My journey to Balochistan started from a house in Sangho-Lane Street in Lyari, Karachi.

No! It started even before that!

It was much before the time of Lyari gang wars when the name of father and uncle of Sardar Abdul Rehman or Rehman Dacoit was a sign of terror. Now, everything had changed in Lyari. I met some Nako (maternal uncle in Balochi) people at the tomb opposite Afshani Street and they told me that Wahid Baloch of Lyari Youth Front had lost his life while bravely fighting against local drug mafia. I was told that how educated youth like Nasir Kareem had opened ill-equipped schools and night schools in places where drugs used to be sold. Now in Mamba Street and Gul Muhammad lane, (I remember Gul Muhammad Lane because House of Jabbar Khattak was situated here) educated boys and girls of Lyari were teaching students of Lyari and It’s the era of NGOs and street theater in Lyari etc, I was told by Nako people.

In Sangho-Lane, my friend and Baloch intellectual Rahim Baksh Azad Baloch was explaining to me, the Alexandria route, with the help of Persian-language map of Balochistan which he had bought from streets of Tehran. He said that he had travelled from Iranian Balochistan to Tehran. He was promising to provide me all sorts of help to travel to Murad Mount.

It was those times when Baloch Political activists, intellectuals and notables didn’t go missing and their addresses were available at tea stalls, houses and book stores.

I left from Jinnah terminal of Karachi for Gwadar in a Fokker plane of PIA in last week of April 1993. Travelling over the rugged mountains, along with coast, Fokker plane was carrying passengers that were Baloch Laborers return from Gulf, Small businessman, 555 and Dunhill cigarette smoking (in those days smoking was allowed on few specific seats at the back of plane) happy Baloch people, government servants and employees of army and secret service. I still remember the Baloch Male Air Stewards.

After many years, I remembered this flight when I heard that PIA Fokker plane travelling from Gwadar to Karachi has been hijacked and as usual India and Baloch nationalists were blamed for it. It was the first time that I heard the name of BLA. Then I heard that shepherd-like Baloch, strolling in Resham Street of Hyderabad, were arrested as accused hijackers. It was 5th May 1999, Nawaz Sharif was in government and Asif Zardari was in Jail. After some time, someone told me in America that when Nawaz Sharif was informed about hijacking of Gwadar-Karachi flight (which was landed on Hyderabad airport by Pakistani Commandos), he asked DIG Hyderabad to register case of plane hijacking against Asif Zardari. However, according to a source, DIG refused to do that. Perhaps that was the reason that same DIG was appointed as IG Sindh during government of Asif Zardari.

 My flight had landed at Gwadar airport in nearly 1 hour 15 minutes. This was a pleasant and shining afternoon of a mild warm day of May. This was timing which is called “Kitcheri Dopehar” in Sindhi. I was amazed to see Yellow Taxis outside of small, silent and railway station like airport of Gwadar. I was also amazed to see few roads made up of bricks and Tar Coal. I reached the Bazaar of Gwadar while asking the address of Ghaffar newspaper bookstore, like a stranger. A lot of my friends in Lyari had told me that I might get the chance to meet educated Youth, intellectuals and political activists at the footpath near this bookstore and start working on my story. It was those times when Baloch Political activists, intellectuals and notables didn’t go missing and their addresses were available at tea stalls, houses and book stores.

In Balochi, Shapki is the term used for smuggling. It’s not unique for people living near international seas and borders.

Which story I was working on? Apparently, I was working on the pace of development in coastal areas of Balochistan but my real effort was to find a story about impact of drugs in Baloch politics and society and the international drugs trade route. This is the same route which was called Alexandrian route in ancient times. Alexander had entered this region with his troops using the same route. I had to be very cautious and stay away from my real subject.

