It is said that life is a journey, sometimes the journey is tough and hard and sometimes it is full of happiness. Everyone has a wish that his journey of life is full of happiness and prosperity. To fulfill their dreams of happiness in life, every year millions of people face the difficult journey by adopting illegal ways to reach the Europe. In recent period, across the world including Pakistan has seen a great increase in this trend. People easily get the employment after reaching there.

According to the record of FIA Gawadar they arrested 1237 people in 2014 and 2613 people in 2015 during illegal border crossing and filed the cases under the Passport Act. According to the country law, the maximum punishment under Passport Act is one week imprisonment and fine of 1000 Rupees that’s why the arrested people make another attempt after release.

In Pakistan, human smuggling has been turned into as a form of trade. The border areas of Balochistan that are Jiwani and Dusht of Gawadar district, Mand, Punjgoor, Sarawan, Mashkel, Taftan borders of Kech district are treated as motor way for human trafficking. The agents belong to Lahore, Gujranwala, Sahiwal, Sialkot, Gujrat, Sheikhpura, Nariwal, Hafiza Abad, Mandi Bahauddin, Faisalabad, Jhelum, Azad Kashmir are spread in different countries of world including Europe. They work with the local agents developing a strong network and send hundreds of people daily from Makran Coastal highway to Europe via Iran and Turkey. According to the record of FIA Gawadar they arrested 1237 people in 2014 and 2613 people in 2015 during illegal border crossing and filed the cases under the Passport Act. According to the country law, the maximum punishment under Passport Act is one week imprisonment and fine of 1000 Rupees that’s why the arrested people make another attempt after release.

According to the Assistant Director FIA Gawadar, Allah Bukhsh Baloch, Human Smugglers have established a network in a very organized way across the country; they receive large sum of money from innocent people and make arrangements to send them to abroad. FIA has limited resources and unarmed force. The area is too large and security system is also not good. They have only a small barrack having 20 members with old car in which sometime no space left for arrested people. Beside them, Coast Guards, Frontier Corps Balochistan, Police and Levies also hand over the people to FIA who tried to go abroad illegally.

Under the custody of FIA a suspect Aftab from Gujranwala son of Maqbool resident of Taregary Gujranwala told that he wanted to go Greece via Iran and Turkey, he had done a deal of Rs 3.5 Lakh to an agent named Liaquat and the amount had to be paid after reaching the destination. Amount also includes the fare from Lahore to Greece, while we bear the cost of food by ourselves. He told that he contacted agent through the reference of friend’s father while I had a friend of friend in Greece, that’s why I was going there so that I could make my life easy by working there. There is no work here, unemployment is common and life is too difficult. He told that three chances are given to them by agent to reach to the desired destination in the amount of Rs 3.5 Lakh.

According to a policeman in FIA Gawadar Police Station there are many interesting stories and cases of people who are arrested at different times. He tells that at once, some people were arrested among of them was an under 19 cricketer who did not make a place in under nineteen because he had no money to bribe and then he contacted to a resident of Peshawar and who offered to send him to Canada and would give him a place in Canadian Cricket Club. He contracted that he would give him half of the money from whatever he would earn from cricket in his whole life.

The policeman tells that similarly few months ago, some people were arrested and among them was a person who was arrested arrested in his second attempt. According to him, when he reached to the Turkey border after crossing the Iran border in the first try, the Dumper person, who took him to there, felt some danger and he fled. They were nearly 25 people and had limited food. Extremely cold and mountainous area covered with snow. They helplessly lived in the freezing area in the mountainous area for 16 days and when food ended during the period they were compelled to eat ice for their survival. 18 people died in a dilapidated condition in front of them and seven people were left alive when one day they heard the sound of helicopter. They hoisted their shirts and then the helicopter rescued them. After that they deported from Taftan and now he was arrested in his second attempt. According to FIA official among those who were arrested last month also included nine year child who arrested in his fourth attempt. Before that he also was arrested in Quetta.

