Pasni is an old city for the fishermen who rely on the 780 km long costal belt of Balochistan to earn their livelihood. Lying adjacent to world’s growing gate-way city Gwadar, the city of Pasni is still deprived of the much needed girls’ college. In the quest for a girls’ college, even the city seems to have lost the previously introduced co-education system. Presently, in Pasni, for a population of almost 150,000, only two ill-equipped high girls’ schools are available. There are eleven primary to high girls’ schools which include two high, three middle and six primary schools out of which one primary school has met with its end due to its dilapidated condition.

According to some estimates, approximately 4000 girls are enrolled in these schools. In Balochistan literacy rate is said to be as low as 27 per cent whereas women literacy rate is rolling downwards which is only 15 per cent. Thus, owing to lack of educational facilities in rural areas, the women literacy rate stands at 2 to 4 per cent. According to a survey report by NHCR, 70 per cent children are out of school in Balochistan; however, education Minister of Balochistan denied the findings of the survey while claiming that if private schools, madrasas and Levies schools are counted, two-third of these children are counted enrolled. He further claimed to have spent 25 per cent of budget on education. He also acknowledged that out of 13000 schools, only 963 are functional.

In Pasni, girls’ schools are stripped off scientific equipment while classes are congested and are insufficient. These schools are also coupled with issues such as lack of drinkable water. A part from lack of girls’ schools in rural areas of Pasni, which is the cause of school-drop out ratio, co-education in schools yet seems present.

‘In a male-dominated society like ours, although it is hard for girls to acquire education, yet self-determination and confidence can pave the way for getting desired education. Girls want to get education, but sometimes either the lack of colleges—often girls in rural areas are not permitted for travelling particularly for the sake of getting education—after matriculation or poverty bars them from furthering their education,’ regrets Aarti Dev, who holds masters in literature and has been inducted as a teacher after passing Public Service Commission (PCS).

Similarly, Shagufta Ramazan, a student-cum-social activist, says, ‘Economic problems are obstacles for girls to get education. After matriculation students are compelled to travel to Turbat, Karachi or Quetta for further education.’ According to her some students bury their desire for education due to financial hurdles.

Furthermore, it is also true that free and compulsory education for girls and boys, age 5 to 16, has been enshrined compulsory in constitution of Pakistan. Article A-25 of the constitution has been promulgated, which ensures free and compulsory education for both girls and boys, also enshrines punishment for those parents who do not adhere to the said law. After the promulgation of this article, Non-Governmental Organizations (NGOs) have sped up their function, yet it is believed that these NGOs have no access to rural areas; therefore, the said women literacy rate and NGOs’ access to these areas are zero. However, after assuming power, the elected government in Balochistan announced educational emergency, but its effectiveness is worth criticizing.

In Pasni, due to lack of girls’ college, girls pursue their education in boys’ college, which is situated far from the city, where they have continued their evening classes with load shedding making their efforts abortive in scorching temperature. It is quite difficult for the lecturers to handle classes in such a high temperature during summer too. Given this, the Professors and Lecturers Association has boycotted the classes. That said, the tribal customs and embedded short-sightedness also seem to have become obstacles in the path for girls to get education; particularly, in rural areas where uneducated parents do not prefer to send their children to school.

‘Short-sighted society is the causative factor which bars girls from acquiring education. Role of educated parents is also of the immense value in society, if they are not educated themselves they choose not prefer girls’ education,’ says a student Zarina Baloch.

‘One educated woman can set an example for others,’ Aarti Dev thinks,’ If one is determined s/he can reform society single-handedly as an educated woman is need of the society,’ she emphasizes on girls’ education. Aarti Dev herself is a symbol of courage and determination as she had to defeat all the odds she had faced until her matriculation.

A local journalist-cum-member of HRCP shares his view, as according to him it is the unfortunate of the society where women education is neglected due to which, female education is almost shrinking. He believes that an educated mother is an indispensable need for a society, because an educated mother can only groom her children well.

While struggling against the prevalent obstacles, women in Pasni and across Balochistan are confronted with a serious issue of teen-age marriages which affects their education badly. When a girl gets enrolled in the age of 5, she becomes 16 or 17 in matriculation and this age, according to old-age customs of Baloch, is the age suitable for marriage.

