Muhammad Abid Baloch

Presently in Pakistan, if there is a city which is discussed by people from almost every walk of life then it’s Gwadar. Situated near the border of Iran on the coast of Balochistan, Gwadar port city is the talk of the town in every nook and corner of the country. Whether it’s the circles of the politicians, civil society, investors, students or causal friends, Gwadar does get a mention. Gwadar has attracted this attention due to its port and as the starting point for China-Pakistan Economic Corridor (CPEC) – the flagship project of One Belt one road strategic plan of China.

While Gwadar gets mentions in discussions and attention from different quarters, there is not much awareness about its history, especially related to its transfer of ownership. Those who have some idea about that chapter of history of Gwadar, lack clarity and believe in the myths and disinformation.

Gwadar has become a hot issue in the debate of Balochistan and its entire grievance debate. Those who claim that Balochistan’s grievances are genuine use Gwadar as an example and same is the case for those who deny or downplay the grievance factor.

In this context, the historical ownership of Gwadar has also been brought into attention. Those who deny the grievances of Balochistan are propagating a narrative that Gwadar was bought by State of Pakistan from Sultanate of Oman and, therefore, Balochistan can’t establish its claim on the port city when it comes to deciding the control over revenues of Gwadar port in the future to come. Few months back, senior journalist Mujib ur Rehman Shami raised this point in one of his TV programs. Chief Secretary Balochistan, Saifullah Chatta repeated the same thing during a seminar on Balochistan.

At the same time, the intellectuals in Balochistan and politicians counter this narrative while asserting that Gwadar was handed over to Sultanate of Oman by Khan of Kalat; therefore Balochistan has a genuine historical claim on this piece of land.

Therefore, the best way to settle this debate is to consult the books of history. Books written on history of Kalat and Sultanate of Oman, if any, can be consulted. However, tracing down such books and verifying their authenticity will be a daunting task. Therefore, the feasible solution to this lies in consulting the autobiography of Feroz Khan Noon who happened to be the Prime Minister of Pakistan in 1958 when Gwadar was reclaimed from Sultanate of Oman.

Sir Malik Feroz Khan Noon (1893-1970) served as the 7th Prime Minister of Pakistan from 1957-58. In his illustrious career, He also served as Chief Minister Punjab (1953-55), Governor of East Bengal (1950-53) and representative of British India in war cabinet of Winston Churchill.

“From Memory” is the title of autobiography of Feroz Khan Noon which was published posthumously by National Book Foundation in1993. In this book, Feroz Khan narrates in detail that how Gwadar was reclaimed from Sultanate of Oman.

Feroz Khan Noon writes on page 298 of the book that in 1781 a prince of Muscat fled to Gwadar and he was given refuge by Khan of Kalat, who was the King of area comprising of Gwadar. In order to facilitate the Prince to arrange for his maintenance, Khan of Kalat allowed the prince a revenue collection of 84 Tunaks (Rupees) per year from Gwadar. Later on the same prince became the King of Oman but didn’t return Gwadar back to Kalat.

Feroz Khan further writes that in 1839 British subjugated the Kalat state and brought it under their rule. In 1861, the then Khan of Kalat demanded from Oman to return Gwadar but British raj didn’t help Kalat in this regard for Oman was also a protectorate of British Empire. After independence of India, in 1949 negotiations on the issue of retaking Gwadar took place with Oman but the matter remained indecisive.

Sir Feroz Khan Noon claims in the book that the issue of reclaiming Gwadar was taken in 1956 when He [Feroz Khan Noon] became Foreign Minister of Pakistan. He studied the papers of agreement on handing over Gwadar to Oman and started negotiations with Oman with the help of British Government. British were in a dilemma at the time yet they cooperated with Pakistan in this matter.

The most important stand put forward by Feroz Khan Noon related to the issue was the legal pleas which he adopted during the negotiations. Feroz Khan maintains: “Gwadar was a Jagir, an area of a state, given to a person so he may collect state taxes due from the area and use them for maintenance. In such a case ownership could not be transferred to a sovereign power. All Jagirs given by British government were cancelled and we could have done the same with Gwadar but never mentioned this point in negotiations.”

Moreover, based on the aforementioned stance adopted by premier Noon, Pakistan was able to reclaim 2,400 square miles territory of Gwadar in return for a payment. Premier didn’t mention the exact amount paid but hinted that it was equal to few years of various income taxes and fishing industry revenues in Gwadar.

Feroz Khan Noon received the transfer documents of Gwadar in London in summer of 1958 by Ikram Ullah Khan who was high Commissioner of Pakistan in London at that time.

