Second and Last Episode

In order to spend the night, I stayed at the home of brother of  my Sindhi friend who was an Engineer at Gwadar Port. When entire Gwadar was in darkness the port area was bright and presented the picture of day and did not seem to be a part of Gwadar. A Baloch friend told me there, “Sir, you are the guest of our rulers.” Brother of my Sindhi friend, who as an engineer at Gwadar Port, did not like Baloch. He called the lazy and reluctant. But I had seen Baloch Fishermen, Sailors and other laborers working all day near the coast. I even saw educated Balochistan youth, including engineers, who were unemployed.

One fine morning in Gwadar, I boarded a bus for Turbat. Discussion at tea stall at the day informed me about the dead bodies of youngsters found in Jewani and later I also came to know about skirmishes at Iranian border which had resulted in death of youngsters. After taking tea and doing breakfast, I sat on the Bus for Turbat. This was my journey from coastal Balochistan to planes and deserts of Balochistan. I got the front seat next to the driver. Indian movies songs were played in the bus.

Meanwhile my brother friend came and started criticizing that  Baloch people are usually lazy and incompetent. Though I had  seen Baloch fishermen, boat riders and labours working on sea   but educated Baloch remained unemployed even those having engineering degree.

I told Bus driver that “”Waja, you do not play Balochi Songs.” He told me in ironic way that passengers do not listen to Balochi songs and only listen to Indian songs. After that he began searching for Balochi songs in his cassettes collection. Finally he played a song of Akhtar Chanal. I told him that it’s a Brahvi song and he give me an unpleasant stare and then switched his attention to back view mirror. Other passengers were also discussing the song. Person sitting next to my seat seemed to be an employee of Customs or Police from his getup. He started talking to me in Balochi and in those days I was unfamiliar with Balochi. However my heart was still a bit Balochi back then. Similarly, after a long time when I met, Selig Harrision, author of Balochistan in Afghanistan’s shadow or Soviet Temptations, which is regarded as Bible of Balochi insurgency and was based on insurgency of Bhutto period, I told him that you are a Baloch hearted American and he replied with a huge laughter.

Now bus was traveling on non-metalled roads that passed through uneven and rugged terrain. At most of places there was no sign of water and at some places there were oasis. Huts made of Peesh, leaves of Date-palm trees, and villages of 4 to 5 houses presented the landscape of coastal Balochistan. When passenger sitting next to me asked about my profession I called Journalism the second oldest profession of the world. Our discussion started from landscape of Makran and reached political scenario of Pakistan. This was a local bus raveling from Gwadar to Turbat and I had boarded it considering it to be an express bus.

Now, the discussion turned to proposed highway for Gwadar and Nawaz Sharif. Driver said, “Waja, Nawaz Sharif was better than Benazir.”

Now, intensity of heat, loud voice of Indian music being played and discussion on politics had made it very inconvenient for passengers sitting at front seats. I was not sure but my cigarette had burnt the new dress of the driver and I was embarrassed. Despite offering the driver money for a new suit, my embarrassment reached its pinnacle when driver not only pardoned me but smiled and said “It does not matter waja.” This is clothe of Iran and available easily at cheap prices, you are a Sindhi and unaware of this.

That driver told me, “There is no guarantee of death and journey.” I remember that sentence of Bus driver all my life.

After listing to my conversation with the driver, in which I sought forgiveness, some passengers were laughing while others were angry. Especially old Baloch women did not like this situation.

Bus was air-conditioned. It was 2:30 PM of a hot day of May and bus was about to enter Turbat. Commissioner houses everywhere in Pakistan are the symbols of pride and fear of the state. Same fort of Police Headquarters, barriers of red and white colors at a check post in Turbat where weather was pleasant. I dismounted from the bus near “Mallah Hotel “which was my place of stay in Turbat for next few days. Owner of the hotel asked me first question about my purpose of stay in Turbat. I told him that I was a journalist who is working in development of Makran. Owner of the hotel belonged from JUI and he advised me to must meet district president of JUI and the Deputy Commissioner of Turbat. After that our discussion turned to politics of Makran or coastal Balochistan and he said that Drug Mafia rules the politics here. He said that I should write on this. I apparently ignored his advice.

But in Bazaars of Turbat city, people used to tell me that offices of government institutions such as PIA and other government offices were situated in offices of Non-governmental organizations.

