Dr. Jehanzeb Jamaldini is acting chief organizer of Balochistan National Party (BNP) which is one of the most vocal opposition parties in Balochistan. In March this year, he was elected a senator from Balochistan for next 6 years. In Senate, Dr. Jehanzeb Jamaldini chairs the standing committee on Procedures and Privileges. Balochistan Inside conducted an interview with Dr. Jehanzeb Jamaldini about different issues of Balochistan.

Adnan Aamir: What role have you played in highlighting different issues of Balochistan after taking oath as Senator?

Jehanzeb Jamaldini: One of the major problem faced by Youth, in Balochistan, is scarce employment opportunities. Youngsters from Balochistan often visit me in Islamabad and Quetta and apprise me on how fake domicile holders get the jobs on Balochistan quota. DMG officers serving as Deputy Commissioners and Assistant Commissioners have issued domicile certificates to their relatives, in huge numbers. In presence of large number of fake domicile holders, genuine candidates from Balochistan are deprived of jobs and scholarship opportunities. From the platform of different standing committees in Senate, I have raised the issue of jobs of Balochistan quota in Federal departments. I have put up questions with PIA, HEC, CDA, OGDCL, SNGPL, SSGC and other departments and asked them to explain how they are fulfilling 6 percent quota of Balochistan. I am also raising voice to investigate the authenticity of domicile certificates of all those candidates who have secured jobs on Quota of Balochistan.

Question: How would you comment on the two years performance of Dr. Malik Baloch’s government?

Answer: I have always been a well wisher of Dr. Malik Baloch. When He became Chief Minister of Balochistan, I provided him with multiple sets of master plans on how he can improve the performance of his government and be a successful Chief Minister. However, he viewed my suggestions with suspicion and ignored them from the outset. In last two years, Dr. Malik Baloch has failed to improve the security situation in the province. There has not been any improvement in matters relating to governance either. Dr. Malik Baloch is helpless without support of Pashtunkhwa Milli Awami Party (PKMAP) and this has further contributed to his failures as Chief Minister.

“As compared to figures in 1998 census, population of Baloch districts has increased nominally but in Pashtun areas it has increased by 300% to 500%. For example Population of Qilla Abdullah was 370,269 in last census and now it has reached 2,138,997. There has been a 477.7% increase and this fact has been reported by national newspapers of Pakistan.”

Question: In March 2016, National census is all set to take place in Pakistan. In presence of hundreds of thousands of Afghan Refugees, How would BNP react to census in Balochistan?

Answer: Without the exodus of Afghan Refugees from Balochistan, census is not acceptable to Baloch. It’s a fact that 4 million Afghan Refugees have been absorbed in society in Balochistan since 1979. Apart from these 4 million, there are another 1.6 to 1.8 million Afghan Refugees that PKMAP wants to register as Pakistani citizen. As compared to figures in 1998 census, population of Baloch districts has increased nominally but in Pashtun areas it has increased by 300% to 500%. For example Population of Qilla Abdullah was 370,269 in last census and now it has reached 2,138,997. There has been a 477.7% increase and this fact has been reported by national newspapers of Pakistan. Same is the case with Loralai and Pishin. Increase in population of Pashtun districts since 1998 has been only because of naturalization of Afghan Refugees. We will not only oppose census in presence of Afghan Refugees but will also resist it with every possible means.

Question: Do you have any reservations on verdict of Judicial Commission on election rigging?

Answer: We have been totally disappointed by the verdict of judicial commission. In 2013, Election Commission failed to conduct free and fair elections in Balochistan. In NA-260, where there is an overwhelming Baloch majority, a Pashtun candidate was declared victorious. Irrefutable evidence is available which suggests that no elections were conducted in Panjgur district but still candidates of National Party were declared victorious from there. These are just two examples of massive rigging in Balochistan. In Punjab elections were possibly rigged by Returning Officers but in Balochistan systematic rigging was carried out to cause defeat of BNP. Judicial commission ignored these realities and that’s why we have expressed our dismay on its verdict.

