Balochistan remained the most peaceful province of Pakistan until 1999 once the earlier rebellions were settled in 1977 during Zia regime. There was not a single incident of a bomb blast, launching rockets and attacking patrolling teams or pickets of forces in Balochistan.

However, during the period from 1999 till 2006 the law and order situation turned upside down. An intense movement for the freedom of the western province was waged by the rebellious Baloch nationalists. Armed attacks on security check-posts and bomb blasts targeting state installations became rampant. The law and order situation worsened sharply due to errant policies of the then President, General Musharraf regime.

Major causes which ignited insurgency in Balochistan could be categorized as four in number. The causes are construction of Gwadar Deep Sea Port; selling of coastal land in the province to outsiders; planning construction of four cantonments Gwadar, Dera Bugti, Sui and Ormara and the last but not the least important cause was the murder of Nawab Akbar Bugti.

During the period from 1999 till 2006 the law and order situation turned upside down. An intense movement for the freedom of the western province was waged by the rebellious Baloch nationalists. Armed attacks on security check-posts and bomb blasts targeting state installations became rampant.

First Phase of Gwadar port was developed by the federal government in collaboration with China, at the cost of $248 million. Its construction began in 2002 and completed in record time in December 2006.

Islamabad launched and implemented the port project without taking into consideration the strong reservations of the people of Balochistan. Ironically the Gwadar Port Authority, the main execution body of the port, was set up in Karachi instead of Gwadar itself or at Quetta, the provincial capital.

All the port matters were being controlled from Islamabad and Karachi. A retired admiral of Pakistan Navy was appointed as a chairman of the port authority giving no space to the local people of Gwadar into the management of the port construction.

Centuries old Mullah Bandh, a tiny but vivid fishermen village located along the Gwadar coast, near the then proposed port was relocated. It displaced hundreds of families from their humble living and deprived them of even their fishing voyages.

Second cause was the sale of coastal land of Balochistan to outsiders. Real estate agents from the south and north and the east of the country vis-a-vis the Middle East became the masters of the fate of the land in Gwadar. The investors from Lahore and Karachi had started purchasing huge plots of land in collaboration with civil and military bureaucracies. The investors were lavishly allotted thousands of acres lands in Gwadar city, Peshukhan, Ganze, Jiwani, Sure Bandar, Kapar, Nalent, Pasni, Kalmat, Basool and Ormara.

Hundreds of housing schemes were launched in the first phase along the Makran coast from Jiwani to Ormara. Besides, hundreds more housing schemes have been planned for next phase in Gwadar district. Sparsely populated Gwadar district is currently comprised of four sub-districts including Gwadar, Jiwani, Pasni and Ormara and has a population of merely 280,000 people. But with the planned development for Gwadar the population would have tremendously risen to approximately more than 20 million people and overwhelming majority of them would be non-Baloch.

Not only Gwadar but another mega city was planned in Lasbela district that was named as “Allah Deen City” near Sonmiani Bay in the district. The new city planners dreamt of constructing the new city as huge as Karachi. Besides Allah Den City, real estate agents had been become active to purchase lands in Gadani, Vendar, Uthal, Bella, Hingol and Kund Malir for launching housing schemes.
This expansion envisaged creating homes for approximately more than 10 million non-local people in Lasbela district. The present population of Lasbela district is estimated to be over 1.2 million.
It was planned to settle more than 50 million people, from the other provinces, in both districts of Gwadar and Lasbela. Whereas total population of Balochistan, according to Household Survey of 2011, is just 13.2 million.

The government had announced to establish three cantonments in Balochistan in addition to Ormara, where work had already started. These cantonments were to be set up in Dera Bugti,
Kohlu and Gwadar.

Concerned with this huge demographic shift in the province, Political activists in Balochistan expressed their extreme resentment. They were fearful that they would be marginalized altogether. They started demonstrating their dissatisfaction over real estate trade along the coastal belt of Balochistan from 750 KM long coastal belt stretching from Gaddani to Jiwani. They raised their voice against those projects, on different platforms, which they believed would turn Baloch into minority on their own land.

All political options had been exhausted by Baloch political parties to stop those projects but their voices remained heedless in corridors of power. The persistent absence of democratic culture in a society, historians believe, smoothers the way for militancy.

