The under-privileged section of our society which lives below poverty line comprises of 60 percent of total population. Man, women, boys and girls of this section of society suffer from lots of problems. Unfortunately, women and girls face a great deal of problems and challenges in our feudal society where they not only face mental and physical torture but also they are deprived of health and education facilities.

In this society the right of choice and life is also not safe. Biggest wealth for a person’s is his life. However, obsolete feudal system has always been strong in our society and prevented boys and girls from making decisions about their marriage. Girls are married at young age without their consent to protect family relations and property.

People who are living below poverty line also marry their girls in early age to get rid of the responsibility of feeding them.

In Jhao locality of district Awaran, a person named Raza got her 14 year old daughter married to a 65 year old man. Nikkah took place due to the will of the family. But the 65 year old man was never able to keep the young girl happy in her life. Girl was subjected to torture whenever she protested for any reason. Suspicion by the man made the life horrible for the girl. Father of the girl is not alive anymore but her daughter is still paying for the decision that he made about her marriage. Should parents be allowed to make these types of decision or not?

I have a similar personal observation in Bela city. There is still one story which is clear in my memory. When we used to study in school, a person used to buy stuff on a cart to provide for his family. His family comprised of three people; he, his wife and her 14 year old school going daughter. These people used to live in a rented house. One day the person suddenly died and left his wife and daughter to fend for themselves as they had no other relatives. Now they had to pay the rent of the home and there was no bread earned who can support them. So, her mother decided to get her daughter married with the owner of the house. She thought in this way they will get social and economic protection. House owner was 50 years old and was already married. However due to compulsion the 14 year old girl was married to the 50 year old man. After marriage, the house owner destroyed the life of the girl. He was a drug addict and mentally tortured her young innocent wife. The way he buried the social status of the women is not explainable. The drug addict husband also died. However the young girl had already given birth to four kids of the man. The way she is living now is a horrible example for anyone who knows about it. However she married again after the death of her first husband but still society as a whole can’t restore her destroyed life.

In Chaman, the age of 13 years is preferred for Marriage and Nikkah. This is a tribal Pashtun area where tribal code dictates the way of social life. Now, when the age of groom is 13 years then the age of bride would be 11 or 12 years. These sorts of unnatural relations weaken the society rather than strengthening it.

In tribal society of Baloch and Pashtun it’s common to marry more than once. In this context, early age marriages often result due to the need of second marriages. In most of cases, early age marriages are arranged to settle family feuds. When the person decides to do second marriage then it results in a lot of family problems. Complications result in increase in trend of divorce in society.

In the world 500,000 women die every year and at least one woman in a minute due to pregnancy complications. The ratio of such mortalities is high in our province due to early age marriages.

In our society, some decisions are made in haste, ignorance and due to obsolete tribal customs are not only violation of human rights but also result in loss of life and other problems. People who have the authority to make social decisions based on their tribal customs are not aware of the human rights and values and thus they make certain decisions which prove to be disastrous.

Early age marriages are an important and thought-provoking issue of our society. It’s a separate debate what are the realties about early age marriages, according to Islamic and medical point of view. However from a societal standpoint early age marriages result in several humanitarian problems.

There are a lot of areas in Balochistan where it’s a trend to marry the children in a very young age. Rationale behind this trend is to prevent them from sexual negativities. Second logic in favor of early age marriages is that it allows the children to support their parents before their old age and can be a part of the happiness of their children. All over country especially in Sindh Balochistan and Khyber Pakhtunkhwa (KP) the frequency of early age marriage is very high and this ritual is also present as a tribal tradition. In context of early age marriages, it’s important to discuss the responsibility in children to abide by the social decisions forced upon them. On this issues organizations working for human rights and women rights conduct a lot of programs and seminars and but no meaningful impact of these efforts can be witnessed till now.

Pakistani women have made a long struggle for their rights in last 68 years in which when they move two steps forward, their opponents push them four steps backward.

A lot of physical and medical problems have also born due to early age marriages. At the moment, 45 percent of women population in the country suffers from the problems of deficiency of blood and only 20 percent can get medical treatment during their pregnancy.

The society in which people are deprived form the right of making choices about their life, where social decision are forced on children and women are deprived of their basic rights then they will burn as fuel in society and events like that can’t be prevented.

