There was a time when the transmission of Radio Pakistan in Brahvi and Balochi languages was heard as far as the Gulf States. Aadenk, a program in Balochi language, was broadcasted from 3 PM to 4 PM and heard all over Balochistan. Hundreds of appreciation letters were received by Radio Pakistan on daily basis.

“Radio Pakistan transmission not only promoted Brahvi and Balochi languages but many people in Balochistan learnt Urdu listening to it,” Said Ashraf Baloch, an ardent listener of radio in past.

However all of this is going to change forever as National Party led government of Balochistan is all set to establish a sports complex, named after Ghaus Baksh Bizenjo, on the site where Radio Pakistan transmitters are installed.

In 1959 radio transmitters were installed in a 64 acre tract of land situated in Sariab road Quetta. Rays of radio towers are injurious for human health that’s why a large land area was allocated for this purpose.

In 2000, these transmitters started to become weak and stopped working in 2010. Radio Pakistan was in process of replacing these transmitters with new ones. The process was delayed due to bureaucratic red tape. In meantime, federal government transferred the 64 acres of land to Balochistan government on request of Chief Minister Dr. Malik Baloch.

Radio transmissions of 7 hours per language were broadcasted daily when the transmitters in Sariab road were functional. When they stopped working in 2010, smaller transmitters installed in Yaro, Pishin district, were used for transmission. Now, every language gets just couple of hours of transmission on daily basis and this arrangement will continue in future because of loss of Radio transmission site on Sariab road.

Balochistan Inside has learnt that federal government was misguided by provincial government during transfer of Radio Pakistan land. A local official of Radio Pakistan told Balochistan Inside that provincial government told the federal government that 64 acre land of radio Pakistan is “abandoned” which is incorrect. “Millions worth of radio transmission equipments are still installed at the site and we are waiting for release of funds by federal government to make the site functional,” added the official.

Reportedly, Sindh government paid for repair of Radio Pakistan tower few years back. According to radio Pakistan Local official, Unlike Balochistan government, Sindh government cares about the transmissions in Sindhi language and that’s why they paid for the repair.

The decision to takeover Radio transmission site would drastically affect Brahvi and Balochi languages. In fact, Brahvi is one of the 27 languages in Pakistan that have been declared endangered languages by UNESCO. Reduction in duration of Brahvi transmission due to conversion of radio transmission site into a sports complex would further endanger Brahvi language.

Balochi Academy, a literary society working for promotion of Balochi language, has passed resolutions against reduction in duration of Balochi and Brahvi transmissions. However Balochi academy can’t do anything more because it’s dependent upon the annual grant that it receives form Balochistan government.

National Party led government is using the pretext of a sports complex to take over the 64 acre prime land. Quetta already has a huge sports complex in form of Ayub stadium. Qasim stadium and Shahwani Stadium are sports grounds situated in vicinity of Radio transmission site on Sariab road that can also be used for sports complex.

Millions worth of radio transmission equipments are still installed at the site and we are waiting for release of funds by federal government to make the site functional.

“I doubt that radio Land would be used for a sports complex,” Samiullah Baloch a resident of Sariab Road told Balochistan Inside. He alleged, “Primary goal is to occupy the 64 acre land which is worth billions of rupees and sports complex is just a pretext for that.”

It’s also surprising that Sariab Road, 10 KM long and most backward road of Quetta, lacks basic facilities but government wants to spend billions of rupees on construction of a sports complex.

Incumbent government has approved a so-called Sariab Package which comprises of few schemes involving construction work and establishing some tube wells. Political opponents of National Party allege that Sariab package is nothing more than an effort to reward National Party leadership of Sariab Road.

“National Party led government do not fix road lights on Sariab road but want to build a sports complex,” lamented Samiullah Baloch. Well placed officials in Finance department confirmed that no amounts have been allocated for repair of road lights in Sariab package.

Spokesman of government of Balochistan was not available for a comment on this issue when contacted by Balochistan Inside. However a well placed official in Chief Minister’s Secretariat termed the issue of criticizing proposed sports complex a conspiracy to halt a pro-people project.

“Why this issue is now making it into media when radio transmission was suspended five years ago, questioned the official.

“Radio employees union has taken up this issue and radio management is also opposing the implementation of decision of transfer of land,” said Abdul Rauf Spokesman of Radio Pakistan. “Release of Rs. 300 million for installation of digital transmission towers at Sariab road is in final stages,” added spokesman of radio Pakistan.

Even if the decision of transfer of land is implemented it will take at least six months to dismantle the radio transmission equipment from the site at Sariab road. “In the best interests of Brahvi and Balochi languages the efforts of National Party led government to use radio site as sports complex must be resisted by political parties and civil society,” demanded Ashraf Baloch.