“Nawaz Sharif and Shehbaz Sharif have repeatedly regretted that toppling government of BNP in 1998 was a grave mistake. Unfortunately, same mistake is once again repeated by not allowing BNP to freely take part in political activities.”

Question: National Party is making continuous attempts to persuade Khan of Kalat to return to Pakistan. Do you think this will help in solving Balochistan conflict?

Answer: Khan of Kalat is a respectable personality all over Balochistan. Family of Khan of Kalat used to be rulers of Balochistan. We welcome Khan of Kalat in politics of Balochistan. However, his return to Balochistan will have no impact in the situation of the province. Khan of Kalat doesn’t enjoy support of any strong political party in Balochistan. Neither any insurgent group is under his control. Therefore His return to Balochistan will be just symbolical. National Party government might be able to extend their tenure as a result of his return but it will not help, in any way, in solving Balochistan conflict.

Question: In a recent press conference, you blamed government for targeting BNP. In your opinion, Why BNP is being targeted?

Answer: BNP is being targeted by both belligerents in the Balochistan conflict. Baloch insurgents blame that BNP is an establishment-sponsored party and establishment blames that BNP is political wing of the insurgents. Both of these allegations are utterly wrong. BNP believes in democratic political struggle and completely rejects armed insurgency, use of weapons and sabotage to achieve political ends. We are being targeted due to our strong and uncompromising stance on issues of Balochistan. Nawaz Sharif and Shehbaz Sharif have repeatedly regretted that toppling government of BNP in 1998 was a grave mistake. Unfortunately, same mistake is once again repeated by not allowing BNP to freely take part in political activities.

Question: As a leading Politician from Balochistan, in your opinion, what can be done to solve Balochistan conflict?

Answer: Solution of Balochistan problem is political and it’s really simple. People of Balochistan should get the powers to make all decisions about Balochistan. Decisions about mineral resources, ports, coasts and everything should be in the hands of Baloch. Balochistan should have provincial autonomy in accordance with Lahore Resolution of 1940. Para-military forces should be in provincial control. Free and fair elections should be conducted in Balochistan and fake leadership should not be imposed on the people. After taking these steps with sincerity, there can be harmony and peace in Balochistan.

Disclaimer: Balochistan Inside not necessarily agrees with the views of the Interviewee.

ہم بلوچستان میں افغان پناہ گزینوں کے انخلاء کے بغیر مردم شماری تسلیم نہیں کریں گے۔ سینیٹر جہانزیب جمال دینی

انٹرویو :عدنان عامر 

ڈاکٹر جہانزیب جمال دینی بلوچستان نیشنل پارٹی (بی این پی) کے قائم مقام چیف آرگنائزر ہیں جو بلوچستان کی انتہائی موثر اپوزیشن جماعتوں میں شامل ہے۔ رواں سال مارچ میں وہ بلوچستان سے اگلے چھ سال کے لئے سینیٹر منتخب ہوئے۔ سینیٹ میں ڈاکٹر جہانزیب جمال دینی اسٹینڈنگ کمیٹی برائے ضابطوں اور مراعات کی صدارت کرتے ہیں۔ بلوچستان ان سائیڈ نے صوبے کے مختلف مسائل پر ان سے تبادلہ خیال کیا ہے۔ 