Another man, Ali, son of Ghulam Rasool said that he reached to Greece after giving 5 Lakh Rupees to agent in 2006 and lived there for seven years. The first four years were great and he received a nice wage but after that the condition began to deteriorate. The conditions were so bad in the remaining three years that even he did not get the labour. Then, we were deported by European Union with a return ticket and 300 euro per head. Citing the problems of returning he explained that it took 15 days to 2 months to reach back and during the journey they left the person back there who cannot walk or became ill and due to this he died after flickering. If anyone protested during the traveling of such act he was tortured.

According to a conservative estimates, hundreds of people go from the Balochistan route and enter into Iran trying to reach the different countries of Europe via Turkey and during this period agents work in an organized way. From Punjab to Iran and Turkey all agents appoint their sub-agents. Human trafficking is off during winter. According to law, under section 34 the punishment to travel abroad without documentation is the fine of Rs. 1000 and ten days imprisonment in case of non-payment, whereas the criminals involved in human trafficking would be sentenced to six years imprisonment with property confiscation. However those involved in this heinous crime were sentenced very little up till now in the country’s history.

بلوچستان کے سرحدی علاقے اور اسمگلروں کی جنت 

تحریر :بہرام بلوچ

کہتے ہیں کہ زندگی ایک سفر ہے ، کہیں یہ سفر کھٹن اور مشکل ہے تو کہیں خوشیوں سے بھر پورہے ۔ہر ایک کی خواہش ہوتی ہے کہ زندگی کا یہ سفر خوشیوں اور خوشحالی سے بھر پور ہو۔اپنی زندگی کی خوشیوں کا خواب لیکر ہر سال لاکھوں افراد یورپ پہنچنے کیلئے انتہائی مشکل سفر کا مقابلہ کرتے ہوئے غیر قانونی راستہ اختیار کرلیتے ہیں ۔ حالیہ برسوں میں پاکستان سمیت دنیا بھر میں اس رجحان میں بے تحاشااضافہ دیکھنے میں آیا ہے ۔ وہاں پہنچنے کے بعد انہیں بآسانی روزگار مل جاتاہے ۔

پاکستان میں انسانی اسمگلنگ ایک تجارت کی شکل اختیار کر چکی ہے ۔ بلوچستان کے سرحدی علاقے ضلع گوادر کے جیوانی ،دشت ،ضلع کیچ کے مند،پنجگور سراوان،ماشکیل،تفتان کا بارڈر انسانی سمگلروں کیلئے موٹروے کی حیثیت رکھتا ہے ۔ لاہور، گوجرانوالہ، ساہیوال، سیالکوٹ، گجرات، شیخوپورہ، ناریوال، حافظ آباد، منڈی بہاؤلدین، فیصل آباد جہلم ،آزاد کشمیر کے ایجنٹ جو یورپ سمیت دنیا کے مختلف ممالک میں پھیل چکے ہیں اور ایک مضبوط نیٹ ورک کے تحت مکران کوسٹل ہائی سے روزانہ سینکڑوں لوگوں کوبراستہ ایران اورترکی یورپ پہنچانے کیلئے یہ ایجنٹ اپنے مقامی ایجنٹوں کے ساتھ مل کر کام کرتے ہیں ایف آئی اے گوادر کے ریکارڈ کے مطابق سال2014میں 1237اور 2015 میں 2613افراد کو غیر قانونی طور پر سر حد پا ر کرنے کے دوران پاسپورٹ ایکٹ کے تحت گرفتار کر کے ان کے خلاف مقدمہ درج کیاگیا ۔ملکی قانون کے مطابق پاسپورٹ ایکٹ کی سزازیادہ سے زیادہ سزا ایک ہفتہ جیل اور ایک ہزار روپیہ جرمانہ ہے ، اس لئے گرفتار ہونے والے افراد سزا پا کر دوبارہ جانے کی کوشش کرتے ہیں ۔ 

