In the backdrop of deceptive educational emergency presented by the ex-Chief Minister of Balochistan in January 2014, it is appropriate to raise the questions again for the abysmal state of education particularly for females in the province.

Unequivocal path to strategic and sustainable socioeconomic development is only possible when females have equal educational opportunities however the state of education in the province remains unchanged and over the years if it is evolving, then so far there are no signs that it is evolving in the right direction.

On the other hand there’s dearth of accurate statistics and on ground information that draft the true stories of the issues related to female education in the province. There is not so much of feudal rule or social restrictions and religious extremism in most parts of the province that confine women as compared to KPK, yet 90% of the girls in rural Balochistan are deprived of primary level education and more than 95% remain deprived of proper higher education in the semi-urban regions.

In 2000 along with 163 other nations, Pakistan signed “Dakar Framework of Action” that set six goals to be achieved by 2015. The Goal 2 of Article 7 of it says:

“Ensuring that by 2015 all children, particularly girls, children with difficult circumstances and those belonging to ethnic minorities, have access to and complete free and compulsory primary education of good quality”

Indeed children of Balochistan are in difficult situation, having two thirds of them out of school, at least thousands of them affected by the insurgency and particularly girls who don’t have access to primary education throughout the province excluding very few areas even fifteen years after the federal ministers signed international commitments of “Dakar Framework of Action” and the Millennium Development Goals.

Moreover, in the port city of Gwadar girls have been attending boys college since 1996 and today the starting point of 46$ billion CPEC (China-Pak Economic Corridor)stands without a single girls college. Even the boys’ college they attend at present is short of lecturers for about more than a half of the subjects.

Since mega cities like Gwadar lack proper education for females, there will probably be even lesser expectations for the remote areas. In such situations, there are only two options left for parents; to either send their daughters far to the provincial capital and any other city with proper educational environment and facilities, or to let them stay in their dispossessed regions and remain deprived of life changing process of education.

Limited financial resources, security issues and the lack of facilities in the dormitories of Universities further contribute for hesitation of most parents to support their daughters for acquiring proper higher education.

Out of 32 districts of Balochistan, there are universities only in very few districts. Poor Infrastructure in most districts and having no direct roads to the most of the towns, it is almost unfeasible mainly for girls to continue university education. For instance; there is only one medical college in the province which is in Quetta, a student from Jivani, Ormara or Gwadar would have to travel to …

Sindh first before stepping to their own provincial capital. Furthermore, since 2006 Balochistan has been going through a continuous insurgency that had worsen the economic and law and order situations. Leaving out Quetta, Karachi or Lahore for higher education, majority of population in Balochistan does not even afford to send their children to nearby towns and districts.

Having alarming economic and educational situations in the province and with a great need of human resource at present, there should have been more financial assistance programs and specially for young women to help them continue their studies however young women in Balochistan who would have otherwise contributed for economic growth often stop dreaming as a consequence of very limited opportunities and that too with political influence.

On the other hand security issues are other hindrances. The blasts in Sardar Bahadur Khan (SBK) Women University in June 2013 and undergoing the worst educational situation after the educational emergency was announced; the forced closure of schools and prohibition of girls’ education in Panjgur by unknown organization in April – May 2014, acid attacks on girls in different parts of the province during the last two years and assassination of Zahid Askani the promoter of female education in less privileged port city of Gwadar in December 2014, were enough factors to discourage the deprived girls of the troubled province.

During the past decades, when government had failed to promote education in rural areas of the country, many foreign nations showed interest to run educational programs. Permission to foreign help was granted in rest of the country but not in Balochistan after 2012.

For instance, English Access Micro – scholarship a two year program of US State Department that enables young girls and boys of rural areas and slums to learn English and basic skills, has been benefiting different parts of the country but after its success in Gwadar in 2007-09, the people of Balochistan were never fortunate enough to have it sustained in their province.

Although Article 25A of Constitution of Pakistan has determined the right to education to all, yet transforming the words of country’s constitution and policies to promote female education into action is a litmus test for the government.

قدرتی وسائل سے مالامال بلوچستان کی تعلیم سے محروم بیٹیاں

تحریر مریم سلیمان بلوچ، گوادر

بلوچستان کے سابقہ وزیراعلی کی جانب سے جنوری 2014 میں پیش کردہ پرفریب تعلیمی ایمرجنسی کے پس منظر میں صوبے کی مخدوش تعلیمی نظام بالخصوص لڑکیوں کی تعلیمی حالت زار کو دیکهتے ہوئے چند سوالات پهر سے اٹهانا لازمی ہوگئے ہیں.

