Balochistan covers 44% land area of Pakistan and just 5% of total population of the country. Till 2009, federal government distributed resources among provinces using population as the sole criterion. This resulted in Balochistan only getting a meager share from federal resources and hence it remained undeveloped.

On 31st December 2009, 7th National Finance Commission (NFC) award was signed after agreement on it by all four provinces. NFC award determines a formula under which resources of federal divisible pool are distributed among provinces. For the first time in history of Pakistan population was not the sole criterion for division of resources under 7th NFC. According to new formula, 82% of resources would be divided based on population, 10.3% based on backwardness, 5% based on Revenue generation and 2.7% based on inverse population density. As a result of 7th NFC award, Punjab gave up 5.62% points from its share and Balochistan gained 3.98% and its share increased from 5.11% to 9.09%.

Budget for fiscal year 2010-11 was the first budget after 7th NFC and Balochistan experienced an increase of 175% in its share from federal divisible pool. Following are statistics of federal receipts of Balochistan and how they were utilized from 2009-10 to 2015-16.

After implementation of 7th NFC award, Balochistan received 885.32 Billion from Federal Divisible Pool in 6 years. Despite inflow of tremendous amount of money in the province, the trickledown effect is minimal. There has not been a proportionate improvement in living standards of people of Balochistan after provincial exchequer was flooded with money from federal government.

Best way to measure the Quality of life is to use Human Dvelopment Index as used by UNDP. Unfortunately, HDI for Balochistan has not been calculated after 2005. Therefore, Pakistan Social and Living Standards Measurement Survey (PSLM) conducted by Pakistan Bureau of Statistics needs to be used to measure quality of life in Balochistan after 7th NFC.

Federal government abided by the award and transferred resources as per agreed formula but provincial government didn’t plan for pro-masses projects.

A general observation of plight of people of Balochistan proves that there has been almost zero benefit to common people of over 800 billion that has been poured in by federal government after 7th NFC award.

There has not been any considerable improvement in basic indicators which are commonly used to assess quality of life. Infant mortally rate data about Balochistan is only available for 2010-11 where value for Balochistan is 72 as compared to national average of 63. Only 13.39% of people interviewed, claimed to have witnessed an improvement in their economic situation. Human development indicators aside, a general observation of plight of people of Balochistan proves that there has been almost zero benefit to common people of over 800 billion that has been poured in by federal government after 7th NFC award.

Mr. Mehfooz Ali Khan, former Secretary Finance, represented Balochistan in NFC negotiations. He told Balochistan Inside that, “7th NFC was squandered away by ill planning and non-utilization of funds for projects which would have affected common man by generating economic activities.” Lamenting lack of strategic vision among provincial leaders Mr. Khan added, “Federal government abided by the award and transferred resources as per agreed formula but provincial government didn’t plan for pro-masses projects.”

“Lack of institutional framework and human resources, the efficient fiscal management and underutilization of funds are the reasons Balochistan government failed to capitalize on 7th NFC award,” Syed Fazal-e-Haider, an economic analyst and author of two books on Balochistan, told Balochistan Inside.

Increase in non-development expenditure is one of the major reasons that 7th NFC failed to benefit common people of Balochistan. After implementation of 7th NFC award, development budget of Balochistan increased from 18.54 to 26.75 billion and non-development budget skyrocketed from 55.71 to 125.25 billion. Non-development expenditure consists of the administrative expenses of government and other expenditures that don’t directly benefit common people.

Size of development budget in 2009-10 was 18.54 billion which has increased to 51.08 billion in 2015-16 which is used for welfare of people.

Large numbers of districts in Balochistan contribute to increase in the non-development budget. Punjab with an approximate population of 101 million has just 36 districts whereas Balochistan has 32 districts with a population of approximately just 9 million.

Zahoor Buledi, former member of Balochistan Assembly came up with another explanation while talking to Balochistan Inside. “Major chunk of non-development budget is being spent on maintaining law and order situation,” he said.

According to Mr. Buledi Corruption and personal interests of politicians prevented the trickledown effect of increase in resources, after 7th NFC award, to common people Mushtaq Raisani, Secretary Finance government of Balochistan, doesn’t agree with the assertion that people of Balochistan have not benefited from increase in provincial resources after 7th NFC award. While talking to Balochistan Inside, he said “size of development budget in 2009-10 was 18.54 billion which has increased to 51.08 billion in 2015-16 which is used for welfare of people.”

In 7th NFC award, Balochistan got a boost in terms of provincial autonomy but failed to deliver the fruits of benefits to common people. Human development indicators and increase in development budget prove that last two Balochistan governments have failed to utilize increased provincial resources for welfare of common public. Until and unless, immediate and robust, fiscal and governance reforms are not put in place, people of Balochistan will continue to suffer even if current share of Balochistan in federal divisible pool is increased by multi-fold.

