Muhammad Ali (Name changed), 68, has been working as a reporter for a private TV channel in Balochistan’s Nushki district. In the view of high inflation rate in the country, he is paid monthly only 15, 000 rupees. Except journalism, he does not have other sources of income.

That is why he has to run his family with this low salary. “Despite my frequent requests, my salary has not been increased yet,” he told Balochistan Inside. “As for my services, I have been consecutively working for my private TV channel for more than 15 years. He further added he was repentant for becoming a journalist, as he could not even earn his livelihood properly.

It is to be noted that Muhammad Ali is lucky enough that he at least receives salary. In rural Balochistan, local journalists are mostly unpaid. Therefore, they are either teachers or clerks in their hometown. But there are some, who do not have jobs. They solely do journalism. That is why they have to attend the press conferences regularly at their district press clubs, so that they may get a trivial amount or, to be more specific, 500 rupees. Besides it, they go to local elites for money, and they get published statements in their favor. Unfortunately, in some districts of Balochistan, journalists who are school teachers and clerks also do reporting part time. That is why they cannot afford to earn the ire of ministers. If they do, they get transferred to other districts of the province. That is why they keep silent.

Similarly, in Quetta, the provincial capital of Balochistan, journalists are confronting the same challenges. The reason is: in Quetta, a reporter is not even paid more than 3, 000 rupees monthly who works for a national English newspaper, while a photographer is said to get paid around 2, 000 rupees in a month. There is also much difference between Quetta based bureau chief’s salary with that Islamabad, Karachi, and Peshawar based bureau chief. Similarly, in Quetta, the provincial capital of Balochistan, journalists are confronting the same challenges. The reason is: in Quetta, a reporter is not even paid more than 3, 000 rupees monthly who works for a national English newspaper, while a photographer is said to get paid around 2, 000 rupees in a month. There is also much difference between Quetta based bureau chief’s salary with that Islamabad, Karachi, and Peshawar based bureau chief.

Many more journalists are underpaid even in Quetta. Only, unlike rural journalists of Balochistan, they have the opportunity of attending works shops in the city, when the Balochistan Union of Journalists (BUJ) holds.

Besides it, as Quetta is center of journalistic activities in all over Balochistan, they (journalists) at least can earn their two times’ meal.

Interestingly, Quetta based senior journalists who are affiliated with international news agencies and TV channels are only economically well-off.

Barkat Zaib Sumalani, who is a senior journalist based in Nushki, told this scribe, “Economically, journalists in rural Balochistan are living in a very pitiable condition. They mostly do not get salaries from their organizations, and they have been working voluntarily for years. If a journalists dares ask for salary, he gets cold-shouldered by his organizations and finally expelled. Unfortunately, another takes his position instead of standing by his side.”

He further added, “There is no unity among journalists in rural Balochistan, which is why their woes are compounding by the day. Unfortunately, journalism, which I am experiencing it myself, can be considered as a source of income; you have to run either a shop or work as s tutor along with journalism. Otherwise, it becomes difficult for him to run his family.”

When asked, local reporters from rural parts of Balochistan told Balochistan Inside, “In almost all districts of Balochistan, we have only one problem, that we do not get a single penny from our media organizations. On the other hand, it is unfortunate to know that Quetta based newspapers do not pay to their stringers despite the fact they send reports to them on daily basis.

In rural areas of Balochistan, there are no facilities available for journalists.

As I spoke to journalists based in rural Balochistan, one said he kept his own son as a cameraman because he himself did not get salary from his TV Channel. So, he wondered if he could hire someone else to do that job for him,” said Shahzada Zulfiqar, the president of Quetta Press Club, to this scribe. He further added that there are merely a few TV Channels that give the reporters salaries in few districts of Balochistan, not in all 32 districts.

Nevertheless, Pakistan in general and Balochistan in particular has been termed one of the dangerous parts of world for journalists. There have been around two dozen journalists killed purely due to their journalistic works.

In spite of it, journalist endeavor for news in the province, as well as bravely work for their media organizations. But their media organizations are least bothered about their reporters.

In these circumstances, Balochistan’s journalists should be unified for their basic rights which they have not been getting for decades. In doing so, they can at least be prospered economically, and can be able to properly run their families.

