Interviewed By: Tania Baloch

“Nawab Sanaullah Zehri, also known as Chief of Jhalawan, is the incumbent Chief Minister (CM) of Balochistan. He has been a part of Balochistan Assembly since the 1988 elections. During these times he has been a part of many political parties and also held multiple porfolios in Balochistan Cabinet. Currently, He is the provincial president of ruling PML-N and in that capacity he was elected CM of Balochistan in December 2015 in accordance with Murree Accord.”

Tania Baloch: Your cabinet is almost same as the cabinet of Dr. Malik Baloch. What changes you can bring with this cabinet?

Nawab Sanaullah Zehri: Composition of cabinet is a result of agreement of three coalition partners. According to Murree Accord, cabinet ministries were divided between PML-N, National Party (NP) and Pashtunkhwa Milli Awami Party (PKMAP) and the selection of ministers were made by their respective party leaders.

After change of government we [PMLN] have made some changes in cabinet and hopefully we will make some more changes. Both of our coalition partners have also not made any major change except PKMAP who have changed just one minister. It was purely their decision and that’s what happens in coalition governments.

In your opinion, how successful was the 2.5 year government of Dr. Malik Baloch?

NP was our ally in the past and it’s still our ally. I respect Dr. Malik Baloch. During my oath taking session, I appreciated all the positive steps taken by Dr. Malik Baloch. I also vowed to continue all the positive steps of Dr. Malik including education emergency.

So, you say that Dr. Malik was a successful CM?

We worked together in a friendly environment for last two and half years and there was agreement between us on different matters. Therefore I appreciate all of his positive efforts. We will try to perform better than him.

Balochistan was the first government where local government elections were held in this cycle. However, Local government representatives still complaint of lack of power and authority.

Do you plan to amend the local government act to solve this issue?

After taking oath, my first meeting was with Mayor, deputy mayor of Quetta and other local government officials. In that meeting I committed to the local government representatives that all possible support will be given to them. I have also allocated funds of Rs. 6 billion for them.

However, I agree that we conducted elections in haste due to order of Supreme Court. The local government act that we used did require some changes which we could not do due to haste. For that matter I have constituted a committee which would study the bill and present a modified version in assembly soon. I am personally in favor of devolution of maximum possible powers to local governments so that the people can benefit.

In coming times I will also try to devolve powers down to the local government representatives at grass route level. I also plan to increase the budget of local government despite the constraint of resources.

Thousands of fake CNICs have been issued from different places in Balochistan. In that context how would you ensure the transparency of census?

Census would be conducted under the supervision of Army. NADRA and army would make sure that census is transparent and no Afghan refugee is a part of it. Those people, who are opposing Census today, conducted census during their government. Presence of Army is must for census.

After completion of CPEC project, local people fear that they will be converted into a minority. Are you planning to bring any legislation to prevent that from happening?

In a high level meeting recently chaired by Prime Minister of Pakistan, Mian Nawaz Sharif, it was decided that every possible e ort would be made to protect the rights of people of Gwadar. I think that I am the biggest protector of the rights of Balochistan and my family has given more sacrifices than any other family. I consider myself to be a nationalist. A true nationalist is not the one who only chants slogans but one who serves his people. My family has made a lot of sacrifices for this land. There was a time when on one side was Iran and the troops of British raj had reached Jacobabad. A huge chunk of Baloch land had already been lost it was my family who saved the remaining Balochistan by sacrificing their lives in battlefield. So, one should not have any doubts that I will go to every possible extent to save the rights of people of Balochistan. In Gwadar projects First right is that of people of Gwadar, second is that of people of Balochistan and third is of rest of people of Pakistan.

Quetta, capital of Balochistan, is facing a lot of problems due to infrastructure flaws. Is it possible that you will make changes to improve infrastructure of Quetta?

I agree with the point that Quetta city is in very bad shape in terms of infrastructure. After coming into power, I provided Quetta Municipal Corporation with Rs. 100 million. I also released Rs. 350 million for the machinery to be used in cleaning of Quetta.

I wish to see Quetta beautiful like before. Soon people will see a change in Quetta in the form of Underpasses and flyovers. In the future people will see work conducted on Sariab road and other areas of the city.

Baloch nationalist parties, including BNP and NP, have expressed serious concerns on census in presence of afghan Refugees in Balochistan. What’s the take of your government?

Census must be conducted without any political pressure. We will conduct a transparent census in the province and ensure that people who do not have local certificates of Balochistan are not counted in census. Our government will ensure that census would be fair and free from any politics.

We welcome national and international investors to our province which is necessary for the economic prosperity. However no one will be allowed to deprive local people of their rights.

