Koh-e-Sulaiman is famous for its highest peak called Takht-e-Sulaiman, 11,440 ft above sea level, which was named by the traveler and explorer Ibn-e-Batuta. A detailed study of Koh-e-Sulaiman range will reveal that it is one of the longest mountain ranges in the world, starting from Ghazni in Afghanistan, passing through Zhob in Balochistan and Drazanda area in Frontier Region Dera Ismail Khan in KP, then to Dera Ghazi Khan in Punjab and it ends in Jacobabad in Sindh province. Along with some of the highest peaks Koh-e-Sulaiman also has places of breath taking beauty and cool hill tops. The Eastern part of Koh-e-Sulaiman at the junction of Punjab-Balochistan border arguably is the most scenic.

 

The Tribal area of district Dera Ghazi Khan which is adjacent to Rakni area of Barkhan, starts from Bewata. The journey starts to ascend up to 6,470 ft towards Fort Munro, one of the coolest and scenic places of Koh-e-Sulaiman range. This was a hill top resort established by the British Political agent and Deputy Commissioner of DG Khan, Sir Robert Sandeman.  More than a fort this place can be regarded as the Kashmir of the Southern Punjab. On one particular mount there are the residences for Political Assistant (PA), DCO DG Khan and Commissioner DG Khan Division. Along with that is a cemetery which has some graves of the Britishers and their children who lived here and died. It also has the old Jirga Haal in which the PA held Jirgas with the tribal notables of the region. It also has a little fort kind of a structure symboling the fort of Munro. On the other mount there are private hotels and a Dam. Tourists flock Fort Munro in large numbers in summer, thus making Tourism the largest business of the area.

 

Fort Munro in called as Nimro in Local Balochi language, the legend has it that a Baloch poet settled in this area and wrote poetry from this cold abode. This was even before the British arrived in this area. But today his poetry is not to be found in any of the Balochi dewans, nor his grave is found in this area, but till date Baloch people call this place as Nimro. It seems a coincidence that the British also had to name it Fort Munro after Colonel Munro, Commissioner Derajat, a name which is a homophone of Nimro. Administratively Fort Munro comes in tribal area of DG Khan and the administration is lead by a PA to the DCO Dera Ghazi Khan.

 

The Koh-e-Sulaiman is regarded by some Baloch intellectuals as Mecca for the Baloch people, and rightly so. The Baloch tribes straddle most of the Eastern part of Koh e Sulaiman. There are nine Toumandars of Baloch tribes which were recognised by the British. The nine tribes are: Mazari, Laghari, Dareeshak, Gorchani, Buzdar, Qaisrani, Souri Lound, Tabi Lound and Kethran. In addition to these nine tribes there are other Baloch tribes as well which inhibit the Koh e Sulaiman range. The Toumandar of Khoso tribe is astonishingly absent from the plate installed at Fort Munro but nevertheless Khoso is also a big tribe of this region. Apart from Khoso and Kethran which speak Siraiki and Kethrani languages respectively, all other tribes still speak Balochi language.

 

It is not only a summer retreat, but also an open museum for specialists and enthusiasts of geology and archaeology to study the area. The mountains and the rocks present a very interesting combination for the people interested in its archaeology. It is a very important site as body parts of Balochitherum have been discovered from Koh e Sulaiman, from Shagala area of Zhob to Eastern part of Koh e Sulaiman (the area of Taunsa). In the mass sedimentary rocks of Sulaiman range the evidences of walking whales were discovered by a US paleontologist. According to a local PHD scholar Rahim Kethran who is also a Hubert Humphrey scholar, some fossils of Dinosaurs have also been found in the nearby Vatakri area of Barkhan. According to him there is a potential presence of hydrocarbon deposits in Jandran area of Barkhan.