In 1979, United Nations has passed a convention which is called “Convention on prevention of all forms of Discrimination against women” (CEDAW).Many countries have made it a part of their law to prevent every sort of discrimination against women. On 8th March 1975 was declared as International women day and a lot of resources were provided to celebrate it. In 2011, hundred years celebration were also held for that event.  However there is no significant change in the third world even after the implementation of these laws in the third world. Human rights are being violated and forced marriages are made in our tribal society. Newspaper headlines read on delay basis that a tribal Jirga or chieftain has decided to marry a 12 year old girl with a 80 year old men.  In order to prevent such things from happening it’s necessary to have an effective law. At the same time the civil society needs to be active. Otherwise such decisions will continue to be made and precious lives will be lost.

کم عمری کی شادیوں کے معاشرے پر منفی اثرات

تحریر: عبدالحق ذوق بلوچ

ہمارے معاشرے کا وہ طبقہ جو نان شبینہ کا محتاج ہے جن کی زندگی خط غربت سے بھی نیچے ہے 60 فیصد سے بھی زیادہ ہے جہاں مرد‘ خواتین‘ بچے اور بچیاں ہر طرح کے صنفی مسائل سے دوچار ہیں لیکن بدقسمتی سے ہمارے اس جاگیردارانہ معاشرے میں خواتین اور بچیوں کو کئی چیلنجوں اور مشکلات کا سامنا ہے اکثرو بیشتر معاشرے کے ان طبقات کو محرومیت کے ساتھ ساتھ ذہنی اور جسمانی تشدد کا سامنارہاہے ۔تعلیم و صحت اور ترقی کے مواقع ناپید رہے ہیں۔لیکن اس معاشرے میں ’’زندگی‘‘ اور ’’انتخاب‘‘ کا حق بھی محفوظ نہیں۔ انسان کے لئے سب سے بڑا سرمایہ اس کی زندگی ہے۔ لیکن ہمارے ہاں فرسودہ قبائلی نظام میں پدرسری نظام کا غلبہ ہمیشہ سخت رہا اور بچے بچیوں کو اپنی ذاتی ازدواجی زندگی کے فیصلوں میں ہمیشہ مشکلات اور دقت کا سامنا رہا جس کی بنیادی وجہ خاندانی رشتوں کو بچانے یا محفوظ کرنے کے لئے کم عمری میں بچوں کے رشتے ان کی مرضی کے بنا طے کئے جاتے ہیں تاکہ خاندان تقسیم نہ ہو یا پھر جائیداد کو محفوظ بنانے کے لئے کم عمری میں بچوں کے رشتے طے کر دیئے جاتے ہیں۔

ایک بنیادی وجہ غربت بھی ہے کیونکہ غربت کی لکیر سے نچلی سطح پر زندگی گزارنے والا آبادی کا 60 فیصد حصہ جو اپنے بچوں کو دیکھ بال‘ تربت اور پرورش سے اپنے آپ کو آزاد کرنے کے لئے بچوں کے رشتے بچپن میں طے کر دیتاہے۔ بلوچستان کے ضلع آواران کے علاقے جھاؤ میں رضا نامی ایک شخص نے اپنی بیٹی جس کی عمر تقریباً 14 سال تھی اس کا رشتہ ایک 65 سالہ عمر سیدہ شخص سے طے کیا۔ بچی کی مرضی منشا کے بغیر نکاح تو ہوگیا کیونکہ خاندان کا فیصلہ تھا لیکن 65 سالہ شوہر اس بچی کو زندگی میں کبھی خوش نہ رکھ سکا۔ بچی کے احتجاج پر اسے ہمیشہ گھریلو تشدد کا سامنا رہا اور شکوک و شبہات نے بچی کی زندگی کو اجیرن بنا کے رکھ دیا۔ اب اس بچی کا نام نہیں رہا لیکن اس کے باپ کے کئے گئے غلط فیصلے کی سزا آج تک وہ بچی کاٹ رہی ہے۔ کیا اس طرح کے فیصلے والدین کو کرنے چاہیں کہ نہیں؟