I initially moved towards the referred address of bookstore in Bazaar. On Turbat Bus stop square, there were new hotels and Public Call Offices (PCOs), out of which there were long queues of women and children who wanted to talk to their relatives working in gulf using telephones because It was not the era of computers and Smartphones. Still I was not sure whether every poor Baloch could afford the use of PCOs! Now, that name of Balochistan and Gwadar has been changed to “China-Pakistan Economic Corridor” either Baloch are still there where they used to be, economically speaking, or they have developed a lot!

Roads of Gwadar were still non-asphalt. Pakistanis have now seen the inconvenience of load shedding but people of Gwadar, then, were living with few hours supply of electricity on daily basis. Electricity supply was suspended at night like curfew. But the sea sang and danced like “Leva.” Color of sea was pure blue which they called “Nadi.” Baloch are so simple minded that they called a huge sea a creek (Nadi). Just like we call American continent a country and country like New York a city. Nadi was blue. Gwadar port project was about to be started and Nawaz Sharif was supposed to inaugurate it.

Till the autocratic government of Ayub Khan, Gwadar was a part of sultanate of Oman, which was handed over to Oman by Naseer Khan Noori, due to his personal relations, to a rebel brother of sultan of Oman, some 200 years ago. Gwadar used to be the capital of Makran in the days when it was ruled by the Gichki tribe. “Deputy Commissioner sak Sharan, Charas Sharab bay zaran,” (Deputy Commissioner is a gentleman and there is no shortage of wine and Charas), said a writing on the wall of Bazaar.

 I stopped to ask from the children playing football in streets that who owns this majestically built house, they said it belongs to Chairman. I asked what does the Chairman do? Children stared laughing and one of them said “Shapki” which means the work done at night time.

In this journey, one of my fellows had seen armored vehicles with Machine guns and Anti-Aircraft guns fixed on them, disappearing in the darkness of night in Helmand, after the end of war with Russians in Afghanistan.

In Balochi, Shapki is the term used for smuggling. It’s not unique for people living near international seas and borders. For centuries, people living near water and land borders are involved in Shapki. However what was new and cause of concern was human and drugs smuggling. Opium which is called “Tariyak” in Balochi is commonly used by men and women in Pakistan and it has been in use for decades and centuries. However, Afghan war had drastically changed the situation of Balochistan and the region.

When I reached Gwadar, a year ago a bus full of children was captured, who were about to be smuggled to Gulf States for Camel race. Journey of me and my friends started from Noshki and Gardi Jungle and it ended in Gwadar. Story of this journey has not ended; in fact, it’s the first episode of this story – Khushab to Gwadar, and Ormara to Panjgur.

In this journey, one of my fellows had seen armored vehicles with Machine guns and Anti-Aircraft guns fixed on them, disappearing in the darkness of night in Helmand, after the end of war with Russians in Afghanistan. Group of high powered motorbikes, travelling behind and in front of trucks, in a convoy by people who were former Afghan Mujahedeen and now changed into gangs of mercenaries. In reality they were moving factories of Heroine, which used to travel to Rabat in Balochistan where borders of three countries; Pakistan, Iran and Afghanistan intersect.

From Awaran to Kolawa and Mand Ballo, this area till 1990s was center of drug mafia due to political patronage. Perhaps, today it’s also the center of Sarmachar (Baloch insurgents) and the army fighting them. I am thinking that all those parties who had accumulated wealth and political influence through drug trade are still active in this area or not.

In football stadium named after Baba-e-Balochistan, Ghaus Baksh Bizenjo, I see Baloch Youth riding 70 cc motorbikes that take me to tall mountains through Dasht named picnic point and coast of Nadi (Sea). Where, at that time, peaks displayed chalking of “Free Balochistan” and “Death to Imperialism.”

(To be continued)

بلوچستان۔ گردی جنگل سے گوادر

حسن مجتبیٰ 
نیویارک

میرا بلوچستان کا سفر کراچی لیاری کی سنگھو لین گلی کے ایک مکان سے شروع ہوا تھا!