Teen-age marriage is a problem that has not been overcome yet. Every decision in favour of girls is pre-destined because of the lack of awareness. Parents remain the sole decision makers in favour of girls whereas decisions often turn into orders.

According to Kamran, a local writer, the early marriages affect the girls’ education. According to him for getting education it is necessary to have a calm and relaxed mind along with a calm environment. ‘After marriage, girls cannot pursue their education. Parents had better get the note of their girls tied after completion of their education.’ Mr. Kamal argues. According to him early marriage is violation of human, moral and societal right of the girls.

Ghulam Yaseen Bezinjo also shares a similar thought. He is of the view that owing to lack of implementation of the Early Marriage Act, the girls in a less developed society will suffer in the hands of the evil of early marriages.

The entrenched custom of early marriage is not only impinging on girls’ education but it also has dire impact on their health. This fact can be seen in shape of mortality rate of women during giving birth in Balochistan. During giving birth to babies out of 100000 women 785 fall prey to death whereas 85 infants die before they are one year old.

Likewise, there is no denial of the fact that early marriage has dire impact on women in rural areas where literacy rate also plays with the fate of women. Embedded social norms and customs are still alive in rural areas with depriving girls of their decision making right. Lack of access to Pasni by the flag carriers of women rights is the cause that affects the lives of the girls in rural areas in Pasni and across the Balochistan.

Political malaise, now interwoven in our education, is another factor that halts educational progress.  Some people believe that political interference in education is the root cause of girls’ backwardness in the field of education. The political interference in education has enabled nepotism and favouritism in inducting teachers which is, in fact, murder of merit. It is also feared that induction of middle-pass girls as primary teachers in future will also have a negative impact on education. Though most of the parents have complained about killing merit while induction of such teachers, yet the recent induction of teachers through NTS has ameliorated education to some extent and has brought some skilled teachers to these schools.