بیلہ شہر میں میرا اپنا ذاتی مشاہدہ ہے۔ ایک ایسی کہانی جو آج بھی میرے ذہن پر نقش ہے۔ جب ہم اسکول پڑھتے تھے تو ایک غریب ریڑھی بان جو اپنے بچوں کا پیٹ پالنے کے لئے ہمارے اسکول کے سامنے ٹھیلہ لگا کر چھولے بیچتا تھا جس کا کنبہ صرف تین افراد پر مشتمل تھا۔ ایک بیوی‘ ایک بیٹی اور تیسرا وہ خود۔ اس کی بیٹی تقریباً 14 سال کی تھی جو اسکول میں بھی پڑھتی تھی۔ یہ ایک کرائے کے گھر میں رہتے تھے۔ خدا کا کرنا تھا کہ ایک دن وہ غریب ریڑھی بان زندگی کی بازی ہار گیا اور پسماندگان میں وہ اپنی بیٹی اور بیوی کو تنہا چھوڑ گیا ان کے کوئی رشتہ دار بھی نہیں تھے اب ماں اور بیٹی اس کرائے کے گھر میں تنہا رہ گئیں۔ تو لڑکی کی ماں نے سوچا کہ وہ جس گھر میں رہ رہے ہیں اس کا کرایہ بھی دینا ہے اور خرچہ بھی لیکن کنبے کا کفیل کوئی نہیں تھا۔ توپھر عورت نے اپنی بیٹی اس مالک مکان کے ساتھ بیاہ دینے کا فیصلہ کیا تاکہ وہ معاشرے میں تنہائی کے حصار سے باہر نکلیں اور ان کا کچھ سماجی تحفظ ہو اور معاش کا ذریعہ بن سکے۔ وہ مالک مکان پہلے شادی شدہ تھا اور اس کی عمر 50 کے قریب تھی۔ لیکن غربت اور مجبوری کی وجہ سے اس 14 سالہ لڑکی کی شادی ماں کی مرضی سے 50 سالہ مالک مکان کے ساتھ ہوگئی۔ مالک مکان نے شادی کے بعد اس معصوم لڑکی کی زندگی میں جیسے آگ لگا دی۔ وہ منشیات کا عادی تھا۔ اس نے اپنی معصوم بیوی کو ذہنی طور پر کافی اذیتیں دیں۔ سماجی طور پر اس معصوم لڑکی کی حیثیت کو جیسے دفن کر کے رکھ دیا گیا۔ جو کہ ناقابل بیان داستان ہے۔ پھر اس لڑکی نے آج تک سکھ نہیں دیکھا۔ ماں بھی مر گئی۔ منشیات کا عادی وہ شوہر بھی مر گیا اور پھر کم عمری میں اس لڑکی کے بطن سے 4 بچوں نے جنم لیا۔ آج وہ جس انداز میں جی رہی ہے اس کو دیکھ کر دل خو ن کے آنسو روتا ہے گو کہ اس نے شوہر کی وفات کے بعد دوسری شادی کر لی لیکن جیسے سب کچھ لٹ گیا اور اب سماج چاہے تو اس کی بکھری ہوئی زندگی کو سمیٹ نہیں سکتا۔

چمن کے علاقے میں شادی یا نکاح کے لئے عام طور پر 13 سال کی عمر کو ترجیح دی جاتی ہے۔ یہ ایک قبائلی پختون علاقہ ہے۔ جہاں قبائلی رسم و رواج کے تحت سماجی زندگی کے راستے متعین کئے جاتے ہیں۔ اب جہاں دولہا کی عمر 13 سال ہو تو وہاں دلہن کی عمر یقیناً10یا 12 سال ہی ہوگی تو اس طرح کے غیر فطری رشتے سماجی ڈھانچے کو مضبوط بنانے کے بجائے یقیناًکمزور ہی کرکے رکھ دیتے ہیں۔