نہیں(!) اس سے بھی پہلے

یہ لیاری گینگز وار  سے بہت پہلے کی بات ہے۔ جب سردار عبد الرحمان یا رحمان ڈکیت نہیں اسکے ابا اور چچا کا طوطی بولتا تھا۔ اب لیاری میں سب کچھ بدل چکا تھا۔ میں افشانی گلی کے سامنے والے مزار پر کچھ ناکو لوگوں (بلوچی میں ناکو چاچا کو کہتے ہیں ) سے ملا جو مجھے بتا رہے تھے کہ لیاری نوجوان محاذ کا واحد بلوچ کس بے جگری سے مقامی ڈرگ مافیا سے لڑا تھا اور مارا گیا ۔ کس طرح ناصرکریم جیسے پڑھے لکھے نوجوانوں نے اب اس جگہ ٹاٹ اسکول یا نائٹ اسکول کھولے ہیں جہاں پہلے منشیات بیچی جاتی تھی۔ اب ممباسا اسٹریٹ اور گل محمد لین میں (مجھے گل محمد لین ہمیشہ اس لیے بھی یاد ہے کہ کسی زمانے میں جبار خٹک کایہاں گھر ہوا کرتا تھا) مقامی تعلیم یافتہ نوجوان لڑکے اور لڑکیاں بچوں بچیوں کو نائٹ اسکولوں میں پڑھا رہے ہیں۔ لیاری میں این جی اوز اور اسٹریٹ تھیٹر کا زمانہ ہے۔ وغیرہ وغیرہ۔

سنگھو لین میں میرا دوست اور بلوچ دانشور رحیم بخش آزاد بلوچ مجھے بلوچستان کے ایک ایسے فارسی زبان کے نقشے کی مدد سے السکندریہ یاالیگزنڈریہ روٹ سمجھا رہا تھا جو اس نے تہران کی فٹ پاتھوں سے خریدا تھا ۔ اسکا کہنا تھا کہ وہ ایرانی بلوچستان سے تہران تک جا چکا ہے۔ وہ مجھے کوہ مراد تک لے جانے کے لئے ہر مدد کی فراہمی کا وعدہ کر رہا تھا۔

یہ وہ زمانے تھے جب بلوچ سیاسی کارکن، دانشور ، اور معززین لاپتہ نہیں ہوا کرتے تھے اور ان چائے خانوں، گھروں، اور بک اسٹوروں پر انکے پتے ملتے تھے۔

میں کراچی کے جناح ٹرمینل سے گوادر جانے والی پی آئی اے کی فوکر پرواز میں اپریل ترانوے کے آخری ہفتے روانہ ہوا تھا۔ ساحل سمندر کے ساتھ ساتھ سنگلاخ پہاڑوں کے اوپر سے پرواز کرتے ہوئے اس فوکر طیارے میں زیادہ تر مسافر اکا دکاخلیج سے لوٹے ہوئے محنت کش بلوچ، بظاہر چھوٹے کاروباری سفید پوش ، کچھ وسطی نشستوں پر پانچ سو پچپن اور ڈنہل سگریٹ پیتے ہوئے بے فکرے خوش پوش بلوچ (ان دنوں دوران پرواز کچھ مخصوص پچھلی نشستوں پر تمباکو نوشی کی اجازت تھی) ، اور کچھ ملازم پیشہ فوجی ، سول ، خفیہ اور بابو لوگ لگتے تھے۔ مجھے بلوچ مرد فضائی میزبان آج بھی یاد ہیں۔

