Balochistan Inside: it is believed that in National census, National Party (NP) remained at forefront in tackling Afghan refugees’ case; but receded from its stance since the party was offered the ministry of finance. Do you agree?

Hasil Bezinjo: I do not agree with this. For this we have raised our voice on every forum even though we did not spare the chance to approach judiciary; kept federal government and establishment engaged in this matter. As far as National Party’s reservations regarding national census were concerned, Party still has the reservations. We raised the issues among local people and we are still raising it. In fact, we had two choices to make: to boycott the census plan or to be part of it.

Further, it was a consensus agreed upon by the all parties that boycotting the census might get the axe fallen upon ourselves. Owing to the consensus we decided to be part of it. We kept our people abreast the issue and urged them to come forward in order to leave no vacuum. First we thought we could stop it, later on we realized it was not possible. If we were not part of it, we thought, the Baloch Nation could not reap the benefits, however, possibly enough would they get nothing from it. It has no link with any ministry. Finance ministry was already ours and it is our right. Thus, linking census with the ministry is not legitimate.

Balochistan Inside: Do you agree with the perception that your ministry was an attempt to suppress the transformation of Gwadar Port to the provincial government by the federal government?

Hasil Bezinjo:  Ministry of port and shipping was the ministry of communication initially. Later on it was parted into two ministries. Before this, ministry of port and shipping did not exist. It was created after the division of ministry of communication. After the division of the ministry, the ministry of port and shipping was established and the ministry of communication was dissolved into the ministry of highways and postal services. I refute the perception that this ministry was given to me to suppress the voice of Balochistan.

Following the 18th amendment, national party was the only party which demanded the ministry of port and shipping to be handed over to the provinces. Parties like Aawani National Party (ANP), Jamait e Islami (JI) and Shairpao group seconded our demand. Mutahida Qoumi Movement (MQM) forwarded its stance demanding that the NP should take the ministry of port and shipping but it may also include in demand that the ministry should be included in Municipal Corporation. With this demand, Karachi Port should fall into the net of Karachi Municipal then MQM would support the NP’s demand. Possibly, the demand might have been supported by the Punjab, but, unfortunately Pakistan People’s Party (PPP) opposed it. Due to PPP’s opposition it could not be possible. The PPP should have supported the demand to hand over Karachi port to Sindh but it could not do so.

It is not possible that upon our or anyone else’s demand the Gwadar Port shall be handed over to Balochistan. To make it possible, with a two third majority of votes from both houses, a bill for an amendment is required. Thus, it makes it impossible that Gwadar shall be handed over to Balochistan and Karachi Port to Sindh.

Balochistan Inside: As it is widely predicted that with the real estate falling in the hands of non local the city of Gwadar will slip from the hands of native people. In the light of Mr. Sanaullah Zehri’s recent statement about mobilizing law for the rights of native people when time is ripe, don’t you think the time has come to mobilize the law?

Hasil Bezinjo: The issue is not as simple to tackle as it seems. We have to bear it in our minds that we are part of this country. Gwadar is not a separate state. Being part of the same country, how one can enact new laws based on the laws practiced in Dubai and other gulf countries for Gwadar alone. Is it possible to bring such a law, where in an investment of billions, you may be equal partner in the business without investing even a single penny? Dubai is a separate state. In Dubai you can bring an invariable law but for a place within a country is not possible. Our party, beyond its all demands, will put this stance forward wherein it would demand to ensure that none of the settlers would get right to vote and people of Gwadar would get their part. Yet on the other hand, if I want to reveal the truth it is that such a law is hard to be accepted; because such law does not exist in any other part of the country. Nevertheless, NP is raising this issue on every forum and will raise it.

Baloch are prey to natural deficiency. Baloch are prey to a huge geography, a small population and a huge backwardness. In Musharaf’s tenure when a committee was formed to find out solution to this issue, it was NP which demanded that if it was possible forever, the people—to lift them out their miserable lives—should be made part of the investment for coming 25 years. Party also demanded that non settlers should not be given citizenship there within the same time period of 25 years.

Balochistan Inside: Balochistan has not been able to reap its legitimate benefits from Reko Diq and Saindak. The resources of the province have not benefited the local masses. Will CPEC be a real game-changer for the people of Balochistan?