بلوچستان کے قبائلی معاشرہ میں بلوچ اور پختون قبائل میں ایک سے زیادہ شادیوں کارجحان بھی عام ہے۔ اس تناظر میں اگر ہم دیکھیں تو کم عمری کی شادیاں بھی اکثر ایک سے زیادہ شادی کا سبب ہیں کیونکہ کم عمری میں شادی ہمیشہ خاندانی فیصلوں کی بنیاد پر ترتیب دی جاتی ہے۔ اور جب وہ دوسری شادی کا فیصلہ کرتا ہے توپھر کئی خاندانی مسائل بھی جنم لیتے ہیں ناراضگیاں اور پیچیدگیاں پیدا ہوتی ہیں اور اس وجہ سے معاشرے میں طلاق کا رجحان بھی بڑھ جاتا ہے۔مختلف اخبارات و جرائد اور پاکستان کمیشن برائے انسانی حقوق کی جانب سے بھجوائی گئیں رپورٹوں کے مطابق گزشتہ سال 2015ء میں 24 ستمبر سے 23 اکتوبر تک کے دوران ملک بھر میں 157 افراد نے خودکشی کر لی ان خودکشی کرنے والوں میں 61 خواتین شامل تھیں اور اسی عرصہ کے دوران 42 افراد نے خودکشی کرنے کی کوشش کی جنہیں بروقت طبی امداد دے کر بچا لیا گیا۔ اقدام خودکشی کرنے والے ان افراد میں 18 خواتین بھی شامل ہیں۔ اعداد و شمار کے مطابق خودکشی کرنے والوں میں 94 افراد نے گھریلوجھگڑوں و مسائل سے تنگ آکر اور 13 نے معاشی تنگدستی سے مجبور ہوکر خودکشی کر لی اور خودکشی کے واقعات میں 80 افراد نے زہر کھا / پی کر اور 36 نے خود کو گولی مار کر جبکہ 30 نے گلے میں پھندا ڈال کر جان دیدی جبکہ خودکشی اور اقدام خودکشی کے 199 واقعات شامل ہیں اور دیگر کئی واقعات کو درج ہی نہیں کیا جاتا ہے۔ دیکھا جائے تو دنیا بھر میں ہر سال 5 لاکھ عورتیں یعنی ہرمنٹ کم از کم ایک خاتون حمل سے متعلقہ پیچیدگیوں کی وجہ سے فوت ہو جاتی ہے ایسی اموات کی شرح ہمارے ہاں زیادہ ہے جس میں کم عمری کی شادی کا بڑا عمل دخل ہے۔ ہمارے معاشرے میں بعض فیصلے جو جلد بازی‘ لاعلمی یا پھر فرسودہ رسم و رواج کی بنا پر کئے جاتے ہیں جو انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا ارتکاب ہوتے ہیں بلکہ کئی انسانی جانوں کے ضیان یا پھر مصائب کا سبب بن جاتے ہیں۔ سماجی فیصلوں کا اختیار رکھنے والے انسانی حقوق اور اقدار سے لاعلم لوگ اپنی قائم کی گئی فرسودہ رسموں کے تحت اکثر و بیشتر ایسے فیصلے کر ڈالتے ہیں جن کے نتائج اکثر خوفناک برآمد ہوتے ہیں۔

کم عمری کی شادی ہمارے سماج کا اہم اور غور طلب مسئلہ ہے۔ میڈیکل نقطہ نظراور اسلامی حوالے سے کم عمری کی شادیوں کے متعلق کیا حقائق ہیں یہ بحث اپنی جگہ پر ہے لیکن سماجی‘ معاشرتی حوالوں سے اگر دیکھا جائے تو یقیناًکم عمری کی شادی کئی خاندانی او انسانی مسائل کا موجب ضرور دیکھی گئی ہے۔ بلوچستان کے قبائلی معاشرے میں کئی ایسے علاقے ہیں جہاں کم عمری کی شادیوں کا رواج ہے جس کے پیچھے منطق یہ ہے کہ بالغ ہونے سے قبل ہی بچوں کی شادیاں انہیں جنسی برائیوں اور بے راہ روی سے روکتی ہیں اور دوسرا زاویہ یہ بھی دیکھنے اور سننے کو ملا ہے کہ کم عمری میں اگر بچوں کی شادیاں کروائی جائیں تو والدین کا ضعیف ہونے سے پہلے بچے ان کا سہارا بھی بنتے ہیں اور والدین اپنی زندگی میں اپنی حیات میں اپنے بچوں کی خوشیاں دیکھ بھی سکتے ہیں اور ان خوشیوں میں شامل بھی ہوسکتے ہیں اور اکثریت کی رائے یہ ہے کہ کم عمری میں شادیاں اس لئے بھی درست ہیں کہ والدین کی جوانی میں ہی اولاد ان کے لئے سہارا بن جاتی ہے۔ ملک بھر میں سندھ‘ بلوچستان اور خیبرپختونخوا میں بالخصوص کم عمری کی شادیوں کا رجحان بہت زیادہ ہے او یہ رسم ایک قبائلی رواج کے طور پر بھی موجود ہے کم عمری میں شادیوں کا رجحان اور اس حوالے سے نوجوان نسل پر خاندانی فیصلوں کی تابعداری کہاں تک درست یا غلط ہے اس پر بحث ضروری ہے۔ انسانی حقوق اور حقوق نسواں پر کام کرنے والی غیر سرکاری تنظیموں کی طرف سے کافی پروگرامز اور سیمینار کے علاوہ شعوری بیداری کیلئے بھی کوششیں جاری ہیں مگر ان کوششوں کے خاطر خواں نتیجہ ابھی تک اخذ نہیں ہو پارہا!!

