Almost 19 years ago, one power plant and a refinery were established in Hub town of Balochistan These large companies were set up with the promise of improving the living standard of local people and providing them with jobs. Today, these two companies, in words of local people, have proved to be anacondas for people of Hub because they have only caused severe damage to them. In connivance with local politicians, officials of labor and environment departments, these two companies are violating international laws relating to environment control and employee protection.

” Eye-camp is only held once a year and the so-called medical center is one smelly-room that doesn’t even offer free tablets to the patients.”

Coastal areas of Hub and Gaddani have been home to several small settlements inhibited by settlers form Naal tehsil in Balochistan and some areas of Sindh, for centuries. Nako Eido, one such settler in Hub narrated ordeal of people of Hub and Gaddani to Balochistan Inside. Nako Eido says that, “We were not very rich but living comfortable lives. Sea was our primary source of livelihood and our health was exemplary, as evident by the fact that, we routinely walked form Hub to Karachi.” Hinting towards the arrival of two anacondas in the region, Nako Eido claims that now we suffer from acute poverty and several types of illnesses. “These two companies came to this region with hopes of bright future for us but now they are not even providing us Disprin table in the name of medical care for illnesses caused due to them,” lamented a frustrated Nako Eido.

Due to the air pollution caused by two energy giants, people of hub, in huge numbers, are suffering from serious ailments such as skin diseases, rashes and respiratory diseases. These claims are backed up by the fact that majority of hub patients receiving treatment in civil hospital, Mowach Goth hospital, Lyari hospital and Jinnah hospital suffer from the aforementioned aliments.

When Balochistan Inside contacted both the companies for comment; one of them out rightly refused to comment and other one said that we have established an eye-camp and a Medical center in Hub as a part of our Corporate Social Responsibility. Balochistan Inside found out, through its investigations, that eye-camp is only held once a year and the so-called medical center is one smelly-room that doesn’t even offer free tablets to the patients.

A women sitting in medical center confirmed to Balochistan Inside the types of illnesses faced by people. When Balochistan inside asked the lady, sitting in Medical center, whether she is a doctor? Her reply was in negative. When asked whether she is a medical officer? Again she said no. When asked what she does in the so-called medical center? she replied that, she can only check blood pressure of patients.

Moving from health to education, a famous nongovernmental organization (NGO) was awarded the contract to run a school by one of these companies. Overwhelming majority of students in that school belongs from Hub city and almost none form the surrounding villages. The reason is the difficult admission test conducted by this school, prior to admissions, which students of surrounding villages can’t pass. As seen by the author herself, donkeys are kept in the government schools of surrounding areas then how come students of this area can be competent enough to pass any admission test?

A local councilor, who requested not to be named, termed Hub and Gaddani “the empire of two anacondas,” who can do anything in this area with impunity. Local councilor revealed that even protestors who protest against these anacondas are not spared by them. “Protestors are picked up by people in blue vehicles, hinting towards Police, allegedly on the instructions of these companies.” Expressing the apathy of government servants and local politicians, Local councilor continued, “there is no one who can listen our plea against these companies and we are totally helpless.”

Two anacondas of hub manage to get away with everything by allegedly keeping the local politicians happy. Balochistan Inside learnt from local people that political stalwarts form this area, whether “with beards or without beards” receive their share from time to time. In return they remain silent on whatever damage the two anacondas cause to the region. When there is any delay in receipt of their share then these politicians ask their henchmen to protest against these companies in an attempt to blackmail them and extort the price for remaining silent.

” While Balochistan government is playing the role of a silent spectator, the question arises, that which messiah will come to rescue local people and help them get rid of these two anacondas? “

Labor and environmental departments of government of Balochistan are empowered to regulate the functioning of two anacondas in Hub. Apparently, they are unmoved by all the damage caused by these companies to people of Hub and Gaddani. Fida Shahwani, director Labor department in Hub, gave a stunning reply when asked by Balochistan Inside whether the two said companies are abiding by international law to provide 5 percent jobs to locals. He replied, “These companies have not submitted report of this year and I am unaware about last year.” According to local people, this officer strictly deals with small factories but surprisingly he is unaware of the labor recruitment in two energy giants.

Balochistan Inside talked to Ali Bizenjo, officer of environment department based in Quetta, who also expressed his helplessness in this matter. Mr. Bizenjo claimed that these companies don’t allow staff of environment department to visit their premises for inspection. He promised that he will talk to his staff members bout this problem.