The political unrest turned into militancy when an unfortunate incident in 2004 in form of a powerful car bomb killed three Chinese engineers and injured 11 others including two Pakistanis who were working on Gwadar port.

Dr Khalid Baloch known as commander Doda Khan had claimed responsibility for the attack. It was the first attack of Balochistan.

The third factor was the construction of the garrisons in Balochistan. The government had announced to establish three cantonments in Balochistan in addition to Ormara, where work had already started. These cantonments were to be set up in Dera Bugti, Kohlu and Gwadar.

The Baloch leaders opposed the construction of cantonments in Balochistan. Nawab Akbar Khan Bugti and Balaach Marri expressed their concerns over the militarization of the province. Balaach Marri announced an armed movement against the state. He reportedly re-organized Balochistan Liberation Army (BLA), which was lying dormant since 1970s, in many parts of Balochistan.

Resistance against setting up of the cantonment in Dera Bugti turned into violent clashes between the armed men of Nawab Akbar Bugti with the law enforcement agencies. Bugti, who was 79 years old politician and tribal chief of Bugtis, was enraged when armed forces attacked his residence in Dera Bugti. Reportedly, many people including women and children were killed in the action. An infamous incident of Dr. Shazia Khalid supplemented the skirmishes. Dr Shazia Khalid was an employee of Pakistan Petroleum Limited (PPL), who was reportedly beaten and repeatedly raped by a masked intruder at her residence in Sui. Nawab Bugti held her in high esteem and had family terms with her. As a result he was infuriated over her rape and the subsequent injustice meted out by the state apparatus.

President of Pakistan Muslim League (Q) Chaudhry Shujahat Hussain and Secretary General PML (Q) Mushahid Hussain visited the Dera Bugti to pacify Nawab Akbar Bugti and played a vital role in temporarily resolving the conflict. Finally Nawab Akbar Bugti acceded to the politician’s arguments and expressed his consent to hold talks with Musharraf regime.

The talk had been planned in Islamabad and a plane was sent to fly Nawab Akbar Bugti from Sui to Rawalpindi. When Nawab Akbar Bugti came at Sui Airport, he was informed that the aircraft had developed some fault and could not fly. It was quite embarrassing for Nawab Bugti to see the aircraft flying in the sky, when he reached his home after return from Sui Airport. Insiders say that such design convinced Nawab Bugti that the Musharraf regime was not interested in any negotiations. That was the turning point for Balochistan. The next day, Nawab announced an armed struggle against the Musharraf regime and left his home for the barren and arid hills. On August 2006, fighting broke out between security forces and Baloch nationalists in Kohlu area. Nawab Bugti along with his 37 Baloch armed fighters and 21 soldiers of Pakistan army were killed during the deadly fighting.

An unending insurgency broke out in the province following the assassination of Nawab Akbar Bugti which continues to date.

بلوچستان میں مسلح بغاوت کی وجوہات
تحریر : عزیز سنگور 
ترجمہ : منیبہ محمود 

1999 تک بلوچستان بدستور ایک پر امن صوبہ تھا جبکہ 1977 میں ضیاء حکومت کے ابتدائی دور میں عسکریت پسندوں کا معاملہ نمٹا لیا گیا تھا۔ اس کے بعد بلوچستان میں گشت کرنے والے فوجیوں او ر چوکیوں پر بم دھماکے ، راکٹ حملے و دیگر کارروائیوں کا ایک واقعہ بھی نہیں ہوا۔ 

تاہم 1999 سے 2006 کے دوران امن و امان کی صورتحال بگڑگئی۔ اس دوران مسلح بغاوت پر آمادہ بلوچ قوم پرستوں کی جانب سے مغربی صوبے کی آزادی کی بھرپور تحریک شروع کی گئی ۔ سیکیورٹی چیک پوسٹوں پر مسلح حملے اور حکومتی تنصیبات کو بم دھماکوں سے نشانہ بنانے کے عمل میں تیزی سے اضافہ ہوا۔ اس وقت صدر جنرل مشرف کی حکومت تھی جن کے دور میں مہم جوئی پر مبنی پالیسیوں کی وجہ سے امن و امان کی صورتحال مزید خراب ہوگئی۔