Hasil Bezinjo: People do not have sufficient information about Saindak. I believe that the problems related to Saindak and Reko Diq depict the inaptness of governments of Balochistan. Still we seem unaware of the fact and unable to differentiate that what kind of authority does rest with the provincial governments. It is commonly believed among different circles that Saindak project has been given to China. However, it is not so. In fact, the Saindak agreement has been signed by the provincial government without involvement of the federal government. In Saindak project, the Chinese company held a share of 50%. Similarly, Balochistan also held a share of 50% and 2% as royalty. It enabled Balochistan to get a lion’s share of 52% whereas the Chinese company got a share of 48%. In 1993, the company offered Balochistan to invest in the project as it got the highest share of 52%. I remember it was not a good investment. In reciprocation to 18 million rupees we became the company’s partner, but after the provincial government refused to invest in the project the company also decided to adopt a tit for tat attitude. In this backdrop, PPL paid 18 million and Balochistan, in return, paid its 50% share to PPL. Now we have to just do with 2% royalty which shows our inaptness and federal government is not involved in this.

We make all the mistakes and blame federal government. Similarly, Reko Diq is the world’s third largest reservoir of gold and copper. Its agreement is comprised of 500 pages and an ordinary officer has signed it! Reko Diq agreement has met the same fate as Saindak project has. In Reko Diq, Balochistan held a share of 25% whereas other companies held 75% of share, but in Jam’s tenure Balochistan had to lose grip on its remaining 25% which made its share zero. I would give some credit to Mr. Asalm Raisani for putting forward his stance on the Reko Diq issue for not signing the agreement. After this the companies approached the international court. If the provisions of the agreement were to be signed, it would have brought an economic devastation for the province. Thus Gwadar Port is still far away, we have to wait to see the effects.

Balochistan Inside: During transfer of power as per ‘Marri Pact’, parties seemed busy in a tug of war meanwhile billions of rupees sprang from water tanks and bakeries. Was this the point which made the party stuck to the ministry?

Hasil Bezinjo: At the time both parties, NP and Pashtunkhwa Milli Awami Party (PKMAP), had reservation about four ministries. Out of four ministries, Ministry of finance and Health fell in the hands of NP whereas P&D and Ministry of Education went to PKMAP.  Everything that happened in finance we accepted it. We took all steps that were to be taken. Such as we sacked the minster belonging to NP and acknowledged that much happened in the ministry. Without making any fuss and vociferation about the matter, we called in an inquiry and avoided calling the matter a conspiracy. Secondly, the NP demanded for P&D not for finance ministry. Thus, it is not true that we demanded for the ministry of finance.

Balochistan Inside: Despite being part of CPEC for four years since 2013, Gwadar is not fully functional. What could be the possible reason behind this?

Hasil Bezinjo: Gwadar Port has been given to China under the pact and I think China will connect its city Xinjiang to Gwadar. China is completely engaged in work in Xinjiang city which will enable the city to be connected to Gwadar. I feel that this entire process needs some time. Nonetheless, the positive aspect of the project, which has come to light so far, is that China has approved of two important projects of Pakistan and work on the projects will be started in May. But Gwadar issue will remain unresolved unless it is connected to the Indus Highway and it will not progress at a desired scale. However, the positive gain is that 80% of the work related to the project has been completed so far. Time to complete remaining projects such as Besima to Khuzdar highway and Wangoo, a passage that connects Sindh and Balochistan via Khuzda, will take four to five months further. After this Gwadar project will be completed.

Balochistan Inside: Do you agree that peace in Balochistan has been restored and insurgency has been eradicated from the province?

Hasil Bezinjo: If we compare today’s Balochistan to that of a few years back, it is pertinent to say that in Balochistan insurgency has dropped significantly. But In some cities of the some particular districts, a low intensity of insurgency still persists. And, there would be incidents of small scales until foreign aid keeps pouring in. Initially, the insurgency that arose from the horizon accommodated educated people and intellectuals, but now miscreants have found a safe haven in to have shelter and exploit the struggle. These miscreants have become a tool in the hands of anti Pakistan elements. The number of people killed in the hands of miscreants is higher than the number of people killed by the security forces. Even our own party workers have lost their lives. When it is hard to fight back to your own state, you start killing your own people.

