When the results were announced in last general elections, no political party got nough seats to form government. PML-N managed to get simple majority and as per the tradition of Balochistan politics, independent candidates were supposed to join PML-N. Independent candidates always join the party in Balochistan who is in power in center. Still PML-N needed the support of other parties to form government in Balochistan. Initially there was a tug of war between three parties to join PML-N for government making.

These three parties were Pashtunkhwa Milli Awami Party (PKMAP), National Party (NP) and Jamiat-e-Ulema-Islam-Faza (JUI-F). BNP was not in a position to join power struggle due to its few seats and PML-Q was in state of confusion because its members were thinking that Nawaz Sharif will not include PML-Q in government. Lobby and rooms of Serena hotel Quetta were the center stage for the political give and take for PML-N members. It seemed that PML-N would form the government in Balochistan. In these circumstances it was reported that second-in-command of seat of Lahore, Shehbaz Sharif would reach Quetta at night.

Suddenly, it was announced in a press conference, called at night, that CM would be from PML-N and NP and PKMAP would be its allies. This arrangement seemed to be fair however when contact was established by local leaders of PKMAP and NP with Mehmood Khan Achakzai and Hasil Bizenjo respectively, who were in Islamabad, they became very angry. Local leadership of both parties had to give explanation that if they had not called press conference then JUI-f might have formed government with PML-N. If there was a little bit delay then NP and PKMAP, after 10 years of opposition, would have got nothing in power share let alone office of CM. Those doing press conference forgot that fate of Balochistan was about to be decided not in Larkana but in throne of Lahore this time. People who conducted a press conference in haste did not realize that decisions about Balochistan are not made in Balochistan. Mir and Khan tried to solve the problem for their parties and asked Shehbaz Sharif, upon his visit to Quetta, that what his intentions are.

This was shocking for Provincial chief of PML-N, Nawab Sanaullah Zehri, whose name was announced as CM in press
conference last night. However the situation on ground had changed now. Throne of Lahore had decided that they don’t want to take the heavy burden of responsibility of Balochistan on their shoulders. Therefore PML-N leadership was pretending to be ignorant about the developments and Nawab Sanaullah Zehri didn’t like this situation. Even I had realized that what’s going to happen as decision were already made and it was time for their implementation only. Future of Balochistan government was not decided in Quetta. NP and PKMAP made it clear to Shehbaz Sharif that NP and PKMAP can form government with PML-N and if not then they can form government with JUI-F.

Now, the ball was in the court of PML-N leadership. Either they can decide to form government with JUI-F or with NP and
PKMAP. As I have told earlier that PML-N was not ready to carry the heavy burden of responsibility of Balochistan on their
shoulder but Nawab Sanaullah Zehri wanted to form government which was not possible without any allies. Mehmood Khan Achakzai, in his meeting with Shehbaz Sharif, made it clear that Dr. Malik Baloch is the candidate of CM supported by PKMAP. Shehbaz Sharif realized that PML-N was not ready to accept Dr. Malik Baloch as CM of Balochistan.

That’s why the negotiations were delayed and shifted from Quetta to Murree. However, those privy to the matters claim that when PML-N leaders of Balochistan were called to Raiwand, they did not lose the courage and stuck to their resolve that they will not accept a CM out of PML-N even at that time there were more than one contenders of CM in PML-N. Then the negotiations were shifted from Murree to Raiwand and people were claiming that PML-N would never sacrifice CM in Balochistan.

When Nawaz Sharif announced in press conference in Murree to make Dr. Malik Baloch as CM, apparently PML-N lost a won
battle and Mir and Khan seemed to be the winners. The tug of war could have been felt even after formation of government as PML-N had not accepted the decision of Nawaz Sharif wholeheartedly. However, due to their compulsion, PML-N Balochistan chapter despite having majority, had kept quiet on the issue. After sometime senior journalist, Anwar Sajidi asked Nawab Sanaullah Zehri about Murree accord and Nawab Zehri said that neither he could confirm nor contradict this news. After that the news of Murree accord became talk of the town. Someone revealed that PML-N and NP will share the office of CM for two and half years each. An unsigned copy of the accord also came to the scene and it was revealed that signed copy of
the accord is with Ishaq Dar and Chaudhry Nisar is the guarantor of the accord. Unlike PML-N members, PKMAP and NP members kept quiet about Murree Accord.