There are examples of Dubai and Singapore and we will do the necessary legislation when the appropriate time comes.

How true is the perception, that bureaucracy is a major obstacle in way of development in Balochistan?

This perception is utterly wrong. We are incompetent ourselves and we blame bureaucracy for our failures. I have been a minister many times in past before becoming CM and I have never seen that bureaucracy has interfered in any way. We should not be hypocritical, since 1970 when One Unit was abolished, All the Chief Ministers have been Baloch and no one came from Punjab to rule here. Excluding the martial law regimes, all powers have been in the hands of the CM. We have allowed the bureaucracy to pressurize us due to our own weaknesses and then blame bureaucracy for this failure.

You met Khan of Kalat in London before becoming CM. Did that meeting ended inconclusively?

No, we are still in contact. I have become very busy after taking charge as CM. However I will soon visit London again.

Lately, your government declared head money for 99 insurgent leaders and operatives. Does that mean that “Peaceful Balochistan Package” is over now?

No, it’s not over now. I always say that the leaders who are sitting outside of Pakistan should come back and take part in the politics of Balochistan and serve their land. If people gave them the mandate then we will respect that mandate. However my government will not allow anyone to kill innocent doctors and Laborers. Dr. Shafi Bizenjo was killed in Awaran. He was only serving his people there. If someone wants to take law in their own hands, kill innocent citizens and enforce their agenda then no one can allow that to happen.

In Baloch society, women are not armed. However a female professor of University of Balochistan was killed. So should we give liberty to such people to operate?

It’s claimed that law and order situation in the province has improved a lot. So will your government make any serious efforts to settle the IDPs of Dera Bugti and Kohlu?

The only obstacle is the lack of availability of authentic data about number of IDPs which is causing the delay. However it’s a top priority for us and we will soon settle them in their areas.

There are serious concerns in Balochistan about equal rights in the federation. Being a part of party which is ruling Pakistan what will you do to address these concerns?

After 18th amendment we have almost got our equal rights. All our natural resources are now in control of the provincial government. Oil and gas resources are also owned 50-50 by provincial and federal government.

Mian Nawaz Sharif has made a visible change in the share of Balochistan in NFC award. Whenever I talk about the rights of Balochistan in Islamabad, I have never felt disappointed. Mian Nawaz Sharif has clearly instructed CM of Punjab that if others do not give their share to Balochistan then Punjab should give them from its share in NFC. We have got billions of rupees from Gas Royalty surcharge. I will make sure that Balochistan gets more resources from the federal government.

 

 

Disclaimer: Balochistan Inside not necessarily agrees with views shared by the interviewee.

OLYMPUS DIGITAL CAMERA

نواب صاحب آپ کی حکومت بھی تقریباً اسی کابینہ پر مشتمل ہے جو ڈاکٹرمالک کے پاس تھی آپ اسی کابینہ کے ساتھ کسی قسم کی تبدیلی لاسکتے ہیں؟

کابینہ میں موجودہ تمام وزراء ہم تین جماعتوں کے باہمی اشتراک کا حصہ ہے میرے معاہدے کے تحت آپس میں تقسیم کی گئی کابینہ جس میں مسلم لیگ ن پختونخوا میپ اور نیشنل پارٹی کے منتخب نمائندء شامل تھے اور کابینہ سے متعلق فیصلہ پارٹی لیڈران پرچھوڑدیا گیا تھا۔حکومت کی تبدیلی کے بعد ہم نے اپنی کابینہ میں کچھ تبدیلی کی ہے اور شاہد کچھ تبدیلیاں اور بھی کرینگے۔باقی دیگردونوں جماعتوں نے اپنے جن منتخب اراکین کے نام دیئے ان سے میں نے حلف لیا اورماسوائے ایک تبدیلی جو کہ پختونخوا میپ کے کسی اور نے نہیں کی جو کہ خالصتاً ان کی اپنی پارٹی لیڈرشپ کا فیصلہ تھا اور کریشن گورنمنٹ میںیہی کچھ ہوتا ہے۔

نواب صاحب آپ کی نظر میں ڈاکٹر مالک کی سابقہ حکومت ان کا دور اقتدار کس حد تک کامیاب رہا؟

نیشنل پارٹی پہلے بھی ہماری اتحادی جماعت تھی اور اب بھی ہے۔ڈاکٹرمالک میرے لئے قابل احترام ہے میں نے حلف برادری کی تقریب کے دوران ان کی جانب سے اٹھائے گئے تمام کاموں کی تعریف کی ار اس بات کا عندیہ دیا کہ ان کے تمام مثبت کاموں کوجس میں تعلیمی ایمرجنسی جاری رکھیں گے۔

