The phenomena of acid throwing has never heard of before 2010 when two incidents after a gap of two months have taken place n Dalbundin and Kalat

Although acid throwing was alien to Baloch society, after penetration of fanaticism and religious extremism some eight such incidents have been recorded for the last few years in different areas of Balochistan inflicting severe injuries to over two dozen women.

Baloch society despite being tribal otherwise is considered liberal and progressive, allowing the women folk to work shoulder to shoulder with their men and to have access to education and opportunities of progress. But since years of Afghan Jihad during General Zia regime, religious extremism started taking its roots under a well though plan in nationalist strongholds.

The phenomena of acid throwing has never been heard before 2010 when two incidents after a gap of two months have taken place in Dalbundin and Kalat. The unknown group with the name of Ghairatmand Baloch had distributed threatening pamphlets in the district, which claimed responsibility for the attacks threw acid on four teenage girls by accusing them of being involved in obscenity under the garb for shopping.

After the incident, the whole family of ill-fated women migrated to Quetta and was never seen again in the town of Dalbundin. Later in 2012 in two different such incidents, some two women had received burn injuries. Some eighteen women have been targeted by throwing acid in one month of July 2014 in Mastung, Quetta and Pishin. However, no one claimed any responsibility for these acid attacks.

The eye witnesses say that the attackers who cover their faces storm into shops or jump of their bikes in front of their victims and throw acid with full pressure syringes on their faces before they disappear with lightening speed.

But the people in general think that the forces of darkness who are having ISIS mind set of forcing minorities for conversion and considering women as usable commodity. Such groups are also behind forced closure of girls educational institutions in Punjgoor and threats to Hindus and Zikries in Kechh to embrace Islam otherwise are liable to be executed.

But the fact of the matter is that the pro-IS slogans on the walls are plastered on the main roads and even in the area close to the red zone and in front of the Iranian Consulate in Quetta, where the security forces and the police are known to be patrolling regularly. There is strict security around this area, with check posts manned by the police force.

If after undergoing some bitter experiences in the past three decades, we still do not take religious extremism and fundamentalism seriously, it means we are not bothered about the country or our future generations,” remarks a senior police official. He, too, believes that all extremist groups are interlinked and extend moral and all kinds of support to each other.

Some political observers argue that in fact the active role of women in ongoing Baloch struggle particularly the campaign for recovery of missing persons perturbed those who are behind missing persons and kill and dump policy in
Balochistan.

Obviously it is the failure of law enforcing agencies that not a single person in all incidents except in one case that two the victims nominated the attacker has been arrested. Police in a knee jerk arrested a Christian Vejay Pervaiz Masieh who confessed his crime of acid throwing on two women of his own community over personal feud. The law enforcing agencies like the society does treat this kind of violence against women as normal as they do to other crimes by shelving the cases by nominating unknown perpetrators. Although police officials complain that the victim families due to fear of being harmed again are not ready to cooperate with them, it was the basic
responsibility of the state to track down the culprits involved in any case.

The victims and their families are so terrified that neither they pursue their cases nor they are ready to speak to press. “Why these people made acid attacks as according to our Baloch traditions, we wrapped us in big shawls and even covered our faces and that was why these shawls saved us from severe injuries”, said 35 year old Naz Bibi, the mother of two of four victims of Quetta in an interview. She appealed to perpetrators “they are also our brothers and I can only request that they should not treat women in such a cruel way”.

Women in Balochistan are thus left at the mercy of these ISIS likeminded extremists who can go to all extent to pursue their nefarious designs. The educated youth in fact are ray of hope to fight such trends that are aimed at to push Baloch society towards stone age.

Aurat Foundation appeals to all segments of society to play their due role in checking such trend otherwise, it fears, it will go out of proportion leaving no space for the women in male dominated society where already they are suppressed”, Saima Jawaid, a women activist of AF says.

The women in all those areas where such barbarity against women have been committed still fear to go out for shopping. If they go either are accompanied by their male members of the family or do shopping in large women groups. So much so, the local residents despite having the knowledge or clue about the culprits are unwilling to talk about the incidents or their perpetrators. These areas are dominated by the religious groups particularly sectarian organizations or their outfits as their flags are seen in abundance and their armed activists are visible riding motorcycles and big luxurious vehicles with black tinted papers.

The sick minds behind these attacks want to create terror in society so that Baloch women are confined to their homes and do not go out for education, taking part in political activities and protests and even for anything that threatens to their domination. Unfortunately since the so called Afghan Jihad launched back in 1979, religion has been used as tool to push Baloch youth towards religious extremism in Balochistan and violence like acid throwing or to stop girls to have access to educational activities are the continuity of that policy.

