Incumbent Chief Minister, Nawab Sanaullah Khan Zehri, told Balochistan Inside in an interview that he is in favor of conducting census under supervision of Army. What’s the point of view of your party on this issue?

Every nation depends on its population for development. Unfortunately, in Balochistan census has always been made controversial. Influx of Afghan refugees in Pashtun areas of Balochistan and Quetta in aftermath of Soviet Invasion of 1979 exacerbated this issue. Normally, refugees are contained in camps but in case of Pakistan they were allowed to settle not only in border areas but also in center of the city. They made fake CNICs for themselves and the recent Mullah Mansoor incident is a proof of that. System of NADRA is very complicated and very difficult for a common citizen. However Afghan Refugees easily get Pakistani CNICs. Not only they have become part of the population but they have also becomes members of Quetta Chamber of Commerce and doing business. Afghan Refugees have also settled in Iran and Turkey after soviet invasion but did such things happen there what Balochistan is suffering? If Afghan Refugees can get CNICs and Passports after getting through a very complicated process then the process of Census is very easy for them. Census teams will knock at their doors and enter the data. Therefore, we demand that Afghan Refugees should be respectfully sent back to Afghanistan before conducting census because the condition of Afghanistan is must better as compared to Pakistan now. Afghanis are better off as compared to us in economic terms and today property in Kabul is much expense as compared to Quetta and even Karachi. Therefore they should respectfully return to their country. Those political forces that have used Afghans refugees for their vested interest and winning elections should be stopped form doing this. As far as the supervision of army is concerned, the elections are also conducted under their supervision and have there been any fair and free elections to date?

Taliban leader, Mullah Mansoor, was killed in the first drone attack in Balochistan. How you view this development?

I would say that “As you sow so shall you reap.” Same people were first refugees, then Taliban and now terrorists. Even now there are terminologies of good Taliban and bad Taliban. In the words of Nawab Raisani, Taliban are Taliban whether they are good or bad. So, if this distinction has been retained then good Taliban yesterday can be Bad Taliban today.

As far as Mullah Mansoor is concerned, Balochistan is a part of Pakistan, constitutionally if not practically, but still in Quetta and outskirts one feels that this is Kandahar and not Balochistan. One can’t blame any individual for this problem, entire system is responsible for this and we have raised voice against it for a long time. Sovereignty and security is for those who make laws to protect their people. Here, government and state is run with the help of the others so there is no question of sovereignty and security.

Hasil Bizenjo has recently been appointed as Federal Minister for Ports and Shipping. Do you think that his appointment will address the concerns of Baloch people about Gwadar port?

I do not think that this will bring any change for people of Balochistan in general and Gwadar in particular. No high profile person like Hasil Bizenjo can bring any betterment in situation of Balochistan even if they want. However it’s possible that their appointment can be used as a show piece to divert attention from the real issues of Balochistan. Even now there are no real powers with Federal Ministers and Chief Ministers which they can use to bring prosperity in the province. Those who have these powers want to keep Balochistan as a colony and loot its resources but don’t give it its fair share. I don’t think giving ministries will solve anything as long as powers are not given to the ministers. If you analyze the CPEC then you will easily find out that which province is the major beneficiary. Claims of development of Gwadar for last many years are only restricted to claims only. Punjab is getting the practical benefit of all the Chinese funded projects. However I can say that if the political stature of Hasil Bizenjo was like Ghaus Baksh Bizenjo then he would have done something to solve the problems.

Recently, NAB arrested Advisor to CM on Finance and Secretary Finance on charges of mega corruption. How you perceive this latest development?

If I praise this act of NAB then it would be too soon for that. This anti-corruption drive should not be restricted to just one department or political party. NAB crackdown against corruption should be indiscriminate and no personality and department should be spared.

I feel that this case will be decided based on political pressure and perhaps NAB will not be able to do what it wants to do. In this case, the strong forces can close down the cases in one day if they want. It’s must that cases should be decided without any deal. History of NAB is in front of us where people who had committed frauds paid half of the amount that they had looted and they were set free. That effectively made it easy for the criminals to commit the crime. There is no justice until and unless there is a punishment for a crime. This system has allowed safe exit for the corrupt people, therefore along with recovery there should also be strict punishment. Therefore, there should be an impartial and transparent inquiry of this case, without accepting any political pressure, so that it becomes an example for other people.