عدنان عامر: سینیٹر کا حلف اٹھانے کے بعد آپ نے بلوچستان کے مختلف مسائل کو اجاگر کرنے کے لئے کیا کردار ادا کیا؟
جہانزیب جمال دینی: بلوچستان میں نوجوانوں کو درپیش سب سے اہم مسئلہ ملازمت کے نایاب مواقع ہیں۔ بلوچستان سے تعلق رکھنے والے نوجوان اکثر مجھ سے اسلام آباد اور کوئٹہ میں آکر ملتے ہیں اور مجھے آگاہ کرتے ہیں کہ جعلی ڈومیسائل کے ذریعے لوگ بلوچستان کے کوٹے پر ملازمت حاصل کرلیتے ہیں۔ ڈپٹی کمشنرز اور اسسٹنٹ کمشنرز کے عہدے پر کام کرنے والے ڈی ایم جی افسران نے اپنے رشتہ داروں میں ڈومیسائل کے سرٹیفکیٹ بڑی تعداد میں جاری کئے ہیں۔ جعلی ڈومیسائل رکھنے والے افراد کی بڑی تعداد کی موجودگی کے باعث بلوچستان کے حقیقی امیدوار ملازمتوں اور اسکالرشپس کے مواقع سے محروم رہتے ہیں۔ سینیٹ میں مختلف قائمہ کمیٹیوں کے پلیٹ فارم سے میں نے وفاقی محکموں میں بلوچستان کے کوٹے پر ملازمتیں دینے کے مسئلہ پر آواز اٹھائی۔ میں نے پی آئی اے، ایچ ای سی، سی ڈی اے، او جی ڈی سی ایل، ایس این جی پی ایل، ایس ایس جی سی اور دیگر محکموں کے سامنے سوالات اٹھائے اور ان سے استفسار کیا کہ وہ کس طرح سے بلوچستان کے 6 فیصد کوٹے پر عمل درآمد کو یقینی بنا رہے ہیں۔ میں بلوچستان میں کوٹے پر ملازمتیں حاصل کرنے والے ان تمام امیدواروں کے ڈومیسائل مستند ہونے کی تحقیقات کے لئے بھی آواز اٹھا رہا ہوں۔ 

سوال: آپ ڈاکٹر مالک بلوچ کی دو سالہ حکومت کی کارکردگی پر کیا تبصرہ کریں گے؟
جواب: میں ڈاکٹر مالک بلوچ کا ہمیشہ سے خیرخواہ رہا ہوں۔ جب وہ بلوچستان کے وزیراعلیٰ بنے تو میں نے حکومت کی کارکردگی بہتر بنانے اور ایک کامیاب وزیر اعلیٰ بننے کے لئے انہیں مختلف ماسٹر پلان پیش کئے۔ تاہم انہوں نے میری تجاویز کو شکوک کی نظر سے دیکھا اور آغاز سے ہی ان تجاویز کو نظر انداز کردیا۔ گزشتہ دو سالوں میں ڈاکٹر مالک بلوچ صوبے میں سیکورٹی صورتحال میں بہتری لانے میں ناکام ہوچکے ہیں جبکہ گورننس سے متعلق معاملات میں بھی کسی قسم کی بہتری نہیں آئی۔ ڈاکٹر مالک بلوچ پشتونخوا ملی عوامی پارٹی (پی کے ایم اے پی) کی حمایت کے بغیر بے یار و مددگار ہیں اور اس وجہ نے بطور وزیراعلیٰ ان کی ناکامی میں مزید حصہ ڈالا ہے۔

      کی1998 مردم شماری کے اعداد و شمار کے مقابلے میں بلوچ اضلاع کی آبادی میں معمولی اضافہ ہوا لیکن پشتون علاقوں کی آبادی میں 300 فیصد سے 500 فیصد تک اضافہ ہوچکا ہے۔ مثال کے طور پر قلعہ عبداللہ کی آبادی کی آبادی آخری مردم شماری کے مطابق 3 لاکھ 70 ہزار 269 تھی اور اب یہ تعداد 21 لاکھ 38 ہزار 997 تک پہنچ چکی ہے۔ یہ اضافہ 477 فیصد ہے اور یہ حقائق پاکستان کے قومی اخبارات میں رپورٹ ہوچکے ہیں۔ 