کوئٹہ میں ریڈیو پاکستان کی نشریات کا تحفظ

تحریر عدنان عامر
مترجم : منیبہ محمود 

ایک وقت تھا جب ریڈیو پاکستان کی براہوی اور بلوچی زبان میں نشریات خلیجی ممالک تک سنی جاتی تھیں ۔ بلوچی زبان کا ایک پروگرام آدینک سہ پہر 3سے شام4 بجے تک نشر ہوتا تھا اور پورے بلوچستان میں سنا جاتا تھا۔ روزانہ کی بنیاد پہ ڈھیروں تعریفی خطوط ریڈیو پاکستان کو موصول ہوتے تھے۔

ماضی میں آدینک کے سامع اشرف بلوچ کہتے ہیں : “ریڈیو پاکستان کی نشریات نے نہ صرف براہوی اور بلوچی کو فروغ دیا بلکہ بلوچستان میں بہت سے لوگوں نے اسے سن کر اردو بھی سیکھی۔

تاہم یہ سب اب ہمیشہ کیلئے ختم ہونے جارہا ہے کیونکہ نیشنل پارٹی کی حکومت نے اس جگہ پر ،جہاں ریڈیو پاکستان کے ٹرانسمیٹرز نصب ہیں، غوث بخش بزنجو کے نام پر اسپورٹس کمپلیکس تعمیر کرنے کی تیاری کرلی ہے۔

1959 میں کوئٹہ میں سریاب روڈ پر واقع 64 ایکڑ رقبے پر پھیلی زمین پر ریڈیو ٹرانسمیٹرزنصب کئے گئے۔ چونکہ ریڈیو ٹاورز کی شعائیں انسانی صحت کیلئے شدید نقصان دہ ہیں اس وجہ سے زمین کا اتنا بڑا حصہ اس کام کیلئے مختص کیا گیا تھا۔ 

سال 2000 میں یہ ٹرانسمیٹرز خراب ہونا شروع ہوگئے اور 2010 میں انہوں نے کام کرنا ہی چھوڑ دیا۔ ریڈیو پاکستان ان ٹرانسمیٹرز کو نئے ٹرانسمیٹرز سے تبدیل کروا رہا تھا لیکن پھر یہ معاملہ بیورو کریسی کے سرخ فیتے کی نظر ہوگیا۔ اسی دوران وزیر اعلیٰ ڈاکٹر مالک بلوچ کی درخواست پر وفاقی حکومت نے 64 ایکڑ رقبے کی زمین بلوچستان حکومت کے حوالے کردی۔

ریڈیو ٹرانسمیٹرز جب سریاب روڈ پرنصب تھے تو ان کے ذریعے ہر زبان میں روزانہ سات گھنٹے کی نشریات نشر ہوتی تھیں۔ جب 2010 میں ان ٹرانسمیٹرز نے کام کرنا ہی چھوڑ دیا تو یارو ، ضلع پشن میں نصب چھوٹے ٹرانسمیٹرز نشریات کیلئے استعمال کئے گئے۔ اب روزانہ ہر زبان میں نشریات کے لئے صرف چند گھنٹے ہی مل پاتے ہیں اور سریاب روڈ سے نشریات ختم ہونے کے باعث مستقبل میں بھی یہ سلسلہ ایسے ہی چلتا رہے گا۔ 

ایک مقامی اہلکارنے بلوچستان انسائیڈ کو بتایا کہ صوبائی حکومت کی جانب سے وفاقی حکومت کو مطلع کیا گیا کہ 64 ایکڑ رقبے کی زمین ختم ہو چکی ہے جبکہ یہ بات صحیح نہیں ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ لاکھوں روپے مالیت کے حامل ریڈیو نشریات کے آلات ابھی بھی اس جگہ نصب ہیں اور ہم وفاقی حکومت کی طرف سے فنڈز کے جاری ہونے کا انتظار کر رہے ہیں تا کہ اس جگہ کو فعال بنایا جائے۔

اس ضمن میں مبینہ طور پر یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ کچھ سال پہلے سندھ حکومت نے ریڈیو پاکستان میں درستگی کے لئے ادائیگی کی۔ ریڈیو پاکستان کے مقامی اہلکار کے مطابق بلوچستان حکومت کے برعکس، سندھ حکومت سندھی زبان میں نشریات کی فکر کرتی ہے اور یہی وجہ ہے کہ انہوں نے درستگی کیلئے ادائیگی کی۔

ریڈیو کی جگہ پر قبضے کے فیصلے سے براہوی اور بلوچی زبان شدید متاثر ہوگی۔ دراصل براہوی پاکستان کی ان 27 زبانوں میں شامل ہے جس کو یونیسکو نے متروک ہونے والی زبان قرار دیا ہے۔ اسپورٹس کمپلیکس میں منتقلی کی وجہ سے براہوی زبان میں ریڈیو نشریات کے دورانیے میں کمی واقع ہوگی جس کے نتیجے میں براہوی زبان مٹنے کا خدشہ مزید بڑھ جائے گا۔ 

بلوچی اکیڈمی ایک ادبی سوسائٹی ہے جو بلوچی زبان کی ترقی کیلئے کام کر رہی ہے، اس اکیڈمی نے بلوچی اور براہوی نشریات کے دورانیہ میں کمی کے خلاف ایک قرارداد منظور کی ہے۔ تاہم اکیڈمی اس سے زیادہ کچھ نہیں کرسکتی کیونکہ وہ خود بلوچستان حکومت کی طرف سے حاصل کردہ سالانہ گرانٹ پر انحصار کرتی ہے۔ 