In those days, half of the people elected in Provincial assembly of Balochistan were alleged to be involved in drug trade. Names of two members of provincial assembly who belonged to Jamhoori Watan Party and one from PNP who belonged from Mand Bullo, were appearing on surface very regularly.

That’s why I started my journey toward Mand Bullo which is situated near Iranian border and famous for drugs trade. Same is the situation with Kech valley of Makran which is home town of Panno, male character of famous Balochi-Sindhi folk tale of Sassi-Pannu and also the burial place of love of Sassi. One of my friends used t call Panno a smuggler for fun, in folk tales he was son of tribal chief of Kech Makran.

While watching the Date palm orchards irrigated though Karez system, I thought that wine made of same date palm was feed by brothers of Pannu to their camels and that’s why they travelled from Bhanboor to Kech overnights.

In Kech Makran there is no tribal system and middle class and hard working communities dwell there. However the people and chiefs of tribe are still present.

Sudheer, young driver of Yellow Taxi, asked me, “Here you will not visit Panni Fort.” Young driver told me about his father that he named him Sudheer because he was inspired from Famous actor of his times Lala Sudheer.

That driver told me, “There is no guarantee of death and journey.” I remember that sentence of Bus driver all my life.

I also managed to meet those people in Turbat Jail who were caught with a huge cache of drugs and customs claimed that this was the largest amount of drugs captured so far in Turbat. But the people called themselves innocent and they said that they were being trapped. Defense lawyer of the apprehended people was a human rights lawyer of Karachi and I was told that he had recovered fee of hundreds of thousands of rupees because lawyers in smuggling cases are paid heavy fees.

In Fort Turk, near Turbat I met an Archaeological expert who was compared at that site along with a European team for some research.

Main source of my information was a very close to drugs families and Baloch politicians and society. He ultimately joined famous politicians named in drugs case and become his special assistant. His defense lawyer frustrated form situation of the country had already announced, in a press conference, to throw himself in cage of Lahore and Karachi. In that press conference there was no one other then three journalists to cover that. Someone had known that the lawyer might be favorite and attractive orator for huge audiences. My story on drugs in Balochistan did influence the politics of Makran in which I had no hand. It was those days when people used to discuss electoral politics and its linkages with drugs economy in coastal Balochistan. This was discussed everywhere be it tea stalls, government offices or normal sittings of Balochi traditions. Still, Chogan are still read in the religious gatherings of Zikris in Mount of Murad by women.

But who had known that after two decades in the same Balochistan a war will take place and its sympathizers will be called Baloch insurgents and its opponents will be called miscreants. And Ghulam Mohammad who I had met between my journeys from Mand to Turbat would go missing and end up as a mutilated dead body. Who had known then that Hayee Baloch, Malik Baloch, Akram Baloch, our old friend Shakeel and senior leader of PPP Mr. Gichki and other such people I would meet.

And this is the end of my journey and it taught me a lot.

گردی جنگل سے گوادر تک

تحریر : حسن مجتبیٰ، نیویارک

قسط دوسری اور آخری

میں اس رات شب بسری کے لئے اپنے سندھی دوست کے بھائی ، جو گوادر پورٹ پر انجینئر تھے، کے بنگلے پر ٹہرا ۔ جب پورا گوادر اندھیرے میں ڈوبا ہوا تھا تو پورٹ والے علاقے میں دن کا سا سماں تھااور وہ گودار کا حصہ نہیں لگتا تھا۔ میرے وہاں جانے پر میرے ایک بلوچ دوست نے کہا:”سائیں آپ تو ہم پر حکمرانوں کے مہمان ہیں” ۔ میرے سندھی دوست کا بھائی گوادر میں انجینئر تھا اور مقامی بلوچوں سے شاکی تھا۔ وہ انہیں “سست اور کاہل” کہتا۔ حالانکہ میں نے بلوچ مچھیروں ، کشتی بانوں اور معماروں کو سارا دن سمندر اور سمندر کے کنارے کام کرتے دیکھا تھا اور تعلیم یافتہ بلوچ نوجوانوں کو بیروزگار دیکھا جن میں انجینئرز تک شامل تھے۔ چائے خانے پر گفتگو سے معلوم ہوا کہ ہر ہفتے یہاں کراچی سے فوجی بیگمات کا بڑا طیارہ بھر کر آتا ہے اور وہ اسمگل شدہ سامان و اشیا کی خریداری کے لئے گوادر، پسنی و جیوانی رخ کرتی ہیں۔ 