ساتویں این ایف سی ایوارڈ کے بعد بلوچستان کی معاشی ترقی میں کمی ؟
عدنان عامر

بلوچستان پاکستان کے 44 فیصد رقبے کا احاطہ کرتا ہے اور یہاں ملک کی محض 5 فیصد آبادی ہے۔ 2009 تک وفاقی حکومت نے صوبوں میں آبادی کی بنیاد پر وسائل تقسیم کئے۔ اس کے نتیجے میں بلوچستان کو وفاقی وسائل سے معمولی حصہ ملا اور یوں وہ بدستور غیرترقی یافتہ رہا۔ 

تمام صوبوں کی جانب سے رضامندی کے بعد 31 دسمبر 2009 کو ساتویں نیشنل فنانس کمیشن (این ایف سی) ایوارڈ پر دستخط ہوئے۔ این ایف سی ایوارڈ ایک فارمولہ متعین کرتا ہے جس کے تحت وفاق سے ملنے والے وسائل صوبوں میں تقسیم کئے جاتے ہیں۔ ساتویں این ایف سی کے تحت پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار آبادی واحد معیار نہیں تھا۔ نئے فارمولے کے مطابق 82 فیصد وسائل آبادی کی بنیاد پر تقسیم کئے جائیں گے، 10.3 فیصد پسماندگی ، 5 فیصد آمدن پیدا کرنے اور 2.7 فیصد معکوس آبادی والے علاقوں میں تقسیم کئے جائیں گے۔ 

اس کے نتیجے میں ساتویں این ایف سی ایوارڈ میں پنجاب کا حصہ 5.62 فیصد پوائنٹس بڑھ گیا اور بلوچستان نے 3.98 فیصد پوائنٹس کا اضافہ ہوا جس کے بعد اس کا حصہ 5.11 فیصد سے 9.09 فیصد تک پہنچ گیا۔ 

ساتویں این ایف سی ایوارڈ کے بعد مالی سال 2010۔11 کا پہلا بجٹ تھا۔ جس میں بلوچستان کا وفاق سے ملنے والے حصے میں 175 فیصد اضافہ ہوا۔ بلوچستان کو ملنے والے وسائل سے متعلق اعداد و شمار مندرجہ ذیل ہیں اور ان کو 2009۔10 سے 2015۔16 تک کیسے استعمال کیا گیا۔ 

ساتویں این ایف سی ایوارڈ کے نفاذ کے بعد بلوچستان کو چھ سالوں میں وفاق سے 885.32 ارب روپے ملے۔ صوبے میں اس قدر بھرپور انداز میں رقم آنے کے باوجود اس کے اثرات انتہائی محدود رہے۔ وفاقی حکومت کی جانب سے سے ملنے والے بھرپور آمدن صوبائی خزانہ وسائل سے بھرا ہونے کے بعد بھی صوبے کے عوام کی زندگیوں میں کسی قسم کی مناسب بہتری نہیں آئی۔ 

معیار زندگی کو جانچنے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ یو این ڈی پی کی جانب سے استعمال کیا گیا ہیومن ڈیولپمنٹ انڈیکس (ایچ ڈی آئی) ہے۔ بدقسمتی سے 2005 سے بلوچستان کے لئے ایچ ڈی آئی کا تخمینہ نہیں لگایا گیا۔ اس لئے پاکستان سوشل اینڈ لیونگ اسٹینڈرڈ میشرمنٹ سروے نے ادارہ برائے اعداد و شمار پاکستان کو ساتویں این ایف سی ایوارڈ کے بعد بلوچستان میں معیار زندگی کی پیمائش کرنے کی ضرورت ہے۔ 

بنیادی اشاریوں میں کوئی اہم تبدیلی نہیں آئی ہے جو معیار زندگی جانچنے کا عام پیمانہ ہے۔ شیر خوار بچوں کی شرح اموات سے متعلق معلومات صرف سال 2010۔11 کی دستیاب ہیں جبکہ قومی اوسط 63 کے مقابلے میں بلوچستان کی اہمیت 72 ہے۔ اس میں صرف 13.39 فیصد لوگوں کے انٹرویو لئے گئے جنہوں نے معاشی صورتحال میں بہتری کا اقرار کیا۔ انسانی ترقی کے اشاریوں کو ایک طرف رکھتے ہوئے بلوچستان کے لوگوں کی عمومی حالت کے مشاہدے سے یہ بات ثابت ہوتی ہے کہ ساتویں این ایف سی ایوارڈ کے بعد وفاقی حکومت کی جانب سے فراہم کئے جانے والے 800 ارب روپوں سے عام آدمی کو کچھ فائدہ نہیں ہوا۔ 

