There are some people in the world who despite being physically fit, feel themselves under the swamp of despair. Some people do societal boycott, while others are addicted to drugs. Then, these people not only become scourge for the society but also try to end their lives by falling into many complications. The number of people in the world is not very much who does not let the frustration to overpower them. They make the life beautiful despite of facing difficulties and glorify the society with creations. By this life becomes beautiful and become an example for the other people who are under the swamp of despair. These are the people, who don’t not let the frustration over them and spread the light to the people who are unaware about the lights of world, always busy in serving these people. One of them is Sanaullah Marri, who was born in Kohlu, the backward area of Balochistan. Visually impaired since birth, he has dedicated himself to serve humanity.

Sanaullah Marri is a teacher by profession and running his welfare organization “All disabled organization” for the welfare and wellness of disabled people of Kohlu and Barkhan. This organization along with the other organizations has worked for the welfare and wellness of the humanity. It includes the availability of wheel chairs for the disables, raised the voice for the rights of disabled people on forums of different organizations, registration of disabled people, access of disabled children to the school and provision of basic necessary goods to the poor disabled people. He, along with few people, founded the organization in 2001. In the beginning no one has shown the interest towards the organization but later on one room has been provided to the organization on the basis of its performance. Locally, houses and roofs were provided to 15 disable people by the efforts of this organization and with the co-operation of other welfare organizations.

When a question was asked about the profession and education of Sanaullah Marri, he interestingly stated his story: “At the age of 16 I started education from Pakistan Association of the Blind in Multan. All credit goes to Mr. Shah Mohammad Marri who chose this institute and enrolled me there. Far from home, without any support and with loss of sight, my journey was full of difficulties, but gradually I began to be familiar with everything and started to adjust with them and got interest in studies. I completed my FA in 1993 where I got mobility training through which I had learnt enough. For my education, the books were written on Braille system.

After Matriculation, I was appointed as a teacher in education board, but after few months some people of the area started objections on me and when the complaints were sent to the secretary, he dismissed me from the job. My fault was shown that how could I teach the students as a blind person. Though I was appointed on the quota of disabled people, I didn’t know of which crime I was punished. Then I knocked the doors of court, I knocked every door, from session court to high court and then
Supreme Court, and got justice after the long struggle of 3 years and I was posted back to school.” He was selected for Asian Blind Union Program organized by Pakistan Association of the Blind and got three months training of Office Management Training Course (OMTC) in 1996 in Delhi, India from where he got the opportunity to learn a lot.

Sanaullah Marri has been providing his teaching services as a JV teacher in the area of Kohlu for 22 years and trying to fulfill his duty in a better manner. During initial days when he joined the school, he was advised that he cannot teach the children and should receive his salary while staying at home. But he asked them to give a chance for 15-day period, after which whatever decision is taken he would accept it. When he started teaching, the children not only liked his way of teaching, but also the school administration was inspired by him and so far he still continues his services as a teacher.

At the age of 16 I started education from Pakistan Association
of the Blind in Multan. All credit goes to Mr. Shah Mohammad Mari who chose this institute and enrolled me there.

After Matriculation, I was appointed as a teacher in education
board, but after few months some people of the area started objections on me and when the complaints were sent to the secretary, he dismissed me from the job. My fault was shown that how could I teach the students as a blind person.

Sanaullah Marri got married in 1996. Allah blessed him with three children. He considers his life partner as his best supporter who always stands with him in every matter of life in a best possible way. He is providing education to his children; currently his elder son is getting education from an institute of Sukkur. He wishes that his entire area get educated. He wants to extend the education for disabled people in particular. He said, “The number of disabled people in Kohlu and Barkhan is quite high, there are 250 disabled people registered in our organization in which blind, deaf and half mad people are included. On the regional level, there is no educational institute for disabled children who could admit his disabled child there because they are reluctant to send their children outside the area. I have sent one student in an educational institute outside the area by active participation and with the cooperation of welfare organizations. I strive that remaining disabled children also come in the field of education.”

He is striving to establish a regular school for disables at a regional level. In this regard, government and nongovernmental organizations must try their efforts. He wants to spread all his work in the entire Balochistan. The way Sanaullah Marri devoted his life for serving humanity; he surely is a role model for the society which is divided into courageous and hopeless people. He kept away the hopelessness from himself while he is a blind. Surely his life would open a new chapter for thousands of other people who despite being physically healthy but a victim of mental infertility.