سوال: مارچ 2015 میں پاکستان بھر میں مردم شماری کا آغاز ہوگا۔ لاکھوں افغان پناہ گزینوں کی موجودگی میں بی این بلوچستان میں پی مردم شماری پر کیسا ردعمل ظاہر کرے گی؟ 
جواب: افغان پناہ گزینوں کو بلوچستان سے نکالے بغیر بلوچوں کو کسی صورت مردم شماری قابل قبول نہیں ہوگی۔ یہ ایک حقیقت ہے کہ 1979 سے بلوچستان آنے والے 40 لاکھ افغان پناہ گزیں معاشرے میں ضم ہوچکے ہیں۔ ان 40 لاکھ افغانوں کے علاوہ (صوبے میں) 16 لاکھ سے 18 لاکھ مزید افغان پناہ گزیں ہیں اور پختونخوا ملی عوامی پارٹی ان کو پاکستانی شہری کے طور پر رجسٹرڈ کرانا چاہتی ہے۔ 1998 کی مردم شماری کے اعداد و شمار کے مقابلے میں بلوچ اضلاع کی آبادی میں معمولی اضافہ ہوا لیکن پشتون علاقوں کی آبادی میں 300 فیصد سے 500 فیصد تک اضافہ ہوچکا ہے۔ مثال کے طور پر قلعہ عبداللہ کی آبادی کی آبادی آخری مردم شماری کے مطابق 3 لاکھ 70 ہزار 269 تھی اور اب یہ تعداد 21 لاکھ 38 ہزار 997 تک پہنچ چکی ہے۔ یہ اضافہ 477 فیصد ہے اور یہ حقائق پاکستان کے قومی اخبارات میں رپورٹ ہوچکے ہیں۔ کچھ ایسا ہی معاملہ لورالائی اور پشین کے ساتھ ہے۔ 1998 سے پشتون اضلاع کی آبادی میں اضافے کی وجہ افغان پناہ گزینوں کو قبول کیا جانا ہے۔ ہم افغان پناہ گزینوں کی موجودگی میں نہ صرف مردم شماری کی مزاحمت کریں گے بلکہ ہر ممکن طریقے سے اس کی مزاحمت کریں گے۔

Dr. Jehanzeb Interview (3) سوال : افغان پناہ گزینوں کے مسئلہ کے پس منظر میں آپ بلوچستان میں نیشنل ڈیٹا بیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) کے کردار کو کیسے دیکھتے ہیں ؟ 
جواب: نادرا میں چاہے بلوچ افسران ہوں یا پشتون، ان کی اکثریت نے ہمیں مایوس کیا ہے۔ چند روپوں کے عوض یہ افغان پناہ گزینوں کو غیرقانونی طور پر رجسٹرڈ کررہے ہیں اور کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ فراہم کررہے ہیں۔ نادرا حکام ان علاقوں جیسے پشین، قلعہ سیف اللہ اور لورالائی میں پختونخوا ملی کی ملی بھگت سے افغان پناہ گزینوں کو بھاری تعداد میں کمپیوٹرائزڈ شناختی کارڈ جاری کررہے ہیں۔ ان علاقوں کے لوگوں نے مجھ سے متعدد بار ملاقاتیں کیں اور اس مسئلہ کے بارے میں اپنی تشویش کا اظہار کیا۔ ان کا کہنا ہے کہ افغان پناہ گزینوں کو کمپیوٹرائزڈ شناختی کارڈ کے اجراء سے مقامی پشتون تباہ ہوجائیں گے۔ کچلاک، سارانان اور قلعہ عبداللہ کے وفود نے مجھ سے ملاقاتیں کی ہیں اور اس عمل کے خلاف آواز اٹھانے کے لئے مجھ سے درخواست کی ہے۔ ہم نے نادرا کے بدعنوان افسران کے خلاف سخت تادیبی کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔ ہمارا ارادہ ہے کہ یہ مسئلہ چیئرمین نادرا، وزیر داخلہ چوہدری نثار اور وزیراعظم میاں نواز شریف کے سامنے اٹھائیں۔ 