One is left with no choice but to conclude that either these officers are innocent children unaware of everything or the allegations of local population about them are true. Local people allege that officers of Labor and Environment departments are in cahoots with two anacondas and receive their share in exchange for remaining silent on violation of laws by two anacondas.

While Balochistan government is playing the role of a silent spectator, the question arises, that which messiah will come to rescue local people and help them get rid of these two nacondas?

One of these anacondas is planning to install a coal-powered electricity generation unit in near future. In the absence of a robust regulatory mechanism and collusion of politicians and government officers with these anacondas, situation will further aggravate in Hub and Gaddani. Unfortunately, Hub and its outskirts are destined to be exploited as another Post-Nuclear test Chagai.

حب کے کنارے بسے دو اژدھے

تانیہ بلوچ

تقریبا 19 سال قبل بلوچستان کے شہر حب میں ایک پاور پلانٹ اور ایک ریفائنری قائم کی گئی۔ یہ کمپنیاں ان وعدوں کے ساتھ قائم ہوئیں کہ مقامی افراد کے معیار زندگی میں بہتری آئے گی اور ان کو ملازمتیں فراہم کی جائیں گی۔ مقامی افراد کے الفاظ کے مطابق آج ان دونوں کمپنیوں نے حب کے لوگوں کے لئے اپنے آپ کو اژدھا ثابت کردیا ہے کیونکہ ان کمپنیوں نے مقامی لوگوں کو ہمیشہ شدید نقصان ہی پہنچایا ہے۔ اس ضمن میں مقامی سیاستدانوں، محکمہ لیبر اور ماحولیات کے حکام کی ملی بھگت سے دونوں کمپنیاں ماحولیاتی تحفظ اور ملازمین کے تحفظ سے متعلق بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی کررہی ہیں۔

آئی کیمپ سال میں ایک بار لگایا جاتا ہے اور جسے وہ موصوف افسر میڈیکل سینٹر کا نام دے رہے تھے وہ ایک گندہ، بدبودار کمرہ ہے جہاں دوا کے نام پر ایک گولی بھی موجود نہیں

حب اور گڈانی کے ساحل پر چھوٹے بڑے بہت سے گوٹھ آباد ہیں جہاں اندرون سندھ اور بلوچستان کے ضلع نال سمیت مختلف علاقوں سے کئی سو سال پہلے نقل مکانی کئے ہوئے لوگ آباد ہیں۔ حب میں رہائش پذیر انہی میں سے ایک آبادکار ناکو عیدو کے مطابق ،”ہم لوگ بہت امیر نہ سہی لیکن ہر اعتبار سے خوشحال لوگ ہوا کرتے تھے، ہماری صحت قابل دید تھی اور سمندر ہمارا روزگار تھا۔ ہم حب سے کراچی تک کا میلوں سفر معمول کے مطابق پیدل طے کیا کرتے تھے، جن میں بزرگ افراد بھی شامل ہوتے تھے مگر کبھی ایسی غربت اور بیماریاں نہیں دیکھیں جو آج دیکھ رہے ہیں۔” ناکو نے اپنا اشارہ ان دو اژدھوں کی طرف کرتے ہوئے کہا ،” انہوں نے ہماری زندگیاں ابتر کردیں، سہانے خواب دکھائے مگر ان مریضوں کو علاج کے نام پر دینے کے لئے اب ان کے پاس ڈسپرین کی گولیاں تک نہیں ہیں، حالانکہ انہی کی وجہ سے ہم بیماریوں میں مبتلا ہوئے۔ “ 

دھواں اگلتے بجلی کے پلانٹ اور ان آئل ریفائنریوں نے نہ صرف یہاں کے مقامی افراد کی زندگی اجیرن کردی ہے اور انہیں شدید قسم کی خارش، دیگر جلدی امراض اور سانس (دمے) کے مرض میں مبتلا کردیا ہے۔ ان حقائق کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ متذکرہ بالا بیماریوں کے علاج کے لئے حب کے بیشتر مریض سول اسپتال، جناح اسپتال، مواچھ گوٹھ اسپتال اور لیاری کے اسپتالوں میں نظر آتے ہیں۔