ثنا ء اللہ مری: ایک باہمت انسان 
ایک پرعزم جذبہ 

تحریر: شبیر رخشانی

دنیا میں کچھ ایسے بھی لوگ ہیں جن کے تمام اعضاء سلامت ہونے کے باوجود وہ اپنے آپ کو مایوسی کی دلدل میں پھنسا محسوس کرتے ہیں۔ کچھ لوگ معاشرتی بائیکاٹ کرتے ہیں تو کچھ منشیات کے عادی ہو جاتے ہیں ، پھر نہ صرف وہ خود معاشرے کے لئے ناسور بن جاتے ہیں بلکہ الجھنوں میں مبتلا ہوکر وہ اپنی زندگی کے خاتمے کے درپے ہو جاتے ہیں ۔ دنیا میں ایسے افراد کی تعداد زیادہ نہیں ہوتی جو کبھی بھی مایوسی کو اپنے اوپر حاوی نہیں ہونے دیتے ، وہ مشکلات جھیلنے کے باوجود زندگی کو خوبصورت بناتے ہیں اور معاشرے کو تخلیقات سے نوازتے ہیں ۔ اس وجہ سے زندگی خوبصورت بن جاتی ہے جبکہ ان کی زندگی مایوسی کی دلدل میں پھنسے دیگر افراد کے لئے مثال بن جاتی ہے ۔ یہ وہ لوگ ہوتے ہیں جو مایوسی کو کبھی اپنے اوپر حاوی نہیں ہونے دیتے اور دنیا کی روشنی سے لاعلم افراد کو روشنی پہنچانے اور ان کی خدمت کے لئے مصروف عمل رہتے ہیں۔ انہی میں سے ایک شخص بلوچستان کے ایک پسماندہ علاقے کوہلو سے جنم لینے والے ثناء اللہ مری بھی ہیں۔ مادر شکم سے ہی بینائی سے محروم ثنا ء اللہ مری انسانیت کی خدمت سے سرشار ہیں۔ 

ثناء اللہ مری پیشے کے اعتبار سے ٹیچر ہیں اور کوہلو و بارکھان میں معذوروں کی فلاح و بہبود کے لئے اپنی فلاحی تنظیم ’’آل ڈس ایبل آرگنائزیشن‘‘ چلا رہے ہیں۔ اس تنظیم نے کوہلو اور بارکھان میں دیگر اداروں کے ساتھ مل کر انسانیت کی فلاح و بہبود کے لئے کام کیا ہے۔ جن میں معذور افراد کے لئے ویل چیئرز کی فراہمی ، مختلف اداروں کے فورمز پر معذور افراد کے حقوق کے لئے آواز بلند کرنا، معذور افراد کی رجسٹریشن، معذور بچوں کو اسکولوں تک رسائی فراہم کرنااور غریب معذور افراد کے لئے ضرورت کا سامان مہیا کرنا شامل ہے۔ انہوں نے چند افراد کے ساتھ مل 2001میں اس تنظیم کی بنیاد رکھی تھی۔ شروع میں اس ادارے کی طرف خاص دلچسپی نہیں دی گئی لیکن بعد میں اسکی کارکردگی کو بنیاد بنا کر اسے ایک کمرہ فراہم کیا گیا۔ اس تنظیم کی کاوشوں اور دیگر فلاحی تنظیموں کے تعاون سے مقامی طور پر پندرہ معذور افراد کو مکان اور چھتیں فراہم کی گئیں۔ 

ثناء اللہ مری سے جب ان کے پیشے اور تعلیم سے متعلق سوال پوچھا گیا تو وہ اپنی کہانی دلچسپی سے یوں بیان کرتے ہیں۔ ’’ میں نے 16سال کی عمر میں اپنی تعلیم کا سلسلہ ملتان میں پاکستان ایسوسی ایشن آف دی بلائنڈ سے شروع کیا ۔ اس کا سہرا شاہ محمد مری صاحب کو جاتا ہے جنہوں نے اس ادارے کا انتخاب کرکے مجھے اس میں داخلہ دلوایا ۔ کسی سہارے کے بغیر اپنے گھر سے دور بینائی سے محرومی کے ساتھ شروع کا میرا سفر مشکلات سے بھرپور تھا لیکن آہستہ آہستہ ہر چیز سے مانوس ہونے لگا اور اسی میں بس گیا۔ پھر پڑھائی میں بھی دل لگ گیا۔ 1993 ء میں اپنی تعلیم ایف اے تک مکمل کی جہاں مجھے موبلٹی ٹریننگ دی جاتی تھی۔ جس سے وہ کافی حد تک سیکھ چکے تھے۔میری تعلیم کے لئے مخصوص ابھرے ہوئے الفاظ پر مشتمل کتابیں ہوتی تھیں ۔‘‘ 

’’ میٹرک کے بعد 1990 میں مجھے محکمہ ایجوکیشن میں بحیثیت ٹیچر تعینات کیا گیا ، چند مہینوں کے بعد علاقے کے بعض افراد نے اعتراضات شروع کر دیئے اور یہ شکایت جب سیکریٹری کو پہنچا ئی گئی تو مجھے میری ملازمت سے برخاست کیاگیا ۔ میرا قصور صرف یہ ظاہر کیا گیا کہ میں آنکھوں سے معذور ہوں تو بھلا بچوں کو کس طرح پڑھا سکتا ہوں حالانکہ میں معذور افراد کے کوٹے پر تعینات کیا گیا تھا لیکن نہ جانے کیوں مجھے کس جرم کی سزا دی گئی۔ پھر مجھے عدالتوں کے دروازے کھٹکھٹانے پڑے۔ میں نے سیشن کورٹ سے لے کر ہائی کورٹ اور پھر سپریم کورٹ تک ہر دروازہ کھٹکھٹایا تب کہیں جاکر 3سال کی طویل جدوجہد کے بعد مجھے انصاف ملا اور مجھے دوبارہ اسکول میں تعینات کیا گیا‘‘۔ پاکستان ایسو سی ایشن آف دی بلائنڈ ملتان کی طرف سے ایشین بلائنڈ یونین کے پروگرام کے لئے انہیں منتخب کیا گیا جہاں 1996 میں بھارت کے شہر دہلی میں انہیں تین مہینے کے آفس مینجمنٹ ٹریننگ کورس (OMTC) کی تربیت دی گئی جہا ں انہیں بہت زیادہ سیکھنے کا موقع ملا۔

