Adnan Aamir

In the month of the march the talk of town in Balochistan is census. The national formality to conduct a nationwide head count, census has to be carried out once a decade but had been delayed since 2008. In Balochistan it’s feared that a census in current circumstances would convert the Baloch into a minority in their own province. Some think that these fears are unfounded while others have strong arguments to support these claims.

In this connection, a grand tribal and political Jirga was convened On February 18 in Quetta. The composition of this Jirga was unique because it not only had representation from Baloch community but also from Pashtun, Sindhi, Hazara and Punjabi communities. This Jirga, in the form of resolutions, demanded from federal government to ensure that foreigners are not made a part of upcoming census in Balochistan. The Jirga also warned that the federal government will be responsible for consequences if the concerns related to census are not addressed.

This Jirga and the heating debate on census in Balochistan triggered an irrational response from some quarters who claim to represent the Pashtuns of Balochistan. These quarters termed all those Pashtun leaders as traitors who participated in the grand census Jirga. They also went on to say that the politics surrounding census is being carried out to prolong the enslavement of Pashtuns in Balochistan at the hands of Baloch. They also denied the claims that census can be manipulated against Baloch using Afghan Refugees.

First of all, the concerns of Afghan refugees possibly manipulating the census are backed up by facts and figures. Last census in Pakistan was conducted in 1998 and a house listing census was conducted in 2011. Although latter was not a proper and full-fledged census but it provided the base to make certain claims. According to this census, the population in country increased by 46.8 percent whereas it increased by a massive 139 percent in Balochistan. Single largest increase in population of any district in entire country was recorded in Afghanistan bordering town of Qilla Abdullah. This town which is known to have the largest concentration of Afghan Refugees, saw an increase in population from 370,269 in 1998 to 2,138,997 in 2011 – a 447 per cent increase. Now it’s obvious that this massive increase can’t be due to natural population growth. What can be the possible reason for this increase? No prize for guesses given the obvious nature of the answer – Afghan Refugees.

Likewise, the aforementioned quarters make the wildly untrue claim that Pashtuns of Balochistan are enslaved by Baloch for last four decades. Pashtuns have always had a greater share in the political setup and financial resources of the province as compared to their population ratio. One can quote the example of current coalition government where PkMAP is arguably the largest beneficiary despite having one fifth of the seats in assembly.

Moreover, another claim made is that in Balochistan Afghan refugees are settled on Pashtun lands so Baloch should have no problem. They want on to say that there are thousands of Baloch who also settled in Afghanistan for last few decades. It’s true that majority of afghan Refugees are settled in Pashtun belt but when it comes to division of political power, financial resources and jobs then population of entire province is counted and not of a specific area. Therefore this claim is absurd without any sound basis. Secondly, they are right that thousands of Baloch live in Afghanistan but they have never acquired citizenship of that country or were included in population census to off-set demographic balances.

In aftermath of the census Jirga, some people termed the demands of census as Human Rights violation with Afghan Refugees. Firstly, the Jirga never asked for the forceful exodus of the Afghan refugees from Balochistan and only demanded that they should not be made part of census. Human rights violations are taking place with Afghan refugees in Punjab and Sindh which are condemnable. However equating the demands of census Jirga with Human rights violations with Afghan refugees is misstatement of a mythical Proportion.

In addition to that another interesting allegation levelled by the aforementioned quarters is that opposition to census in Balochistan by Baloch nationalists is actually being done to benefit Punjab. They allege that as if Baloch nationalists are in cahoots with Punjab and are working to protect their interests. Nothing can be further from reality for obvious reasons. However opposition of census in Balochistan is a catch-22 situation nonetheless. Conducting census will have some benefits for Balochistan in the form of possible increase in resources acquired from the federal government. However the costs are in the form of upsetting the demographic balance for the wrong reasons.

Presently, there are 272 general seats in National assembly out of which 148 are in Punjab which are 54.4 percent of the seats and 14 in Balochistan which are 5.1 percent of seats. House listing census of 2011, which was not fully accurate, states that population of Punjab has reduced to 47.69 percent and that of Balochistan has increased to 6.86 percent of total population of the country. This means that after the forthcoming census the share of Balochistan is expected to increase in parliament, federal divisible pool under NFC and quota in federal jobs.

Still, the costs of a controversial census are much greater than expected benefits. Therefore the sane approach would be to address the concerns raised in the grand census Jirga. This can be done by delaying the census in Balochistan for few months and conducting a refugee census in the province and ensuring settlement of Baloch refugees. Once this process is completed then census can be carried out in the province. This can be a win-win situation for the majority of stakeholders barring those whose political interests depend upon inclusion of Afghan refugees in census.