یہ جانتے ہوئے بهی کہ مکمل اور پائیدار سماجی و معاشی ترقی کا راستہ عورتوں کو یکساں تعلیمی مواقع دینے سے مشروط ہے پهر بهی صوبے کی تعلیم میں کوئی تبدیلی نہیں آئی، اتنے سالوں میں اگر اس سلسلے میں کوئی پیش رفت ہوئی بهی ہے تو یقینناً درست سمت میں نہیں ہوئی۔

درست اعداد و شمار کے فقدان اور زمینی حقائق کی عدم دستیابی کی وجہ سے صوبے میں خواتین کی تعلیم کی اصل کہانی کو جاننا بهی مشکل ہے،

خیبر پختونخواہ کے مقابلے میں بلوچستان میں

سرداری نظام، معاشرتی پابندیاں اور مذہبی شدت پسندی ایسے عوامل ہوتے ہیں جو خواتین کو پابند رکهتے ہیں، نہ ہونے کے برابر ہیں.

اسکے باوجود بلوچستان کی دیہی علاقوں کی 90 فیصد لڑکیاں پرائمری سطح کی بنیادی تعلیم سے محروم ہیں جبکہ نیم شہری علاقوں کی 95 فیصد لڑکیاں مناسب اعلی تعلیم سے محروم ہیں.

سن 2000 میں دنیا کے دیگر 163 ممالک کے ہمراه پاکستان نے “ڈکار فریم ورک آف ایکشن” پر دستخط کئے جس میں 6 ایسے اہداف مقرر کئے گئےتھے جو سال 2015 تک قابلِ حصول ہوں، اسکے آرٹیکل 7 کے ہدف 2 میں واضح بیان ہے کہ

2015 تک مشکل حالات سے نبردآزما اور نسلی بنیادوں پر تقسیم اقلیتی بچوں، بالخصوص لڑکیوں کی مفت تعلیم تک رسائی کو یقینی بنایا جائے گا”.

بلاشبہ، بلوچستان کے بچے مشکل حالات سے دوچار ہیں جن کا دو تہائی حصہ آج بهی سکولوں سے باہر ہے نیز ہزاروں بچے صوبے میں جاری شورش کے لپیٹ میں ہیں. بدقسمتی، سے “ڈکار فریم ورک آف ایکشن” اور “ملینیم ڈولپمنٹ گولز” جیسے بین الاقوامی عزائم پر دستخط کے 15 سال گزرنے کے بعد بهی بلوچستان کے بچے بنیادی تعلیم سے محروم ہیں جن میں اکثریت لڑکیوں کی ہے

. مزیدبرآں، گوادر جیسے ساحلی شہر میں لڑکیاں 1996 سے لڑکوں کے کالج میں حصول علم کے لئے جاتی رہی ہیں اور آج جہاں چائنہ پاکستان اقتصادی راہداری کی محض ابتدائی اخراجات چهیالیس بلین ڈالرز سے شروع ہوئی ہیں وہاں اتنی بڑی رقم میں بهی گوادر کی لڑکیوں کے لئے کالج کا کوئی منصوبہ شامل نہیں. اس پر ستم ظریفی کی انتہا یہ کہ لڑکوں کے جس کالج میں وه پڑهنے جاتی ہیں وہاں بهی آدهے سے ذیاده مضامین کے لیکچرار دستیاب نہیں ہیں۔.

جب گوادر جیسے ‘میگا سٹی’ میں لڑکیوں کی تعلیم کا کوئی پرساں حال نہیں تو بلوچستان کےدیگر دور دراز علاقوں میں لڑکیوں کی تعلیمی صورتحال کا تصور بهی نہیں کیا جا سکتا. ایسے حالات میں والدیں کے لئے محض دو راستے ہی ره جاتے ہیں یا اپنے بچیوں کو گهروں سے دور صوبائی دارالحکومت یا تعلیمی سہولیات سے آراستہ کسی اور شہر بهیج دیں یا انهیں اپنے غیرترقی یافتہ علاقوں میں تعلیم جیسی نعمت سے محروم رکهیں