معاشی مسائل میں جکڑے بلوچستان کے صحافی
تحریر اکبر نوتیزئی

68
سالہ محمد علی (خدشات کے پیش نظر فرضی نام) بلوچستان کے ضلع نوشکی میں ایک نجی ٹی وی چینل میں بطور رپورٹر خدمات سرانجام دے رہے ہیں، ملک میں مہنگائی کی شرح کو مدنظر رکھتے ہوئے انہیں ماہانہ مبلغ 15 ہزا روپے ر ادا کئے جاتے ہیں. صحافت انکی ذارئع معاش کا واحد ذریع ہے لہذا وہ اپنی خاندان کی دیکھ بھال اس محدود تنخواہ سے کرنے پر مجبور ہیں. بلوچستان انسائیڈ سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ پچھلے 15 سال سے وہ مسلسل ایک نجی ٹی وی چینل سے منسلک ہیں اور انکی لگاتار درخواستوں کے باوجود ابھی تک انکی تنخواہ میں اضافہ نہیں کیا گیا انہوں نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا صحافی بننے پر انہیں پچتھاوا ہے جہاں انہیں مناسب ذرائع معاش بھی میسر نہیں۔

محمود علی ان محدودے چند خوش نصیب صحافیوں میں شمار ہوتے ہیں جنہیں کم سے کم تنخواہ ملتی تو ہے، اندروں بلوچستان کے ذیادہ تر مقامی صحافی بلامعاوضہ کام کرتے ہیں لہذا وہ اپنے آبائی علاقوں میں بطور استاد یا کلرک بھی خدمات سرانجام دے رہے ہوتے ہیں، لیکن بعض ایسے بھی ہیں جنکی ملازمتیں نہیں ہوتیں وہ صرف صحافت کے پیشے سے وابستہ ہوتے ہیں اس لئے انہیں ضلعی پریس کلب میں ہونے والے پریس کانفرنسز میں باقائدگی سے شرکت کرنی پڑتی ہے تاکہ انہیں چھوٹی رقم مل سکے جو پانچ سو روپے سے ذیادہ نہیں ہوتی. اسکے علاوہ انہیں مقامی اشرافیہ کے ہاں حاضری لگا کر انکے حق میں توصیفی بیان جاری کرنا پڑتا ہے تاکہ انہیں کچھ رقم حاصل ہو سکے.

بدقسمتی سے بلوچستان کے بعض اضلاع میں سرکاری سکولوں کے اساتذہ و کلرک فارغ اوقات میں بطور صحافی کام کر رہے ہوتے ہیں، سرکاری ملازمین ہونے کے سبب وہ وزراء کو ناراض کرنے کے متحمل نہیں ہوسکتے بصورت دیگر انہیں ناراضگی کا سامنا کسی اور ضلع میں تبادلے کی شکل میں کرنا پڑھ سکتا ہے لہذا وہ خاموشی میں ہی عافیت سمجھتے ہیں.
بالکل اسی طرح بلوچستان کے صوبائی دارالحکومت کوئٹہ کے صحافیوں کو بھی کافی مشکلات کا سامنا ہے، کوئٹہ میں کسی قومی سطح کے انگریزی اخبار کے رپورٹر کو ماہانہ 3 ہزار جبکہ فوٹوگرافر کو 2 ہزار سے ذیادہ نہیں دیا جاتا. کوئٹہ میں مقیم بیورو چیف کی تنخواہوں کا اگر اسلام آباد، کراچی و پشاور میں مقیم بیورو چیف کی تنخواہوں سے موازنہ کیا جائے تو ایک واضح فرق نظر آتا ہے.

کوئٹہ میں بھی بعض صحافی کم کماتے ہیں مگر اندرون بلوچستان کے صحافیوں کے برعکس انہیں ورکشاپس و دیگر سرگرمیوں میں شرکت کا موقع مل جاتا ہے جو بلوچستان یونین آف جرنلسٹ (B۔U۔J) منعقد کرواتی ہے. کوئٹہ بلوچستان بھر کے صحافتی سرگرمیوں کا مرکز ہے یہاں صحافی کم از کم دو وقت کی روٹی کما سکتے ہیں. دلچسپ بات یہ ہے کوئٹہ میں مقیم سینئر صحافی جو بین الاقوامی ایجنسی یا ٹی وی سے منسلک ہیں صرف وہی معاشی طور مضبوط ہیں.