Whether it’s Chakar Khan University in Sibi or the Wadh University for which you have provided land, the objections of Governor Balochistan hint towards what?

It has been our bad luck that our provincial governments have always made comprises to protect their governments. In order to prioritize their ministries and rule they have even compromised on their powers. After the 18th Amendment, Governor should not have the powers of the Chancellor and this is what’s under practice in rest of the provinces. However in case of Balochistan whether it was government of Dr. Malik Baloch or the current government, they can’t even say that due to fears that their ally might not like it and their government can be in danger. Objecting on name of Chakar Khan with regard to Sibi is beyond comprehension. History is evident that Sibi was the fort of Chakar e Azam and will remain. Objections like this hint toward shear racism and one can’t change history on their whims.

As far as Wadh University is concerned, normally it’s said that Sardars are against development and they do not allow education in their areas. I have allocated 100 acres of my personal land for this purpose; In past Nawab Akbar Bugti did the same and many other Sardars have also done the same.

I am personally running a private English School in Wadh and more branches of that schools would also be opened. That was the reason that I announced donating my land for university. It has been over a year now and not only has governor objected to it but federal government has also not started any practical work. If I had donated this land for a housing scheme then till now, Inauguration boards would have been placed on it.

This is not the first time that exchange of harsh statements has taken place between National Party and BNP. Don’t you think that when Baloch nationalist parties will issue statements against each other like that then it will directly damage the national interests of Baloch people?

I totally agree with this Assertion. However when questions arise about corruption and incompetence of government then it’s must for us to respond. Journalists in Quetta asked me that huge amount of money is being recovered from water tankers and Bakeries then it means that there is someone behind this corruption.

It’s true that issuing statements is damaging but time is itself a test. Do all the steps taken in two and half year government were nationalistic in any way? When you had power, what you did to serve the people? They have to answer the question that who is a nationalist?

I accept the fact that both Nawaz Sharif and Shehbaz Sharif are Nationalistic in their approach. I always tell my fellows that a bureaucrat of Punjab is a nationalist and all politicians of Punjab, irrespective of which party they are in, when it comes to interest of their province then they become nationalists. When it comes to the issue of Kalabagh dam then all politicians of Punjab become nationalists. If they were not nationalists then today not entire country would have been under rule of Punjab. It’s another thing that they have a different treatment for other people. Unfortunately, when we get into power we forget nationalism.

When politicians of Balochistan are in opposition they talk about coast and natural resources. However when they join government they forget everything. Is it possible that tomorrow when your party comes into power you will also adopt similar attitude?

It’s unfortunate that transfer of power is taking place through compromises only. God forbids, if we got power in similar circumstances then our condition would not be different. If we did not make compromises then we will also not get power. If one can’t do anything due to lack of power then it’s acceptable however sacrificing your nation in greed of power is the worst thing to do.

Whether it is the Baloch insurgent groups of the political parties both lack unity. Tomorrow, if military establishment wants to negotiate with all of you then how is it possible?

This has been our bad luck since the day one and there has been increase in this tendency with the passage of time. Nationalists were divided in the past and today same is the condition of BSO. We have to learn from our past experiences and all Baloch leadership has to mutually sort out a solution of this matter. However it’s not less than a dilemma that we have failed to achieve unity. Here, I will first place my own self for this and after that our brothers who are still not willing to talk to anyone. Initially, all nationalists’ political parties supported each other on certain issues and also get united. However due to some immature friends, the differences compounded and these were more of personal differences rather than political differences. It’s time for the Baloch people to decide that who is right and who is wrong at this stage.  I tried my best to unite all the Baloch leaders but I am incompetent myself that I could not do that.

Its felt that role of BNP has been restricted to press statements only. At the moment, Gwadar is the center of attention for everyone and your party representatives have been elected from there has failed to do anything to solve the problems.

