The weather of Quetta begins turning in October. The changing weather with chilling winds reports the arrival of winter and the routine life goes slow duirng a chilled cold weather. Presently, the weather of Quetta is cold but surprisingly the political temperature is looking to be hot. What is the future of the Murree Agreement? The result will be come out soon. How the head of Muslim League (N) and the throne of Lahore will control the political situation of Balochistan. All eyes are focused on them. Dr. Malik will remain as the chief Minister or the power will transfer to Nawab Sanaullah Zahri. In both conditions the political atmosphere will be hot in the next few months. All political forces and tribal elders also know about the hotness of political situation.

At a time when the political situation is very tense and there is also a fear that either the Murree Agreement is acted upon or not, the Muslim League (N) will face difficulties in Balochistan. In order to make the implication of agreement possible, the throne of Lahore will have to gain the trust of Mahmood Khan Achukzai of Pukhtunkhuwa Milli Awami Party and Mir Hasil Khan Bazenjo of National Party.

If agreement was acted upon, then those Muslim League members who did not get the ministries, they will start preparing for future journey and if Murree Agreement did not implement, then, first they would show resentment and then would withdraw and then apart from the throne of Lahore and it would be necessary for all such members of Muslim League (N) to get prepared for the next elections.

All parties are ready to get the advantage of this situation. There will be fewer members, who leave the (N) league and join nationalist politics of Balochistan. Most of them could fly towards national level parties like JUI-F, Pakistan Peoples Party, Pakistan Tehreek Insaf and any other political alliance. Every party is trying to get the advantage of this situation. However, the first achievement has won by Pakistan Tahreek Insaf who came up with the slogan of change, as Sardar Yar Muhamammad Rind, head of Rind tribe, joined them who had resigned from Muslim league (Q) three years ago. In the last election he distanced himself from parliamentary politics due the cases filed during his tenure. However, now he has decided to politically break the silence that’s why he has joined the party whose slogan is change led by Imran Khan.

Sources close to Sardar Yar Muhammad Rind said that the main reason behind the late decision by him about his future is that from last election to current situation he had many available options to join any political platform which include nationalist, religious and national level parties and as he puts his political weight in favour of any party, it would not only benefit in Sibbi, Naseer Abad divisions of Balochistan but some parts of Sindh as well because Sardar Yar Muhammad Rind keeps his tribal influence not only in Balochistan but also in Sindh. However, his closer sources are also claiming that now Sardar Yar Muhammad wants to do provincial level politics rather than federal politics and he does not want to leave his nation alone who are living in Sindh and in other parts of country in this situation.

According to the closer sources of Sardar Rind, before the announcement of joining, Sardar Rind has not only consulted with his nation living in Balochistan and Sindh but also with the tribal elder of Naseer Abad division and his associates.

After long deliberations, Sardar Yar Muhammad Rind has announced to join the Pakistan Tahreek Insaf so that he could play an important role in the federal politics along with Balochistan. According to the closer sources of Sardar Rind, before the announcement of joining, Sardar Rind has not only consulted with his nation living in Balochistan and Sindh but also with the tribal elder of Naseer Abad division and his associates. He has also contacted with his friends and associates belong to the areas of Pushtoon Abad of Balochistan and provincial capital, Quetta. He has joined the Pakistan Tahreek Insaf after getting positive responses.

The sources close to Sardar Yar Muhammad Rind said that Sardar Rind would not wait for the upcoming elections to come to the assembly, he has decided to join the current assembly and for this he is waiting to clear himself from the cases which are already in the process of court hearing. For this matter his lawyers are very hopeful that he will be cleared from the cases in the next 1-2 months because all the family members and tribal people who have been nominated in the cases along with the Sardar Rind already acquitted from the court.

On this basis lawyers of Sardar Rind are hopeful that Sardar Rind will also be acquitted soon from the cases and after that he would contest on his ancestral seat from the platform of Pakistan Tahreek Insaf and would come into assembly.

The sources in Pakistan Tahreek Insaf claim that the consultations have been completed to make Sardar Rind as an organizer of Pakistan Tahreek Insaf Balochistan chapter. It is only waiting an appropriate timing for this announcement. On the other hand, Sardar Rind has started preparations for Kisan Conference in Naseer Abad division which would be the first demonstration of the masses in Balochistan on the platform of Pakistan Tahreek Insaf by him.