Again it was Anwar Sajidi who asked Prime Minister Nawaz Sharif in a gathering about the existence of Murree accord. Nawaz Sharif sealed the matter by admitting the reality of
existence of Murree Accord. After that Hasil Bizenjo also admitted about existence of Murree accord and now time is coming close when power will be transferred to PML-N. Now National Party only has 6 months after which power would be transferred to PML-N. Apparently, NP is giving the impression
that it is prepared to transfer power according to Murree Accord. Once again fate of Balochistan will be decided by throne of Lahore. Whether leaders of NP and PKMAP keep their word only time will tell. As a student of politics and journalism, in my
humble opinion, PML-N will not take the heavy responsibility of Balochistan on its shoulders.

My analysis and opinion can be wrong but I would like to state a few arguments in support of my stance. First, PML-N could have
formed government with support of JUI-F in center and Balochistan and Khyber Pakhtunkhwa. However, ten years of exile has taught Nawaz Sharif a great deal of Politics. He handed over Khyber Pakhtunkhwa to those chanting slogans of
change so they would be accountable for it. He handed over Sindh to his reconciliatory friend Asif Zardari and let him deal with Sindh. Nationalists in Balochistan were deprived of power for a long time and that’s why Nawaz Sharif gave them power to keep them Happy. Now, after five years Nawaz Sharif would only be accountable for performance of Punjab and federal government. If a party wins majority of seats in three provinces and loses from Punjab then it can’t form government, the reason being the seats of national assembly from Punjab.

Keeping that in mind, the advice provided by advisors of PML-N seems to be a long term planning. However all the planning will
go down the drain if the powerful quarters only display a glimpse of their power then PML will drown in flood water and a letter is added to Pakistan Muslim League. Coming back to the point, NP has announced its willingness to transfer power but efforts for return of Khan of Kalat and rapid development of surrender Policy is raising suspicions. Silence of Mehmood Khan Achakzai on this matter also raises question mark because it was him who played a key role in nomination of Dr. Malik Baloch as CM.

Members of PML-N Balochistan have high hopes that Nawaz Sharif will ensure implementation of Murree Accord because if he didn’t do then PML-N would suffer huge losses in Balochistan.

Interesting situation is that more than one candidate within PML-N are hoping to be the next CM and making attempts in their capacity to please seat of Lahore. Names of some candidates possibly might not be considered after senate elections but what’s wrong in trying in their capacity. It’s not only difficult but impossible to predict when game will change in Balochistan. Just like it’s not headache of a shepherd in Balochistan that who will be CM, similarly, PML-N doesn’t need few members of assembly to prolong its rule of power. Nawaz Sharif needs the support of Hasil Bizenjo and Mehmood Achakzai, just like Asif Zardari needed the support of Molana Fazal-ur-Rehman and Asfandyar Wali. Therefore Balochistan will
await the decisions of seat of Lahore.

بلوچستان حکومت مری معائدہ اور تخت لاہور کا فیصلہ 

تحریر :شاہد رند 

گزشتہ انتخابات کے بعد جب ابتدائی نتائج سامنے آئے تو کسی جماعت کو اکیلے حکومت بنانے جتنی اکثریت نہ مل سکی ۔بظاہر مسلم لیگ (ن) نے سادہ اکثریت حاصل کرلی تھی اور کچھ آزاد امیدواروں نے روایت کے تحت مسلم لیگ (ن )میں ہی آنا تھا کیونکہ بلوچستان کی یہ روایت ہے کہ آزاد امیدوار ہی سہی لیکن وہ اسی جماعت کا رخ کرتے ہیں جس کو مرکز میں اقتدار ملنے جتنی اکثریت حاصل ہو جیسے ہی انتخابی نتائج واضح ہوئے بلوچستان میں مسلم لیگ (ن ) سب سے بڑی جماعت تھی لیکن اسے بھی اقتدار کے حصول کیلئے اتحادی کی ضرورت تھی ۔ 

