Budget is said to be estimates of Incomes and Expendi­ture for a fiscal year. Besides in today’s world it is an instru­ment of planning, which determines priorities of a gov­ernment for a fiscal year. Some countries prepare a Roll-on budget which reflects long term vision of legisla­tors. It should reflect aspiration of masses, resulting in overall prosperity in the society. In our country, unfortu­nately it has been reduced to mechanical exercise only.

Officials in Finance and Planning Depart­ments create a maze of figures with no fore­sight or strategic plan in view, not because civil servants lack expertise, because policy makers lack vision and foresight. This basical­ly deprives the masses who pin hopes on policy formulators.
Budget has two components, the Revenue Budget, which is also termed as non-devel­opment outlay and Capital Budget, general­ly known as Development Budget. Revenue Budget is formulated by the Finance Depart­ment and Development or Capital Budget is handled by Planning and Development (P&D) Department. On Revenue side it has further two parts, the Expenditure and Reve­nue or Income.

In Balochistan, traditionally income side has never been given its due importance, result­ing in stagnant income except NFC dole outs which register growth as per agreed formula. While preparing expenditure budget, the Finance Department notionally increases it annually by certain percentage that is called Incremental Budgeting. Nor­mally it is devoid of any rationality.
Legislators due to their ignorance or indiffer­ence remain aloof from 80% of budget which is Revenue Budget. Barring few, successive Finance Ministers had little or no working knowledge of finance or budget and entire exercise is thus left to the whims of Secretary Finance and his team. Since non-development budget is meant to run government machinery including establish­ment charges and operational expenditure, which has little interest for legislators. In this part they have marginal interest in creation of new jobs or purchase of transport for them.
There is no system in place to tag this huge outlay with performance. Since there is no mechanism or system of assessing performance, no improvement is seen in service delivery despite huge annual expenditure.

Over the period of time, due to 7th NFC Award, income and size of the budget has registered handsome growth, but the quality of service in any sector has not shown much improvement. It is to be mentioned that around 80% of non-development outlay goes in salaries and establishment charges. For operational activities around 20% is left. There is no fixed or rational criteria for alloca­tion of funds, it follows the historical pattern and on size of the department.

On Income side there is no tracking or moni­toring system to find out actual income from Tax and Non-Tax Revenue. Targets are fixed by the Finance department but those targets are not based on any criteria and hardly given importance due to inaction by the government. In year 2005-6 total income of Balochistan from its own tax and non-tax heads was only one billion rupees which has now reached Rs. 7.8 billion. But still it is very small compared to our resource base.

Balochistan Revenue Authority was notified but still it has not yet become functional, resulting in loss of precious revenue. All successive governments have been avoid­ing levying tax and duties. Surprisingly, royal­ty on our major mineral, coal is Rs.70 per ton, whereas Federal government gets Rs. 425 per ton GST. So the major income on this and other mineral goes to Federal exchequer. We have not done re-assessment of royalty rates of various mineral nor do we have linked it with market prices.

There is huge potential to increase tax and non-tax revenue, if Mines department and Board of Revenue work in coordination with Finance Department. There is lack of coordi­nation and legislators have overarching interests in Development Budget. Since days of Prime Minister Junejo, legislators were given incentive by allocating fixed amounts to each MPA for suggesting projects of their choice. Initially this amount was very small, but over the period of time it touched hun­dreds of Millions.

Now, in a way entire Public Sector Develop­ment Programme (PSDP) has been hijacked. No or little consideration is given to projects or programmes of Provincial importance. Technically P&D is supposed to prepare sector wise projects based on technical feasibility and regional or provincial needs basis. In reality projects are identified by legislators and ministers for their respective constituencies rather than for their respec­tive ministries. This has alienated the adminis­trative departments and managing officers, as they are not consulted at any stage. This trend bred enormous rent seeking tendency among legislators whose first and foremost job was legislation.

For result oriented budget formulation, the tradition of allocation to MPAs should forth­with be stopped. All projects should be based on technical feasibility and for reduc­ing gap between various regions and districts. If we review budgets of last ten years, we shall be dismayed to see least priority for Resources and Coast, which otherwise we find often used as rhetoric. Government should strictly monitor utilization of development funds and overrun of time and cost in no way should be accepted as a norm.

Writer is a former Bureaucrat and had served as Secretary Finance of Government of Balochistan.

“بلوچستان میں بجٹ سازی پر ایک نظر”

ایک مالی سال کی آمدنی و اخراجات کے تخمینے کو بجٹ کہا جاتا ہے. آج کی دنیا میں یہ منصوبہ بندی کا ایک اہم ذریعہ ہے جو ایک مالی سال کیلئے حکومت کی ترجیعات کا تعین کرتا ہے. اکثر ممالک ایک رول آن بجٹ تیار کرتے ہیں جو قانون سازوں کے طویل مدتی نظریے اور بصارت کی عکاسی کرتا ہے، یہ عوامی امنگوں اور خواہشات  کے مطابق ہونا چاہیے جو مجموعی طور پر معاشرے کی خوشحالی کا ضامن بنے مگر بدقسمتی سے ہمارے ملک میں یہ محض ایک میکانکی مشق بن کر ره گئی ہے.