اسسٹنٹ ڈائریکٹر ایف آئی اے گوادر اللہ بخش بلوچ کے مطابق ملک بھر میں انسانی سمگلروں کا ایک جال بچھا ہوا ہے جو انتہائی منظم طریقے سے معصوم لوگوں سے بھاری رقم لیکر انہیں بیرون ملک پہنچاننے کا بندوبست کرتے ہیں ۔ ایف آئی اے کے پاس محدود وسائل ہیں اور غیر مسلح فورس ہے ۔علاقہ بہت بڑا ہے اور سیکورٹی کے حالات بھی درست نہیں ہیں،ایک پرانی گاڑی اور 20نفری کے ساتھ چھوٹی سی بیرک ہے جس میں بعض اوقات گرفتار قیدیوں کیلئے بھی جگہ کم پڑجاتی ہے ۔ ان کے علاوہ کوسٹ گارڈ،فرنٹیئر کور بلوچستان، پولیس اور لیویز بھی غیر قانونی طور پر بیرون ملک جانے والوں کو پکڑکر ایف آئی اے کے حوالے کرتی ہے ۔ 

ایف آئی اے کی زیر حراست گوجرانوالہ سے تعلق رکھنے والے ایک ملزم آفتاب ولد مقبول سکنہ تریگڑی گوجرانوالہ کے مطابق وہ ایران اور ترکی کے براستہ یونان جانا چاہتا تھا اور لیاقت نامی ایجنٹ سے اس کی ساڑھے تین لاکھ روپے میں ڈیل ہوئی تھی، رقم کی ادائیگی منزل مقصود تک پہنچنے پر کرنی تھی،جس میں لاہور سے لیکر یونان پہنچنے کا کرایہ بھی شامل ہے جبکہ کھانے پینے کا خرچہ ہم خود کرتے ہیں ۔وہ بتاتے ہیں کہ ان کے دوست کے والد کے توسط سے ایجنٹ سے رابطہ ہوااور وہاں یونان میں بھی میرے دوست کا ایک دوست ہے اس لئے میں جا رہا ہوں اور وہاں جا کر کام کر کے اپنی زندگی آسان بنا لوں گا ،یہاں کام نہیں ہے ،بے روزگاری عام ہے اور زندگی بہت مشکل ہے ،وہ بتاتے ہیں کہ ساڑھے تین لاکھ روپے میں ایجنٹ کی جانب سے تین دفعہ منزل مقصود تک پہنچنے کا چانس دیا جاتاہے ۔ 

ایف آئی اے گوادرکے تھانے میں تعینات ایک اہلکار کے مطابق مختلف اوقات میں گرفتار ہونے والوں کے دلچسپ قصے اور واقعات سامنے آتے ہیں ۔ وہ بتاتے ہیں ایک دفعہ گرفتار ہونے والوں میں ایک انڈر 19کاایک کر کٹر بھی شامل تھا ،جو انڈر19میں اس لئے جگہ نہیں بناسکا کہ اس کے پاس دینے کیلئے پیسے نہیں تھے ،پھر اسکا رابطہ پشاور کے ایک رہائشی سے ہوا اور اُس نے اسے پیشکش کی کہ وہ اسے کینیڈا پہنچا کر کینیڈین کرکٹ کلب میں جگہ دلوائے گا اور زندگی بھرکرکٹ کی جتنی بھی کمائی ہوگی وہ اس کا آدھا حصہ دینے کا پابند ہوگا۔