Fifteen years ago from today, when Pervez Musharraf announced the establishment of Gwadar Port and Coastal highway all political parties were on one side and BNP was on another side. Our stand is same as it was at that time. Our demands are still same that Baloch should have control of their resources, people of Gwadar should be prevented from turning into a minority in their own land, Military garrison should be abolished and military operations should be brought to an end. If you want to see development there then you should provide skill development training to people of Gwadar. They should also be provided vocational training so that people can have skills. At this moment NP blamed us that these people are from Jhalawan and they do not want development in Makran. During the government of Dr. Malik funds were issued under my and Hammal’s name but they were not released. Dr. Malik was the real owners of the funds allocated in the name of Hammal because they were spent using Deputy Commissioner. As far as my area is concerned, if 250 million funds were approved then hardly ever funds of 90 million were actually released. In such a situation how can a MPA solve the problems of his area?

انٹرویو: تانیہ بلوچ

سوال: موجودہ وزیر اعلیٰ بلوچستان جناب ثناہ اللہ زہری نے بلوچستان انسائیڈ کو دیئے گئے حالیہ انٹرویو میں مردم شماری کے حوالے سے کہا کہ وہ اس کے حق میں ہیں۔ اور اس کی شفافیت کے لیے وہ مردم شماری فوج کی نگرانی میں کروائیں گے۔اس سلسلے میں آپ کی جماعت کا کیا موقف ہے؟
جواب: کسی بھی قوم کی ترقی کا انحصار اس کی آبادی پر ہوتا ہے۔ بلوچستان کی بد قسمتی یہ رہی ہے کہ مردم شماری کو ہمیشہ متنازعہ رکھا گیا ہے جو بلاوجہ نہیں ہے بلکہ اس کے پیچھے وجوہات بھی ہیں۔ 1979 سے سویت یونین کی جنگ کے بعد بلوچستان بالخصوص پشتون علاقے اور اس کے ساتھ ساتھ کوئٹہ میں بھی افغان مہاجرین کی آبادکاری سے یہ مسئلہ پیچیدہ ہوگیا ۔ مہاجرین کے مسائل دنیا میں کئی ملکوں کو درپیش ہیں ایسا صرف پاکستان کے ساتھ نہیں ہورہا بلکہ پاکستان کی بنیاد کے اسباب میں سے ایک یہی ہے مگر مہاجرین کے لیے کیمپس لگائی جاتی ہیں۔ پتا نہیں ہمارے حکمران اسلام کے بڑے چاہنے والے تھے یا ڈالرز کے پرستار البتہ انہوں نے آنکھیں بند کرکے تمام مہاجرین کو نہ صرف سرحد پار آنے کی اجازت دی بلکہ کوئٹہ شہر میں ان کی آبادکاری بھی کی گئی۔ پھر ان مہاجرین نے نہ صرف اپنے لیے جعلی شناختی کارڈز بنائے بلکہ ملا منصور کا حالیہ واقعہ آپ کے سامنے ہے۔ جہاں تک نادرا کے سسٹم کا تعلق ہے تو یہ جاننا ہوگا کہ وہ کس قدر مشکل اور پیچیدہ ہے کہ ایک عام مقامی شہری کو بھی کئی مشکل مراحل سے گزرنا پڑتا ہے لیکن افغان مہاجرین آسانی سے بنا رہے ہیں۔ وہ نہ صرف یہاں کی آبادی کا حصہ بن چکے ہیں بلکہ کوئٹہ چیمبر آف کامرس کا حصہ بن کر کاروبار بھی کر رہے ہیں۔ اور یہ لوگ لاکھوں کی تعداد میں ہیں حالانکہ افغان مہاجر سویت جنگ کے وقت ایران اور ترکی بھی گئے تھے لیکن کیا وہاں یہ سب کچھ ہوا ؟جو بلوچستان کے ساتھ ہورہا ہے؟ اب جب کہ مہاجرین کے لیے نادرا سے شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بنانا کوئی مسئلہ نہیں تو مردم شماری کیا مشکل ہوگا؟ یہ تونہایت آسان کام ہے بس دروازہ کھٹکھٹایا اور اندراج کردیا۔ ایسی حالت میں شفافیت کیسے ممکن ہے؟ اس سلسلے میں ہمارا مطالبہ بس اتنا ہے کہ مردم شماری سے پہلے افغان مہاجرین کو باعزت طریقے سے واپس ان کے وطن بھیجا جائے۔ اب تو پاکستان کے مقابلے میں افغانستان کی حالت قدرے بہتر ہے اور معاشی حوالے سے بھی وہ ہم سے کچھ بہتر ہیں۔ آج کابل میں پراپرٹی کوئٹہ سے مہنگی ہے۔ مکانوں کے کرائے ڈالروں میں ہیں جو کراچی کی پراپرٹی سے بھی زیادہ ہے۔ لہٰذا اب ان کو باعزت طریقے سے واپس جانا چایئے۔ اور وہ سیاسی قوتیں جنہوں نے افغان مہاجرین کو اپنے مفادات کی خاطر استعمال کرکے انتخابات میں کامیابی حاصل کرنے کی کوشش کی ہے، اس سلسلے کو روکا جانا چاہیے۔ اب آپ دیکھیں کہ خیبر پختونخواہ میں موجود پارٹیاں افغان مہاجرین کے لیے الگ رائے رکھتی ہیں لیکن جب وہ بلوچستان میں افغان مہاجرین کی بات کرتے ہیں تو کہتے ہیں کہ یہ ہمارے بھائی ہیں۔ رہی بات فوج کی نگرانی کی تو انتخابات بھی تو فوج کی نگرانی میں ہوتے ہیں کیا �آج تک شفاف انتخابات ہوئے ہیں؟ یہ الگ بات ہے کہ فوج بھی ان سے بیزار ہوچکی ہے اور ہم اس آبادکاری سے کافی نقصان اٹھا چکے ہیں۔ آج دہشت گردی کی بات کی جارہی ہے کیا اس کے اشارے اسی طرف نہیں جارہے؟