فنانس اور پلاننگ محکموں کے حکام دور اندیشی اور واضح حکمت عملی سے عاری اعداد و شمار کی ایک بهولبهلیاں تخلیق کرتے ہیں جسکی وجہ سرکاری ملازمین کی مہارت میں کمی نہیں بلکہ پالیسی سازوں کی تنگ نظری اور نااہلی ہوتی ہے. بنیادی طور پر اس سے عوام محروم و اثراندار ہوتے ہیں جنکی تمام تر امیدیں پالسی سازوں سے وابسطہ ہوتی ہیں.

بنیادی طور پر بجٹ کے دو اجزاء ہوتے ہیں. ریونیو بجٹ، جسے غیر ترقیاتی خرچ بهی کہا جاتا ہے اور دوسرا سرمایہ بجٹ جسےعام طور پر ترقیاتی بجٹ کہا جاتا ہے. ریونیو بجٹ محکمہ خزانہ و ترقی کی طرف سے تیار کیا جاتا ہے جبکہ سرمایہ بجٹ پلاننگ اور ڈولپمنٹ (پی اینڈ ڈی) سیکشن کی جانب سے سنبهالا جاتا ہے پهر ریونیو مزید دو حصوں میں تقسیم ہوجاتا ہے یعنی ‘آمدنی’ اور ‘اخراجات’.

بلوچستان میں روایتاً کبهی بهی آمدنی کی طرف خاص توجہ نہیں دی گئی جسکے نتیجے میں آمدن مسلسل جمود کا شکار رہی ہے، ماسوائے این ایف سی کے مد میں ملنے والے حصے کی جس سےکچه حد تک اضافہ دیکهنے کو ملتا ہے. بجٹ کی تیاری کرتے ہوئے سالانہ اخراجات میں محکمہ خزانہ کے جانب سے ایک خاص شرح تک اضافہ کیا جاتا ہے جسے زوائدی بجٹنگ کہا جاتا ہے. عام طور پر یہ کسی بهی سمجهداری سے مبرا ہوتا ہے.

قانون ساز اپنی نااہلی و بے حسی کی وجہ سے 80 فیصد ریونیو بجٹ سے دور رہتے ہیں. چند ایک کو چهوڑ کر اکثر وزراء بجٹ کی تشکیل کے عمل سے نابلد ہوتے ہیں یا انتہائی محدود علم رکهتے ہیں جسکی وجہ سے اس مکمل عمل کو سیکٹری خزانہ اور اسکی ٹیم کے رحم و کرم و خواہشات پر چهوڑ دیا جاتا ہے. غیر ترقیاتی بجٹ کا دارو مدار حکومتی مشینری کو چلانے، سٹیبلشمنٹ اور عملیاتی اخراجات سے ہوتا ہے جسکی وجہ سے یہ قانون سازوں کے لئے خاص دلچسپی نہیں رکهتا. اس سلسلے میں انکی معمولی دلچسپی محض نئی ملازمتوں کی تخلیق اور اپنے نقل و حمل کی خاطر گاڑیاں خریدنے تک ہوتی ہے. چونکہ سرے سے ایسا کوئی نظام وجود ہی نہیں رکهتا جو ان تمام تر اخراجات کو کارکردگی سے جوڑے یا کارکردگی کا درست اندازه لگانے میں مدد کرے لہذا سالانہ بنیادوں پر وسیع اخراجات کے باوجود بهی خاصی ترقی یا تبدیلی نظر نہیں آتی.

گزرتے وقت کے ساته ساته این ایف سی ایوارڈ کی وجہ سے آمدن اور بجٹ کی حجم میں خاطر خواه اضافہ دیکهنے کو ملتا ہے لیکن کسی بهی شعبے کے خدمات میں بہتری ابهی تک ناپید ہے. یہ قابل ذکر بات ہے کہ غیر ترقیاتی خرچ کا 80 فیصد تنخواہوں اور سٹیبلشمنٹ سرگرمیوں میں چلا جاتا ہے اور مانده 20 فیصد عملیاتی سرگرمیوں کے لئے ره جاتا ہے. فنڈز کی تقسیم کے حوالے سے کوئی معقول یا مخصوص طریقہ کار موجود نہیں ہے بلکہ یہ روایتی طریقہ کار کو برقرار رکهتے ہوئے محکموں کی سائز کو مدنظر رکه کر تقسیم کیا جاتا ہے. آمدن کی جانب بهی یہی صورتحال ہے، ٹیکس اور نان ٹیکس کی صورت میں حاصل ہونے والی اصل آمدن کا صحیح اندازه لگانے کے لئے کوئی نظام موجود نہیں. اہداف محکمہ خزانہ کی جانب سے مقرر کئے جاتے ہیں لیکن یہ اہداف بهی کسی خاص بنیاد پر مقرر نہیں کئے جاتے اور حکومتی بے عملی کی وجہ سے بمشکل ہی اس پر توجہ دی جاتی ہے . سال 2005-6 میں بلوچستان کی کل آمدنی اسکی ٹیکس اور نان ٹیکس آمدن کو ملا کر محض ایک ارب روپیا بنتی تھی جو آج کل 7.8 ارب روپے بنتی ہے لیکن صوبے کے وسائل کے مقابلے میں یہ رقم بهی قلیل ہے.