“The purpose of such inhuman act is to keep the women away of social, education, economic and political activities in normal life by creating an atmosphere of fear and terror in which no female even could think of going out of her home despite permission of her parents or spouse.”, Acting President of Balochistan National Party Senator Dr. Jahanzaib Jamaldini opines.

An educated youth who lives in same in Sariab area where six women got burn injuries, claims that he knows at least some five girls all under 15 in his neighbourhood who had acid burn injuries in the same incidents, but their male members had not allowed them to hospitals for treatment. They thought that it will bring a bad name to the families in the locality besides being hounded by the media.

“Like me many people of the area think that since whole Sariab is hostage to state patronized sectarian groups whose involvement in such incidents cannot be ruled out.” Dropping anonymous threatening letters without mentioning the name of any group has become a routine matter. In the letters these groups level stereo typed allegations against women of their areas and warn the local population not to allow their women without spouse or any male member of the family otherwise be burnt with acid

It is big question that why such incidents are taking place in those areas where Baloch insurgents are
present and women, though in small number, are taking part in the ongoing political activities against state, in fact the state agencies are helping religious fanatics in countering Baloch insurgents”, a political worker of a nationalist party opinions.

کور اسٹوری 
بلوچستان میں خواتین پر تیزاب سے حملے اور ریاستی اداروں کی جانب سے فرقہ وارانہ گروپوں کی سرپرستی 
تحریر: شہزادہ ذوالفقار

بلوچ معاشرے میں اگرچہ خواتین پر تیزاب سے حملے غیرمانوس تھے لیکن جنونی و مذہبی انتہا پسندی کے جگہ بنانے سے چند سالوں کے دوران بلوچستان کے مختلف حصوں میں ایسے آٹھ واقعات ریکارڈ کئے جاچکے ہیں جن میں دو درجن سے زائد خواتین زخمی ہوچکی ہیں۔ 

بلوچ معاشرہ اپنی ہیئت میں قبائلی ہونے کے باوجود لبرل اور ترقی پسند ہے، خواتین کو مردوں کے شانہ بشانہ کام کرنے کی اجازت دیتا ہے جبکہ یہاں تعلیم تک رسائی اور ترقی کے مواقع بھی موجود ہیں۔ لیکن جنرل ضیاء کے دور حکومت میں افغان جہاد کے دوران ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت قوم پرستوں کے گڑھ میں مذہبی انتہا پسندی نے جڑیں بنانا شروع کردیں۔ 

تیزاب پھینکنے کا رجحان سال 2010 سے قبل کبھی نہیں سنا گیا تھا جب دو مہینوں کے وقفے سے دلبدین اور قلات میں تیزاب پھینکنے کے دو واقعات رونما ہوئے۔ ایک نامعلوم گروپ نے غیرت مند بلوچ کے نام سے ضلع میں دھمکی آمیز پمفلٹ تقسیم کئے جس میں انہوں نے چار نوجوان لڑکیوں پر تیزاب پھینکنے کی ذمہ داری قبول کی اور ان پر الزام عائد کیا کہ وہ شاپنگ کی آڑ میں فحاشی میں ملوث تھیں۔ 

اس واقعے کے بعد ان خواتین کا پورا بدقسمت خاندان کوئٹہ نقل مکانی کرگیا اور پھر کبھی دلبدین کے شہر میں دکھائی نہ دیا۔ بعد ازاں سال 2012 میں ایسے دو مختلف واقعات رونما ہوئے جن میں دو خواتین زخمی ہوئیں۔ جولائی 2014 میں ایک ماہ کے دوران مستونگ، کوئٹہ اور پشین میں تقریبا آٹھ خواتین تیزاب سے حملوں کا نشانہ بنیں۔ تاہم ان حملوں کی کسی نے ذمہ داری قبول نہیں کی۔ 

عینی شاہدین بتاتے ہیں کہ حملہ آوروں نے اپنے چہرے ڈھانپے ہوئے تھے، انہوں نے دکانوں پر متاثرہ کے سامنے اچانک دھاوا بول دیا یا ان کے سامنے موٹرسائیکلوں سے چھلانگ لگائی اور طاقتور سرنجوں سے ان کے چہرے پر تیزاب پھینکا اور تیزی سے غائب ہوگئے۔ 