آمدنی کے محدود ذرائع، حفاظتی مسائل اور جامعات میں رہائش کے ناقص انتظامات وغیره دیگر ایسے اسباب ہیں جنکی وجہ سے والدین اپنے بچیوں کو اعلی تعلیم کے حصول کی اجازت دینے سے کتراتے ہیں. بلوچستان کے 32 اضلاع میں سے صرف چند ہی اضلاع میں جامعات موجود ہیں، مگر صوبے بهر میں ناقص ڈهانچے اور خستہ حال سڑکوں کی وجہ سے ایک شہر سے دوسرے شہر میں جانا انتہائی کٹهن کام ہے ایسی صورت حال میں خاص کر لڑکیوں کے لئے آگے تعلیم جاری رکهنا مشکل ہے. مثال کے طور پر صرف ایک ہی میڈیکل کلاج کوئٹہ میں موجود ہے جسکے لئے ارماڑه، جیونی اور گوادر سے تعلق رکهنے والے طلبا و طالبات کو اپنے ہی صوبائی دارالحکومت میں براستہ سندھ جانا پڑهتا ہے.

مزید، بلوچستان میں 2006 سے جاری شورش کی وجہ سے امن اماں کی صورتحال اور معیشت بری طرح متاثر ہوئے ہیں، اعلی تعلیم کے حصول کے لئے اپنے بچوں کو لاہور، کوئٹہ اور کراچی بهیجنا تو دور کی بات بلکہ لوگوں کے لئے قریبی شہروں اور اضلاع میں بهیجنا محال ہوگیا ہے.

صوبے میں تشویشناک معاشی و تعلیمی صورتحال اور انسانی وسائل کی سخت ضرورت کے پیشِ نظر مالی امداد کے منصوبے بنائے جانے چاہیے تهے بالخصوص خواتین کے لئے تاکہ وه اپنی تعلیم مزید آگے لے جانے کے اہل ہوسکتیں، تاہم بلوچستان کی وه خواتین جو اقتصادی ترقی میں اہم کردار ادا کر سکتی تهیں اکثر محدود مواقع، وه بهی سیاسی اثر و سوخ کی بنیاد پر، ملنے کی وجہ سے اپنے خوابوں سے دستبردار ہوجاتی ہیں.

 دوسری جانب سیکیورٹی مسائل بھی بہت بڑی رکاوٹیں ہیں، جون 2013 میں سردار بہادر خان وومن یونیورسٹی میں ہونے والے دهماکوں سے پیدا ہونے والی بدترین صورتحال ، تعلیمی ایمرجنسی کے اعلانات کے بعد اپریل اور مئی 2014 میں نامعلوم تنظیم کی طرف سے پنجگور کے سکولوں کی جبری بندش اور لڑکیوں کی تعلیم پر پابندی; گزشتہ دو سالوں کے دوران صوبے کے مختلف علاقوں میں لڑکیوں کے چہرے تیزاب سے مسخ کرنے کے واقعات اور دسمبر 2014 میں کم مرعات یافتہ ساحلی شہر گوادر میں لڑکیوں کی تعلیم کے حامی زاہد آسکانی کا قتل ایک شورش زده صوبے میں محروم لڑکیوں کی حوصلہ شکنی کے لئے کافی عوامل ہیں۔.

 گزشتہ دہائیوں کے دوران جب حکومت ملک کے دیہی علاقوں میں تعلیم کے فروغ میں ناکام رہی تو دنیا کے بہت سی قوموں نے ان تعلیمی منصوبوں کو چلانے میں دلچسپی کا مظاہره کیا اور ملک کے دیگر حصوں میں اس بیرونی امداد کی اجازت بهی دی گئی جبکہ 2012 کے بعد بلوچستان کو اس بیرونی امداد سے بهی محروم رکها گیا. مثال کے طور پر “انگلش اکسیس مائکرو سکالرشپ” امریکی وزارت خارجہ کا ایک ایسا دو سالہ منصوبہ تها جو دیہی علاقوں میں بچوں کو انگریزی زبان اور دیگر بنیادی ہنر سکهاتا تها، ملک کے دیگر حصے تاحال اس سے فیض یاب ہو رہے ہیں جبکہ 2007-09 میں گوادر میں اسکی شاندار کامیابی کے بعد بلوچستان کے لوگوں کو اس سے بهی محروم رکها گیا

(اے) اگرچہ پاکستان کی آئین کے آرٹیکل 25 کے شق

 کے تحت ” سب کو برابر تعلیم دینی چایئے”

 لیکن ملک کے آئین اور لڑکیوں کی تعلیم کو فروغ دینے کے منصوبوں پر مکمل عمل درآمد کرنا حکومت کے لیے بڑی آزمائش ہے”