بدلتا موسم اور تحریک انصاف کی بلوچستان میں آمد

تحریر :شاہد رند 

اکتوبر میں کوئٹہ کا موسم رخ بدلنا شروع کردیتا ہے ۔یخ بستہ ہواؤں کے ساتھ موسم تبدیل ہوکر سردیوں کی آمد کی اطلاع دیتا ہے ، شدید سرد موسم میں معمولات زندگی سست پڑنا شروع ہوجاتے ہیں ۔ اس وقت کوئٹہ کا موسم تو سرد ہو رہا ہے لیکن حیران کن طور پر سیاسی میدان گرم ہوتا ہوا نظر آرہا ہے ۔ مری معاہدے کا مسقبل کیا ہوگا ؟اس کا فیصلہ جلد سامنے آجائیگا ۔مسلم لیگ (ن )کے سربراہ تخت لاہور کے بادشاہ بلوچستان میں سیاسی ماحول کو کیسے قابو پائیں گے ، تمام نگاہیں انہی پر مرکوز ہیں ۔ ڈاکٹر مالک بدستور وزیر اعلیٰ رہیں گے یا اقتدار نواب ثناء اللہ زہری کو منتقل ہوگا ۔ ان دونوں صورتوں میں سیاسی ماحول آئندہ چند مہینوں میں گرم رہے گا ۔ سیاسی ماحول کی اس تپش کا اندازہ تمام سیاسی قوتوں اور قبائلی عمائدین کو بھی ہے 

ایک ایسے وقت میں جب سیاسی صورتحال تناؤ کا شکار ہے اور خدشہ یہ بھی موجود ہے کہ مری معائدے پر عمل ہو یا نہ ہو لیکن مسلم لیگ ن کو بلوچستان میں مشکلات پیش آنے والی ہیں ۔ معاہدے پر عمل درآمد کو ممکن بنانے کیلئے تخت لاہور کے بادشاہ کو پختونخوا ملی عوامی پارٹی کے محمود خان اچکزئی اور نیشنل پارٹی کے میر حاصل خان بزنجو کا اعتماد حاصل کرنا ہوگا ۔ معاہدے پر عمل درآمد ہوا تو جن مسلم لیگیوں کو وزارتیں نہ ملیں وہ مستقبل کے سفر کی تیاری شروع کردیں گے اور اگر مری معاہدے پر عمل نہ ہوا تو پھر پہلے ناراضگی اور پھر کنارہ کشی اختیار کریں گے اور پھر تخت لاہور سے الگ رہ کر ان تمام لیگی اراکین پر آئندہ انتخابات کی تیاری لازم ہوجائے گی ۔ 

ایسی صورتحال کا فائدہ اٹھانے کے انتظار میں تمام جماعتیں موجود ہیں ن لیگ سے نکلنے والے اراکین میں کم ہی ایسے افراد ہونگے جو بلوچستان کی قوم پرست سیاست کا رخ کریں گے ۔ زیادہ تر کا رخ قومی جماعتوں یعنی جے یوآئی (ف )، پاکستان پیپلز پارٹی ، پاکستان تحریک انصاف اور مسلم لیگ ق ،ع، غ جیسے کسی سیاسی اتحاد کی طرف ہوسکتا ہے ۔ ہر جماعت اس صورتحال کا فائدہ اٹھانے کی کوششیں کررہی ہے تاہم پہلی کامیابی تبدیلی کا نعرہ لگانی والی پاکستان تحریک انصاف جیت چکی ہے اور یہ کامیابی پی ٹی آئی نے حاصل کی ہے ۔ رند قبیلے کے سربراہ سردار یار محمد رند کی شمولیت کی صورت میں رند قبیلے کے سربراہ سردار یار محمد رند نے تقریباً تین سال قبل مسلم لیگ ق سے استعفیٰ دیدیا تھا ۔ گزشتہ انتخابات کے دوران سردار یار محمد رند اپنے دور حکومت میں درج مقدمات کی وجہ سے پارلیمانی سیاست سے دور ہوئے تھے تاہم اب اس خاموشی کو توڑ کر انہوں نے سیاسی فیصلہ کرلیا ہے اور خان صاحب کی تبدیلی کے نعرے والی ٹیم کو جوائن کرچکے ہیں ۔ 