توآپ ان ڈھائی سالوں کو کامیاب قراردیتے ہیں؟

میں نے آپ سے کہا نہ کہ ہم نے ڈھائی سال ایک دوستانہ طریقے سے کام کیا اور ہمارے درمیان باہمی اتفاق رہا لہٰذا میں ان کے اچھے کاموں کوسراہتا ہوں ہم کوشش کرینگے کہ اس سے بہتر پرفارمنس دکھاسکیں۔

بلوچستان وہ پہلا صوبہ ہے جہاں سب سے پہلے بلدیاتی الیکشن ہوئے لیکن لوکل نمائندے ابھی تک اختیاردوکاروناروتے ہیں ایسے میں کیا آپ کی حکومت قانون میں کسی قسم کی ترامیم کاارادہ رکھتی ہے؟

حلف اٹھانے کے بعد میری سب سے پہلی میٹنگ بلدیاتی نمائندوں ،میئر اورڈپٹی میئرسے ہوئی اور میں نے اس ملاقات میں اپنی حکومت کی جانب سے ہر ممکن تعاون کاوعدہ کیا میں نے چھ ارب کے قریب فنڈزبھی مختص کئے۔

یہاں میں آپ کی تائیدکرونگا کہ ہم نے کچھ جلدبازی کامظاہرہ کیا چونکہ سپریم کورٹ کاتھالہٰذابلدیاتی انتخابات وقت پر کروائے گا اس جلد بازی میں جو آرڈیننس لوکل باڈی کا تھا اس میں ترامیم کی گنجائش موجود تھی اس میں یقیناً خامیاں ہیں اور اسی وجہ سے میں نے ایک کمیٹی تشکیل دی ہوئی ہے ہم انشاء اللہ جلد اسے اسمبلی میں لے کرجائیں گے میری ذاتی خواہش ہے کہ زیادہ سے زیادہ اختیارات نچلی سطح پر جائیں تاکہ عوام کو فوری فائدہ حاصل ہو۔آنیوالے وقتوں میں میری یہ کوشش بھی رہے گی کہ اختیارات زیادہ سے زیادہ گرامی روٹ سے آئے ہوئے ان لوکل نمائندوں کودواورساتھ ساتھ بجٹ میں بھی ان محدود مسائل میں رہتے ہیں۔

نواب صاحب بلوچستان کا دارالخلافہ کوٹۂ اس وقت انفرااسٹرکچر کے حوالے سے انتہائی بری حالت میں ہے کیا یہ امید کی جاسکتی ہے کہ اس پر جلد عمل درآمد ممکن ہوسکے گا؟

میں آپ کی بات سے اتفاق کرتا ہوں کہ ہمارا شہر کوئٹہ جو کہ کسی زمانے میں سیاحوں کامسکن ہوتاتھا اور لوگ یہاں اپنی صحت بنانے آتے تھے اس وقت انفرااسٹرکچر کے اعتبار سے بہترصورت میں نہیں ہے اس لئے میں نے حکومت میں آتے ہی کوئٹہ شہر کی صفائی کیلئے میونسپل کارپوریشن دس کروڑ جاری کئے پھر مشنری کی خریداری جو کہ کوئٹہ شہر کی صفائی میں استعمال کی جانی تھی میں نے35کروڑ کے قریب وہ بھی جاری کردیئے میری خواہش ہے کہ کوئٹہ پہلے کی طرح خوبصورت نظرآئے۔جلد ہی آپ کو کوئٹہ تبدیلی نظرآئے گی جس میں انڈرپاسز اوراوورہیڈبرج کاقیام شامل ہے۔آنے والے وقتوں میں آپ سریاب کوشتہ روڈ ودیگرروڈز پر کام ہوتا ہوا نظرآئے گا جس کیلئے میں نے چیف سیکرٹری صاحب کو جلد سے جلد ٹینڈردینے کا حکم بھی دیا ہے۔

 اورنیشنل پارٹی افغان مہاجرین کی موجودگی میں مردمBNPبلوچ قوم پرست جماعتیں بشمول

 شماری کے حوالے سے اپنے تحفظات رکھتے ہیں ایسے میں آپ کی حکومت کاکیاموقف ہے؟

مردم شماری بالکل ہونی چاہئے اور تمام ترسیاست سے پاک ہونی چاہئے ہماری حکومت ایماندارانہ اور شفاف طریقے سے مردم شماری کروائے گے اور کسی بھی ایسے شخص کو جو کہ بلوچستان کا لوکل نہیں ہوگا اگر میرے دور میں مردم شماری ممکن ہوئی توایسے شخص کو کسی طور پر اسلسٹ میں شامل نہیں کیاجائیگا۔بلوچستان میں بلوچوں کے علاوہ ہزارہ اور دیگر قومیں بھی آبادہیں مگر ہماری حکومت اس بات کو یقینی بنائے گی کہ مردم شماری کا حصہ صرف مقامی افراد ہی ہوں۔اس میں کسی قسم کی سیاست نہیں کی جائے گی۔