سوال: بلوچستان میں ہونے والے ڈرون حملے میں ملا منصور مارا گیا۔ آپ اس کو کس طرح سے دیکھتے ہیں؟

جواب: اس پر میں یہی کہوں گا کہ ’’جو بویا وہ کاٹا‘‘ ۔1979 میں لفظ مہاجرین تھا۔ پھر طالبان، اور اب دہشت گرد۔ اور اس میں بھی آپ نے اچھے طالبان اور برے طالبان کی اصطلاح کا اضافہ کردیا۔ بقول نواب رئیسانی ، طالبان تو طالبان ہے چائے Good ہو یا Bad ۔ لیکن جب آپ نے یہ تفریق پیدا کی ہے تو کل کا اچھا طالبان ، آج برا طالبان بھی ہوسکتا ہے۔ جہاں تک ملا منصور کا سوال ہے تو آج آپ ملک کی سا لمیت کی بات کر رہے ہیں ، تو بلوچستان کو آپ عملاً نہ سہی، آئین کی حد تک تو پاکستان کا حصہ بنایا ہوا ہے، تو آپ دیکھیں کہ آج نہ صرف کوئٹہ میں بلکہ آپ اس سے باہر بھی نکلیں گے تو آپ کو محسوس ہوگا کہ آپ بلوچستان میں نہیں، قندھار میں گھوم رہے ہیں۔ اس کا ذمہ دار کون ہے؟ اب کسی ایک شخص کو اس کا ذمہ دارنہیں کہا جاسکتا ۔ آپ کا سسٹم اس کا ذمہ دار ہے جس کے لیے ہم عرصہ دراز سے آواز بلند کر رہے ہیں۔ سا لمیت اور وقار ان کا ہوتا ہے جو قوانین اپنے لوگوں کی حفاظت کے لیے بناتے ہیں لیکن ہمارے یہاں تو دوسروں کے سہارے حکومت اور ملک کو چلایا جاتا ہے تو پھر کیا ملکی وقار اور کیسی سا لمیت؟

سوال : حاصل بزنجو حال ہی میں وفاقی وزیر برائے پورٹ اینڈ شپنگ مقرر کئے گئے کیا آپ سمجھتے ہیں کہ ان کی یہ تعنیاتی گوادر پورٹ سے متعلق بلوچ عوام کے خدشات کو دور کر سکے گی ؟