 
مجھے کئی برسوں بعد پھر یہ پرواز اس وقت یاد آئی تھی جب میں نے سنا کہ گوادر سے کراچی آنے والا پی آئی اے کا فوکر جہاز اغوا ہوگیا ہے اور اس کا الزام حسب معمول بھارت اوربلوچ قوم پرستوں پر لگایا گیا ۔ میں نے پہلی بار شاید بی ایل اے کا نام اس وقت سنا تھا۔ پھر میں نے سنا کہ حیدرآباد کی ریشم گلی میں گھومتے ہوئے نیم ننگے پاؤں چرواہے نما بلوچ پی آئی اے فوکر طیارے کے اغوا ء کے الزام میں گرفتار کیے گئے ہیں۔ یہ پانچ سال بعد مئی 1999کی بات ہے جب نواز شریف کی حکومت تھی اور آصف علی زرداری جیل میں تھے ۔ کئی دنوں بعد پھر امریکہ میں مجھے کسی نے بتایا تھا کہ جب نواز شریف کو گوادر۔کراچی پرواز کی ہائی جیکنگ کی خبر سنائی گئی (کہ طیارے کو پاکستانی کمانڈوز نے حیدرآباد کے ایئرپورٹ پر اتار لیا تھا) تو انہوں نے حیدرآباد کے اس وقت کے ڈی آئی جی پولیس سے کہا تھا کہ “طیارے کے اغوا کا مقدمہ آصف علی زرداری کے خلاف درج کرلیا جائے۔” لیکن بقول راوی کے ڈی آئی جی نے ایسا کرنے سے انکار کردیا تھا۔ شاید اسی لیے پھر اسی ڈی آئی جی کو آصف علی زرداری کے دور میں سندھ کا آئی جی بھی بنایا گیا تھا۔

میری پرواز اب بمشکل سوا ڈیرھ گھنٹے میں گوادر ائیرپورٹ پر اتر چکی تھی۔ یہ مئی کی چمکتی ہلکی گرم لیکن خوشگوار دوپہر تھی۔ جسے سندھی میں کچڑی دوپہر کہا جاتا ہے۔ بارہ بجے سے پہلے والی۔ مجھے گودار کے خاموش اور کسی چھوٹے شہر کی ریلوے اسٹیشن جیسے لگتے ایئرپورٹ سے باہر پیلی ٹکسیاں دیکھ کر حیرت ہوئی۔ حیرت ہوئی کہ کچی اینٹوں اور کہیں کہیں تارکول سے بنی ہوئی یک رویہ سڑکیں۔ میں غفار نیوز پیپرز بک اسٹور کا پتہ پوچھتے ایک اجنبی کی طرح شہر کے بازار میں پہنچا ، اس مقام کے بارے میں مجھے لیاری میں میرے کئی دوستوں نے بتایا تھا کہ میری پڑھے لکھے نوجوانوں، دانشوروں ، سیاسی کارکنوں سے اس تھڑے پر ملاقات ہوسکتی ہے جہاں سے میں اپنی اسٹوری پر کام کرنے کی شروعات کرسکتا ہوں۔ یہ وہ زمانے تھے جب بلوچ سیاسی کارکن، دانشور ، اور معززین لاپتہ نہیں ہوا کرتے تھے اور ان چائے خانوں، گھروں، اور بک اسٹوروں پر انکے پتے ملتے تھے۔ 

بلوچی میں شپکی “اسمگلنگ” کو کہا جاتا ہے۔ بین الاقوامی پانیوں اور سرحدوں سے قریب رہنے والے لوگوں کے لئے یہ کوئی انہونی بات نہیں ۔ یہ صدیوں عشروں سے سمندری اور زمینی سرحدوں پر رہنے والے لوگ “شپکی”کرتے آئے ہیں۔