Narration of this episode from the book of Feroz Khan Noon seals the debate on this matter and proves that Gwadar was and always had been a historical part of Baloch state of Kalat. Therefore, modern day province of Balochistan has a legitimate and just claim on this piece of coastal land. This account also can’t be challenged because it was narrated by none other than Prime Minister of Pakistan at the time when Gwadar was reclaimed from Sultanate of Oman.

Disclaimer: Views expressed in this article are those of the author and Balochistan inside not necessarily agrees with them.

گوادر کا پاکستا ن کوہوالگی اور ایک تاریخی پسِ منظر
اگر کوئی شہر آج کل ہر خاص و عام کے بات چیت کا مرکز بناہوا ہے تو وہ گوادر شہر ہے۔ ایران کے سرحدکے قریب بلوچستان کے ساحلی پٹی پر واقع گوادر شہر ملک کے ہر کونے اور کوچوں میں بحث مباحثہ کا مرکز بن چکا ہے۔ خواہ یہ کوئی سیاستدانوں ، سماجی کارکوں،تجراتی حضرات،طلباء یا عام لوگوں کی محفل ہو‘ گوادر کا ذکر ان سرگرمیوں میں ناگزیر ہوچکا ہے۔
گوادر اپنی گہری بندرگاہ اور چائنہ پاکستان اقتصادی رہ داری کا مرکز ہونے کی وجہ سے ہر لب پر ذکر بن چکا ہے ۔ اس کے باوجو بھی گو اد کی تاریخی پسِ منظر پر عبور اور منطقی بحث و مباحثہ نظروں سے اُوجھل ہی سمجھ لیں خصوصاََ شہر کے ملکیت کی منتقلی کے حوالے سے آگاہی بہت کم ہے۔ وہ لوگ جو گوادر کی تاریخ سے آشنا ء ہیں تاہم اُن کے خیالات بھی غیر شفاف اور منگڑہت کہانیوں پر مبنی دکھائی دیتے ہیں ۔
بلوچستان اور یہاں بڑھتے ہوئے عناد کے حوالے سے بحث میں گوادر ایک اہم مسئلہ بن چکا ہے۔ وہ لوگ جو بلوچستان میں بڑھتے عناد سے اتفاق کرتے ہیں وہ گوادر کو بطور مثال پیش کرتے ہیں اور اسی طرح دوسری جانب جو اس بات سے اتفاق نہیں کرتے وہ بھی موجود ہ گوادر کی مثال کو تھامے اپنے موقف کو مظبوط بناتے ہیں۔
اس سیاق و سباق سے گوادر کے تاریخی ملکیت کو ہمیشہ زیر غو ر لیا جاتا ہے ۔ گوادر بندرگاہ اور اس کی اقتصاددی کنٹول کے حامی بلوچستان کے بڑھتے عناد کی تردید د کرتے ہوئے اس حقایت کو زیر غور لاتے ہیں کہ پاکستان کی حکومت نے عمان کے سلطان سے گوادر شہر کو خریداتھا۔لہذا بلوچستان گوادر بندرگاہ کے قبضے کا حق نہیں رکھتا۔ چند ماہ پہلے ایک سینئر صحافی مجیب الرحمان نے ٹی وی پروگرامز میں بھی اس نقطہ نظر کو اُجاگر کیا جسے بعد میں بلوچستان کے حوالسے سے ایک سیمینار میں چیف سیکریٹری صیف اللہ چھٹہ بھی زیر بحث لائے۔
دوسری جانب بلوچ دانشور اور سیاستدان اس غیر شفاف تاریخی حکایت کی تردید کرتے ہوئے یہ دعواکرتے ہیں کہ پہلے خان قلات نے گوادر شہر کو عُمان کے سلطان کے حوالے کیا تھا لہذا ان کے مطابق بلوچستان کا گوادر شہر پر قبضہ جائز ہے۔
چنانچہ، اس طویل بحث و مباحثہ کا ممکن حل تاریخی کتابوں کے اوراک پلٹ کر گوادر شہر کو ایک غیر جانبدارانہ تاریخی دریچے سے دیکھناہے۔ اس حوالے سے بلوچستان اور سلطنت عمان پر لکھی گئی تاریخی کتابوں سے مدد لی جاسکتی ہے تاہم ان کتابوں میں پیش کی گئی تاریخی مواد کی تصدیق ایک مشکل عمل ہوگا۔ لہذا اس مسئلے کا ممکنہ حل فیروز خان نون کی آپ بیتی “From memory”میں موجود ہے۔ فیروز خان نون 1957-50(1893-1970)تک پاکستان کے وزیر اعظم رہے اور اسی دوران گوادر کو سلطنت عمان سے لیا گیا تھا۔ اپنے تمایا دورسیاست میں فیروز خان نون 1953-55تک پنجاب کے وزیر اعلیٰ رہے1950-53تک مشرقی پاکستان کے گورنر ہونے کے ساتھ ساتھ ونسٹن چرچل کے جنگی کابینہ میں بطور برطانوی نمائندہ بھی شامل رہے۔