نواب صاحب ہزاروں کی بنیاد میں جعلی شناختی کارڈ کابلوچستان کے کئی مقامات سے اجراء ہوا ہے اس صورت حال میں شفافیت کس طرح قائم رہے گی؟

فوج کی نگرانی میں مردم شماری کا انعقاد ممکن ہوگا،نادرا اور فوج اس کی مکمل شفافیت کاخیال رکھے گی اور کسی بھی مہاجرین کو اس کاحصہ نہیں بنایاجائیگا۔
جولوگ آج مردم شماری کی مخالفت کررہے ہیں خود انہی کے دورے میں مردم شماری ہوچکی ہے۔لہٰذا فوج کی موجودگی اس عمل کیلئے ضروری ہے۔

سی پیک کامنصوبہ مکمل ہونے کے بعد جوخدشات مقامی افراد کو ہیں جس میں ایک اہم خدشہ مقامی آبادی کااقلیت میں تبدیل ہوجانا ہے کیا آپ اس ضمن میں کوئی قانون سازی کرینگے؟

پچھلے دنوں میں نے ایک اعلیٰ سطحی میٹنگ میںیہ واضح کردیا تھا کہ پرائم منسٹر آف پاکستان نوازشریف نے خاص اور واضح ہدایت دی ہے کہ گوادر کے رہنے والے مقامی افراد کے حقوق کاہر ممکن خیال رکھاجائیگا۔

میں یہ سمجھتا ہوں کہ بلوچستان کے حقوق کا سب سے زیادہ تحفظ کرنیوالا میں ہوں میں نے  اور میرے خاندان نے بلوچستان کیلئے کئی قربانیاں دی ہیں میں اپنے آپ کو ایک

     کہتا ہوں قوم پرست ہونے کا مطلب یہ نہیں ہے کہ آپ زندہ باد True Nationalist

یامردہ باد کہتے   پھریں ایک سچا قوم پرست وہ ہوتا ہے جو اپنے لوگوں کی خدمت کرے۔میرے خاندان نے بلوچستان کے تحفظ کیلئے کئی قربانیاں دی ہیں جہاں ایک طرف ایران تھا تو دوسری طرف جیکب آباد تک انگریز سرکار کی افواج آچکی تھیں اور بلوچستان کا ایک بہت بڑا حصہ وہ ہم سے چھین چکے تھے۔باقی ماندہ بلوچستان کو کسی طرح ہمارے بزرگوں نے بچایا یہ سب جانتے ہیں میرے بزرگ بلوچستان کو بچاتے ہوئے میدان جنگ میں شہید ہوئے ہیں کوئی یہ گمان میں نہ رہے کہ کسی طرح بھی بلوچستان کے حقوق کے ساتھ سودے بازی ممکن ہوسکے گی۔پہلاحق گوادر کے رہنے والوں پھربلوچستان کے دیگرشہروں اورآخرمیں پاکستان کے دیگرحصوں کاحق ہے۔

ہم سرمایہ کاروں کو خوش آمدید کہتے ہیں اپنے صوبے کو خوشحالی کی جانب گامزن کرنے کیلئے یہ ضروری ہے کہ اندرون ملک اور بیرون ملک سرمایہ کاروں کو یہاں سرمایہ کاری کرنے کی اجازت دی جائے لیکن مقامی افراد کے حقوق پرڈاکہ مارنے کی کسی صورت اجازت نہیں دی جائیگی۔
اس میں آپ کے سامنے دبئی اور سنگاپورکی مثال سامنے ہیں اس صورت میں وقت پڑنے پر ہم ضرور قانون سازی بھی کرینگے۔