حکومت 64 ایکڑ رقبے کی زمین کواسپورٹس کمپلیکس کے طور پر استعمال کرنے کا عذر پیش کررہی ہے تاکہ اس پر قبضہ کرلیا جائے۔ کوئٹہ میں پہلے سے ہی ایوب اسٹیڈیم کی صورت میں ایک بہت بڑا اسپورٹس کمپلیکس موجود ہے۔سریاب روڈ پر واقع ریڈیو کی نشریاتی مقام والے علاقے میں کھیل کے میدان قاسم اسٹیڈیم اور شہوانی اسٹیڈیم واقع ہیں اور ان میدانوں کو بھی اسپورٹس کمپلکس کے طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے۔ 

سریاب روڈ کے رہائشی سمیع اللہ بلوچ نے بلوچستان انسائڈ کو بتایا : ” ریڈیو پاکستان کی زمین کو اسپورٹس کمپلیکس کیلئے استعمال کئے جانے پر مجھے شک ہے۔” انہوں نے شک کا اظہار کرتے ہوئے کہا: ” اسپورٹس کمپلیکس صرف ایک بہانہ ہے اور بنیادی مقصد یہ ہے اربوں روپے مالیت کے حامل 64 ایکڑ وسیع رقبے کو اسپورٹس کمپلیکس کے نام پر حاصل کرلیا جائے۔”

یہ بھی ایک حیران کن بات ہے کہ بنیادی ضروریات سے محروم سریاب روڈ 10 کلومیٹر طویل اور کوئٹہ کی سب سے پسماندہ سڑک ہے لیکن حکومت اسپورٹس کمپلیکس کو تعمیر کیلئے اربوں روپے خرچ کرنا چاہتی ہے۔ 

موجودہ حکومت نے نام نہاد سریاب پیکج کی منظوری دیدی ہے۔ یہ پیکج چند منصوبوں پر مشتمل ہے جن میں تعمیراتی کام اور کچھ ٹیوب ویلز کا قیام شامل ہے۔ نیشنل پارٹی کے سیاسی مخالفین اس حوالے سے شکوک کا اظہار کرتے ہیں کہ سریاب پیکج کی کوشش اس سے زیادہ کچھ بھی نہیں ہے کہ نیشنل پارٹی کی قیادت کو سریاب روڈ نواز دیا جائے۔ سمیع اللہ بلوچ نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا : ” نیشنل پارٹی کی حکومت سریاب روڈ کی لائٹیں تو ٹھیک کراتی نہیں لیکن اسپورٹس کمپلیکس تعمیر کرنا چاہتی ہے۔” محکمہ خزانہ کے اعلیٰ حکام نے اس بات کی تصدیق کی کہ سریاب پیکج میں سڑک کی لائٹوں کو ٹھیک کرانے کیلئے کوئی رقم مختص نہیں کی گئی ہے۔ جب بلوچستان انسائیڈ نے اس مسئلے پر بلوچستان حکومت کے ترجمان سے رابطہ کرنے کی کوشش کی تو ان کا کوئی بھی نمائندہ جواب دینے کے لئے دستیاب نہیں تھا۔ 

تاہم چیف منسٹر سیکریٹریٹ میں اعلیٰ عہدے پر براجمان ایک افسر نے مجوزہ اسپورٹس کمپلیکس کے مسئلے پر تنقید کو حکومت کے خلاف سازش قرار دیا تاکہ عوام دوست منصوبے کو روکا جائے۔افسر نے سوال کیا : “اس مسئلے کو اب ذرائع ابلاغ پر کیوں لایا جارہا ہے جبکہ ریڈیو کی نشریات کو 5 سال قبل معطل ہوگئی تھیں۔ 

ریڈیو پاکستان کے نمائندہ عبدالرؤف نے کہا: “ریڈیو کی انجمن ملازمین نے اس مسئلے کو اٹھایا ہے اور ریڈیو کی انتظامیہ بھی زمین کی منتقلی کے فیصلے کے خلاف ہے۔” ریڈیو پاکستان کے نمائندے نے مزید کہا : “سریاب روڈ پر ڈیجیٹل ٹرانسمیشن ٹاور نصب کرنے کیلئے 300 ملین روپے کی وصولی آخری مراحل میں ہے۔ “

اگر زمین کی منتقلی کے فیصلے پر عمل درآمد بھی کیا جاتا ہے تب بھی سریاب روڈ کی جگہ سے ریڈیو کے نشریاتی آلات ہٹانے میں کم از کم چھ ماہ لگ جائیں گے۔ اشرف بلوچ نے مطالبہ کیا : “براہوی اور بلوچی زبان کے بہترین مفاد میں یہ ہے کہ نیشنل پارٹی کی حکومت کی جانب سے ریڈیو اسٹیشن کے مقام کو اسپورٹس کمپلیکس کے طور پر استعمال کرنے کی کوششوں کے خلاف سیاسی جماعتیں اور سول سوسائٹی مزاحمت کا آغاز کرے۔”