سوال : آپ کا پاک چین اقتصادی شاہراہ اور اس کے راستے کے تنازع کے بارے میں کیا خیال ہے؟
جواب: پاک چین اقتصادی شاہراہ ہمارے لئے ثانوی حیثیت رکھتی ہے۔ ہم گوادر پر پورا کنٹرول چاہتے ہیں اور پھر ہم اس اقتصادی شاہراہ کے راستے کا فیصلہ کریں گے۔ ہم قانون سازی کے ذریعے ضمانتیں چاہتے ہیں کہ گوادر میں کوئی آبادگار شناختی کارڈ، پاسپورٹ اور ووٹ دینے کا حق حاصل نہیں کرے گا۔ میں نے یہ مسئلہ کوئٹہ میں منعقد ہونے والی اقتصادی شاہراہ سے متعلق آل پارٹیز کانفرنس میں اٹھایا۔ ووکیشنل ٹریننگ کے ادارے قائم کئے جائیں جو بلوچ نوجوانوں کو اسکل ڈیولپمنٹ کی تربیت فراہم کرسکیں۔ اگر یہاں ایسے تربیتی ادارے نہیں ہوں گے تو پھر دیگر صوبوں سے مزدور منگوائے جائیں گے اور بلوچ بدستور بیروزگار رہیں گے۔ ایک بار قانونی ضمانتیں فراہم ہوجائیں تب ہم اقتصادی شاہراہ کے راستے اور صنعتی زون کے مقام وغیرہ پر بات چیت کرسکتے ہیں۔ 

سوال : کیا آپ کو انتخابی دھاندلی سے متعلق جوڈیشل کمیشن کے فیصلے پر تحفظات ہیں؟ 
جواب: جوڈیشل کمیشن کے فیصلے پر ہمیں مکمل طور پر تحفظات ہیں۔ 2013 میں الیکشن کمیشن صوبے میں آزاد اور منصفانہ انتخابات کے انعقاد میں ناکام رہا۔ این اے 260 میں جہاں بلوچوں کی بھاری اکثریت ہے، وہاں ایک پشتون امیدوار کو فاتح قرار دیا گیا۔ اس ضمن میں ناقابل تردید شواہد موجود ہیں جن سے یہ پتہ چلتا ہے کہ پنجگور ضلع میں انتخابات منعقد ہی نہیں ہوئے۔ لیکن بدستور نیشنل پارٹی کے امیدواروں کو فتح یاب قرار دیا گیا۔ بلوچستان میں بھرپور دھاندلی کی یہ محض دو مثالیں ہیں۔ پنجاب میں ممکنہ طور پر ریٹرننگ افسران کی جانب سے انتخابات میں دھاندلی کی گئی لیکن بلوچستان میں منظم انداز سے دھاندلی کی گئی تاکہ بی این پی کو شکست دی جائے۔ جوڈیشل کمیشن نے ان حقائق کو نظرانداز کیا اور اسی وجہ سے ہم نے اس کے فیصلے پر مایوسی کا اظہار کیا ہے۔

نواز شریف اور شہباز شریف اس پر پہلے ہی افسوس کا اظہار کرچکے ہیں کہ 1998 میں بی این پی کی حکومت کو ہٹانا ایک بڑی غلطی تھی۔ بدقسمتی سے بی این پی کو سیاسی سرگرمیوں میں آزادانہ طور پر حصہ لینے کی اجازت نہ دیکر وہ غلطی دوبارہ دہرا رہے ہیں۔ 

سوال : خان آف قلات کو واپس پاکستان لانے کے لئے نیشنل پارٹی مستقل کوششیں کررہی ہے۔ کیا آپ سمجھتے ہیں کہ ان کی واپسی سے بلوچستان کے تنازع کو حل کرنے میں مدد ملے گی؟
جواب : خان آف قلات بلوچستان بھر میں ایک قابل احترام شخصیت ہیں۔ خان آف قلات کا خاندان بلوچستان کا حکمراں رہا ہے۔ ہم بلوچستان کی سیاست میں خان آف قلات کا خیرمقدم کرتے ہیں تاہم ان کی بلوچستان واپسی سے صوبے کی صورتحال پر کوئی فرق نہیں پڑے گا۔ خان آف قلات کو بلوچستان میں کسی سیاسی جماعت کی مضبوط حمایت حاصل نہیں ہے۔ نہ ہی عسکریت پسندوں کا کوئی گروپ ان کے کنٹرول میں ہے۔ اس لئے ان کی بلوچستان واپسی محض علامتی ہوگی۔ نیشنل پارٹی کی حکومت ان کی واپسی کے نتیجے میں شائد اپنے اقتدار کا دورانیہ بڑھانے میں کامیاب رہے لیکن اس سے کسی بھی طرح بلوچستان کے تنازع کے حل میں کوئی مدد نہیں ملے گی ۔