جب بلوچستان ان سائیڈ نے دونوں کمپنیوں سے رابطہ کیا تو ان میں سے ایک نے تو بات کرنے سے صاف ہی انکار کردیا اور دوسری کمپنی کے نمائندے نے بتایا کہ ہم نے اپنی کاروباری سماجی ذمہ داری کے طور پر حب میں ایک آئی کیمپ اور ایک میڈیکل سینٹر قائم کیا ہے۔ بلوچستان ان سائیڈ نے اپنی تحقیق کے دوران یہ دریافت کیا کہ آئی کیمپ سال میں ایک بار لگایا جاتا ہے اور جسے وہ موصوف افسر میڈیکل سینٹر کا نام دے رہے تھے وہ ایک گندہ، بدبودار کمرہ ہے جہاں دوا کے نام پر ایک گولی بھی موجود نہیں۔ 

وہاں براجمان ایک خاتون نے بلوچستان ان سائیڈ کی جانب سے لوگوں کے مختلف بیماریوں میں مبتلا ہونے کی تصدیق کی۔ جب بلوچستان ان سائیڈ نے میڈیکل سینٹر میں بیٹھی خاتون سے استفسار کیا کہ آیا وہ ڈاکٹر ہے ؟ خاتون کا جواب انکار میں تھا۔ پھر پوچھا کہ کیا آپ میڈیکل آفیسر ہیں؟ تو ایک بار پھر اس نے نفی میں سر ہلایا ۔ جب ان سے استفسار کیا کہ وہ اس نام نہاد میڈیکل سینٹر میں کیا کرتی ہیں تو ان کا جواب تھا کہ وہ مریضوں کے صرف بلڈ پریشر چیک کرسکتی ہیں۔ 

یہ احوال تو صحت سے متعلق تھا ،اب تعلیمی فنڈنگ کی بھی بات کر لیتے ہیں۔ ایک معروف این۔جی۔او کو ان میں ایک کمپنی کی جانب سے اسکول کا ٹھیکہ دیا گیا، اس اسکول میں ارد گرد کے علاقوں کے بچے نہ ہونے کے برابر ہیں، زیادہ تر بچے حب شہر سے تعلیم حاصل کرنے آتے ہیں۔ اس کی وجہ اسکول انتظامیہ کی پالیسی ہے کہ داخلے سے قبل بچے ان کا ٹیسٹ پاس کریں پھر داخلہ ملے گا جو ارد گرد کے دیہات سے آنے والے بچے پاس نہیں کرسکتے۔ راقم نے ارد گرد کے علاقوں کے سرکاری اسکولوں میں خود گدھے بندھے ہوئے ملاحظہ کیا ہے۔ پھر وہاں اتنی استعداد کے حامل بچے کیسے موجود ہوں گے جو داخلے کے لئے ان کا امتحان پاس کرسکیں۔

ایک مقامی کونسلر نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر انتہائی ناراضگی سے حب اور گڈانی کو ان اژدھوں کی سلطنت قرار دیا جو اس علاقے میں آزادی کے ساتھ کچھ بھی کرسکتے ہیں۔ انہوں نے انکشاف کیا کہ جو افراد ان اژدھوں کے خلاف احتجاج کرتے ہیں، ان کو نہیں بخشا جاتا۔ انہوں نے پولیس کی نیلی گاڑیوں کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ان کمپنیوں کے مبینہ احکامات پر نیلی گاڑیوں میں مظاہرین کو اٹھا کر لے جایا جاتا ہے۔ مقامی کونسلر نے سرکاری ملازمین اور مقامی سیاستدانوں کی حالت زار پر اظہار افسوس کرتے ہوئے کہا کہ ان کمپنیوں کے خلاف یہاں کوئی بھی ہماری التجاؤں کو سننے کے لئے تیار نہیں ہے، ہم مکمل طور پر بے یارو مددگار ہیں۔

حب کے دونوں اژدھے مبینہ طور پر مقامی سیاستدانوں کو ہر طرح سے خوش رکھنے کی کوشش کرتے ہیں۔ بلوچستان ان سائیڈ کو مقامی لوگوں سے معلوم ہوا کہ اس علاقے کی سیاسی شخصیات، چاہے وہ باریش ہوں یا کلین شیو ہوں، وقتا فوقتا اپنا حصہ وصول کرتی رہتی ہیں۔ جب حصے کی وصولی میں سیاستدانوں کو کبھی تاخیر ہوتی ہے تو وہ اپنے کارندوں کے ذریعے ان کمپنیوں کے خلاف احتجاج کرتے ہیں تاکہ انہیں بلیک میل کیا جائے اور خاموش رہنے کے لئے وہ بھتہ دیں۔