پسنی مسائل کی آماجگاہ

پسنی ماہی گیروں کی ایک قدیم بستی ہے جہاں 80فیصد افراد کا ذریعہ معاش 780کلومیٹر طویل بحربلوچ ہے۔دنیا کی ابھرتی ہوئی گیٹ وے گوادر کا جڑواں شہر میں اب تک گرلز کالج تو نہ بن سکا۔البتہ ماضی میں سکولوں میں رائج مخلوط تعلیمی نظام اب ختم ہو چکا، تقریبا ڈیڑھ لاکھ کی آبادی کیلئے سہولتوں سے محروم دو گرلز ہائی سکول موجود ہیں۔پسنی شہر میں اس وقت لڑکیوں کیلئے پرائمری سے ہائی تک گیارہ گرلز سکول ہیں۔جن میں دو ہائی، تین مڈل جبکہ چھ پرائمری سکول ہیں،جبکہ ایک پرائمری سکول بلڈنگ کی خستہ حالی کے سبب عارضی طور پر بند ہے۔
ایک اندازے کے مطابق چار ہزار کے قریب بچیاں ان تعلیمی اداروں میں علم کی پیاس بجھارہی ہیں۔
بلوچستان جہاں خواتین کی شرح خواندگی 27فیصد ہے جبکی گوادر ضلع میں خواتین کی شرح خواندگی 15% بتایا جاتا ہے، جبکہ دیہی علاقوں میں پسماندگی اور تعلیمی سہولیات کی فقدان کی مدنظر شرح خواندگی بمشکل 2سے4فیصدہے۔NHCR سروے کے مطابق بلوچستان میں 70فیصد بچے سکول سے باہر ہیں۔۔۔۔۔۔جبکہ اس حوالے سے سیکریٹری تعلیم بلوچستان ایک خبر رساں ادارے کیساتھ ایک حالیہ انٹریو میں اسکو مسترد کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ صوبے میں پرائیویٹ سکولوں۔ مدرسوں اور لیویز سکولوں کو شامل کیا جائے تودو تہائی بچے سکولوں میں موجود ہیں۔وہ مزید کہتے ہیں کہ 25فیصد بجٹ تعلیم پر خرچ کررہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ بلوچستان میں 13000سکول ہیں جن میں 963غیر فعال ہیں۔
گرلز سکولوں میں جہاں سائنسی آلات نہ ہونے کی برابر ہے۔جبکہ پسنی کے زیادہ تر گرلز سکولوں میں کلاس رومز کی تعداد بھی کم ہے جبکہ صاف پانی اور دیگر بنیادی ضروریات کا بھی فقدان ہے۔۔
پسنی کے دیہی علاقوں میں ڈراپ آؤٹ کی ایک اہم وجہ قریب میں سکول کا نہ ہونا ہے۔شہری علاقوں میں کو ایجوکیشن ختم ہوچکی البتہ دیہی علاقوں میں اب بھی لڑکیوں کیلئے گرلزسکولوں کی کمی کی وجہ سے یہ سلسلہ چل رہا ہے۔
پسنی کے آرتی دیو Aarti Devجو کہ انگش لٹریچر میں ماسٹر ڈگری ہولڈر ہیں اور حالیہ پبلک سروس کمیشن کے امتحان میں ایس ایس ٹی ٹیچر بھرتی ہوئی ہیں۔وہ کہتی ہیں کہ مردوں کے اس معاشرے میں عورتوں کیلئے تعلیم حاصل کرنا مشکل ضرور ہے مگر آپ کا جذبہ اور اعتماد ہر مشکل کو آسان بنادیتا ہے۔لڑکیاں پڑھنا چاہتی ہیں مگر انٹرمیڈیٹ کے بعد تعلیم کے حصول کیلئے انکو اپنے شہر سے دور جانا ہوتا ہے جہاں اکثر بچیوں کو جانے اجازت نہیں ملتی ، تو بعض جگہ غربت تعلیم کی راہ میں رکاوٹ ہوتی ہے۔
بی ایس سی کی طالبہ اور سماجی کارکن شگفتہ رمضان کہتی ہے کہ معاشی مسائل خواتین کی تعلیم کی راہ میں ایک بڑی رکاوٹ ہے۔انٹرمیڈیٹ کے بعد پسنی کی طالبات کومزید علم کے حصول کیلئے تربت، کراچی یا کوئٹہ جانا پڑتا ہے۔انکے مطابق کئی ایسی طالبات بھی ہیں جو تعلیم کی حسرت دل میں لئے اسلئے افسردہ ہیں کہ ان انکی مالی حالت انھیں آگے پڑھنے کی اجازت نہیں دیتی۔