بلوچستان میں مردم شماری پر بحث کا تاویلی تجزیہ

بلوچستان میں موجودہ ماہ کے دوران ہر سوں مردم شماری کا تذکرہ ہے ۔ ہر دہائی کے بعد مردم شماری کا انعقادقومی فائدہ ہے لیکن پاکستان میں یہ لازمی فعل 2008سے ٹال مٹول کا شکار ہے۔ بلوچستان میں یہ خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے کہ اگر موجودہ حالات میں بلوچستان میں مردم شماری کا عمل بلوچ اکثریت کو اقلیت تبدیل کردے گی۔ چند لوگ اس دعوے کی نفی کرتے ہیں تو دوسری جانب کچھ لوگ اس دعوے کے حق میں ہیں۔
مردم شماری کے حوالے سے 18فروری کو کوئٹہ میں ایک قومی اور سیاسی جرگہ بلایا گیا۔ جرگہ کی منفرق نمائندگی بے مثال ثابت ہوئی جس کی نہ صرف بلوچ بلکہ سندھی، ہزارہ ، پشتون اور پنجابی قبائل بھی نمائندگی کر رہی تھی۔جرگہ نے وفاقی حکومت سے غیر علاقائی پناگزین لوگوں کو مردم شماری میں حصہ نہ بنانے کا قراردادی طور پر مطالبہ کیا اور وفاقی حکومت کو جرگہ کے خدشات کا ممکنہ حل نہ نکالنے پر تسکین نطائح پیش آنے پر حکومت کو تمبیہ بھی کیا۔
بلوچستان میں مردم شماری اور اس جرگہ کے حوالے سے بحث میں بلوچستا ن کے پشتون برادری کے چند نمائندوں کی جانب سے کچھ غیر سنجیدہ اور غیر ذمہ داری دعوے بھی سامنے آئے۔ ان دعوؤں میں جرگہ میں شرکت کرنے والے اُن تمام نمائندوں کو ناصرف غدّار کے لقب سے نوازا گیا بلکہ اس حد تک دعوے کئے گئے کہ مردم شماری کو رروکنے کی سیاست بلوچوں کے ماتحت غلامی کی زندگی بسر کرنے والے پشتون کے غلامی کو مزید بڑھا نا ہے۔ مزید اس بات کی بھی تردید کی گئی کہ افغان پناگزین کے معاملے کی بدولت مردم شماری میں بلوچوں کا استعمال ممکن ہوگا۔
سب سے پہلے تو اس بات کی وضاحت ضروری ہے کہ افغان پناہ گزینوں کی موجودگی اور مردم شماری کا ممکنہ استحال کے دعوے حقائق اور منطق پر مبنی ہیں۔ پاکستان میں آخری بار مردم شماری 1998میں کی گئی جبکہ 2011میں خانہ شماری کی گئی۔ حتیٰ کہ خانہ شماری کے محارار و شماری کا عمل اور نتیجہ غیر شفاف ثابت ہوئے تاہم اس نے چند مخصوص دعوؤں کی بنیاد بھی رکھی۔ اس خانہ شماری کے حق کے مطابق ملک میں آبادی 46.8فیصد تک بڑھی جبکہ بلوچستان میں شرح آبادی میں 139فیصد اضافہ ہوا۔
افغانستان کے سرحد کے ساتھ واقع بلوچستان کے ضلع قلعہ عبداللہ میں ملک کے تمام ضلعوں کے مقابلے میں شرح آبادی میں اضافہ پایا گیا۔ یہ علاقہ افغانِ مہاجرین کے لحاظ سے سب سے گنجان آباد ضلع سمجھا جا تا ہے جس کی آبادی جو 1998میں کی گئی مردم شماری کے مطابق 370,269لاکھ تھی‘2011کے خانہ شماری میں 2,138,997لاکھ تک پہنچ گئی جو شرح آبادی میں 447فیصد اضافہ تھی۔
اب اس سے یہ بات واضح ہوتی ہے کہ آبادی میں اس حد تک وافر اضافہ قدرتی طور پر نہیں ہوسکتی ۔ آخر اس زبردست اضافے کی ممکنہ وجہ کیا ہوسکتی ہے؟یقیناًاس سوال کا جواب افغان مہاجرین خود ہیں۔ اس طرح پشتونوں کے حق میں محض دعویٰ دار بلوچستان کے پشتون کا بلوچوں کے ماتحت چالیس سالہ غلامی کے جھوٹے دعوے کرتے ہیں۔ پشتونوں کے اپنے آبادی کے مقابلے میں سیاسی اور مالی وسائل میں ہمیشہ بڑھ کر حصہ دیا گیا ہے۔ جس کے حوالے سے پختونخواں ملی عوامی پارٹی کی صوبائی اسمبلی میں 1/5سیٹز ہونے کے باوجود اتحادی حکومت ایک مثال ہے۔
