Outbreak of Dengue Fever has been a huge problem in recent past. Especially in Sindh and Punjab this virus has taken hundreds of lives. In summer of 2011 more than 300 people died due to Dengue fever. So far it’s believed that this virus is not found in Balochistan but recently discovered cases paint a picture that there can be a possibility that dengue virus exists in Balochistan as well.

Dengue fever is a mosquito-borne tropical disease caused by the dengue virus. This virus is spread by a type of female of mosquito known as aedes aegypti or Tiger Mosquito. If this disease is not diagnosed at early stages and patient is not treated properly then it can proved to be fatal.

Multiple cases of Dengue Fever were detected in Kech and Gwadar districts of Balochistan in last couple of months. Almost all of the patients were transported to Karachi for treatment and some of them have been released from the hospital after recovery.

Sources have told Balochistan Inside that more than 20 cases of Dengue fever have been identified in Kech and 4 cases have been identified in Gwadar district.

Mohammad Hanif, Lab Technician in Kech Hospital Turbat, told Balochistan Inside that 18 cases of Dengue fever have been reported in Kech Hospital in May and 10 of them have no travel history. This means that 10 of these patients have not travelled out of Kech district in recent past and they have not caught the virus from another place.

It was revealed that the affected 18 people belonged to different places in Turbat and thus the virus is not restricted to a specific place or street.

District Health Administration of Kech did not verify the claim that 18 people have been affected by Dengue Fever.

Dr. Sajid Baloch, DHO Kech, told Balochistan Inside that only one case of Dengue was reported in the district a month ago and since then there has been no further cases that have been reported.

However the district Health Administration of Gwadar accepted the occurrence of dengue cases but pleaded ignorance to their travel history.

“2-3 Dengue cases of people of Gwadar were reported in Karachi hospitals,” Dr. Akhtar Buledi DHO Gwadar told Balochistan Inside. He added, “We have not been able to collect information about the travel history of the dengue affected patients yet.”

Both DHOs of Kech and Gwadar indicated that Dengue virus has been carried by patients from Karachi and it does not exist in Balochistan. They also claimed to have carried out anti-mosquito sprays in their areas to dispose of any possible dengue virus carrying mosquitoes.

Imdad Baloch runs a NGO called HnNuts which focus on Health issues. He denied the claim that Dengue Virus does not exist in Balochistan. “District Health administration only has data of government hospitals and cases of Dengue have been discovered in private hospitals that’s why DHO is clueless about them,” he said.

Mr. Baloch further added that the denial mode adopted by the health department can result in a situation where outbreak of dengue will be met by lack of preparedness.

Ajmeri Lal Baloch is a Social Worker based in Turbat. He denied the claim of DHO Kech about anti-mosquito spray. He told Balochistan Inside that no spray has been carried out in Turbat city to eliminate mosquitoes.

World Health Organization (WHO) used to run Disease Early Warning System & Response (DEWS) system to collect data bout Dengue and other such cases. According to the Report on Dengue Fever in Balochistan Year 2014, WHO states that 42 cases of Dengue were reported in 2013 out of which 22 did not have travel history.  Out of these 42 cases, 36 were reported from Kech, Gwadar and Lasbela alone.

Figure for year 2013 and 2012 was low. However again in 2016 so far there have been claims of almost 30 dengue cases reported from Kech and Gwadar districts.

It must be noted that there are two types of dengue illness; dengue fever and dengue hemorrhagic fever. Latter is more lethal as compared to the simple dengue fever. All the reported cases of dengue in Balochistan have been proved to be dengue fever cases.

Dengue vector requires clean water, hot and humid environment to survive and multiply. According to health experts conditions in Lasbela, Gwadar and Kech districts of Balochistan are suitable for breeding of Denuge vector.

Dr. Sultan Paracha is the Provincial focal person for dengue in Balochistan. He disagrees with the notion that situation is crucial about any possible outbreak of dengue in Balochistan. “No vector of dengue has been discovered in Balochistan and the disease has not spread so far,” he told Balochistan Inside.

He alleged that most of dengue patients do not tell their proper travel history or forget about their travel and that ends up in generation of inaccurate travel history data.

Dr. Paracha agreed with the notion that situation is feasible for dengue virus in coastal areas of Balochistan.

Notwithstanding the contradictory claims made by Health administration and local people, need of the hour is to tackle the issue of Dengue virus seriously. If government did not made proper arrangements for battling dengue then it can possibly result in catastrophe in form of dengue outbreak in coastal belt of Balochistan.