گو کہ پاکستانی خواتین نے پچھلے 68 سالوں میں اپنے حقوق اور ان کے تحفظ کیلئے ایک طویل جدوجہد کی ہے جس میں اگر وہ دو قدم آگے بڑھتی تھیں تو ان کی مخالف طاقتیں انہیں چار قدم پیچھے دھکیل دیتی تھیں۔کم عمری کی شادیوں کے حوالے سے کئی طبی اور جسمانی مسائل نے بھی جنم لیا ہے۔ دیکھا جائے تو اس وقت ہمارے معاشرے میں عورتوں کی کل آبادی کا 45 فیصد سے زائد خون کی کمی کا شکار ہے صرف 20 فیصد عورتوں کو ہی ڈلیوری کے دوران طبی امداد میسر ہوتی ہے۔جس معاشرے میں انسان اپنی زندگی کے انتخاب کے حق سے محروم ہو جہاں بچوں کو محض اپنی ذاتی پیداوار سمجھ کر سماجی فیصلے ان پر تھوپ دیئے جائیں اور جہاں خواتین کو ان کے بنیادی حقوق سے محرومی کا سامنا ہوا اور وہ محض بطور ایندھن سماج میں جلتی رہیں تو اس طرح کے واقعات کو رونما ہونے سے نہیں روکا جاسکتا۔

اقوام متحدہ نے 1979 میں ایک کنونشن پاس کیا جس کا نام Convention on the Elimination of all forms of Discrimination Against Women (CEDAW) جس کو دنیا کے بیشتر ممالک اپنے قوانین کا حصہ بنا چکے ہیں تاکہ عورتوں کے ساتھ ہونے والے ہر قسم کے امتیازی رویوں کے خاتمے کے لئے اقدامات کئے جاسکیں اور پھر 1975 میں 8 مارچ کو خواتین کا عالمی دن قرار دیا اور اس کے لئے بھرپور وسائل فراہم کرنے شروع کر دیئے اور 2011 میں اس حوالے سے صد سالہ تقریبات بھی منائی گئیں لیکن دیکھا جائے تو ان قوانین کے نافذ ہونے کے بعد بھی تیسری دنیا بالخصوص ترقی پذیر ممالک میں کوئی خاطر خواہ تبدیلی دیکھنے کو نظر نہیں آرہی انسانی حقوق مسلسل سلب ہو رہے ہیں اور جبری شادیاں ہمارے قبائلی معاشروں میں رچائی جارہی ہیں جہاں روز رونگھٹے کھڑے کر دینے والی خبریں ہمارے اخبارات کی شہہ سرخیاں ہیں کہ سرپنچ یا وڈیرے نے فلاح جگہ 12 سالہ لڑکی کو 80 سالہ بوڑھے سے بیاہ دینے کا فیصلہ کیا اور اس طرح کے واقعات کو روکنے کے لئے قانون کا موثر بنانا ضروری ہے اور اس کے ساتھ ساتھ سول سوسائٹی کا متحرک ہونا انتہائی ضروری ہے۔ ورنہ معاشرے میں اس طرح کے فیصلے ہوتے رہیں گے اور زندگیاں قربانی کی بھینٹ چڑھتی رہیں گی۔