وہ بتاتے ہیں کہ اسی طرح چند ماہ قبل گرفتار ہونے والوں میں ایک ایساشخص بھی شامل تھا جو دوبارہ جانے کی کوشش میں گرفتار ہوا،اس کے مطابق پہلی کوشش میں وہ ایران بارڈر پار کر کے ترکی بارڈر کے قریب پہنچے ہی تھا کہ اسے لے جانے والے شخص ،جنہیں ‘ڈمپر ‘کہا جاتا ہے ، نے خطرہ محسوس کیا اور اسے چھوڑکر بھا گ گیا ۔وہ 25کے قریب لوگ تھے ، ان کے پاس محدودراشن تھا۔ انتہائی سرد اور برف سے ڈھکا پہاڑی علاقہ تھا۔ وہ بے یارو مددگار برفیلی علاقے میں پہاڑ کے دامن میں 16دن تک رہے اور اس دوران خوراک ختم ہونے پر برف کھا کر گزارا کرتے رہے ۔اس کے سامنے 18افراد تڑپ تڑپ کر مر گئے اور باقی وہ 7 افراد رہ گئے تھے کہ ایک دن ہیلی کاپٹر کی آواز سنائی دی ، انہوں نے اپنی قمیضیں نکال کر لہرائیں جس پر ہیلی کاپٹر نے انہیں ریسکیو کیا ،بعد میں انہیں تفتان سے ڈی پورٹ کیا گیا ،اب دوبارہ جانے کی کوشش میں وہ گرفتار ہوا۔ایف آئی اے اہلکار کے مطابق گزشتہ ماہ گرفتار ہونے والوں میں ایک نو سال کا بچہ بھی شامل تھا جو چار مرتبہ جانے کی کوشش میں گرفتار ہوا،اس سے پہلے وہ کوئٹہ میں بھی گرفتار ہو چکا تھا۔

ایک اور شخص علی ولد غلام رسول کا کہنا ہے کہ وہ 2006 میں پانچ لا کھ روپے ایجنٹ کو دے کر یونان پہنچ گیا ا ورسات سال یونان میں رہا ،ابتدائی چار سال کام بہت اچھا تھا ، مزدوری اچھی ملتی تھی لیکن بعد میں حالات خراب ہونا شروع ہو گئے۔باقی تین سالوں کے دوران حالات اتنے خراب ہوئے کہ مزدوری بھی نہیں ملی ۔ پھر یورپین یونین کی جانب سے ہمیں واپسی کا ٹکٹ اور فی آدمی 300یورو دے کر ڈی پورٹ کر دیا گیا ۔راستے کی دشواریوں کا ذکر کرتے ہوئے وہ بتاتے ہیں کہ پہنچنے میں 15دن سے لیکر دوماہ تک لگ جاتے ہیں اور اس دوران جو پیدل سفر نہیں کر سکتا یا کوئی بیمار ہو جائے ، انہیں وہاں ویران راستے میں چھوڑ دیا جاتا ہے جس سے وہ تڑپ تڑپ کر مر جاتا ہے ، اگر قافلے میں کوئی دوسرا شخص احتجاج کرے تو اس پر تشدد بھی کیا جاتا ہے ۔ 

ایک محتاط اندازے کے مطابق بلوچستان کے راستے روزانہ سینکڑوں افراد ایران میں داخل ہو کر براستہ ترکی یورپ کے مختلف ممالک میں پہنچنے کی کوشش کرتے ہیں ،ایجنٹ ایک منظم طریقے سے اپنا کام کرتے ہیں ۔پنجاب سے لیکر ایران وترکی تک تمام ایجنٹوں نے اپنے سب ایجنٹ مقرر کئے ہوئے ہیں ۔ سردیوں کے سیزن میں کام بند ہوجاتا ہے ۔ ملکی قانون کے مطابق بغیر دستاویزات کے بیرون ملک جانے والوں کی سزا تعزیرات دفعہ 34کے تحت صرف ایک ہزار روپیہ جرمانہ اور عدم ادائیگی پر دس دن جیل جبکہ انسانی اسمگلنگ میں ملوث مجرم کی سزا چھ سال جیل اور جائیداد کی ضبطگی شامل ہے تاہم اس گھناؤنے کاروبار میں ملوث افراد کو اب تک ملکی تاریخ میں بہت ہی کم سزا ہوئی ہے ۔