Balochistan Inside: From census to CPEC and then to the current situation of Balochistan, we see nationalist parties to put their demands forward but do not raise a collective voice for the benefits of the nation. Do you see any grand alliance among national parties in future?

It does not seem possible. Certainly, one can predict an alliance between other parties but they will choose to remain away from NP. Thus, I do not believe that the parties would make an alliance with us.

Balochistan Inside: Given the four years performance of the NP, do you predict that party will be able to earn a satisfactory mandate in coming elections?

Hasil Bezinjo: This decision rests in the hands of masses. The party in helm does face some disadvantages and people choose to remain reluctant. Some are reluctant deliberately and some remain angry for not getting jobs. NP has always preferred the policy of the party. If we prefer the party policy in future we can get succeeded. For the policy we have made for the coming elections, we have been preparing for it drastically and hope that we can get a meaningful success in elections.

س نیشنل پا رٹی نے افغان مہاجرین کی موجودگی میں مردم شماری کے خلاف بڑی شدت سے آواز اُٹھائی لیکن اچانک یہ آواز دب گئی اس بنا پر نیشنل پارٹی پر الزام لگایا جاتا ہے کہ اس سے صوبائی وزارت خزانہ کے عوض اس موضوع پر خاموشی اختیار کرلی ہے۔
ج میں اس سے اتفاق نہیں کرتا ہو ں جہاں تک نیشنل پارٹی کی مردم شماری پر تحفظات تھے وہ اب بھی موجود ہیں اور ہم نے اس کیلئے ہر سطح پر آواز اُٹھائی اورعدلیہ بھی گئے فیڈرل گورنمنٹ اور اسٹیبلشمنٹ کو بھی بارہا انگیج رکھاعوامی سطح پر آواز اُٹھائی اور اُٹھار ہے ہیں ہمارے سامنے دو راستے تھے ایک یا تو مردم شماری کا بائیکاٹ کریں یا پھر اس کا حصہ بنیں۔
ہر پارٹی کی مجموعی رائے بنی کہ بائیکا ٹ کا راستہ خود کُشی کا ہے اسی لئے ہم نے یہ بہتر سمجھا کہ نیشنل پارٹی اس کا حصہ بننے کیلئے میدان میں اترے گی ۔ ہم نے ڈسٹرکٹ اور ہر سطح پر اپنے لوگوں کو آگے آنے کو کہا ہے تاکہ میدان کو خالی نہ چھوڑاجائے ۔کیونکہ جب ہم نے یہ چاہاکہ اسے روک پائے گیں توہم نے اچھی طرح یہ محسوس کیا کہ یہ ممکن نہیں ہے اور اگر میدان خالی چھوڑدیتے ہیں تو بلوچ قوم کو کسی طورپر فائدہ نہیں ہوگا۔البتہ نقصان میں ضرور رہیں گئے ۔اس کا کسی وزارت سے تعلق نہیں ہے اور وزارت خزانہ کو تھی ہی ہماری اور ہمارااس پر جائزحق بنتا ہے لہذٰا مردم شماری کو اس سے جوڑنا ٹھیک نہیں ہے۔