این ایف سی مشاورت میں بلوچستان کی نمائندگی سابق فنانس سیکریٹری محفوظ علی خان نے کی۔ انہوں نے بلوچستان ان سائیڈ کو بتایا کہ ساتواں این ایف سی خراب منصوبہ بندی اور منصوبوں کے لئے فنڈز کے عدم استعمال کے باعث ضائع ہوگیا جس کے نتیجے میں معاشی سرگرمیوں کے پیدا ہونے سے عام آدمی بھی متاثر ہوتا۔ سیاسی رہنماؤں کے اندر دور رس نگاہ بینی کی قلت پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت نے اس ایوارڈ کی پاسداری کی اور طے پانے والے فارمولے کے مطابق وسائل منتقل کئے لیکن صوبائی حکومت نے بڑے عوامی پروجیکٹس کی منصوبہ بندی نہیں کی۔ 

ایک معاشی تجزیہ کار اور بلوچستان کے موضوع پر دو کتابوں کے مصنف سید فضل حیدر نے بلوچستان ان سائیڈ کو بتایا،”ادارہ جاتی ڈھانچے اور انسانی وسائل کی قلت کے ساتھ موثر مالیاتی انتظام اور فنڈز کا ناکافی استعمالبلوچستان حکومت کی ناکامی کی بڑی وجوہات ہیں جن کے ذریعے ساتویں این ایف سی ایوارڈ سے فائدہ نہیں اٹھایا جاسکا۔”

غیرترقیاتی اخراجات میں اضافہ اس کی بڑی وجوہات میں شامل ہے جس کی وجہ سے این ایف سی بلوچستان کے عام لوگوں کو فائدہ پہنچانے میں ناکام رہا۔ ساتویں این ایف سی ایوارڈ کے نفاذ کے بعد بلوچستان کا ترقیاتی بجٹ 18.57 ارب سے بڑھ کر 26.75 ارب ہوگیا جبکہ غیرترقیاتی بجٹ غیرمعمولی طور پر 55.71 ارب سے بڑھ کر 125.25 ارب ہوگیا۔ غیرترقیاتی اخراجات حکومت کے انتظامی امور پر آنے والے اخراجات اور دیگر مدات شامل ہیں جس سے عام آدمی کو براہ راست فائدہ نہیں پہنچتا۔ بلوچستان میں اضلاع کی بڑی تعداد نے غیرترقیاتی بجٹ میں اضافہ کیا ہے۔ پنجاب جس کی آبادی ایک تخمینے کے مطابق 10 کروڑ 10 لاکھ ہے وہاں محض 36 اضلاع ہیں جبکہ بلوچستان میں 32 اضلاع ہیں جس کی آبادی تقریبا 90 لاکھ ہے۔ 

بلوچستان اسمبلی کے سابق رکن ظہور بلیدی بلوچستان ان سائیڈ سے گفتگو کرتے ہوئے ایک اور وضاحت کے ساتھ سامنے آئے۔ ان کا کہنا تھا،”غیرترقیاتی بجٹ کا بڑا حصہ امن و امان کی صورتحال کو برقرار رکھنے کے لئے خرچ کیا جارہا ہے۔”ان کے مطابق ساتویں این ایف سی ایوارڈ کے بعد کرپشن اور سیاستدانوں کے ذاتی مفادات نے وسائل میں اضافے کے اثرات کو عام آدمی تک پہنچنے سے روک رکھا ہے۔ 

بلوچستان حکومت کے سیکریٹری فنانس مشتاق رئیسانی اس خیال سے اتفاق نہیں کرتے کہ بلوچستان کے لوگوں کو ساتویں این ایف سی ایوارڈ میں اضافے سے فائدہ نہیں ہوا۔ بلوچستان ان سائیڈ سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا، “2009۔10 میں ترقیاتی بجٹ کا حجم 18.54 ارب تھا اور 2015۔16 میں اضافے کے بعد 51.08 ارب ہوگیا ہے اور یہ لوگوں کی فلاح و بہبود کے لئے استعمال کیا جاتا ہے۔”

ساتویں این ایف سی ایوارڈ میں صوبائی خودمختاری کے حوالے سے بلوچستان کے وسائل میں تیزی سے اضافہ ہوا لیکن یہ عام آدمی کو فائدہ پہنچانے میں ناکام رہا۔ انسانی ترقیوں کے اشاریوں اور ترقیاتی بجٹ میں اضافہ سے ثابت ہوتا ہے کہ بلوچستان کی پچھلی دو حکومتیں عام لوگوں کی فلاح و بہبود کے لئے صوبے کے وسائل بڑھانے میں ناکام رہیں۔ وفاق سے ملنے والے وسائل میں کئی گنا اضافے کے باوجود جب تک فوری اور تیزی کے ساتھ مالیاتی اور حکومتی اصلاحات سامنے نہیں لائی جاتیں اس وقت تک بلوچستان کے عوام کی مشکلات جاری رہیں گے۔