جواب: میں نہیں سمجھتا کہ یہ اہل بلوچستان بالخصوص گوادر کے عوام کے لئے کسی قسم کی تبدیلی لائے گی ، حاصل بزنجو جیسے کئی بڑے سیاسی قدآور شخصیات چاہتے ہوئے بھی بلوچستان کے حالات میں تبدیلی نہیں لاسکتے، ہاں البتہ یہ ممکن ہو سکتا ہے کہ بلوچستان کے حقیقی مسائل سے توجہ ہٹانے کے لئے صرف دیکھنے کی حد تک ایک ’’شو پیس‘‘کی حیثیت دی جائے ۔کیونکہ اختیارات ابھی تک نہ کسی وزیر کے پاس ہیں اور نہ ہی کسی وزیر اعلی کو دیئے گئے ہیں کہ وہ صوبے کی خوشحالی کے لئے کام کر سکے۔جہاں یہ اختیارات رکھے گئے ہیں وہ بلوچستان کو ہمیشہ ایک کالونی کا درجہ دیتے ہیں جہاں کے وسائل تو لوٹے جاتے ہیں مگر بلوچستان کا حصہ اسے نہیں دیا جاتا، مجھے نہیں لگتا کہ محض وزارتیں دینے سے مسائل حل ہو سکتے ہیں جب تک اختیارات نہیں دیئے جاتے۔مجھے یاد پڑتا ہے کہ2004 میں جب گوادر کے دورے پر گیا تھا گوادر شہر سے ایئرپورٹ کے جانب جاتے ہوئے میں نے اپنے ساتھیوں کو اس بورڈ کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا تھا جس پر لکھا تھا کہ لاہور کتنے کلومیٹر فاصلے پر ہے در حقیقت یہی ہے کہ ترقی لاہور سے کتنے کلومیٹر کے فاصلے پر ہے ۔ سی پیک کا معائنہ کریں تو آپ باآسانی دیکھ سکیں گے کہ تمام تر ترقیاتی منصوبے کس صوبے کے لئے ہیں اتنے عرصے سے گوادر کی ترقی صرف باتوں کی حد تک محدود ہے ، اور چین کے تمام عملی منصوبوں کا فائدہ پنجاب کو حاصل ہو رہا ہے۔ ہاں البتہ حاصل خان بزنجو کا سیاسی قد میر حاصل خان بزنجو کے برابر ہوتا تو میں یہ کہہ سکتا تھا کہ وہ ان مسائل کے حل کے لئے ضرور کچھ کرسکتے ہیں۔

سوال: سیکریٹری خزانہ اور مشیر خزانہ کی کرپشن کے حوالے سے جو گرفتاریاں عمل میں آئی ہیں۔ آپ نیب کے اس اقدام کو کس طرح دیکھتے ہیں؟

جواب: اگر میں نیب کی تعریف کروں تو یہ قبل از وقت ہوگی۔ سب سے پہلے تو اسے کسی ایک محکمے یا کسی ایک جماعت تک محدود نہیں کرنا چایئے۔ یہ کاروائیاں بالاتفریق ہونی چائیے اور اس سے کوئی بھی پارٹی یا شخصیت بالاتر نہیں ہونا چایئے۔ مجھے یہ محسوس ہورہا ہے کہ ہوسکتا ہے کہ کسی سیاسی دباؤ کے ذریعے اس مقدمے کا فیصلہ کیا جائے۔ اور شاید نیب وہ کام نہ کر پائے جو وہ کرنا چا رہا ہے۔ اگر اس ضمن میں وہ مخصوص قوتیں چائیں تو وہ ان کیسوں فیصلہ کرکے ان کو ایک ہی دن میں ختم کر سکتی ہیں۔اگر وہ ادارے بغیر کسی ڈیل کے یہ فیصلہ کرنا چائیں۔ نیب کے ماضی کی تاریخ ہمارے سامنے ہے۔یعنی جتنا فراڈ کیا ہے اس کا آدھا حصہ دو اور کیس ختم۔ اس طرح تو مجرم کے لیے ہم جرم کو آسان بنا رہے ہیں۔ اور یہ انصاف نہیں ہے جب تک کہ جرم کی سزا نہ ہو۔ آپ نے چوری کے بعد راہِ فرار بھی پیش کر دیا ہے۔ ٰلہٰذا میں سمجھتا ہوں کہ ریکوری کے بعد سزا بھی ہونی چائیے۔ اور اس واقعے کی شفاف اور بغیر کسی سیاسی دباؤ کے مکمل انکوائری ہونی چائیے۔ تاکہ دیگر افراد کے لیے یہ ایک مثال بن جائے۔