س کیا آپ اس تاثر سے اتفاق کرتے ہیں کہ آپ کو وفاقی وزارت دینے کا مقصد وفاق کی طرف سے گوادر پورٹ بلوچستان حکومت کے حوالے کرنے کے مطالبے کو دباناتھا؟
منسٹری پورٹ اینڈشپنگ اس سے پہلے منسٹری آف کمیونیکیشن تھی ۔پھر اسے دو حصوں میں تقسیم کیاگیا۔ اس سے پہلے یہ وزارت ہی نہیں تھی تقسیم ہونے کے بعد ایک وزارت پورٹ اینڈشپنگ اور دوسری کمیونیکیشن کو ہائی ویز اور پوسٹل سروسز میں تبدیل کردیاگیا۔یہ کہا جاتاہے کہ مجھے یہ وزارت اس لئے دی گی ہے کہ بلوچستان کی آواز کودبایاجائے بلکل غلط ہے۔
18ترمیم کے بعد نیشنل پارٹی ہی وہ واحد پارٹی تھی کہ جس نے آواز اٹھائی کہ پورٹ اینڈشپنگ کی وزارت صوبوں کو دی جائے ،باقی جماعتوں جیسے کہ نیشنل پارٹی ،جماعتِ اسلامی اور شیرپاؤگروپ نے ہماری حمایت کی اور ایم کیو ایم نے اپناموقف کچھ یوں دیاکہ اگر منسٹری آف پورٹ اینڈشپنگ آپ لے لیں مگر اس کو آپ اس مطالبے میں شامل کرکے یہ میونسپل کو دی جائے ۔ اس طرح کراچی پورٹ کراچی میونسپل کے حوالے کیا جائے اس صورت میں وہ ہماری حمایت کرنے کو راضی تھے۔ہوسکتاتھاکہ پنجاب اس کیلئے راضی بھی ہوجاتامگر بدقسمتی سے پیپلز پارٹی نے اس کی مخالفت کردی ۔پیپلز پارٹی کی مخالفت کی وجہ سے یہ ممکن نہ ہوسکا ۔پیپلز پارٹی کو یہ چاہیے تھاکہ و ہ کراچی پورٹ کو سندھ کے حوالے کرنے کامطالبہ کرتے لیکن انھوں نے ایسا نہیں کیا۔
لہذٰا اس طرح یہ ممکن نہیں کہ ہم یاکوئی بھی یہ مطالبہ کرئے کہ گوادر کو بلوچستان کے حوالے کیاجائے۔ اس کیلئے بنیادی طور پر ترمیم کی ضرورت ہے جس کیلئے دونوں ایوانوں سے دو تہائی اکثریت سے اس طرزکے بل کی منظوری ضروری ہے لہذٰا اس کے بغیر ممکن نہیں کہ گوادر بلوچستان کے حصے میں آئے اور کراچی وفاق کے ۔ ہمارا مطالبہ اس وقت ممکن ہے جب بل کی صورت میں اسے منظور کیاجائے۔
س بلوچستان کے عوام کا یہ اندیشہ ہے کہ جس طرح آ ج کل زمین کا غیر مقامی افراد بڑی تعداد میں خریدوفروخت کررہے ہیں ۔جلد ہی گوادر مقامی افراد کے ہاتھو ں سے نکل جائے گااور اسکا نقصان ہر حال بلوچستان کو ہے ۔ جس طرح وزیرِاعلٰی جناب نواب ثناء اللہ خان زہری کہہ چکے ہیں کہ ہم ضرورت پڑنے پر قانونی طریقے سے مقامی لوگوں کو تحفظ دیں گے۔تو آپ نہیں سمجھتے کہ اس کا وقت آگیاہے؟
یہ مسئلہ اتنا آسان نہیں ہے ۔ہمیںیہ سوچ لینا چاہیے کہ ہم اس ملک کا حصہ ہیں ۔ گوادر کوئی علیحدہ ریاست نہیں ہے ۔ایک ہی ملک میں رہ کر گوادر کیلئے دبئی یا دیگر عرب ممالک جیسے قوانین کیسے رائج کئے جاسکتے ہیں۔ہم کیسے یہ قانون لاسکتے ہیں کہ جو کروڑوں کا سرمایہ لگائے آپ کو کچھ لگائے بغیر برابرکا شریک بنائے۔