مزید ، اس حوالے سے یہ بھی دعویٰ کیا گیا کہ افغان مہاجرین جو کہ پشتون علاقوں میں آباد ہیں لہٰذا بلوچوں کو اس سے کوئی پریشانی نہیں ہونی چاہئے ۔ اس کے علاوہ اس بات کا بھی دعویٰ کیا گیا کہ اسی طرح ہزاروں بلوچ بھی افغانستان کی سرزمین پر بھی آباد ہیں ۔ یقیناًاس بات کی بھی تردید نہیں کی جا سکتی کہ افغان مہاجرین پشتون علاقوں میں آباد ہیں ‘ تاہم یہ بھی سمجھ ہے کہ سیاسی اقتدار‘ مالی وسائل اور نو کریوں کی تقسیم کے وقت یہ تمام آبادی بجائے ایک مخصوص علاقے تک محدود رکھنے کے یکساں ایک گِنی جاتی ہے اس لیے اس دعویٰ کی بنیاد کے افغان مہاجرین محض پشتون علاقوں میں آباد ہیں سراسر کھو کھلی ہے۔ دوسری جانب یہ دعویٰ بھی درست ہے کہ افغانستان میں بھی بلوچ پناہ گزین موجود ہیں تاہم یہ بھی سمجھ ہے کہ ان بلوچ آبادکار نے کبھی افغانستان کی شہریت حاصل کرنے کا دعویٰ نہیں کیا اور نہ ہی اُنہیں مردم شماری کا حصہ بنایا گیا جسکی بدولت آبادی کے لحاظ سے توازن بگڑ جائے۔
جرگہ کے اختتام پر چند عناصر نے جرگہ کے افغان مہاجرین کے حوالے سے کی گئی مطالبات کو انسانی حقوق کی خلاف ورزی قرار دیا۔ اس حوالے سے پہلے تو یہ بات واضح ہونی چاہئے کہ جرگہ نے محض اس بات کا مطالبہ کیا کہ افغان مہاجرین کو مردم شماری کا حصہ نہ بنایا جائے اور افغان مہاجرین کی زبردستی انخلاح کے حوالے سے کوئی موقف ظاہر نہیں کیا۔ تاہم سندھ اور پنجا ب میں افغان مہاجرین کی زبردستی انخلاح انسانی حقوق کی خلاف ورزی اور قابل مزمت بھی ہے۔ چنانچہ ، جرگہ کے مطالبات کو افغان مہاجرین کے حوالے سے انسانی حقوق کی خلاف ورزی قرار دینا غیر ذمہ دارانہ رویہ کی نشاندہی کرتا ہے۔
ان تمام دعوؤں کے باوجود‘ بلوچ قومیت پسند لوگوں پر مردم شماری میں تاخیر پیدا کرکے پنجاب حکومت کی ذاتی مفادات کی حفاظت کرنے کا بھی الزام لگایا پر صریحسچائی پر پردہ ڈالنا ممکن نہیں ۔ چنانچہ ‘ بلوچستان میں مردم شماری پریشان کن حالات سے گھری ہوئی دکھائی دیتی ہے۔ اس کے باوجود بھی بلوچستان میں مردم شماری کے عمل سے صوبہ بلوچستان وفاقی حکومت سے وسائل کی تقسیم کے حوالے استفادہ حل کرسکے گا۔تاہم اس کے عیوض صوبہ بلوچستان کو آبادی کے لحاظ سے غیر یقینی تبدیلی کی صورت میں قیمت بھی ادا کرنا پڑے گا۔
قومی اسمبلی میں اس وقت 272عام نشستوں میں سے (45.5%)148پنجاب اور (5.1%)14بلوچستان کے ہیں۔2011میں کی گئی خانہ شماری کے مطابق‘ تاہم جو کئی وجوہات کے باعث دُرست نہیں ہوپائی۔ صوبہ پنجاب کی آبادی میں 47.69فیصد کمی ہوئی جبکہ بلوچستان کی آبادی ملکی کُل آبادی کا 6086فیصد بنی۔ اس سے یہ بات واضح ہوتی ہے کہ موجودہ مردم شماری کے بعد بلو چستان کا مجلس شوریٰ‘ قومی مالی کمیشن کے تحت وفاقی Division 1000اوروفاقی نوکریوں میں کوٹہ کے حوالے سے صوبائی حصہ میں اضافہ ممکن ہوگا۔ لیکن ابھی تک متنازعہ مردم شماری کے نقصانات شاید اسی سے متوقع فوائد سے کئی گناہ زیاد ہ ہوں۔ اس لیے جرگہ میں اُٹھائے خدشات کے خاتمہ کیلئے ایک دشوارانہ حکمت عملی کی ضرورت ہوگی۔ یعنی اس مسئلہ کا ممکنہ حل موجودہ مردم شماری کو روک کر پہلے افغان مہاجرین کی مردم شماری کرنے اور صوبہ سے باہر رہنے والے بلوچوں کی دوبارہ واپسی پر انحصار کرتا ہے۔اس عمل کے مکمل ہونے کے بعد مردم شماری ہونی چایئے ۔ اس طرح یہ عمل مردم شماری میں افغان مہاجرین کی شماری کے دعوے داروں کیلئے میسر ہوگا جن کے سیاسی مفادات ان مہاجرین سے جوڑے ہوئے ہیں۔


Warning: A non-numeric value encountered in /home/balochistan/public_html/wp-content/themes/Newspaper/includes/wp_booster/td_block.php on line 2017