18ویں آئینی ترمیم کے نفاذ کے بعد تعلیم بنیادی اور مفت کرنے کا اعلان کیا گیا ہے جہاں پانچ سال کے بچوں اور بچیوں کو سکول میں داخل کرنا ضروری قرار دیا گیا۔آرٹیکل 25۔A نافذ تو ہوگیا جوکہ اس بات کی ضمانت دیتاہے کہ پرائمری سے میٹرک تک تعلیم مفت اور لازمی ہے۔خلاف ورزی کی صورت میں والدین کو قید اور جرمانہ بھی ہوسکتا ہے۔اس آرٹیکل کے نافذکے بعد بلوچستان میں کام کرنے والے غیرسرکاری اداروں (این جی او)کی جانب سے تعلیمی سال کے آغاز میں ایک واک کا انعقاد کرکے اپنی ذمہ داریوں کا بوجھ ہلکا کرنے کی ناکام کوشش کے زمرے میں آتی ہے۔۔
یہ بتایا جاتا ہے کہ عورتوں کی تعلیم پر کام کرنے والے زیادہ ترغیر سرکاری ادارے ان دیہی علاقوں تک نہیں پہنچ پاتے ہیں جہاں عورتوں کی تعلیم کا ریشو کم ہے۔پسنی کے دیہی علاقوں میں عورتوں کی تعلیم کے حوالے سے غیرسرکاری ادارے یعنی این جی او کی کارکردگی صفر ہے۔بلوچستان کی موجودہ حکومت نے اقتدار سنھالتے ہی صوبے میں تعلیمی ایمرجنسی کا اعلان تو کرلیا اس کے ثمرات اب تک نظر نہ آسکے۔
ساحلی شہر پسنی میں گرلز کالج نہ ہونے کی وجہ سے طالبات شام کے اوقات میں بوائز کالج میں اپنی پڑھائی جاری رکھے ہوئے ہیں جو کہ شہر سے دور ہے۔گرمیوں کے اوقات میں جہاں بجلی کی لوڈشیڈنگ معمول کا حصہ ہے۔اور دوپہر کو پڑھنا دشوار ہوتا ہے۔جبکہ گرلز لیکچرار نہ ہونے کی وجہ سے بوائز کالج کے لیکچرار صبح اور شام دونوں شفٹ کو پڑھا رہے ہیں۔۔۔
صوبائی حکومت کی جانب سے اعزازیہ نہ ملنے کیوجہ سے اس وقت بلوچستان لیکچرار اور پروفیسرز ایسویشن کے مرکزی کال پر پسنی کے لیکچرارز بھی شام کے کلاسز کا بائیکاٹ کرچکے ہیں۔۔ پسماندہ ذہنیت اور قبائلی رسم و رواج بھی خواتین کی تعلیم میں رکاوٹ ہوتے نظر آتے ہیں۔
کیونکہ دیہی علاقوں میں والدین تعلیم یافتہ نہ ہونے کی وجہ سے اپنی بچیوں کو سکول نہیں بھیجتے ہیں۔ایک طالبہ زرینہ بلوچ کہتی ہیں کہ معاشرے میں تنگ نظری کی سوچ لڑکیوں کی تعلیم کی راہ میں رکاوٹ ہے۔ان کے مطابق معاشرے میں عورتوں کی تعلیم کے حوالے سے والدین کا رول اہم ہوتا ہے جب والدین پڑھے لکھے نہ ہوں تو وہ اپنی بچیوں کو بھی تعلیم نہیں دلواتے۔ آرتی دیو کہتی ہیں کہ ایک عورت کی کامیابی دوسری عورتوں کیلئے مثال ہوسکتی ہے جب آپ کے حوصلے بلند ہوں تو آپ معاشرے کو اپنی کامیابیوں کے بل بوتے پر قائل کرسکتے ہیں کہ تعلیم یافتہ عورت معاشرے کی ضرورت ہے۔ آرتی دیوکا کہنا ہے کہ مجھے حصول تعلیم کے دوران ان گنت مسائل کا سامنا کرنا پڑا،مگر میری ہمت اور حوصلے نے تمام مشکلات کو شکست دی۔
مقامی صحافی اورانسانی حقوق کمیشن پاکستان کے رکن غلام یاسین بزنجو کا کہنا ہے کہ بدقسمتی یہ ہے کہ ہمارے معاشرے میں عورتوں کی تعلیم کو فوکس نہیں کیا گیا ہے۔جس کی وجہ تعلیم نسواں زبوں حالی کا شکار ہے، ایک بہتر معاشرے کیلئے تعلیم یافتہ ماں کا ہونا ضروری ہے کیونکہ اگر ماں تعلیم یافتہ ہوگی تو بچوں کی بہتر پرورش ہوسکے گی۔
پسنی سمیت بلوچستان کے زیادہ تر دیہی علاقوں میں لڑکیوں کی کم عمری میں شادی سے انکی تعلیم متاثر ہوتی ہے۔جب کسی بچی کو 5سال کی عمر میں سکول میں داخل کیا جائے تومیٹرک تک اس کی عمر 16سے 17سال تک ہوجاتی ہے۔جبکہ معاشرے میں اسی عمر میں لڑکیوں کی شادی کا رواج ہے جو زمانہ جاہلیت سے چلا آرہا ہے۔