سردار یار محمد رند کے قریبی ذرائع کا کہنا ہے کہ سردار رند کی جانب سے اپنے مستقبل کے حوالے سے فیصلے میں تاخیر کی اہم وجہ یہ ہے کہ گزشتہ انتخابات سے لے کر حالیہ صورتحال تک ان کے پاس کسی سیاسی پلیٹ فارم پر جانے کے کئی آپشنز موجود تھے جن میں قوم پرست ، مذہبی اور قومی سطح کی جماعتیں شامل تھیں اور سردار رند اپنا قبائلی اور سیاسی وزن جس بھی سیاسی جماعت کی جھولی میں ڈالتے اسے اس کا فائدہ نہ صرف بلوچستان کے سبی نصیر آباد ڈویژن میں ملتا بلکہ سندھ میں بھی ہونا تھا کیونکہ سردار یار محمد رند نہ صرف بلوچستان بلکہ سندھ میں بھی اتنا ہی قبائلی اثر و رسوخ رکھتے ہیں ۔ تاہم انکے قریبی ذرائع یہ بھی دعویٰ کررہے ہیں کہ اب سردار یار محمد رند مرکز کے بجائے صوبے کی سیاست کرنا چاہتے ہیں اور ایسی صورتحال میں وہ سندھ میں اور ملک کے دیگر حصوں میں آباد اپنی قوم کو تنہا نہیں چھوڑنا چاہتے ۔ 

اس لئے طویل صلاح و مشورے کے بعد سردار یار محمد رند نے پاکستان تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان کیا ہے تاکہ وہ بلوچستان سمیت مرکز کی سیاست میں اہم کردار ادا کرسکیں ۔ سردار رند کے قریبی ذرائع کے مطابق شمولیت کے اعلان سے قبل نہ صرف سردار رند نے بلوچستان اور سندھ میں آباد اپنی قوم بلکہ سبی نصیر آباد ڈویژن کے قبائلی عمائدین اور اپنے رفقاء سے مشورے کئے ہیں بلکہ شمولیت کے اعلان سے قبل صوبائی دارالحکومت کوئٹہ اور بلوچستان کے پشتون آبادی والے علاقوں سے تعلق رکھنے والے اپنے دوستوں اور رفقاء سے بھی رابطے کئے ہیں جن کی جانب سے حوصلہ افزاء جواب ملنے پرانہوں نے پاکستان تحریک انصاف میں شمولیت کی ہے ۔ 

سردار یارمحمد رند کے قریبی ذرائع کا کہنا ہے کہ سردار رند اسمبلی میں آنے کیلئے آئندہ انتخابات کا انتظار نہیں کرینگے ،وہ موجودہ اسمبلی میں آنے کا فیصلہ کرچکے ہیں جس کے لئے انہیں عدالت میں زیر سماعت مقدمات سے کلئیر ہونے کا انتظار ہے ۔ اس حوالے سے ان کے وکلاء پر امید ہیں کہ آئندہ ایک سے دو ماہ میں انہیں بری کروالیا جائیگا کیونکہ تمام مقدمات میں سردار رند کے ساتھ انکی فیملی اور قبیلے کے جن افراد کو نامزد کیا گیا ہے وہ عدالتوں سے بری ہوچکے ہیں ۔ اسی بنیاد پر سردار رند کے وکلاء پر امید ہیں کہ سردار رند جلد ان مقدمات سے بری قرار دیئے جائیں گے جس کے بعد وہ اپنی آبائی نشست سے پاکستان تحریک انصاف کے پلیٹ فارم سے انتخاب لڑ کر اسمبلی میں آئیں گے ۔ 

پاکستان تحریک انصاف کے ذرائع کا دعویٰ ہے کہ سردار رند کو بلوچستان میں پاکستان تحریک انصاف کا آرگنائیزر بنائے جانے پر غور مکمل ہوچکا ہے ، صرف اس بات کے اعلان کیلئے مناسب وقت کا انتظار کیا جارہاہے ۔ دوسری جانب سردار رند نے نصیر آباد ڈویژن میں کسان کانفرنس کے انعقاد کیلئے تیاریاں شروع کردی ہیں جو پاکستان تحریک انصاف کے پلیٹ فارم سے ان کی جانب سے بلوچستان میں عوامی طاقت کا پہلا مظاہرہ ہوگا ۔