سوال: چاکر خان یونیورسٹی کی بات کریں یا پھر وڈھ میں آپ کی طرف سے یونیورسٹی کے لیے دی گئی زمین ہو، اس پر گورنر صاحب کے اعتراضات کس بات کی طرف اشارہ کررہے ہیں؟

جواب:یہ ہماری بد قسمتی رہی ہے کہ ہماری حکومتوں نے اپنے اقتدار کی کرسیوں کو مضبوط کرنے کے لیے ہمیشہ سمجھوتوں کا سہارا لیا ہے۔ وہ اپنی وزارتوں اور اقتدار کو ہمیشہ سے اولین ترجیع دیتی رہی ہیں اور اپنے اختیارات سے بھی ہمیشہ سمجھوتا کرتے آرہے ہیں۔ حالانکہ اٹھارویں ترمیم کے بعد اب گورنر چانسلر کے اختیارات نہیں رکھتا اور یہ دیگر صوبوں میں عملاً موجود ہے لیکن بلوچستان میں چونکہ مخلوط حکومت ہے تو چائے وہ ڈاکٹر مالک کی سابقہ حکومت ہو یا حالیہ حکومت، وہ اس بات کا اظہار کرنے سے بھی گھبراتے ہیں کہ کہیں ان کی اتحادی جماعتیں ناراض نہ ہوں اور ان کی حکومت خطرے میں نہ پڑ جائے۔ چاکر خان کے نام پر اعتراض اور سبی کے حوالے اعتراض کرنا سمجھ سے بالاتر ہے۔ تاریخ گواہ ہے اور ہمیشہ رہے گی کہ سبی چاکرِ اعظم کا قلعہ رہا ہے اور رہے گا۔ اس طرح کے تحفظات سے خود تعصب کی بو آتی ہے۔ آپ تاریخ کو اپنی مرضی سے موڑ نہیں سکتے۔ جہاں تک وڈھ یونیورسٹی کا تعلق ہے تو یہ کہا جاتا ہے کہ سردار ترقی کے خلاف ہوتے ہیں اور اپنے علاقوں میں تعلیم عام ہونے نہیں دیتے۔ اور میں نے تو اپنی طرف سے 100 ایکڑ مختص کیے۔ نواب اکبر خان بگٹی نے بھی اسی طرح کے اقدامات کیئے اور دیگر سرداروں نے بھی اس طرح کے اقدامات کیے۔ وڈھ میں ، میں خود ذاتی طور پر ایک پرائیوٹ انگلش اسکول چلارہا ہوں اور اس کی مزید شاخیں بھی کھولیں گے۔ اسی وجہ سے میں نے اپنی زمین یونیورسٹی کے لیے دینے کا اعلان کیا۔ ایک سال گزر گیا ہے ، ایک تو گورنر صاحب کا اعتراض ، دوسری طرف وفاق نے بھی ابھی تک کوئی عملی کام شروع نہیں کیا۔ یہی زمین اگر میں ہاؤسنگ اسکیم کے لیے دیتا تو اب تک افتتاحی تختیاں بھی لگ چکی ہوتیں۔

سوال: یہ پہلا موقع نہیں ہے کہ نیشل پارٹی اور بی این پی کے درمیان ، تلخ بیانات کا ایک سلسلہ جاری ہے، کیا آپ نہیں سمجھتے کہ قوم پرست جماعتیں اس طرح ایک دوسرے کے خلاف بیان بازی سے کام لینگے تو اس کا نقصان بلوچ قومی مفادات کو برائے راست ہوگا؟