 

Beside historical, archaeological and tourist potential, this area also presents itself as a hub of enormous mineral potential. When one descends downward from the Fort Munro and Rakhi Guage area there one can see dozens of crush plants working in Sakhi Sarwar area. Substances like Gypsum, Limestone and clay, which are basic ingredients of Cement manufacturing are found here. The DG Khan Cement manufacturing company makes one of the best quality cement in Pakistan. But more significant is the fact that this area is more famous for its good quality Uranium. There is also a big site of Pakistan Atomic Energy Commission in DG Khan. Irrespective of the abundance of such resources, the people of the area are not well attended by the government and their main business is in live stock.

 

DG Khan City comes after the Sakhi Sarwar town, and it would be a pleasant surprise that the main city is quite a clean city as per Pakistani standards. It is more like a planned city, as the British administrators divided it into blocks. DG Khan is at the junction of the four provinces and there is a roundabout which has roads leading to all four provinces of Pakistan. There is a contention that once it was being considered for being made the capital city of Pakistan for its geographical contiguity to all four provinces. This is a Baloch dominated city, and Baloch culture is quite evident from the dresses of the people, but it is quite tolerant to other settlers. There are big businesses of the people from Loralai and Barkhan districts of Balochistan. The city has many good schools which has a good number of students from Balochistan. Its civil hospital caters to the needs of whole of the division and beyond, it also has a medical college.

Writer is an Assistant Commissioner in Balochistan.

کوہ سلیمان کے عجائبات

سطح سمندر سے 11.440 فٹ اوپر، کوه سلیمان اپنی بلند ترین چوٹی کی وجہ سے مشہور ہے جسے تخت سلیمان بهی کہا جاتا ہے. اسے یہ نام معروف متلاشی و سیاح ابن بطوطہ نے دیا تها. کوه سلیمان سلسلہ کے تفصیلی مطالعہ سے یہ بات آشکار ہوجاتی ہے کہ یہ دنیا کے طویل ترین پہاڑی سلسلوں میں سے ایک ہے، جس کا آغاز افغانستان کے علاقے غزنی سے ہوتا ہوا بلوچستان کے علاقے ژوب سے گزرتا ہوا علاقہ غیر کے درازنده اور خیبر پختونخواه کے ڈیره اسماعیل خان کو ملاتا ہوا پهر پنجاب کے علاقے ڈیره غازی خان کو پہنچتا ہے اور بالآخر صوبہ سنده کے علاقے جیکب آباد میں اختتام پذیر ہوجاتا ہے. کوه سلیمان میں جہاں ایک طرف بلند و بالا چوٹیاں ہیں وہیں فریفتہ کرنے والے خوبصورت مناظر اور ٹهنڈی پہاڑی چوٹیوں کے مقامات بهی ہیں. پنجاب اور بلوچستان کی سرحد کے سنگم پر واقع کوه سلیمان کا مشرقی حصہ قدرتی خوبصورتی میں اپنی مثال آپ ہے. بارکهان کے علاقے رَکنی سے ملحق ضلع ڈیره غازی خان کے قبائلی علاقے بیوٹا سے شروع ہوتے ہیں. سفر کا آغاز 6,470 فٹ اوپر کی جانب ہوتا ہوا فورٹ منرو کو پہنچتا ہے جو سلسلہ کوه سلیمان کے خوبصورت ترین اور ٹهنڈی مقامات میں سے ہے. یہ برطانوی سیاسی ایجنٹ اور ڈی جی خان کے ڈپٹی کمشنر سر رابرٹ سنڈیمن کی جانب سے قائم کرده پہاڑ کی چوٹی پر ایک قیام گاه ہے، محض ایک قلعے کے مقابلے میں اس مقام کو جنوبی پنجاب کے کشمیر کے طور پر بهی شمار کیا جاسکتا ہے. ایک مخصوص پہاڑی پر پولیٹیکل اسٹنٹ (PA)، ڈی سی او ڈیره غازی خان اور ڈپٹی کمشنر ڈی جی خان ڈویژن کی رہائش گائیں بهی ہیں. اسکے علاه یہاں ایک قبرستان بهی ہے جس میں یہاں رہنے اور مرنے والے انگریزوں اور ان کے بچوں کی قبریں بهی ہیں، یہاں ایک جرگہ حال بهی موجود ہے جہاں پولیٹیکل اسٹنٹ اس علاقے کے قبائلی عمائدین کے ساته جرگے بهی منعقد کرتا تها. یہاں ایک چهوٹا قلعہ نما ساخت بهی موجود ہے جو فورٹ آف منرو کی علامت ہے جبکہ دوسری پہاڑی پر ایک ڈیم اور نجی ہوٹل بهی قائم ہے. موسم گرما میں سیاح بڑی تعداد میں فورٹ منرو کا رخ کرتے ہیں جو اس علاقے میں سیاحت کے کاروبار کو فروغ دیتا ہے.