گوادر کی ایک صبح میں تربت کی بس پر سوار ہوا۔ چائے خانوں میں اس دن جیوانی کے ساحل پر نوجوانوں کی لاشوں سے متعلق خبر پر بحث چل رہی تھی اور جو آگے چل کر ایرانی سرحد پر مزید مقابلوں اور اموات کے ذکر تک جا پہنچی تھی ۔ چائے اور پراٹھے کے ناشتے کے بعد میں تربت جانے والی بس پر سوار ہوا اور یہ میرا ساحلی بلوچستان سے میدان اور صحرا کی جانب سفر تھا۔ مجھے ڈرائیور کے ساتھ والی فرنٹ سیٹ پر جگہ مل گئی۔ بس میں ریکارڈر پر انڈین فلمی گانے چل رہے تھے۔

میں نے بس ڈرائیور سے کہا:”واجہ !کوئی بلوچی گانا نہیں چلاتے۔”اس نے مجھ سے طنزا کہا:”پیسنجر بلوچی گانا سنتا ہی نہیں 150سب انڈین گانے سنتا ہے” ۔ اور پھر وہ اپنی کیسٹوں میں کوئی بلوچی ‘ریل’ ڈھونڈھنے لگا۔ آخر اس نے اختر چنال لگایا ۔ میں نے اسے کہا: یہ تو براہوی ہے ۔ اس نے مجھے قدرے ناراضگی سے دیکھا اور پھر عقبی شیشے میں دیکھنے لگا کیونکہ وہاں بھی تبصرے ہونے لگے تھے۔ میرے ساتھ والی سیٹ پر بیٹھا شخص حلئے سے پولیس یا کسٹم اہلکار لگتا تھا ۔ اس نے مجھ سے بلوچی میں بات کرنا شروع کردی جو ظاہر ہے کہ میں ان دنوں میں بالکل نا بلد تھا ۔ پھر بھی میں دل تب سے کچھ کچھ بلوچی تھا۔ جیسے میں نے بہت دنوں بعد بلوچوں کی بھٹو حکومت کے دنوں میں لڑی جانے والی جنگ یا سرکاری زبان میں عرف عام “سرکشی” پر لکھی جانیوالی بائیبل “بلوچستان ان افغانستانس شیڈو آر سوویت ٹیمپٹیشن” جیسی کتاب کے مصنف اور بلوچوں کے حقوق کے ایک مانے جانے والے امریکی سیلسگ ہیرسن سے کہا تھا کہ تم بلوچ دل رکھنے والے امریکی ہو ، تو اس نے زور سے قہقہہ لگایا تھا۔ 

اب بس کچے راستوں اور رتیلے پہاڑی میدانوں سے چلنے لگی تھی جہاں کہیں بے آب گیاہ تو کہیں چھوٹے مربع برابر نخلستان کا گمان ہوتا۔ “پیش” یعنی کھجور کے پتوں سے بنی جھونپڑیاں اور چار پانچ گھروں پر مشتمل گاؤں اس ساحلی بلوچستان کا لینڈ اسکیپ منظر پیش کررہے تھے۔ بس کی سیٹ پر ساتھ بیٹھے اسی شخص نے جب راقم کے پیشے سے متعلق استفسار کیا تو صحافت کو دنیا کا دوسرا سب سے قدیم پیشہ بتایا جس پر بات مکران کے لینڈ اسکیپ سے شروع ہو کر پاکستان کے سیاسی منظر نامے پر جا پہنچی ۔ یہ گوادر سے تربت جانے والی لوکل بس تھی جسے میں ایکسپریس سمجھ کر سوار ہوا تھا۔
اب مجوزہ گوادر شاہراہ اور نواز شریف پر جا نکلی۔ڈرائیور نے کہا:” نواز شریف بے نظیر سے اچھا تھا واجہ” 