فیروز خان نون کی کتاب “From memory” 1993میں شائع ہوئی۔ اس کتاب میں فیروز خان نون گوادر کی پاکستانی کے حوالگی کے بارے میں تفصیل سے لکھاہے ۔ کتاب کے صفحہ 298پر فیروز خان لکھتے ہیں کہ 1781میں خان قلات‘ جوگوادر سمیت بلوچستان کا بادشاہ تھا‘ نے مسقط کے شہزادے کو گوادر میں پنا دی۔ شہزادے کو کوئی مالی پریشانی نہ ہو‘ اس حوالے سے خان قلات نے شہزادے کو گوادر سے سالانہ 84 Tunaks بطور مالی آمدنی لینے کی اجازت دی ۔ آگے چل کر یہ شہزادہ عمان کا بادشاہ بنا اور گوادر کو دوبارہ ریاست قلات کو لوٹانے سے گریز کیا۔
فیروز خان مزید لکھتے ہیں کہ برطانیہ نے 1839میں ریاست قلات کو اپنے زیر اختیار لے لیاتھا۔ 1861میں خان قلات نے سلطنت عمان کو گوادر دوبارہ بلوچستان کو لوٹانے کا مطالبہ کیا لیکن برطانیوی حکومت نے اس حوالے سے کوئی پیشِ رفت نہیں دکھائی کیونکہ عمان پہلے سے ہی برطانیہ کے زیر تحفظ تھا۔ برصغیر ہند کی آزادی کے بعد 1949میں عمان سے گوادر کی دوبارہ حوالگی کیلئے غیر نتیجہ خیز بات چیت بھی منعقد کی گئی ۔
فیروز خان دعواکرتے ہیں کہ گوادر کے دوبارہ حوالگی کا مسئلہ 1956اُٹھایا گیا جب وہ پاکستان کے وزیر خارجہ بنے ۔ اُنہوں نے گوادر کے عمان کو حوالگی کے متعلق تمام دستاویزات پڑھیں اور برطانوی حکومت کی مد د سے دوبارہ عمان سے گوادر کی پاکستان کو واپس حوالگی کیلئے مذاکرات کا آغاز کیا۔ ہتاکہ اس وقت برطانیہ ایک مشکل حالت سے گزررہا تھا تاہم اس نے پاکستان کا ساتھ دیا۔
اس مسئلے کے حوالے سے سب سے اہم نقطہ فیروز خان کے دورانے مذاکرات پیش کی گئی قانونی دلائل تھے ۔ اس حوالے سے فیروز خان لکھتے ہیں :
’’گوادر ایک جاگیر یعنی ریاست کا حصہ تھا جسے ایک شخص کو اپنے اخراجات برداشت کرنے کیلئے بطور وسائل مالی آمدنی دیا گیا۔ اس حوالے سے اس علاقے کا کسی آزاد ریاست کی ملکیت میں آجانا ہر گز ممکن نہیں۔ چنانجہ برطانوی حکومت کی دی گئی تمام جاگیر کا خاتمہ کیا گیا لکین ہم گوادر کے حوالے سے اس قانون پر عمل پیرا نہیں ہوسکے لیکن اس حوالے سے مذاکرات میں کبھی یہ بات منظر عام پر نہیں لائی گئی ۔‘‘
اس موقف کے بعد پاکستان ایک ادنیٰ ادائیگی کے عویض گوادر کے 2400 km2 کا حصہ لینے میں کامیاب ہوا۔ تاہم گوادر کیلئے ادا کی گئی صیح رقم کا حوالہ نہیں دیا گیا ‘ لیکن یہ ضرور کہاگیا کہ یہ رقم گوادر کے فش انڈسٹری اور ٹیکس کی چند سالوں کی آمدنی کے برابر تھی۔
فیروز خان نے1958میں لند ن میں تعینات ہائی کمشنر اکرام اللہ کے زریے گوادر کے دوبارہ حوالگی کے دستاویزات حاصل کیئے ۔ فیروز خان کی اس آپ بیتی اور اس میں موجود تاریخی جائزہ بلوچستان کو گوادر کی زمین کا جائزہ حقدار ثابت کرتی ہے ۔اور اس تاریخی جائزہ کا کوئی تردید بھی نہیں کرسکتا کیونکہ یہ اِس شخص سے وابسطہ ہے جس کے دورِ وزارت میں گوادر کی پاکستان کو واپسی ممکن ہوپائی۔


Warning: A non-numeric value encountered in /home/balochistan/public_html/wp-content/themes/Newspaper/includes/wp_booster/td_block.php on line 2017