دبئی ایک علیٰحدہ ریاست ہے ۔پورے دبئی میں تو آپ ایک قانون لاسکتے ہیں لیکن ایک ملک میں یہ قدرے مشکل ہے۔ہماری پارٹی ایک قدم اور آگے جاکریہ مطالبہ رکھتی ہے کہ نئے آنے والوں کو جو مقامی نہیں ہیں انھیں ووٹ دینے کا حق حاصل نہ ہو اور مقامی افرادکو تھوڑا بہت حصہ ملتارہے ۔مگر حقیقت کی بات اگر میں آپ سے کروں تو اس قانون کا منظور ہو نا اتنا آسا ن نہیں ہے۔ کیونکہ یہ ایک ایسا مطالبہ ہے جوکہ ملک کے کسی دوسرے حصے میں رائج نہیں ہے ۔مگر پھر بھی ہماری پارٹی اس قانون کی منظوری کیلئے ہر سطح پر آواز اٹھارہی ہے اور اٹھاگی۔
بلوچ ایک بہت Naturul deficencyکا شکا ر ہے ۔بلوچ ایک بہت بڑے رقبے ایک چھوٹی آبادی اور بڑی پسماندگی کا شکارہے۔مشرف دورمیں جب اس مسئلے کے حل کیلئے کمیٹی بنائی گی تو یہ ہماری ہی پارٹی کا مطالبہ تھاکہ اگر ہمیشہ کیلئے ممکن ہے تو کم از کم اگلے پچیس سال تک یہاں ہونے والی سرمایاکاری میں مقامی آبادی کو حصہ دیاجائے اور اسی طرح پچیس سالوں تک مقامی لوگوں کے علاوہ کسی کو سٹیزن شپ کے حقوق نہ دئیے جائیں،تاکہ بلوچ عوام معاشی بد حالی اور پسماندگی سے باہر آسکیں۔
س آج تک بلوچستان ریکوڈِک اور سیندک سے اپنا جائز حصہ حاصل نہیں کرسکا ۔جب آج تک بلوچستان کے وسائل وہاں کے مقامی لوگوں کے کام نہ آسکی تو ہم کسطرح یہ سوچ سکتے ہیں کہ سی پیک وہاں کے عوام کیلئے ایک گیم چینجر ثابت ہوگا؟
سب سے پہلے سیندک کے متعلق لوگوں کو مکمل معلومات نہیں ۔میں سمجھتاہوں کہ سیندک کے مسائل اور حتٰاکہ ریکوڈک کے مسئلے پر جونا ہلی ہوئی ہے وہ مکمل طورپر بلوچستان کی حکومتوں کی نااہلی ہے۔ ہم اب تک اس فرق کو سمجھ ہی نہیں پائے کہ کون سے اختیارات ہے جو صوبائی حکومت کو حاصل ہے۔ اکثر حلقوں میں یہ کہا جاتا ہے سیندک کوچین کے حوالے کیاگیاہے۔ جبکہ ایسا بلکل نہیں ہے اور سیندک کے سلسلے میں کیاگیامعایدہ کی قطعی طور پر وفاقی حکومت نے نہیں بلکہ صوبائی حکومت نے کیا ہے۔ سیندک میں 50%چین سے تعلق رکھنے والی کمپنی اور 50%بلوچستان اور 2%مزید بلوچستان کو رائلٹی ملنی تھی۔اسطرح وہ کمپنی 48%اور بلوچستان حکومت 52%پر آگئی۔1993میں اس کمپنی نے حکومتِ بلوچستان کو سرمایاکاری کی آفرکی کیونکہ نفع میں بلوچستان کاحصہ 52%بنناتھا۔مجھے اچھی طرح یادہے یہ کوئی بڑی سرمایاکاری نہیں تھی۔18ملین کے عوض ہم انکے شراکت دار ہوئے مگر صوبائی حکومت کے منع کرنے کے بعد اس کمپنی نے بھی سرمایاکار سے منع کردیاتو PPLنے وہ 18 ملین دیئے اور بلوچستان نے جو50%اسے خود ملناتھااپنے ہاتھوں سے PPLکے حوالے کردیا۔ لہذٰا آپ اب صرف 2%رائلٹی پر اپنا کام چلائیں جوکہ سراسر ہماری اپنی ناہلی کے اس سے وفاق کا کوئی تعلق نہیں ۔