اب گرمی کی شدت اور انڈین موسیقی کا شور بڑھنے سے اگلی نشستوں پر بیٹھے مسافروں کے سیاسی بحث کر ماند کرنے لگا تھا ۔ پتہ نہیں اب میرے سیگریٹ کے جلتے ٹوٹے نے ڈرائیور کی نئے جوڑے والی نئی قمیص کو جلادیا تھا۔ میں بہت ہی شرمندہ تھا۔ ڈرائیور کو نئے جوڑے کی رقم بھر دینے کی پیشکش کے باوجود میری شرمندگی کی انتہا نہ رہی جب دیگر مقامات کے برعکس ڈرائیور نے نہ صرف مجھے معاف کردیا بلکہ ہنس کر کہا :”پرواہ نہیں واجہ۔ یہ ایران کا کپڑا یہاں بہت ہے اور سستا بھی ہے۔تم سندھی اور پردیسی بھائی ہو۔ ”
۔
اس ڈرائیور نے کہا : “موت اور سفر کا کوئی بھروسہ نہیں ہوتا۔ ” اس بلوچ ڈرائیور کا یہ جملہ میں ساری عمر پلو سے باندھے پھرتا ہوں۔
ڈرائیور میرے درمیان ہونے والے مکالمے و معافی تلافی پر پوری بس میں لوگ ہنسنے اور کجھ غصے میں بولنے لگے تھے۔ خاص طور بوڑھی بلوچ عورتوں کو یہ “حال” پسند نہیں تھا۔ 
بس ایئر کنڈیشنڈ تھی۔ مئی کے دوپہر ڈھائی بجے کا وقت تھا کہ بس اب تربت شہر کی حدود میں داخل ہونے لگی تھی۔ کمشنر ہاؤس پاکستان میں ہر جگہ وہی ہیبت و وقار کا نمونہ ہوتے ہیں۔ وہی پولیس قلعہ کا ہیڈ کوارٹر، لال اور سفید رنگ کے بمبو والی رکاوٹوں والی چوکی جبکہ شہر تربت کا موسم قدرے خوشگوار تھا۔ میں “ملاں ہوٹل” کے قریب اترا جو آنے والے کچھ دن تربت میں میرا مسکن بننا تھا۔ اس ہوٹل کے مالک نے مجھ سے پہلا سوال تربت شہر میں قیام کا مقصد پوچھا ۔ میں نے اسے مکران کی ترقی پر کام کرنے والا صحافی بتایا۔ اس ہوٹل مالک کا تعلق جے یو آئی سے تھا اور اس نے مجھے شہر کے ڈپٹی کمشنر اور جے یو آئی کے صدر سے ضرور ملنے کا مشورہ دیا اور پھرمکران یا ساحلی بلوچستان کی سیاست پر بات کرتے اس نے کہا یہاں کی سیاست پر خرچہ ڈرگ مافیا کا ہے۔ آپ کو اس پر لکھنا چاہیے۔ میں نے اسکی اس بات کو بظاہر سنی ان سنی کردیا۔ 
لیکن تربت شہر کے بازار اور مین روڈ پر عمارتوں کے بارے میں آپ کو سڑک پر لوگ بھی بتاتے تھے کہ عمارتیں جن میں پی آئی دفتر و دیگر سرکاری و غیر سرکاری اداروں کے دفاتر قائم ہیں۔ 

انہی دنوں بلوچستان اسمبلی کے فلور پر نصف درجن سے زائد منتخب اراکین اسمبلی کے نام منشیات کی اسمگلنگ کے حوالے سے باز گشت میں تھے جن میں اکبر بگٹی کی اس وقت کی جمہوری وطن پارٹی کے دو اراکین صوبائی اسمبلی اور پی این پی کے ایک رکن صوبائی اسمبلی، جن کا تعلق مند بلو سے تھا، کے نام بار بار منظر عام آئے تھے۔
اسی لیے میں نے مند بلو کا سفر اختیار کیا جو ایران کی سرحد پر انسانی و دیگر اسمگلنگ کی وجہ سے ایک مشہور شہر ہے ۔ یہی صورتحال کیچ مکران وادی کی ہے جو ‘سسی پنوں’ سندھی بلوچی پنجابی محبت کی لوک داستانوں کے کردار پنوں کا آبائی گاؤں اور سسی اور اس کی محبت کا مدفن اور کٹھن سفر کی جائے واردات بھی ہے۔ میرا ایک دوست ازراہ تفنن پنوں کو تو کیچ مکران کا اسمگلر کہتا ہے۔ داستانوں میں کیچ مکران کے سردار کا بیٹا ہے۔ 
میں سے کیچ وادی میں کاریزوں پر آباد ہونے والے کھجوروں کے چھوٹے بڑے باغوں کو دیکھتے ہوئے سوچا کہ اسی کھجور سے بنی شراب پنوں کے بھائیوں نے اپنے اونٹوں کو پلائی ہوگی تبھی تو وہ راتوں رات سندہ کے بھنبھور سے کیچ مکران جا نکلے تھے۔ 
کیچ مکران میں سرداری سسٹم نہیں ہے بلکہ متوسط طبقے یا نچلے محنت کش طبقے بستے ہیں۔ 
لیکن بہرحال لوگ اور اپنے قبیلوں کے سربراہ یا میر موجود ہیں۔ 
پیلی ٹیکسی کے سدھیر نامی نوجوان بلوچ ڈرائیور نے مجھ سے پوچھا:” یا تم قلعہ پنی نہیں دیکھو گے” ۔ اس نوجوان ڈرائیور نے مجھے اپنے والد کے بارے بتایاکہ اس کا اس نوجوان کا نام اسکے والد نے سدھیر اس لیے رکھا تھا کہ وہ اپنے دور کے عظیم اداکار لالہ سدھیر کی فلموں کا شوقین تھا۔ 