بلوچستان میں مسلح بغاوت کی بڑی وجوہات کو چار درجہ بندیوں میں تقسیم کیا جاسکتا ہے۔ ان وجوہات میں گوادر بندرگاہ کی تعمیر، بیرونی افراد کو صوبے کی ساحلی زمین کی فروخت ، بلوچستان کے شہر گوادر، ڈیرہ بگٹی، سوئی اور اوماڑہ میں چار چھاؤنیوں کی تعمیر کا منصوبہ اور آخری لیکن سب سے اہم وجہ نواب اکبر بگٹی کا قتل ہے۔

گوادر پورٹ کا پہلا مرحلہ وفاقی حکومت نے چین کے اشتراک سے 248 ملین ڈالر کے لاگت سے مکمل کیا ۔اس کی تعمیر 2002 میں شروع ہوئی اور ریکارڈ مدت میں دسمبر 2006 تک پایہ تکمیل تک پہنچ گئی۔

وفاقی حکومت نے بلوچستان کے لوگوں کے شدید تحفظات کو خاطر میں لائے بغیر بندر گاہ کے منصوبے کا آغاز اور اس پر عمل درآمد شروع کردیا۔ اس پر ستم ظریفی یہ کہ گوادر پورٹ اتھارٹی ، جو بندرگاہ چلانے کی ذمہ دار ہے ، گوادر یا صوبائی دارالحکومت کوئٹہ کے بجائے کراچی میں قائم کردی گئی۔ 

بندرگاہ کے تمام معاملات اسلام آباد اور کراچی سے کنٹرول کئے جارہے ہیں۔ پاکستان بحریہ کے ایک ریٹائرڈ ایڈمرل کو گوادر پورٹ اتھارٹی کا چیئرمین مقرر کردیا گیا تھا اور بندر گاہ کی تعمیر کے انتظام میں گوادر کے مقامی لوگوں کو کوئی جگہ نہیں دی گئی ۔ 

گوادر کے ساحل کے ساتھ ماہی گیروں کا صدیوں پرانا چھوٹا لیکن نمایاں گاؤں ملابندھ قائم ہے۔ مجوزہ بندرگاہ کے قریب واقع اس گاؤں کو دوسری جگہ منتقل کیا گیا۔ یہاں رہائش پذیر سینکڑوں مجبور خاندان بے گھر ہوئے جبکہ ان کو ماہی گیری کے حق سے بھی محروم کردیا گیا۔

مسلح بغاوت کی دوسری وجہ بلوچستان کی ساحلی زمین کی بیرونی افراد کو فروخت ہے۔ پاکستان کے جنوبی، شمالی اور مشرقی غرض یہ کہ مشرق وسطیٰ کے اسٹیٹ ایجنٹس گوادر کی زمین کے مالک بن گئے۔ لاہور اور کراچی کے سرمایہ کاروں نے سول اور فوجی بیورو کریسی کے تعاون سے زمین کے بڑے بڑے پلاٹس خریدنا شروع کردیے۔ گوادر شہر، پیشکان ، گنز ، جیوانی، سر ے بندن ، کپر، نلینیٹ، پسنی، کلمت ، باسول ، اور اوماڑہ کی ہزاروں ایکڑ رقبے کی اراضی سرمایہ کاروں کو بہت بے دردی سے فروخت کی گئی ۔

پہلے مرحلے میں سینکڑوں کی تعداد میں مکران کے ساحل کے ساتھ جیوانی سے اوماڑہ تک ہاوسنگ اسکیم کا آغاز کیا گیا۔ اس کے ساتھ ہی اگلے مرحلے میں ضلع گوادر میں مزید سینکڑوں ہاؤسنگ اسکیموں کی منصوبہ بندی کی جاچکی ہے۔ 2 لاکھ 80 ہزار کی محدود آبادی پر مشتمل ضلع گوادر فی الوقت چار تحصیلوں پر مشتمل ہے جن میں گوادر، جیوانی، پسنی اور اوماڑہ شامل ہیں۔ گوادر میں ترقی کے منظم منصوبوں کی بدولت اس کی آبادی غیر معمولی اضافے سے بڑھ کر 2 کروڑ افراد سے تجاوز کرجائے گی جن کی اکثریت غیر بلوچوں پر مشتمل ہوگی۔ 