میں کس اسٹوری پر کام کر رہا تھا؟ بظاہر میں بلوچستان کے ساحلی علاقوں میں ترقی کی رفتار پر کام کر رہا تھا لیکن میری اصل کہانی کی جستجو بلوچستان کے سماج اور سیاست میں منشیات اور اسکی عالمی مارکیٹ کا روٹ اصل موضوع تھا۔ یہ وہی روٹ ہے جسے قدیمی زمانوں میں الیگزینڈرین روٹ کہا جاتا تھا کہ اسی راستے سے ہی سکندر اعظم اپنی فوجوں کے ساتھ اس خطے میں داخل ہوا تھا۔ مجھے بہت ہی محتاط اور اپنے اصل موضوع سے بظاہر ہٹ کر رہنا تھا۔ 
میں نے ابتدائی طور پر بازار میں بتائے گئے بک اسٹور والے پتے کا رخ کیا۔ تربت بس اسٹاپ والے چوک میں جہاں نئے ہوٹل تھے اور پی سی اوز (پبلک کال آفیسز) کی لمبی قطاروں والی دکارنوں کے باہر زیادہ تر عورتوں اور بچوں کا رش تھا کہ وہ خلیج میں رہنے والے اپنے رشتہ داروں کو ٹیلفون کرنے کو درماندہ لگتے تھے۔ کہ ابھی کمپیوٹر اور اسمارٹ فونوں کا زمانہ نہیں آیا تھا۔ آتا بھی تو مجھے یقین نہیں کہ ہر غریب بلوچ اسکی استطاعت رکھتے تھے بھی کہ نہیں! شاید اب گوادر اور بلوچستان کا نام ” چین پاکستان اقتصادی راہداری” پڑنے کے باوجود بلوچ شاید وہیں ہوں جہاں میں نے انہیں دیکھا تھا۔ یا بہت آگے جا چکا ہو!

اب تک گوادر میں کچی سڑکیں تھیں۔ پاکستانیوں نے تو لوڈ شیڈنگ کا عذاب اب دیکھا ہے گوادر کے بلوچ فقط دن کی چند گھنٹوں کی بجلی پر زندہ تھے۔ رات کو کرفیو کی طرح بجلی بند ہوتی تھی۔ لیکن انکا سمندر لیوا کی طرح ناچتا گاتا سمندر انتہائی شفاف نیلا تھا جسے وہ ندی کہتے۔ بلوچ اتنے کسر نفس ہیں کہ اتنے وشال یا وسیع سمندر کو ندی کہتے ہیں، جیسے ہم امریکی بر اعظم کو ملک اور نیویارک جتنے ملک کو سٹی کہتے ہیں۔  ندی نیلی تھی۔ ابھی گودار پورٹ بننا ہی چاہتا تھا جس کا افتتاح نواز شریف کرنے والے تھے۔

گوادر ایوب خان کے آمرانہ دور تک سلطنت اومان کی ملکیت تھا جسے اصل میں اپنی رشتہ داری کی وجہ سے نصیر نوری نے دو سو سال قبل سلطان اومان کے ایک باغی بھائی کو رشتہ داری میں دیا تھا۔ گودار کبھی ملک مکران پر گچکیوں کی حکومت کے دنواں میں دارالحکومت بھی رہا تھا۔

“ڈپٹی کمشنر سک شران، چرس شراب بے زران” ڈپٹی کمشنر شریف آدمی ہے ، چرس شراب کی کوئی کمی نہیں)۔ گوادر کے بازار کی ایک دیوار پر لکھا تھا۔

میں گودار کے ایک محلے میں فٹبال کھیلتے بچوں سے پوچھنے رک گیا کہ یہ عالیشان گھر کی عمارت کس کی ہے تو انہوں نے کہا، “چیئرمین کا” ۔ پوچھا کہ چیئر مین کیا کرتا ہے؟ تو بچے ہنسنے لگے۔ ایک بچے نے کہا “شپکی” یعنی وہ کام جو رات کی تاریکی میں کیا جائے۔

افغانستان میں روسیوں سے جنگ کے خاتمے کے بعد اسی سفر کے حصے میں میرے ایک ساتھی نے ہلمند (افغانستان ) کے پہاڑوں میں رات کی تاریکیوں میں غائب ہوتے بڑے بڑے آرمرڈ یا بکتربند گاڑیاں دیکھی تھیں جن پر مشین گنیں اور اینٹی ایئر کرافٹ گنیں نصب تھیں ۔