بلوچستان حکومت اس معاملے پر خاموش تماشائی کا کردار ادا کررہی ہے۔ اس پر سوال اٹھتا ہے کہ مقامی لوگوں کو بچانے کے لئے کون مسیحا آئے گا اور ان اژدھوں سے مقامی آبادی کی جان چھڑائے گا؟

بلوچستان حکومت کے محکمہ ماحولیات اور لیبر حب میں ان دو اژدھوں کو کنٹرول میں رکھنے کے لئے بااختیار ہیں۔ بظاہر، وہ حب اور گڈانی کے لوگوں کو پہنچنے والے نقصان پر خاموش ہیں۔ لیبر ڈائریکٹر فدا شہوانی سے جب یہ پوچھا گیا کہ بین الاقوامی قانون کے تحت یہ کمپنیاں پابند ہیں کہ مقامی افراد کو 5فیصد نوکریاں فراہم کریں تو کیا وہ اس پر عمل درآمد کرتی ہیں؟ جس پر شہوانی صاحب نے حیران کن جواب دیا ،’اس سال کی رپورٹ تو ان کمپنیوں نے جمع نہیں کروائی اور پچھلے سال کا مجھے علم نہیں۔’ مقامی لوگوں کے مطابق یہ افسر چھوٹی فیکٹریوں کے ساتھ سختی سے پیش آتا ہے لیکن حیران کن طور پر توانائی کی ان دو بڑی کمپنیوں میں مزدوروں کی بھرتی سے لاعلم ہے۔ 

بلوچستان ان سائیڈ سے گفتگو میں کوئٹہ میں محکمہ ماحولیات کے افسر جناب علی بزنجو صاحب اپنی بے چارگی کا اعتراف کرتے ہوئے فرماتے ہیں، “یقین جانئے ، یہ محکمہ ماحولیات کے عملے کو کمپنیوں کے معائنے کے لئے دورہ کرنے کی اجازت نہیں دیتے۔” تاہم انہوں نے وعدہ کیا کہ وہ اپنے افسران کے سامنے یہ مسئلہ ضرور اٹھائیں گے۔ 

اب اس نتیجے پر پہنچے بغیر کوئی چارہ نہیں رہتا کہ یا تو یہ افسران معصوم بچوں کی طرح ہر چیز سے لاعلم ہیں یا پھر مقامی آبادی کی جانب سے ان پر عائد کئے جانے والے الزامات درست ہیں۔ مقامی لوگ الزام عائد کرتے ہیں کہ محکمہ لیبر اور ماحولیات ان دو اژدھوں کے آلہ کار ہیں اور قوانین کی خلاف ورزی پر دونوں محکموں کے حکام خاموشی اختیار کرکے اپنا حصہ وصول کرلیتے ہیں۔ 

بلوچستان حکومت اس معاملے پر خاموش تماشائی کا کردار ادا کررہی ہے۔ اس پر سوال اٹھتا ہے کہ مقامی لوگوں کو بچانے کے لئے کون مسیحا آئے گا اور ان اژدھوں سے مقامی آبادی کی جان چھڑائے گا؟

ان میں سے ایک اژدھا مستقبل قریب میں کوئلے سے بجلی پیدا کرنے والے یونٹ کی تنصیب کی منصوبہ بندی کررہا ہے۔ ایک متحرک ریگولیٹری کے فرائض سرانجام دینے اور سیاستدانوں اور سرکاری حکام کی ان دو اژدھوں کے ساتھ ملی بھگت سے حب اور گڈانی میں صورتحال مزید خراب ہوجائے گی۔ بد قسمتی سے جس طرح ایٹمی دھماکوں کے لئے چاغی کو استعمال کیا گیا ، اسی طرح حب اور اس کے مضافات کا استحصال ہونا بھی مقدر ہے۔


Warning: A non-numeric value encountered in /home/balochistan/public_html/wp-content/themes/Newspaper/includes/wp_booster/td_block.php on line 2017