صرف گوادر ہی نہیں بلکہ ضلع لسبیلہ میں سونمیانی خلیج کے قریب اللہ دین سٹی کے نام سے ایک اور بڑے شہر کا منصوبہ بنایا گیا ہے۔ اس نئے شہر کے منصوبہ سازوں نے کراچی جتنے ایک بڑے شہر کی تعمیر کا کا خواب دیکھا ہے۔ اللہ دین سٹی کے علاوہ رئیل اسٹیٹ کے ایجنٹس گڈانی، ویندر ، اتھال، بیلا، ہنگول، اور کنڈ ملیر میں بھی ہاؤسنگ اسکیمیں شروع کرنے کے لئے زمین خریدنے کی غرض سے انتہائی سرگرم ہوگئے ہیں۔

اس توسیع سے لسبیلہ شہر میں تقریبا ایک کروڑ سے زائد غیرمقامی افراد گھر حاصل کرسکیں گے جبکہ فی الوقت ضلع لسبیلہ کی آبادی 12 لاکھ نفوس سے زائد ہے۔

یہ منصوبہ بھی بنایا گیا ہے کہ دیگر صوبوں سے 5 کروڑ سے زائد افراد کو دونوں اضلاع گوادر اور لسبیلہ میں آباد کیا جائے۔ دوسری جانب ہاؤس ہولڈ سروے آف 2011 کے مطابق بلوچستان کی کل آبادی محض 1کروڑ 32 لاکھ ہے۔

صوبے میں آبادی کی اتنی بڑی سطح پر منتقلی پر اظہار تشویش کرتے ہوئے بلوچستان کی سیاسی جماعتوں کے کارکنوں نے شدید ناراضگی کا اظہار کیا۔ ان کو ڈر ہے کہ انہیں مکمل طور پر دیوار سے لگا دیا جائے گا۔ انہوں نے گڈانی سے جیوانی تک پھیلی 750 کلومیٹر طویل بلوچستان کی ساحلی پٹی کے ساتھ رئیل اسٹیٹ کی تجارت پر عدم اعتماد کا اظہار کرنا شروع کردیا۔انہوں نے مختلف پلیٹ فارمزپر ان منصوبوں کے خلاف آواز بلند کرنے کا آغاز کیا کیونکہ انہیں اس بات کا یقین ہوگیا تھا کہ یہ منصوبے بلوچ قوم کو ان کی اپنی ہی سرزمین پر اقلیت میں تبدیل کردیں گے۔ 

بلوچستان کی سیاسی جماعتوں کی جانب سے ان منصوبوں کو رکوانے کے لئے اختیار کئے گئے تمام سیاسی طریقے ناکام ثابت ہوئے اور ان کی آواز اقتدار کی راہداریوں میں بدستور دبی رہی۔ مورخین کو یقین ہے کہ معاشرے سے جمہوری کلچر کی مسلسل غیر موجودگی عسکریت پسندی کی راہ ہموار کرتی ہے ۔ 

سیاسی بے چینی اس وقت عسکریت پسندی میں تبدیل ہوگئی جب سال 2004 میں بدقسمتی سے ایک طاقتور کار بم دھماکے میں تین چینی انجینئر ہلاک اور گیارہ دیگر زخمی ہوگئے جن میں گوادربندرگاہ پر کام کرنے والے 2 پاکستانی بھی شامل تھے۔ 

کمانڈر ڈوڈا خان کے نام سے مشہور ڈاکٹر خالد بلوچ نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی۔ یہ بلوچستان میں قوم پرست کالعدم تنظیموں کا پہلا حملہ تھا۔

بلوچستان میں مسلح بغاوت کی تیسری بڑی وجہ بلوچستان میں چھاؤنیوں کا قیام ہے۔حکومت نے اوماڑہ کے علاوہ بلوچستان میں تین مزید چھاؤنیوں کے قیا م کا بھی اعلان کیا جہاں پہلے ہی تعمیراتی کام شروع ہوچکا ہے۔ یہ چھاؤنیاں ڈیرہ بگٹی، کوہلو، اور گوادر میں قائم کی جارہی ہیں ۔ 