نوشکی میں مقیم ایک سینیئر صحافی برکت زیب سمالانی نے بتایا کہ بلوچستان کے دیہی علاقوں میں صحافی انتہائی کسمپرسی کی زندگی بسر کرتے ہیں، ان میں سے ذیادہ تر کو انکی تنظیموں کی جانب سے تنخواہ نہیں دی جاتی اور یہ سالوں سے رضاکارانہ طور پر کام کرتے آرہے ہیں اگر کوئی صحافی ہمت جوڑ کر تنخواہ کی مانگ کرتا ہے تو اسے تنظیم سے بے دخل کر دیا جاتا ہے. بدقسمتی سے اسکا ساتھ دینے کے بجائے کوئی اور صحافی تنظیم میں اسکی جگہ لے لیتا ہے. انہوں نے مزید بتایا کہ آئے روز صحافیوں کی مشکلات میں اضافے کی ایک وجہ ان میں اتحاد و اتفاق کی کمی ہے. بدقسمتی سے صحافت کے ساتھ میرا تجربہ اچھا نہیں گزرا ایک صحافی کو ساتھ ساتھ ایک دوکاندار یا استاد بھی ہونا چاہیے تاکہ آمدنی کا ایک بہتر وسیلہ بن سکے بصورت دیگر انکے خاندان کو معاشی مسائل درپیش ہو سکتے ہیں.

جب اندرون بلوچستان کے صحافیوں سے بات کی تو انہوں نے بلوچستان انسائیڈ کو بتایا کہ میڈیا تنظیموں کی جانب سے صحافیوں کو پیسہ نہ ملنا تقریباً بلوچستان کے تمام صحافیوں کا مشترکہ مسئلہ ہے جس کا انکو سامنا ہے. دوسری جانب ستم ظریفی یہ بھی ہے کہ کوئٹہ سے شائع ہونے والے اخبارات اپنے نامہ نگاروں کی جانب سے روزانہ کی بنیادوں پر رپورٹ موصول کرنے کے باوجود بھی انہیں پیسے ادا نہیں کرتے .بلوچستان میں صحافیوں کے لئے کسی بھی قسم کی سہولیات موجود نہیں ہیں، اندرون بلوچستان کے صحافیوں سے جب بات کی تو ایک نے بتایا کہ انہوں نے اپنے بیٹے کو ہی بطور کیمرہ مین رکھا ہوا ہے کیونکہ انہیں خود آج تک ٹی وی چینل کی جانب سے تنخواہ نہیں دی گئی ہے وہ اس کام کے لئے کسی اور کیسے ہجرت پر رکھ سکتے ہیں. کوئٹہ پریس کلب کے صدر شہزادہ ذلفقار نے بتایا کہ بلوچستان کے 32 میں صرف چند اضلاع ہی ایسے ہیں جہاں ٹی وی چینلز کے رپورٹرز کو تنخواہ دی جاتی ہے.

بہرحال پاکستان بالعموم اور بلوچستان بالخصوص دنیا میں صحافیوں کے لئے خطرناک ترین خطہ قرار دے دیا گیا ہے . دو درجن سے زائد صحافی اپنے صحافتی فرائض سرانجام دیتے ہوئے انہی راہوں میں مارے گئے ہیں اسکے باوجود صحافی مخلصی سے اپنے فرائض نبھا رہے ہیں اور بہادری سے اپنے تنظیموں کے لئے کام کر رہے ہیں جبکہ میڈیا کے ام تنظیموں کو اپنے نامہ نگاروں کی خاص فکر لائق نہیں ہے. ان حالات میں بلوچستان کے صحافیوں کا اتحاد و یکجہتی اپنے حقوق کے حصول کے لئے ناگزیر ہے جن سے وہ دہائیوں سے محروم ہیں. اس طرح کرنے سے کم سے کم و? معاشی طور پر قدرے آسودہ ہوسکیں گے اور اپنی خاندانوں کو بہتر طریقے سے چلانے کے اہل ہو سکیں گے.