بلوچستان ریونیو اتهارٹی کو مطلع کیا گیا تها لیکن یہ تاحال فعال نہیں ہوسکا ہے جسکی وجہ سے خاصی آمدنی خسارے میں ہے. صوبے کے تمام تر ادارے ٹیکس اور ڈیوٹیز عائد کرنے گریز کرتے رہے ہیں. تعجب کی بات ہے کہ ہمارے بڑے معدنی کوئلے پر رائلٹی 70 روپے فی ٹن ہے جبکہ وفاق جی ایس ٹی کی مد میں 425 روپے فی ٹن وصول کرتا ہے تو کوئلے اور دیگر معدنیات کی مد میں حاصل ہونے والی ذیاده تر رقم کا حصہ وفاق کے خزانے میں چلا جاتا ہے. ہم نے معدنیات رائلٹی کی شرح کا ازسرنو پڑتال نہیں کیا ہوا اور نہ ہی اسے مارکیٹ کے نئی قیمتوں کے مطابق رکهنے کی ضرورت محسوس کی ہے.

ٹیکس اور نان ٹیکس آمدنی میں اضافہ کرنے کی وسیع گنجائش موجود ہے اگر مائنز ڈیپارٹمنٹ اور بورڈ آف ریونیو محکمہ خزانہ سے ملکر باہمی تعاون سے کام کریں. محکموں میں تعاون کا فقدان موجود ہے اور ترقیاتی بجٹ سے قانون سازوں کے اہم مفادات وابسطہ ہیں. وزیراعظم جونیجو کے دنوں میں ہر ایم پی اے کے لئے مخصوص رقم مختحض کی گئی تاکہ اپنے مرضی کے منصوبوں پر کام کر سکے. شروع میں یہ رقم کم مقدار میں ہوا کرتی تهی مگر گزرتے وقت کے ساته ساته اب یہ کروڑوں تک پہنچ گئی ہے.

اب ایک طرح سے پورا پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام ( پی ایس ڈی پی) یرغمال بن چکا ہے. صوبائی اہمیت کے پروگراموں پر بہت کم یا بالکل ہی غور نہیں کیا جاتا. اصولی طور پر (پی اینڈ ڈی) کو چاہیے وه ہر شعبے کے لئے ایسے منصوبے تشکیل دے جو قابل عمل اور علاقائی و صوبائی ضروریات کے تحت ہوں لیکن قانون ساز اور وزراء منصوبوں کو اپنے وزارتوں کے بجائے اپنے حلقوں کی نظر سے دیکهتے ہیں. اس عمل نے انتظامی محکموں اور انتظامی افسران کو ایک طرف رکها ہے کیونکہ ان سے کسی بهی مرحلے پر مشاورت نہیں کی جاتی. اس عمل نے قانون ساز افراد کو کرایہ جات کے حاصلات میں لگایا ہوا ہے جنکا اولین فرض صرف قانون سازی تها.

نتیجہ خیز بجٹ کی تشکیل کے لئے اراکین صوبائی اسمبلی کو مخصوص رقم مختحض کرنے کی روایت کو فی الفور روکا جائے اور تمام تر منصوبے تکنیکی سہولیات کے بنیادوں پر بنائے جائیں تاکہ مختلف علاقوں اور اضلاع کےدرمیان خلیج کو کم کیا جا سکے. اگر ہم دس سالہ بجٹ پر نظر ثانی کریں تو ہمیں ساحل و وسائل کو کم تر ترجیحات میں دیکه کر مایوسی ہوگی جو ویسے اکثر ہمارے بیانات کی زینت بنی ہوتی ہیں. حکومت کو چاہیے کہ سختی سے ترقیاتی فنڈز کے استعمال کی نگرانی کرے اور کسی بهی صورت وقت و لاگت کی بربادی کو روایت کے طور پر قبول نہ کرے.

مصنف ایک سابق بیوروکریٹ ہیں جو محکمہ خزانہ حکومت بلوچستان کے سیکٹری ره چکے ہیں.