میں تربت جیل میں کسی طرح ان لوگوں سے بھی ملا جو حال ہی میں منشیات کے سب سے بڑے ذخیرے کے ساتھ پکڑے گئے تھے اور کسٹمز کا دعویٰ تھا کہ اب تک پکڑے جانے والی منشیات کی یہ سب سے بڑی مقدار تھی۔ لیکن یہ لوگ خود کو بے گناہ بتاتے تھے اور کہتے تھے کہ انہیں ناحق پھنسایا گیا ہے۔ ان لوگوں کا دفاعی وکیل کراچی کا انسانی حقوق کا ایک وکیل تھا جس نے یہاں مجھے بتایا گیا کہ لاکھوں روپے فیس لی تھی کیونکہ اسمگلنگ کے مقدمات میں وکیلوں کی بھاری فیس ہوتی ہے۔ 
تربت کے قریب قلعہ ترک میں میرا سماجی باقیات کے ماہر ایک ودوست سے ملاقات ہوئی جو کسی یورپی ٹیم کے ساتھ تحقیق کی غرض سے خیمہ زن تھا۔

میری معلومات کا اہم ذریعہ اور دوست منشیات مافیا اور بلوچ سیاست و سماج کے اہم ذرائع میں سے ایک تھا۔ وہ آخر میں منشیات کے حوالے سے نام آنے والے سیاستدا ن سے مل گیا اور ان کا معاون خاص بن گیا۔ اس کے دفاع کا وکیل ملکی حالات سے تنگ ہوکر خود کو کراچی یا لاہور کے پنجرے میں پھینکنے کا اعلان ایک پریس کانفرنس میں کرچکاتھا ۔ اس پریس کانفرنس کو کور کرنے کے لئے تین صحافیوں کے علاوہ کوئی نہیں تھا ۔ کس نے جانا تھا کہ وہ وکیل شریف آدمی پورے ملک میں لاکھوں کے مجمعے کا محبوب اور مقناطیسی مقرر ہوگا۔ میری بلوچستان پر منشیات کی اسٹوری نے مکران کی سیاست پر ضرور اثر ڈالا جس میں میرا کوئی ہاتھ نہیں تھا۔ یہ وہ دن تھے جب ساحلی بلوچستان میں لوگ انتخابی سیاست اور اسکے پیچھے منشیات کی اقتصادیات کی بات ضرور کرتے تھے۔ پھر وہ چائے خانے ہوں، سرکاری دفاتر، بک اسٹور، کہ بلوچی روزمرہ کے احوال ہوں جسے وہ حال کہتے ہیں ۔ لیکن کوہ مراد پر ذکری بلوچوں کے اجتماع میں چوگان اب بھی پڑھے جاتے تھے جن کو پڑھنے والی عورت ہوتی ہے۔

لیکن کس نے جانا تھا کہ دو عشروں بعد اسی بلوچستان میں ایک جنگ برپا ہوگی جسے ان کے ہمدرد بلوچ مزاحمت کاروں اور ان کے مخالف شورش پسند کہیں گے ۔ اور وہ سانولا بلوچ غلام محمد جو مجھے مند اور تربت کے سفر میں ملا تھا وہ بھی غائب شدہ ہوکر مسخ شدہ لاشوں میں شامل ہوچکا ہوگا۔ کس نے جانا تھا حئی بلوچ ، مالک بلوچ، اکرم بلوچ، کچکول علی، ہمارا پرانا دوست شکیل اور پی پی پی کا بزرگ رہنما کچکی صاحب جیسے نہ جانے کیسے کیسے لوگ ملے تھے۔ 

اور یہ میرے سفر کا اختتام ہے جو مجھے بہت کچھ سکھا گیا۔