جواب: بی بی میں آپ کی بات سے مکمل اتفاق کرتا ہوں مگر جب کرپشن یا حکومتی نااہلی کے حوالے سے سوالات آتے ہیں تو ان کا جواب دینا بنتا ہے۔ کوئٹہ میں موجود صحافیوں نے جب مجھ سے یہ سوال کیا کہ اتنی بڑی رقم پانی کی ٹینک اور بیکریوں سے نکل رہی ہے، کوئی تو ہے اس کے پیچے۔ حقیقت ہے کہ بیان بازی سے نقصان ہوتا ہے مگر وقت خود ایک پیمانہ ہے۔ ڈھائی سالہ دورِ حکومت میں کیا ان کے تمام اقدامات قوم پرستانہ رہے ہیں؟ جب اقتدار آپ کے پاس رہا تو آپ نے اپنی قوم کی کیا خدمت کی؟ اس کا ان کو جواب دینا پڑے گا کہ قوم پرست کس کو کہتے ہیں؟ میں اس حقیقت کو تسلیم کروں گا کہ میاں شہباز شریف اور نواز شریف اپنی عمل سے قوم پرستی کر رہے ہیں۔ میں اکثر اپنے ساتھیوں کو بھی کہتا ہوں کہ پنجاب کا بیوروکریٹ بھی قوم پرست ہے۔ سیاست دان ، چاہے اس کا تعلق کسی بھی پارٹی سے ہو، جب بات ان کی صوبے کی آتی ہے تو وہ قوم پرست بن جاتا ہے ۔ کالا باغ ڈیم کی بات آئی تو پنجاب کے تمام سیاست دان قوم پرست بنے۔ اگر وہ قوم پرست نہ ہوتے تو پورے کا پورا ملک پنجاب کے زیرِ حکومت نہ ہوتا۔ یہ بات الگ ہے کہ وہ دوسروں کے ساتھ ان کا رویہ مختلف ہے۔ افسوس جب ہمیں حکومت ملتی ہے تو ہم قوم پرستی بھول جاتے ہیں۔

سوال: سردار صاحب جب ہم اپوزیشن میں ہوتے ہیں تو بلوچ ساحل ووسائل کی بات کرتے ہیں لیکن جب حکومت میں آتے ہیں تو ان تمام باتوں کو بھول جاتے ہیں۔ کیا یہ عین ممکن ہے کہ اگر کل آپ کی پارٹی حکومت میں آئی تو اس کا طرزِ عمل بھی کچھ اسی طرح کا ہوگا؟

جواب: بدقسمتی سے اقتدار کی منتقلی آج کل سمجھوتوں سے چل رہی ہے۔ ایک معاہدہ کیا جاتا ہے اگر خدا ناخواستہ ہمیں کچھ اس صورتِ حال میں اقتدار نصیب ہوا تو ہمار حال بھی اسی طرح ہوگا۔ اور اگر ہم نے سمجھوتا نہ کیا، تو ہمیں اقتدار بھی نہیں ملے گا۔ میں کہتا ہوں کہ اگر آپ اختیارات نہ ہونے کی وجہ سے کچھ نہیں کرسکتے تو یہ قابلِ قبول ہے مگر آپ اپنی قوم کو اقتدار کی لالچ میں آگ میں جونک دیتے ہیں تو یہ اُس سے بھی بری صورتِ حال ہے۔

سوال: چاہے بلوچ آزادی پسند تحریکیں ہو یا بلوچ سیاسی قوتیں، دونوں جگہ اتحاد کا فقدان ہے۔ کل کو کوئی عسکری قیادت یا اسٹیبلشمنٹ آپ لوگوں کو ایک ساتھ بٹھا کر بات کرنا چاہے تو یہ کیسے ممکن ہوسکتا ہے؟