بلوچ رہنماؤں نے صوبے میں فوجی چھاؤنیوں کے قیام کی مخالفت کی۔ نواب اکبر خان بگٹی اور بالاچ مری نے صوبے میں فوجی اثر و رسوخ پر اپنے تحفظات کا اظہارکیاتھا ۔ 

نواب اکبر بگٹی کے مسلح افراد کی قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ساتھ ڈیرہ بگٹی میں چھاؤنیوں کے قیام کے خلاف مزاحمت پر تشدد حملوں میں تبدیل ہوگئی۔79 سالہ پرانے سیاستداں اور بگٹی قبیلے کے سربراہ اکبر بگٹی اس وقت شدید غصے میں آگئے جب سیکورٹی فورسز نے ڈیرہ بگٹی میں ان کی رہائش گاہ پر حملہ کیا۔ اس حملے میں مبینہ طور پرخواتین اور بچوں سمیت بہت سے افراد مارے گئے۔

ڈاکٹر شازیہ خالد کے بدنامہ زمانہ واقعے نے ان جھڑپوں میں شدت پیدا کردی ۔ ڈاکٹر شازیہ خالد پاکستان پیٹرولیم لمیٹڈ (پی پی ایل )میں ایک ملازمہ تھیں ، سوئی میں اپنی رہائش گاہ پر ایک نقاب پوش اجنبی کی جانب سے متعدد بار مبینہ طور پر جنسی زیادتی اور تشدد کا نشانہ بنیں۔ نواب بگٹی انہیں بہت عزت دیتے تھے اور ان کے ساتھ ان کے خاندانی مراسم تھے۔ 

پاکستان مسلم لیگ (ق) کے صدر چوہدری شجاعت حسین اور سیکریٹری جنرل مشاہد حسین نے نواب اکبر بگٹی کا غصہ ٹھنڈا کرنے کیلئے ڈیرہ بگٹی کا دورہ کیا اور عارضی طور پر اس تنازعے کو حل کرنے کے لئے اہم کردار ادا کیا۔ آخر کار نواب اکبر بگٹی نے سیاستدانوں کے دلائل مان لئے اور مشرف حکومت کے ساتھ مذاکرات کی آمادگی کا اظہار کردیا۔ 

مذاکرات اسلام آباد میں ہونا طے پائے تھے ، اس لئے نواب اکبر بگٹی کو سوئی سے راولپنڈی لانے کے لئے جہاز بھیجا گیا۔ جب نواب اکبر بگٹی سوئی ایئرپورٹ پہنچے تو انہیں مطلع کیا گیا کہ جہاز میں کچھ خرابی ہوگئی ہے اور وہ پرواز نہیں سکتا۔ تاہم نواب اکبر بگٹی کو اس وقت انتہائی شرمندگی محسوس ہوئی جب انہوں نے گھر واپس پہنچنے پر سوئی ایئرپورٹ سے ہوائی جہاز کو فضا میں پرواز کرتے دیکھا۔ 

واقفان حال کا کہنا ہے کہ ان حالات سے نواب بگٹی کو یقین ہوگیا کہ مشرف حکومت کسی قسم کے مذاکرات میں دلچسپی نہیں رکھتی۔یہ بلوچستان کیلئے اہم موڑ تھا۔اگلے دن نواب اکبر بگٹی نے مشرف حکومت کے خلاف مسلح جدوجہد کا اعلان کیا اور اپنے گھر سے نکل کر خشک و بنجر پہاڑوں پر چلے گئے۔ اگست 2006 میں کوہلو کے علاقے میں ایک خونریز لڑائی کے دوران نواب اکبر بگٹی کے ساتھ 37 بلوچ مسلح مزاحمت کار اور پاکستانی فوج کے 21 جوان مارے گئے۔ 

نواب اکبر بگٹی کے قتل کے ساتھ صوبے میں نہ ختم ہونے والی بغاوت پھوٹ پڑی جو آج بھی جاری ہے۔