فورٹ منرو کو مقامی بلوچی زبان میں نمرو کہا جاتا ہے، اسکی داستاں کچه یوں ہے کہ اس علاقے میں ایک بلوچ شاعر رہتا تها جوواس سرد مسکن میں شاعری لکهتا تها. یہ یہاں انگریزوں کی آمد سے بهی قبل کے بات ہے مگر آج بهی کسی بلوچی شاعری کی دیوان میں ان کی شاعری کا حوالہ نہیں ملتا اور نہ ہی کسی کو ان کی قبر کا پتا ہے، لیکن آج بهی بلوچ اس جگہ کو نمرو کا نام دیتے ہیں. یہ اتفاق کی بات ہے کہ انگریز نے بهی اسکا نام کرنل منرو سے منسوب کرکے فورٹ منرو رکه دیا جو بلوچی نام نمرو کے ہم آواز ہے. انتظامی حوالے سے فورٹ منرو ڈی جی خان کے قبائلی علاقوں میں آتا ہے لیکن انتظامی قیادت ڈی جی خان کے ڈی سی او کے ایک PA کے ذریعے سنبهالے جاتے ہیں.

بلوچ دانشوروں کی جانب سے کوه سلیمان کو بلوچوں کا مکہ بهی کہا جاتا ہے اور یہ بجا بهی ہے کیونکہ کوه سلیمان کے مشرقی حصے میں ہر طرف بلوچ قبائل پهیلے ہوئے ہیں. یہاں بلوچوں کے نو ایسے قبائل ہیں جنکے تمندار (سردار) انگریز کی جانب سے تسلیم کئے گئے تھے، جن میں مزاری، لغاری، دریشک، گورچانی، بزدار، قیصرانی، سوری لنڈ، تبی لنڈ اور کهیتران شامل ہیں. ان نو قبائل کے علاوه دیگر کافی ایسے بلوچ قبائل ہیں جو کوه سلیمان سلسلے میں آباد ہیں. حیران کن طور پر فورٹ منرو میں نسب تختی میں کهوسو قبیلے کے تمندار نام شامل نہیں ہے جبکہ کهوسو بهی اس خطے میں آباد بڑے قبائل میں سے ایک ہے. یہاں پر آباد تمام تر قبائل بلوچی زبان بولتے ہیں سوائے کهوسو جو سرائیکی اور کهیتران جو کهیترانی زبان بولتے ہیں.