یہ بات کس حد تک درست ہے کہ بلوچستان کی ترقی کی راہ میں بیوروکریسی حائل ہے؟

یہ بات سراسر غلط ہے جب ہم میں خودقابلیت نہیں ہوتی تو ہم بیوروکریسی کی طرف اشارہ کرتے ہیں میں پہلے منسٹر رہاہوں میں نے آج تک یہ نہیں دکھاکہ بیوروکریسی نے مداخلت کی ہو۔جی جی ہمیں منافقت نہیں کرنی چاہئے جب سے ون یونٹ ٹوٹاہے70سے لیکرآج تک وزیراعلیٰ بلوچ رہے کسی پنجابی نے یہاںآکر حکمرانی نہیں کی ہے مارشل کے دور کو چھوڑ کر سارے اختیارات چیف منسٹر کے حوالے ہوتے ہیں ہم نے خود اپنی نالائقیوں کا الزام بیوروکریسی کودیتے رہے ہیں۔

آپ نے وزیراعلیٰ بننے سے پہلے لندن میں خان آف قلات سے ملاقات کی کیا وہ ملاقات ادھوری رہ گئی؟

جی نہیں وہ ملاقات ادھوری نہیں رہی ہم رابطے میں ہیں۔میری مصروفیات کچھ بڑھ گئی ہے مگر انشاء اللہ جلد ہی لندن جاؤں گا۔

آپ کی حکومت نے پچھلے دنوں99لوگوں کے سر کی قیمت رکھی کیا یہ سمجھاجائے کہ ’’پرامن بلوچستان‘‘ نامی پروگرام اب ختم ہوچکاہے؟

یہ عمل بالکل بھی ختم نہیں ہوا میں بارہایہ کہتاہوں کہ جولینڈران بلوچستان سے باہر بیٹھے ہوئے ہیں وہ یہاں آئیں سیاست کریں بلوچستان کی ترقی میں اپناحصہ دیں اگرعوام نے انہیں مینڈیٹ دیا ہم ان کے مینڈیٹ کااحترام کرینگے لیکن میری حکومت اس بات کی ہرگز اجازت میں دے گی کہ آپ نہتے ڈاکٹروں ،مزدوروں کوقتل کریں آواران میں ڈاکٹرشفیع کے قتل کی کیا وجوہات تھی یہی کہ وہ اپنے لوگوں کی خدمت کرتا تھا جو لوگ امن وامان کواپنے ہاتھ میں لینگے اور بندوق کی زورپراپنا نظریہ تھوپنے کی کوشش کرینگے اور شہریوں کاقتل عام کرتے پھریں اس کی اجازت نہ تو کوئی معاشرہ دیتا ہے نہ ہی کوئی حکومت۔
بلوچ معاشرے میں کسی بھی عورت پر ہاتھ اٹھایا نہیں جاتا مگر بلوچستان یونیورسٹی کی پروفیسر کو شہید کیاگیا تو کیاایسے افراد کو کھلی چھوٹ دے دی جائے؟

جیساکہ دعویٰ کیا جارہا ہے کہ بلوچستان میں امن وامان کی صورتحال اب قدر سے بہتر ہے تو   ایسے میں آپ کی حکومت کوہلو(ڈیرہ بگٹی) کے 

  کودوبارہ بسانے میں کس حد تک سنجیدہ ہے؟IDP`s

یہاں رکاوٹ صرف اعدادوشمار ہے جس کی وجہ سے کچھ تاخیرہورہی ہے لیکن یہ ہماری اولین ترجیحات میں شامل ہے اور انشاء اللہ ہم جلد انہیں ان کے علاقوں میں بسائیں گے۔

بلوچستان میں مساوی حقوق کے حوالے سے شدید تحفظات موجود ہیں مرکز کاحصہ ہوتے ہوئے آپ اس خلاء کو کیسے پرُ کرینگے؟

آٹھارویں ترمیم کے بعد مساوی حقوق ہمیں تقریباً مل چکے ہیں اور جو ہمارے وسائل پر سیاست کرتے ہیں وہ اب مکمل طور پر بلوچستان کے عوام کی ملکیت ہے تیل اور گیس جیسا مسئلہ بھی50/50پچاس پچاس فی صد پر حل ہوگیا ہے۔

NFC

ایوارڈ میں میاں صاحب نے بلوچستان  کے حصے میں بھی واضح تبدیلی کردی جب بھی میں نے مرکز سے بلوچستان کے حوالے سے بات کی مجھے ناکامی نہیں دیکھنے کوملی میاں نوازشریف نے پنجاب کے وزیراعلیٰ سے خصوصی طور پر کہا کہ اگردوسرے صوبے

سے نہیں دیتے تو آپ پنجاب سے دیں۔ NFC اپناحصہ

 رائلٹی سرچارج کی صورت میں ہمیں اربوں روپے حاصل ہوئے ہیں انشاء اللہ ہم اپنے فرائض کوپوراکرینگے میرے لوگ میری ذمہ داری ہیں۔