لڑکیوں کی کمی عمری کی شادیاں ایک ایسا مسئلہ ہے جس پر اب تک قابو نہیں پایا جاسکا۔معاشرے میں شعور و آگہی کی کمی اور تعلیم سے دوری کی وجہ سے والدین لڑکیوں کی تعلیم اور مستقبل کا فیصلہ ان سے پوچھے بغیر کرتے ہیں۔مردوں کے اس معاشرے میں بیٹیوں کے مستقبل کے فیصلوں میں ان سے مشاورت تو درکنار بلکہ اکثر اوقات فیصلے مسلط کیے جاتے ہیں۔
مقامی ادیب کامران اسلم کہتے ہیں کہ ارلی میرج عورتوں کی تعلیم پر منفی اثرات مرتب کرتا ہے۔وہ کہتے کہ تعلیم حاصل کرنے کیلئے اچھا ذہن اور خوشگوار ماحول کا ہونا ضروری ہے۔ان کے مطابق شادی کے بعد عورتوں کا تعلیم حاصل کرنا مشکل ہوتا ہے۔ وہ مزید کہتے ہیں کہ تعلیم مکمل کرنے کے بعد لڑکیوں کی شادی کیجائے، اسٹوڈنٹ لائف میں بچیوں کی شادی معاشرتی،اخلاقی اور انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔غلام یاسین بزنجو کہتے ہیں کہ جب تک ارلی میرج ایکٹ کا نفاذ حقیقی معنوں میں نہی ہو تا ہمارے پسماندہ معاشرے میں لڑکیوں کی جبری شادیوں کا سلسلہ جاری رہے گااور خواندگی کی شرح بہتر نہیں ہوسکتی۔
شگفتہ رمضان کے مطابق موجودہ معاشرے میں اب بھی قدیم سوچ رکھنے والے لوگ ہیں جو لڑکیوں کی کم عمری میں شادی کے حامی ہیں جو لڑکیوں کیلئے تعلیم کے دروازے بند کرتے اور انکی تعلیمی خواہشات کا گلا دباتے ہیں۔ کم عمری میں شادی کے اثرات نہ صرف خواتین کی تعلیم پر ہوتے ہیں بلکہ انکی صحت پر بھی منفی اثرات کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ بلوچستان میں حمل اور زچگی کے دوران ایک لاکھ میں سے 785عورتیں موت کا شکار ہوجاتی ہیں جبکہ ایک ہزار میں سے 85 بچے پہلی سالگرہ سے قبل ہی مر جاتے ہیں۔
اس حقیقت سے انکار ممکن نہیں کہ ارلی میرج کے زیادہ تر کیس دیہی علاقوں میں ہوتے ہیں جہاں تعلیم کی کمی دور جاہلیت کے رسم ورواج اب بھی زندہ ہیں۔ جہاں حوا کی بیٹیوں کو اپنے مستقبل کیلئے فیصلے کرنے کا اختیار بھی قبائلی معاشرتی نظام نے چھین لیا ہے۔
حقوق نسواں کے علمبردار اداروں کی توجہ اکثر صوبائی دارلخلافہ کوئٹہ اور دیگر بڑے شہروں میں ہوتی ہے ،پسنی جیسے پسماندہ شہر میں انکی عدم دلچسپی / رسائی نہ ہونے کی وجہ سے اب تک بلوچستان کے ایسے علاقوں میں تبدیلی کے اثرات نہ آسکے ۔
ہمارے معاشرے کی ایک اور بدقسمتی یہ ہے کہ تعلیم کا شعبہ بھی سیاسی مداخلت کی بھینٹ چڑھ گیا ہے۔بعض ناقدین کا کہنا ہے کہ عورتوں کی تعلیم کی بربادی کا ذمہ دار سیاسی مداخلت ہے جہاں ٹیچرز کی بھرتی میں میرٹ کو پس پشت ڈال کر من پسند اساتذہ کی بھرتی کی جاتی ہے۔ماضی قریب میں مڈل پاس لڑکیوں کو پرائمری ٹیچر کی حیثیت سے بھرتی کیا گیا جس سے میعاری تعلیم کافروغ ممکن نہیں۔بعض افراد خواتین ٹیچرز کی اہلیت پر سوال اٹھاتے ہوئے کہتے ہیں کہ ٹیچرز کی بھرتیوں میں میرٹ کی پامالی سے گرلز ایجوکیشن پر برے اثرات پڑے ہیں۔البتہ اس سال این ٹی ایس کے ذریعے ٹیچرز کی بھرتی کے عمل کو سراہا جارہا ہے جس سے فیمل سکولز میں درس و تدریس میں بہتری کی امید ہے۔


Warning: A non-numeric value encountered in /home/balochistan/public_html/wp-content/themes/Newspaper/includes/wp_booster/td_block.php on line 2017