ایسی صورتحال میں تین جماعتوں کے درمیان رسہ کشی جاری تھی ان تین جماعتوں میں جے یو آئی (ف) ،نیشنل پارٹی اور پشتونخواہ میپ شامل تھے ۔ابتدائی نتائج میں بی این پی مینگل ایسی صورتحال میں تھی ہی نہیں کہ وہ اقتدار کی دوڑ میں شامل ہوتی جبکہ ق لیگ گومگوں کی صورتحال میں تھی کیونکہ لوگوں کا خیال تھا کہ میاں نواز شریف ق لیگ کو شریک اقتدار نہیں کرینگے ۔ سرینا ہوٹل کی راہداریاں اور کمرے مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں اور اراکین کا مسکن تھیں ،جوڑ توڑ کا عمل جاری تھا اورن لیگ بظاہر حکومت بناتی ہوئی نظر آرہی تھی اور اطلاعات کے مطابق فیصلے کیلئے تخت لاہور کے موجودہ نائب چھوٹے میاں شہباز شریف صاحب کوئٹہ پہنچ رہے تھے کہ اچانک رات گئے پریس کانفرنس بلا لی گئی اور اعلان کردیا گیا کہ ن لیگ کا وزیر اعلیٰ ہوگا اور نیشنل پارٹی اور پشتونخواہ اتحادی ہوں گی ۔ 

بظاہر جو کچھ ہوا ٹھیک لگ رہا تھا لیکن پریس کانفرنس کے خاتمے کے بعد پشتونخواہ میپ اور نیشنل پارٹی کے جو رہنما پریس کانفرنس میں پہنچے تھے ان سے محمود خان اچکزئی اور میر حاصل بزنجو کا رابطہ قائم ہوا تو دونوں رہنما جو اسلام آباد میں بیٹھے تھے سخت ناراض ہوئے ۔مقامی قیادت کو وضاحت دینا پڑی کہ اگر ہم پریس کانفرنس نہ کرتے تو جے یو آئی کے ساتھ مسلم لیگ (ن)کا اتحاد بن رہا تھا ۔تھوڑی سی تاخیر سے اقتدار کی ٹرین ہاتھ سے نکل جاتی ۔وزارت اعلیٰ تو کجا دس سال کی اپوزیشن کے بعد اس بار بھی اپوزیشن ہی مقدر میں ہوتی لیکن پریس کانفرنس کرنے والے یہ حضرات بھول رہے تھے کہ بلوچستان کا فیصلہ اس بار لاڑکانہ کے بجائے تخت لاہور نے کرنا تھا بلوچستان کے فیصلے کا اختیار کبھی بلوچستان کا نہیں رہا ۔

مسلم لیگ (ن )بلوچستان کی قیادت نواب ثناء اللہ زہری کے حوالے سے حیران تھی کیونکہ گزشتہ رات تو انہیں وزیر اعلیٰ بنانے کی یقین دہانی دونوں جماعتیں کرواچکی تھیں لیکن اب صورتحال بدل چکی تھی ۔ تخت لاہور مسلم لیگ (ن) بلوچستان کے مسائل کا بار گراں اپنے کندھوں پر اٹھانے کو تیار نہ تھا لیکن نواب ثناء اللہ زہری اور انکے ساتھی چاہتے تھے کہ مسلم لیگ حکومت بنائے جو کسی اتحادی کے بغیر ممکن نہ تھا ۔