ساری غلطیا ں ہم خود کرتے ہیں اورا لزام وفاق پر لگاتے ہیں اسی طرح ریکوڈک دنیا کا تیسرا سب سے بڑا ذخیر ہ ہے اس کا معاہدہ تقریباََ پانچ سو صفحات کا ہے اور بلوچستان کا ایک ڈاریکٹر لیول کا بندہ جا کر اس پر دستخط کرتا ہے اور اس کا انجام بھی وہی ہوا جو کہ سیندک کا ہوا ۔ ریکوڈک میں% 25بلوچستان اور 75%دیگر کمپنییز کا تھا مگر جام صاحب کے دور میں بلوچستان اس% 25سے محروم ہوگیا اور اس نتیجے میں بلوچستان کا حصہ صفررہ گیا ۔میں اسلم ریئسانی صاحب کو کچھ اور کریڈٹ دوںیا نہ دوں مگر اُنہوں نے اس معاملے میں انہوں نے اپنا موقف پیش کیا اور معاہدے پر دستخط سے انکار کردیا۔ اس کے بعد وہ کمپنیاں انٹر نیشنل کورٹ چلی گئی مگر ان شرائط پر اگر معاہدے پر دستخط کردیئے جاتے تو بلوچستان کیلئے یہ بہت بڑی معاشی تباہی ہوتی ۔ لہذا گوادر پورٹ ابھی دور ہے اور ثمرات کیلئے انتظار کم نا پڑ ے گا۔
س مری معاہدے کے تحت اقتدار منتقلی کے دوران وزارتِ خزانہ کی سپردگی پر دونو ں جماعتوں میں رسہ کشی جاری تھی ۔پھر یوں ہوا کہ ٹینکیوں اور بیکریوں سے کروڑوں روپے برآمد ہوئے ۔ کیا یہی وجہ تھی کہ نیشنل پارٹی اس وزارت کو چھوڑنے کیلئے رضامند نہیں تھی؟
ان دنوں چار وزارتوں پر نیشنل پارٹی اور پختونخواہ ملی عوامی پارٹی کے تحفظات تھے۔جس میں سے ایک وزارت خزانہ تھی اور missingاور وزارت خزانہ نیشنل پارٹی کے حصے میں آئیں ۔جب کہ PNDاور ایجوکیشن پختونخواہ کے حصے میں آئیں۔
وزارت خزانہ میں جو کچھ ہوا ہم نے اس سے انکار نہیں کیا ۔ہم نے وہ تمام اقدامات فوری طور پر کیئے جو کرنے چاہیے تھے۔جیسے کہ ہم نے نیشنل پارٹی کے وزیر کو بر طرف کیا ہم نے اس بات کو قبول کیا کہ اس وزارت میں بہت کچھ ہواہے ۔اور اس غلطی کو ہم نے تسلیم بھی کیا ہم نے یہ شور نہیں مچایاکہ یہ سازش کی گئی ۔خود ہماری پارٹی نے انکو انٹری کا مطالبہ کیا۔
دوسری بات یہ کہ نیشنل پارٹی نے اپنے ڈیمانڈز میں PNDکی بات کی تھی وزارت خزانہ کی نہیں تو لہذٰا یہ بات درست نہیں ہیکہ ہم نے اس وزارت کا مطالبہ کیا تھا۔
س گوادر پورٹ 2013سے سی پیک کا حصہ ہے چارسالہ طویل عرسہ کے باوجود اب تک گوادر مکمل طورپر فعال نہیں ہوسکا۔اس کی کیا وجہ ہوسکتی ہے؟
معاہدے کے تحت گوادر پورٹ آپریشن حکومتِ پاکستان نے چین کے حوالے کیا ہواہے اور میں یہ سمجھتاہوں کہ چین اسکو اپنے صوبے ’’شنجان‘‘ سے منسلک کریگے۔چین اپنے اس صوبے پر بھر پور طریقے سے کام کررہاہے اور آنے والے وقتوں میں’ ’شنجان‘‘ سے گوادر کو منسلک کیا جائیگا۔لہذٰا مجھے یہ محسوس ہوتاہے کہ یہ ساراعمل مکمل ہونے میں کچھ وقت درکارہوگا۔ البتہ جو مثبت عمل سامنے آیا ہے و ہ یہ ہے کہ پاکستان کے دو اہم منصوبے چین نے منظور کرلیئے ہیں اور مئی تک اس میں عمل درآمد شروع ہوجائے گا۔مگر گوادر پورٹ کا مسئلہ اس وقت تک حل نہیں ہوگا جب تک گوادر کوانڈس ہائی وے سے نہیں ملایاجائیگا ۔اس وقت تک گوادر اس پیمانے پر ترقی نہیں کرسکے گا ۔اچھی بات یہ ہیکہ اس منصوبے پر تقریبََا80%کام مکمل ہوچکا ہے۔بسیمہ سے لیکر خضدار تک اور پھر ونگوں سے لیکرآگے تک تقریََبا چار پانچ مہینوں تک مکمل ہوجائیگا۔اور پھر گوادر مکمل طور پر بحال ہوجائیگا۔