 
بلوچی میں شپکی “اسمگلنگ” کو کہا جاتا ہے۔ بین الاقوامی پانیوں اور سرحدوں سے قریب رہنے والے لوگوں کے لئے یہ کوئی انہونی بات نہیں ۔ یہ صدیوں عشروں سے سمندری اور زمینی سرحدوں پر رہنے والے لوگ “شپکی”کرتے آئے ہیں۔ لیکن جو بات انہونی اور قابل تشویش تھی وہ انسانوں اور منشیات کی اسمگلنگ تھی ۔ پاکستان میں افیون جسے بلوچی میں “تریاق” کہا جاتا ہے اس کا استعمال مرد و زن میں عام تھا اور صدیوں عشروں سے زیر استعمال تھا۔ لیکن افغان جنگ نے خطے اور بلوچستان کی یکسر صورت حال کو تبدیل کردیا ۔ 

جب میں گوادر پہنچا تھا ، اس سے ایک سال قبل وہاں بچوں سے بھری بس پکڑی گئی تھی جنہیں اونٹوں کی دوڑ کے لئے خلیجی ریاستوں کو اسمگل کیا جانا تھا۔ 
میرا اور میرے ساتھیوں کے سفر کا آغاز نوشکی سے لیکر گردی جنگل اور گوادر تک ختم ہوتا تھا۔ 
لیکن اس سفر کی کہانی ابھی ختم نہیں ہوئی بلکہ یہ اس سفر کی پہلی قسط ہے۔ خوشاب سے گوادر، اور اوڑمارا سے پنجگور۔ 

افغانستان میں روسیوں سے جنگ کے خاتمے کے بعد اسی سفر کے حصے میں میرے ایک ساتھی نے ہلمند (افغانستان ) کے پہاڑوں میں رات کی تاریکیوں میں غائب ہوتے بڑے بڑے آرمرڈ یا بکتربند گاڑیاں دیکھی تھیں جن پر مشین گنیں اور اینٹی ایئر کرافٹ گنیں نصب تھیں ۔ ٹرکوں اور ان کے آگے پیچھے کسی ہالی وڈ فلم کی طرح چلتی انتہائی بھاری سی سی پاور کی موٹر سائیکلوں کے کانوائے یا قافلے جو سابق افغان مجاہدین اور اب کرایے کے گوریلوں یا اجرتی قاتل جتھوں میں بدل گئے تھے ۔ حقیقت میں وہ ہیروئن کی چلتی پھرتی فیکٹریاں تھیں۔ جو بلوچستان میں رباط تک آتی تھیں جہاں تینوں ملکوں افغانستان، ایران اور پاکستان کی سرحدیں آپس میں ملتی تھیں۔

آواران سے کولواہ اور مند بلو۔ یہ وہ علاقہ ہے جو 1990کی دہائی تک سیاسی سرپرستی میں منشیات کی مافیا کا مرکز رہا اور شاید آج بلوچ سرمچاروں اور انکی سرکوبی کرنے والی فوج کی سرگرمیوں کا مرکز بھی ہے۔ میں سوچ رہا ہوں کہ منشیات کے پیسے سے سیاسی طاقت حاصل کرنے والی وہ پارٹیاں ، گروہ اور لوگ اب بھی اس علاقے میں سرگرم ہیں کہ نہیں۔

 
بابائے بلوچستان میر غوث بخش بزنجو کے نام سے منسوب فٹبال اسٹیڈیم میں اس بلوچ نوجوان کو سیونٹی موٹر سائیکل پر سفر کرتے دیکھتا ہوں جو مجھے دشت نامی ایک پکنک پوائنٹ اور ندی (یعنی سمندر) کے ساحل سے ہوتا ہوا اونچے پہاڑوں پر لے جاتا ہے جہاں کی چوٹیوں پر تب بھی “آزاد بلوچستان ” سامراج مردہ آباد” کی چاکنگ کی ہوئی تھی۔

(جاری ہے)