نیشنل پارٹی سے ملاقات کے بعد شہباز شریف نے محمود خان اچکزئی سے ملاقات کی تو انہوں نے بھی واضح کردیا کہ ان کے وزارت اعلیٰ کے امیدوار ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ ہیں ، میاں شہباز شریف یہ بھانپ چکے تھے کہ مسلم لیگ (ن )بلوچستان اس فیصلے کو تسلیم کرنے پر آمادہ نہیں ہے اور پھر مذاکرات کے اس مرحلے کو طول دیکر کوئٹہ کے سرد مقام سے مری کے سرد مقام تک لیجایا گیا ۔ واقفان حال کہتے ہیں کہ تخت لاہور نے جب ن لیگ بلوچستان کے اراکین کو رائیونڈ بلایا تب بھی انہوں نے ہمت نہ ہاری اور ڈٹے رہے گو کہ اس وقت بھی ن لیگ کے اندر وزارت اعلیٰ کے ایک سے زائد امیدوار تھے ، لیکن وہ وقت بھی آیا جب نواز شریف نے مری میں پریس کانفرنس میں ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ کو وزیر اعلیٰ بنانے کا اعلان کیا تو بظاہر مسلم لیگ (ن) بلوچستان کی جیتی ہوئی بازی ہار گئی تھیں اور محمود خان اچکزئی اور میر حاصل خان کی کامیابی نظر آرہی تھی ۔ 
حکومت کے قیام کے بعد بھی اس کھینچا تانی کو بخوبی محسوس کیا جاسکتا تھا ۔ ن لیگ کے اراکین نے اس فیصلے کو بخوشی قبول نہیں کیا تھا اس لئے کابینہ کی تشکیل تاخیر سے ہوئی لیکن مرتے کیا نہ کرتے تخت لاہور کے فیصلے کے سامنے مسلم لیگ بلوچستان اکثریت ہونے کے باوجود خاموش ہوچکی تھی ۔ 

کچھ عرصے بعد ن لیگ بلوچستان کے سربراہ نواب ثناء اللہ زہری سے سینئر صحافی انور ساجدی نے شراکت اقتدار کے حوالے سے کسی ڈھائی سال کے مری معاہدے کا سوال پوچھا جس پر نواب ثناء اللہ زہری نے مؤقف دیا کہ نہ وہ اسکی تصدیق کرینگے نہ تردید اور اسکے بعد یہ بات آگے چل نکلی ۔ کبھی کسی نے کہا معاہدہ ہوا تھا کہ دونوں اتحادی ڈھائی ڈھائی سال وزارت اعلیٰ اپنے پاس رکھیں گے ۔پھر بغیر دستخط کے ایک معاہدہ کی کاپی بھی منظر عام پر آگئی جس کے حوالے سے یہ دعویٰ بھی کیا گیا کہ دستخط والی کاپی اسحاق ڈار صاحب کے پاس ہے اور اس معاہدے کے ضامن چوہدری نثار بتائے گئے اور ایک بار پھر انور ساجدی صاحب نے ہی کسی محفل میں میاں صاحب پر یہ سوال داغ دیا کہ کیا ایسا کوئی معاہدہ ہوا تھا کہ نیشنل پارٹی اور پشتونخواہ پہلے ڈھائی سال وزارت اعلیٰ اپنے پاس رکھیں گی اور بعدمیں مسلم لیگ (ن )سے وزیر اعلیٰ چنا جائیگا ۔

اس سوال پر میاں نواز شریف نے سارا معاملہ سمیٹ کر اس معاہدے کے وجود کی تصدیق کردی جس کے بعد میر حاصل خان بزنجو نے بھی معاہدے کی موجودگی کا اعتراف کیا ۔اب وہ دن قریب آرہے ہیں کہ معاہدے کے تحت اقتدار فریق دوم یعنی مسلم لیگ (ن )کو منتقل کیا جائے ۔فریق اول کے پاس چھ ماہ کا عرصہ رہ گیا ہے جس کے بعد انتقال اقتدار کا وقت آنے والا ہے ۔بظاہر نیشنل پارٹی نے یہ تاثر دیدیا ہے کہ وہ معاہدے پر عمل درآمد کے لئے تیار ہے لیکن کیا اس بار بھی بلوچستان کا فیصلہ تخت لاہور نے ہی کرنا ہے یا بلوچستان کے یہ سیاسی اکابرین اپنے کئے گئے قول کو پورا کرینگے ۔اس کا فیصلہ آنے والا وقت کریگا کیونکہ سیاست اور صحافت کے طالب علم کی حیثیت سے میری ناقص رائے میں مسلم لیگ (ن ) بلوچستان کا بار گراں اپنے کندھوں پر نہیں اٹھائیگی ۔