س کیا آپ اسب بات سے اتفاق کرتے ہیں کہ بلوچستان سے INSURGANCYکا خاتمہ ہوچکا ہے ۔اور صوبہ مکمل طور پر پُرامن ہے۔
اگر ہم پچھلے دس سالوں کے گزشتہ حالات کو اور آج کے بلوچستان کو د یکھیں تو جی ہاں ہم کہہ سکتے ہیں کہ INSURGANCYکا فی حدتک کم ہوچکی ہے۔کہیں کہیں کسی ایک ڈسٹرکٹ میں معمولی سی شدت موجود ہے۔
اور جب تک بیرونی امداد ملتی رہی گی کہیں نہ کہیں چھوٹے بڑے واقعات ہوتے رہے گے۔
وہ INSURGANCY جس کا آغاز ہواتھا۔اس وقت اس میں پڑھے لکھے اور دانشورلوگ شامل تھے۔اور اب اس میں جرائم افراد شامل ہوچکے ہیں۔جو اپنے جرائم کو چھپانے اور محفوظ پناہ گاہ کی تلاش کرنے کیلئے اس جدوجہد کو صرف استعمال کررہے ہیں اور انہی جرائم پیشہ قوتوں کو پاکستان مخالف قوتیں اپنے مقاصد کیلئے استعمال کررہی ہیں ۔اتنا سیکیورٹی فورسز نے لوگوں کو نہیں ماراجتنان لوگوں نے خود اپنے لوگوں کو ماراہے۔
خود ہماری پارٹی کے کئی افراد کو شہید کیا گیا۔جب آپ ریاست سے لڑنہیں سکتے تو اپنے ہی لوگو ں کو مارنا شروع کردیتے ہیں۔
س مردم شماری ہو سی پیک ہو اور یا چاہیے بلوچستان کے موجودہ حالات قوم پرست جماعتیں اپنے مطالبات تو کرتی رہتی ہیں ۔لیکن اپنی قو م کے کثیر البنیادی فائدے کیلئے یکجا نہیں ہوتے ۔کیا آپکو اپنے آنیوالے وقتوں میں کوئی گرینڈالائنس بنتانظرآتاہے؟
مجھے ایسا ہوتاممکن نظر نہیں آتاہے ۔باقی جماعتیں کے درمیان الائنس توممکن ہے مگر وہ نیشیل پارٹی سے شاید دوررہینگے۔لہذٰا مجھے نہیں لگتاکہ وہ ہمارے ساتھ کسی قسم کا کوئی الائنس کرینگے۔
س کیا آپ یہ توقع رکھتے ہیں کہ نیشنل پارٹی نے جس کارکردگی کا پچھلے چار سال سے مظاہرہ کیا ہے۔ آنے والے الیکشن میں اسے کوئی خاطر خواہ کامیابی حاصل ہوسکے گی؟
یہ حقیقی طور پر عوام کا فیصلہ ہوگا۔ کچھ نقصانات حکومت میں رہنے والی پارٹیوں کوہوتے ہیں اور لوگ آپ سے ناراض ہوجاتے ہیں کوئی ٹھیکے پر ناراض رہتا ہے تو کوئی نوکری نہ ملنے کی وجہ سے۔ نیشنل پا رٹی نے ہمیشہ پارٹی پالیسی کوترجیح دی ہے اور ہم آئندہ بھی ایسا کرتے رہے تو ضرور کا میا ب ہونگے۔
الیکشن کیلئے ہم نے جو لائحہ عمل اختیا ر کیا ہوا ہے ہم اس کی بھرپور تیاری کررہے ہیں اور اُمید رکھتے ہیں کہ ہمیں خاطر خواہ کامیابی حاصل ہوگی۔


Warning: A non-numeric value encountered in /home/balochistan/public_html/wp-content/themes/Newspaper/includes/wp_booster/td_block.php on line 2017