ثناء اللہ مری 22سال سے کوہلو کے علاقے ماوند میں بحیثیت جے وی ٹیچر کے طور پر ٹیچنگ کے فرائض سر انجام دے رہے ہیں اور وہ اپنے اس فرض کی انجام دہی کو بہتر طور پر نبھانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ وہ بتاتے ہیں کہ ابتدائی دنوں میں جس وقت انہوں نے اسکول میں شمولیت اختیار کی تھی تو انہیں ہدایت جاری کی گئی کہ وہ بچوں کو پڑھا نہیں سکتے ، گھر بیٹھ کر اپنی تنخواہ وصول کر لیں۔ لیکن انہوں نے صاف کہہ دیا تھا کہ انہیں پندرہ دن خدمت کا موقع دیں پھر جو فیصلہ کیا جائے گا انہیں قبول ہوگا ۔ انہوں نے جب پڑھانا شروع کیا تو نہ صرف بچوں کو ان کے پڑھانے کا طریقہ پسند آگیا بلکہ اس کے ساتھ ساتھ اسکول انتظامیہ بھی ان سے متاثر ہوئے بغیر نہ رہ سکی اور وہ اپنی خدمات کو اس وقت سے لے کر اب تک جاری رکھے ہوئے ہیں ۔ 

ثناء اللہ مری نے 1996 میں شادی کی ۔ اللہ تعالیٰ نے انہیں تین بچوں سے نوازا ہے۔ وہ اپنی رفیق حیات کو بھی اپنی زندگی کا بہترین معاون سمجھتے ہیں جنہوں نے زندگی کے معاملات میں بہتر طور پر ان کا ساتھ دیا ۔ وہ اپنے بچوں کو تعلیم دے رہے ہیں ، ان کا بڑا بیٹا اس وقت سکھر کے ایک ادارے سے تعلیم حاصل کررہا ہے ۔ ان کی کوشش ہے کہ ان کا پورا علاقہ ہی تعلیم یافتہ ہوجائے۔ وہ خاص کر معذوروں کی تعلیم کو آگے بڑھانے کے خواہاں ہیں۔ وہ کہتے ہیں :’’ کوہلو اور بارکھان میں معذوروں کی تعداد انتہائی زیادہ ہے۔ ہمارے ادارے میں اس وقت 250 معذور افراد رجسٹرڈ ہیں جن میں نابینا، بہرے اور نیم پاگل افراد شامل ہیں۔ علاقائی سطح پر معذوروں کے لئے کوئی تعلیمی ادارہ قائم نہیں ہے جہاں ہر کوئی اپنے معذور بچے کو اس ادارے میں داخلہ دلوائے جبکہ وہ ان بچوں کو وہ باہر بھجوانے سے گریز کرتے ہیں۔ میں نے سرگرمی کا مظاہرہ کرکے فلاحی اداروں کے تعاون سے ایک معذور بچے کو باہر کے تعلیمی ادارے میں بھجوایا ، میری کوشش ہے کہ باقی معذور بچے بھی تعلیمی میدان میں آئیں۔‘‘

ان کی کوشش ہے کہ علاقے کی سطح پر معذوروں کا باقاعدہ اسکول قائم ہو ۔ اس کے حوالے سے سرکاری اور نیم سرکاری اداروں کو کوشش کرنی ہوگی۔ وہ اپنا کام پورے بلوچستان کی سطح پر پھیلانا چاہتے ہیں۔ ثناء اللہ مری جس طریقے سے انسانیت کی خدمت میں اپنی زندگی وقف کئے ہوئے ہیں ، وہ یقیناًاس معاشرے میں انسانی ہمت اور مایوسی کے درمیان بٹے ہوئے انسانوں کے لئے ایک مشعل راہ ہے۔ ثناء اللہ مری نے نابینا ہوتے ہوئے بھی مایوسی کو اپنے قریب پھٹکنے نہیں دیا ، یقیناًان کی زندگی ان دیگر ہزاروں افراد کے لئے ایک نیا باب کھول سکتی ہے جو جسمانی طور پر صحت مند رہنے کے باوجود ذہنی بانجھ پن کا شکار ہیں۔


Warning: A non-numeric value encountered in /home/balochistan/public_html/wp-content/themes/Newspaper/includes/wp_booster/td_block.php on line 2017