  • بلوچستان میں ڈینگی بخار کے امکانات
  • عدنان عامر

ماضی قریب میں ڈینگی بخار کا پھیلاؤ ایک بڑا اور سنگین مسئلہ رہا ہے، خاص کر سندھ اور پنجاب میں سینکڑوں افراد اس وائرس کی وجہ سے موت کا شکار ہوئے ہیں ۔

موسم گرما 2011  میں ڈینگی کی وجہ سے تین سو افراد انتقال کر گئے۔ اب تک یہ خیال کیا جاتا رہا ہے کہ یہ وائرس بلوچستان میں نہیں پھیلا لیکن حال ہی میں چند ایسے واقعات سامنے آئے ہیں جن کی بناء پر بلوچستان میں بھی اس وائرس کی موجودگی کے امکانات ظاہر کئے جا سکتے ہیں ۔ ڈینگی بخار کا سبب ڈینگی وائرس ہے جو ایک مچھر سے جنم لینے والی خاص بیماری ہے یہ وائرس ایک خاص قسم  کی مادہ  مچھر کے کاٹنے سے پھیلتا ہے، جسے ایڈیز ایجفٹی یا ٹائگر مچھر کہا جاتا ہے.اگر اس بیماری کی تشخیص و تدارک ابتدائی مراحل میں نہ کئے گئے تو یہ جان لیوا ثابت ہو سکتا ہے ۔ پچھلے چند ماہ کے دوران ڈینگی بخار کے متعدد کیسز بلوچستان کے اضلاع کیچ اور گوادر میں سامنے آئے ہیں ۔ متاثرہ تمام تر افراد علاج کے سلسلے میں کراچی کے ہسپتالوں میں گئے ہیں جن میں سے بعض کو صحتیابی کے بعد ہسپتالوں سے فارغ کر دیا گیا۔

بلوچستان انسائیڈ کو مختلف ذرائعوں سے معلوم ہوا کہ ڈینگی بخار کے 20 سے زائد کیسز کیچ جبکہ 4 کے قریب کیسز ضلع گوادر میں سامنے آئے ہیں_

کیچ ہسپتال کے لیب ٹیکنیشن محمد حنیف نے بلوچستان انسائیڈ کو بتایا کہ ڈینگی بخار کے اٹهاره کیسز مئی کے ماه میں کیچ ہسپتال میں سامنے آئے ہیں جن میں سے دس افراد کے کہیں بهی باہر کے سفر کے شواہد نہیں ملتے. جس سے یہی شواہد ملتے ہیں کہ یہ دس افراد ضلع کیچ سے باہر نہیں گئے اور وائرس کہیں باہر سے ان میں منتقل نہیں ہوا. یہ شواہد بهی سامنے آئے ہیں کے یہ اٹهاره متاثره افراد تربت کے مختلف مقامات سے تعلق رکهتے ہیں یعنی کے یہ وائرس کسی مخصوص جگہ یا گلی تک محدود نہیں ہے.

کیچ ضلع کی انتظامیہ صحت نے اٹهاره افراد کے ڈینگی سے متاثر ہونے کی خبر کی تصدیق نہیں کی.

ڈی ایچ او کیچ ڈاکٹر ساجد بلوچ نے بلوچستان انسائیڈ کو بتایا کہ ضلع میں ایک ماه قبل ڈینگی کا ایک واقعه سامنے آیا تها جس کے بعد مزید کسی بهی کیس کے سامنے آنے کی اطلاعات نہیں ہیں.

تاہم گوادر ضلع کی انتظامیہ صحت نے ڈینگی واقعات کے سامنے آنے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ مزید ان افراد کی سفری معلومات سے وه لاعلم ہیں.

گوادر کے مقامی افراد کی دو سے تین ڈینگی کے کیسز کراچی کے ہسپتالوں میں سامنے آئیں ہیں، ڈاکٹر اختر بلوچ نے بلوچستان انسائیڈ سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے مزید بتایا کہ ابهی تک وه ڈینگی کے متاثره افراد کی کسی بهی سفری معلومات کو جمع کرنے سے قاصر ہیں.

گوادر اور کیچ دونوں اضلاع کے ڈی ایچ اوز کے مطابق بلوچستان میں ڈینگی موجود نہیں ہے. انہوں نے یہ بهی دعوی کیا کہ مچهروں کی وجہ سے پهیلنے والی کسی بهی ممکنہ بیماری سے نمٹنے کیلئے انہوں نے اپنے علاقوں میں مچهروں کو ختم کرنے والا سپرے استعمال کیا ہے.