سوال : حالیہ پریس کانفرنس کے دوران آپ نے بی این پی کو نشانہ بنانے پر حکومت کو مورد الزام ٹہرایا۔ آپ کے خیال میں بی این پی کو کیوں ہدف بنایا جارہا ہے؟ 
جواب : بلوچستان کے تنازع میں بی این پی کو دونوں اطراف کے جنگجونشانہ بنایا جارہا ہے۔ بلوچ عسکریت پسند الزام عائد کرتے ہیں کہ بی این پی اسٹیبلشمنٹ کی حمایت یافتہ جماعت ہے اور اسٹیبلشمنٹ یہ الزام عائد کرتی ہے کہ بی این پی عسکریت پسندوں کی سیاسی شاخ ہے۔ یہ دونوں الزامات مکمل طور پر غلط ہیں۔ بی این پی جمہوری سیاسی جدوجہد پر یقین رکھتی ہے اور سیاسی نتائج کے حصول کے لئے مکمل طور پر مسلح جدوجہد، ہتھیاروں کے استعمال اور تخریب کاری کو مسترد کرتی ہے۔ ہم کو بلوچستان کے مسائل پر مضبوط اور غیرمتزلزل موقف اختیار کرنے پر نشانہ بنایا جارہا ہے۔ نواز شریف اور شہباز شریف اس پر پہلے ہی افسوس کا اظہار کرچکے ہیں کہ 1998 میں بی این پی کی حکومت کو ہٹانا ایک بڑی غلطی تھی۔ بدقسمتی سے بی این پی کو سیاسی سرگرمیوں میں آزادانہ طور پر حصہ لینے کی اجازت نہ دیکر وہ غلطی دوبارہ دہرا رہے ہیں۔ 

سوال : صوبے کے صف اول کے سیاستداں کے طور پر آپ کے خیال میں بلوچستان کے مسائل کو حل کرنے کے کیلئے کیا اقدام کئے جاسکتے ہیں ؟
جواب : بلوچستان کے مسئلے کا حل سیاسی ہے اور یہ واقعی بہت سادہ ہے۔ بلوچستان کے لوگوں کو بلوچستان کے بارے میں تمام فیصلے کرنے کے لئے اختیارات ہونے چاہیے۔ معدنی ذخائر، بندرگاہ، ساحلی علاقے اور ہر ایک چیز بلوچوں کے ہاتھ میں ہونی چاہیے۔ بلوچستان کو قرار داد پاکستان 1940 کے مطابق صوبائی خودمختاری دی جائے۔ نیم فوجی دستے صوبائی اختیار میں ہونے چاہیں۔ بلوچستان میں آزادانہ اور منصفانہ الیکشن کرائے جائیں گے اور جعلی قیادت کو عوام پر مسلط نہ کیا جائے۔ ان اقدامات پر سنجیدگی کے ساتھ عمل درآمد کیا جائے تو اس سے بلوچستان میں بھائی چارہ اور امن قائم ہوسکتے ہے۔ 

نوٹ: بلوچستان ان سائیڈ کا انٹرویو دینے والے کے جواب سے متفق ہونا ضروری نہیں۔


Warning: A non-numeric value encountered in /home/balochistan/public_html/wp-content/themes/Newspaper/includes/wp_booster/td_block.php on line 2017