یہ محض موسم گرما کے لئے ایک تفریح گاه نہیں ہے بلکہ ایک مکمل عجائب خانے کی حثیت بهی رکهتا ہے جس سے ارضیات و آثار قدیمہ میں دلچسپی رکهنے والے اور ماہرین اس علاقے کا بخوبی مطالعہ کر سکتے ہیں. یہاں کے پہاڑ اور پتهر آثار قدیمہ میں دلچسپی رکهنے والوں کے لئے ایک دلچسپ امتزاج پیش کرتے ہیں. ژوب کے علاقے شاغالا سے لیکر کوه سلیمان کے مشرقی حصے (علاقہ تونسہ) اس لحاظ سے بهی کافی اہم مقامات ہیں کہ یہاں سے بلوچی تهیریم کے جسم کے مختلف حصے دریافت ہوئے تهے. امریکہ کے ایک ماہر حیاتیات نے کوه سلیمان کے تہ نشین چٹانوں میں وہیل کے چلنے کے شواہد بهی دریافت کئے تهے. ایک مقامی پی ایچ ڈی سکالر رحیم کهیتران، جو ہیوبرٹ ہمفرے سکالر بهی ہیں، انکے مطابق ڈائناسار کے کچه فوصلز بارکهان کے علاقے وٹاکاری سے بهی دریافت ہوئے ہیں. انکے مطابق بارکهان کے علاقے جاندران میں ہائیڈرو کاربن کی موجودگی کے بهی قوی امکانات ہیں.

آثار قدیمہ، تاریخ اور سیاحت کے علاوه یہ علاقہ بے پناه معدنی وسائل کا بهی مرکز ہے. فورٹ منرو اور رکهی گیج کے علاقوں سے جب نیچے آیا جائے تو سخی سرور کے علاقے میں پتهر پیسنے (Crushing Plants) کے درجنوں کارخانے ملیں گے، اسکے علاه سیمنٹ بنانے کے بنیادی اجزاء جیسے جپسم، چونا اور مٹی وغیره بهی یہاں پائے جاتے ہیں. اسکے علاوه ڈی جی خان سیمنٹ مینوفیکچرنگ کمپنی پاکستان بهر میں معیاری اور بہترین سیمنٹ بنانے والی کمپنیوں میں سے ایک ہے. لیکن یہ حقیقت بهی اہم ہے کہ یہ علاقہ معیاری یورنیم پیدا کرنے کے لئے بهی ذیاده مشہور ہے. ڈیره غازی خان میں پاکستان ایٹمک انرجی کمیشن کی ایک بڑی سائٹ بهی موجود ہے. وسائل سے مالامال ہونے کے باوجود بهی حکومت کی جانب سے علاقے کے لوگوں کی بود و باش کے لئے کوئی اہم پیش رفت نہیں ہوئی ہے جس کی وجہ سے مال مویشی پالنے سے وابستہ ہے.

ڈی جی خان شہر سخی سرور قصبے کے بعد آتا ہے اور یہ خوشگوار طور پر حیرت کی بات ہوگی کہ مرکزی شہر پاکستان کے معیار کے مطابق ایک صاف ستهرا شہر ہے. یہ منصوبہ بندی سے تعمیر کئے گئے شہروں کی طرح ہے جسے برطانوی منتظمین نے مختلف بلاکس میں تقسیم کیا تها. ڈی جی خان چاروں صوبوں کے سنگم پر واقع ہے جہاں سے تقریباً پاکستان کے چاروں صوبوں کے لئے سڑکیں نکلتی ہیں. دلیل ہے کہ چاروں صوبوں سے اس کی جغرافیائی ربط ہونے کی وجہ سے ایک بار اسے پاکستان کا دارالحکومت حکومت بنانے پر غور کیا گیا تها. یہ ایک بلوچ اکثریتی علاقہ ہے جہاں لوگوں کے پہناؤ اور رہن سہن کے انداز میں بلوچی ثقافت نمایاں ہے تاحال یہ علاقہ آبادکاروں کے لئے بهی روادار ہے.  یہاں پر بلوچستان کے اضلاع بارکهان اور لورلائی کے لوگوں کے بڑے بڑے کاروبار موجود ہیں. اس شہر میں کافی بہترین سکول بهی ہیں جہاں بلوچستان سے بچے اچهی خاصی تعداد میں زیر تعلیم ہیں. اس کا سول ہسپتال ڈویژن اور باہر کی بهی ضروریات پورا کرتا ہے، اسکے علاوه اس کا ایک میڈیکل کالج بهی ہے.