امداد بلوچ صحت پر توجہ مرکوز رکهنے والی ایک  HnNuts نامی این جی او سے وابسطہ ہیں نے بلوچستان میں ڈینگی کی غیر موجودگی کے دعوؤں کی تردید کی اور بتایا کہ ڈینگی کے ذیاده تر کیسز نجی ہسپتالوں میں سامنے آئے ہیں جن سے ضلعی انتظامیہ لاعلم ہیں کیونکہ ان کی دسترس میں محض سرکاری ہسپتالوں کی معلومات ہیں.

امداد بلوچ نے مزید بتایا کہ محکمہ صحت کی جانب سے اپنایا گیا انکار اور لاعلمی کا رویہ خطرناک نتائج مرتب کرسکتا ہے جہاں ڈینگی کی وباء پهیلنے کی صورت میں سنگین صورتحال سے نمٹنے کے لئے وه تیار نہیں ہونگے.

اجمیری لال بلوچ تربت میں مقیم ایک سماجی کارکن ہیں انہوں نے ڈی ایچ کے دعوے کی تردید کرتے ہوئے بتایا کہ تربت شہر میں مچهروں کے خاتمے کے لئے کوئی سپرے نہیں کیا گیا.

عالمی اداره صحت WHO کی جانب سے ڈینگی اور اس قسم کی دوسری بیماریوں کا اندازه لگانے اور اعداد و شمار جمع کرنے کے لئے disease Early Warning System  And Response (DEWS) کا نظام چلتا تها. ڈبلیو ایج او کے 2014 کی رپورٹ کے مطابق، 2013 میں بلوچستان میں 42 ڈینگی کے کیسز سامنے آئے جن میں سے 22 کی کسی بهی قسم کے سفر کی اطلاعات نہیں تهیں. ان 42 میں سے 36 کیسز محض لسبیلہ، کیچ اور گوادر کے تهے. سال 2012 اور 2013 کی شرح نسبتاً کم تهی جبکہ ایک بار پهر 2016 میں اب تک کی سامنے آنے والی ڈینگی کیسوں کی تعداد 30 ہے.

یہ واضح رہے کہ ڈینگی مرض کی دو اقسام ہیں، ڈینگی بخار اور ڈینگی ہیمرج بخار، مؤخرالذکر ساده ڈینگی کے مقابلے میں ذیاده مہلک ہے. بلوچستان میں اب تک سامنے آنے والے تمام تر کیسز ڈینگی بخار ثابت ہوئے ہیں.

ڈینگی کو بقاه و افزائش کی خاطر صاف پانی، گرم اور مرطوب ماحول کی ضرورت پڑتی ہے جبکہ ماہرین صحت کے مطابق بلوچستان کے علاقے لسبیلہ، کیچ اور گوادر ڈینگی کی افزائش کے لئے سازگار ماحول فراہم کرتے ہیں.

ڈاکٹر سلطان پراچہ بلوچستان میں ڈینگی کے حوالے سے صوبائی فوکل پرسن ہیں، انہوں نے کہا کہ وه اس بات سے اتفاق نہیں رکهتے کہ بلوچستان میں صورتحال کسی ممکنہ ڈینگی وباء کے پهیلنے کے نہج تک ہے. انہوں نے بلوچستان انسائیڈ کو بتایا کہ اب تک بلوچستان سے کوئی بهی ڈینگی ویکٹر دریافت نہیں ہوا اور نہ ہی اس مرض کے پهیلنے کی اطلاعات ہیں.

انہوں نے کہا کہ اکثر مریض دانستہ طور پر اپنے سفر کی صحیح معلومات فراہم نہیں کرتے یا بهول جاتے ہیں جسکی وجہ سے درست اندازه لگانے اور اعداد و شمار جمع کرنے میں دشواری کا سامنا رہتا ہے.

ڈاکٹر پراچہ اس بات سے اتفاق کرتے ہیں کہ بلوچستان کے ساحلی علاقے ڈینگی وائرس کی افزائش کے لئے سازگار ہیں .

انتظامیہ صحت اور مقامی لوگوں کی جانب سے متضاد دعوے سامنے آنے کے باوجود وقت کی اہم ضرورت یہ ہے کہ ڈینگی وائرس سے نمٹنے کے لئے سنجیده اقدامات اٹهائے جائیں، اگر حکومت مناسب انتظامات نہیں اٹهاتی تو ڈینگی وباء ممکنہ طور پر بلوچستان کی ساحلی پٹی پر بڑی تباہی کا باعث بن سکتی ہے.