جواب: یہ بدقسمتی ہماری روزِ اول سے رہی ہے اور وقت کے ساتھ ساتھ اس میں اضافہ ہوتا جارہا ہے۔ قوم پرست پہلے بھی بٹے ہوئے تھے اور اب آج بھی ہیں۔ بی ایس او بھی اسی صورتِ حال کا شکار ہے۔ ہمیں اپنے پرانے تجربات سے سیکھنا چایئے تھا۔ اور تمام بلوچ قیادت کو سر جوڑ کر اس کا حل نکالنا چایئے تھا، لیکن یہ کسی المیے سے کم نہیں ہے کہ ہم اس میں ناکام رہے ہیں۔ اس میں سب سے پہلے میں اپنے آپ کو اس کا قصوروار قرار دوں گا۔ اس کے بعد اپنے ان بھائیوں کو جو آج بھی کسی سے بات کرنے کے لیے تیار نہیں ہیں۔ شروع میں تمام قوم پرست جماعتیں کسی نہ کسی مسئلے پر ایک دوسرے کی حمایت بھی کرتی تھیں اور اکٹھا بھی ہوجاتی تھیں لیکن چند نادان دوستوں کی وجہ سے اختلافات بڑتے چلے گئے جس میں سیاسی اختلافات کم اور ذاتی اختلافات زیادہ شامل ہوگئے۔ ہم سب اپنی اپنی ڈیڑھ انچ کی مسجدوں میں بیٹھے ہوئے ہیں۔ اب شاید وقت یا بلوچ قوم اس کا فیصلہ کرسکے کہ کون غلط اور کون صحیح ہے۔ میں نے کافی کوشش کی کہ سب کو ایک ساتھ بٹھا سکوں لیکن شاید میں ہی اتنا نالائق تھا کہ یہ نہیں کرسکا۔

سوال: سردار صاحب! بی این پی کا کردار اب یوں لگتا ہے کہ صرف بیانات کے حد تک رہ گیا ہے۔ اس وقت سب کی نگائیں گوادر کی جانب مرکوزہیں اور وہاں سے منتخب نمائندے گوادر کے بنیادی مسائل کے حل کے لیے کچھ بھی نہیں کرسکے ہیں۔

جواب: آج سے پندرہ سال پہلے جب مشرف نے گوادر کوسٹل ہائی وے اور گوادر پورٹ کا اعلان کیا تھا ، تمام سیاسی جماعتیں ایک طرف اور بی این پی ایک طرف تھی۔ ہمارے جو نکات تھے، آج بھی ہم وہی کہہ رہے ہیں کہ بلوچ کا اس کے ساحل و وسائل پر حق ہو۔ بلوچ قوم بالخصوص گوادر کی عوام کا اقلیت میں تبدیلی کا اہم خدشہ ہے۔ فوجی چھاونیاں ختم کی جائیں ۔ فوجی آپریشنز ختم کیے جائیں۔ اور اگر آپ وہاں ترقی چاہتے ہیں تو ، آنے والے وقتوں کے لیے وہاں کے مقامی لوگوں کو اسکل ڈیولپمنٹ کے لیے ووکیشنل ٹریننگ دی جائے۔ تاکہ دس سال بعد وہاں لوگ ہنر مند ہوں۔ اس وقت نیشل پارٹی نے ہم پر یہ الزام عائد کیا ہے کہ یہ لوگ جھالاوان کے ہیں اور مکران کی ترقی نہیں چاہتے ہیں۔ سی پیک کے حوالے سے جو پہلی میٹنگ کی گئی اس میں بھی میٹنگ کے دوران ہماری جماعت کو مدعو نہیں کیا گیا ۔ ہاں البتہ چائے پارٹی کی دعوت دی گئی ۔ ڈاکٹر مالک کے دورِ حکومت میں میرے اور حمل کے نام پر تو فنڈز آتے تھے مگر دیئے نہیں جاتے تھے۔ حمل کو دیئے گئے فنڈز کے اصل مالک ، ڈاکٹر صاحب تھے۔ کیونکہ وہ ڈپٹی کمیشنر کے ذریعے دیئے جاتے تھے۔ اور جہاں تک میرے علاقے کی بات ہے تو اگر پچیس کروڑ کی منظوری کا فنڈ ہے تو مشکل سے نو کروڑ دیئے جاتے تھے۔ اسی صورتِ حال میں کوئی بھی ایم پی اے اپنے علاقے کے لاتعداد مسائل کو کیسے حل کرسکتا ہے۔