میرا یہ تجزیہ غلط بھی ہوسکتا ہے ،میں اپنی اس رائے کی دلیل کچھ یوں دینا چاہتا ہوں ۔نمبر ایک ،مسلم لیگ (ن )مرکز اور پنجاب کے علاوہ دو اور صوبوں میں جے یو آئی کو ملاکر حکومت بناسکتی تھی جن میں خیبر پختونخواہ اور بلوچستان شامل تھے اور بلوچستان میں تو باآسانی وزارت اعلیٰ بھی لے سکتی تھی لیکن دس سالہ جلاوطنی نے میاں صاحب کو تھوڑی بہت سیاست سکھا دی ہے ۔انہوں نے خیبر پختونخواہ تبدیلی کے نعرے والوں کے حوالے کیا تاکہ وہی جواب دہ ہوں ۔سندھ انہوں نے اپنے مفاہمتی دوست آصف علی زرداری کے سپرد کیا کہ وہ جانیں اور ایم کیو ایم جانے ۔بلوچستان میں چونکہ قوم پرست کافی عرصے اقتدار سے دور رہے تھے تو کہیں یہ بھی ناراض نہ ہوجائیں اور انہیں بھی رام کرتے ہوئے اقتدار دیدیا جائے ۔ بلوچستان میں نیشنل پارٹی اقتدار چھوڑنے کا عندیہ دے رہی ہے لیکن خان آف قلات کی واپسی اور سرینڈر پالیسی پر نیشنل پارٹی کی جانب سے تیزی سے کام کیا جانا کچھ شکوک پیدا کررہا ہے اور بقول محمود خان اچکزئی صاحب کے اس معاملے پر ابھی تک خاموشی بھی سوالیہ نشان ہے کیونکہ ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ کو وزیر اعلیٰ بنوانے کا سہرا انہی کے سر جاتا ہے ۔

مسلم لیگ (ن) بلوچستان کے اراکین کو قوی امید ہے کہ میاں نواز شریف صاحب معاہدے پر عمل درآمد کروائیں گے کیونکہ اگر ایسا نہ ہوا تو بلوچستان میں مسلم لیگ (ن) کو بھاری نقصان ہوگا اور انتہائی دلچسپ صورتحال یہ بھی ہے کہ ن لیگ بلوچستان کے اندر بھی وزارت اعلیٰ کے حصول کیلئے ایک سے زائد امیدوار دل میں خواہش دباکربیٹھے ہیں اور اپنے تئیں تخت لاہور کو رام کرنے کی بھی کوشش کررہے ہیں ۔ان میں سے کچھ کے نام سینیٹ کے انتخابات کے بعد ممکن ہے زیر غور بھی نہ آئیں لیکن اپنے تئیں کوشش کرنے میں کیا حرج ہے ۔

بلوچستان میں کھیل کب بدلتا ہے اس کی پیش گوئی مشکل ہی نہیں نا ممکن بھی ہے ۔بس اپنی دلیل کی ایک آخری وضاحت کردوں ، وزیر اعلیٰ کوئی بھی بنے ،اقتدار کسی کا بھی ہو ،یہ بلوچستان کے کسی چرواہے کا درد سر نہیں ہے ۔میاں صاحب کو ایسے ہی حاصل بزنجو اور محمود خان کی ضرورت ہے جیسے آصف علی زرداری کو اسفند یار ولی اور مولانا فضل الرحمان کی ضرورت تھی ،اس لئے بلوچستان تخت لاہور کے فیصلے کا منتظر رہے گا۔

I am text block. Click edit button to change this text. Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Ut elit tellus, luctus nec ullamcorper mattis, pulvinar dapibus leo.