لیکن اب لوگوں میں یہ عام خیال ہے کہ داعش کی ذہنیت رکھنے والی تاریک قوتیں اقلیتوں کو تبدیلی مذہب پر مجبور کررہی ہیں جو خواتین کو بھی ایک قابل استعمال جنس سمجھتے ہیں۔ پنجگور میں لڑکیوں کے تعلیمی اداروں کی جبری بندش میں بھی ایسے گروپوں کا ہاتھ ہے جو کیچھ میں ہندوؤں اور زکریوں کو اسلام قبول نہ کرنے پر انہیں قتل کی دھمکیاں دیتے ہیں۔ 

حقیقت یہ ہے کہ مرکزی سڑکوں بلکہ ریڈ زون کے قریب اور کوئٹہ میں ایرانی قونصلیٹ کے سامنے دیواروں پر داعش کی حمایت میں نعرے درج ہیں جبکہ وہاں پر سیکورٹی فورسز اور پولیس باقاعدگی سے گشت کرتے ہیں۔ اس علاقے میں سیکورٹی انتہائی سخت ہے اور چیک پوسٹوں پر پولیس اہلکار تعینات ہوتے ہیں۔ 

ایک سینئر پولیس افسر نے بتایا کہ گزشتہ تین دہائیوں میں اگر بعض تلخ تجربات سے ہم نہ گزرتے تو ہم بدستور مذہبی انتہا پسندی اور بنیاد پرستی کو کبھی سنجیدہ نہ لیتے۔ اس کو سنجیدہ نہ لینے کا مطلب یہ ہے کہ ہمیں اپنے ملک یا مستقبل کی نسلوں کی فکر نہیں ہے۔ وہ خود یقین رکھتے ہیں کہ تمام انتہا پسند گروپ ایک دوسرے سے ملے ہوئے ہیں اور ایک دوسرے کو اخلاقی و ہر طرح کی حمایت فراہم کرتے ہیں۔ 

بعض سیاسی دانشور اختلاف کرتے ہیں کہ بلوچ جدوجہد بالخصوص لاپتہ افراد کی بازیابی کی مہم میں خواتین کے سرگرم کردار کے باوجود بلوچستان میں لاپتہ افراد اور ان کو مار کر لاشیں پھینکنے والوں کی وجہ سے حالات پریشان کن ہیں۔ 

یقیناًیہ قانون نافذ کرنے والی ایجنسیوں کی ناکامی ہے کہ ان تمام واقعات میں ملوث کوئی مجرم نہ پکڑا گیا۔ صرف ایک واقعے میں متاثرہ شخص کی جانب سے نامزدگی پر حملہ آور پکڑا گیا۔ پولیس نے نیم دلی سے ایک عیسائی ویجائے پرویز مسیح کو گرفتار کیا جس نے ذاتی تنازع پر اپنی ہی برادری کی دو خواتین پر تیزاب پھینکنے کے جرم کا اعتراف کرلیا۔ جس طرح معاشرے میں خواتین کے خلاف دیگر اقسام کے تشدد کا ارتکاب ہوتا ہے ، اسی طرح قانون نافذ کرنے والی ایجنسیاں معمولی رویہ کا مظاہرہ کرکے ان مقدمات میں نامعلوم افراد کو ڈال کر مقدمات بند کردیتی ہیں۔ اگرچہ پولیس حکام یہ شکایت کرتے ہیں کہ متاثرہ خاندان ایک بار پھر نقصان پہنچنے کے ڈر کے باعث ان کے ساتھ تعاون پر تیار نہیں ہوتے لیکن اصل میں یہ ریاست کی بنیادی ذمہ داری ہے کہ کسی بھی مقدمے میں ملوث شخص کو پکڑے۔ 

متاثرین اور ان کے اہل خانہ اس قدر خوف زدہ ہیں کہ نہ ہی وہ ان مقدمات کی پیروی کرتے ہیں اور نہ ہی وہ میڈیا پر بات کرنے کے لئے تیار ہوتے ہیں۔ کوئٹہ سے تعلق رکھنے 35 سالہ خاتون اور چار متاثرین میں سے دو بچوں کی والدہ ناز بی بی نے ایک انٹرویو میں استفسار کیا کہ یہ لوگ تیزاب سے حملے کیوں کرتے ہیں حالانکہ ہم بلوچ روایات کے مطابق اپنے آپ کو بڑی شالوں میں لپیٹتے ہیں اور یہاں تک کہ اپنے چہرے بھی ڈھانپ لیتے ہیں اور اسی وجہ سے ان شالوں میں ہمیں شدید زخموں سے بچایا۔ انہوں نے حملہ آوروں سے اپیل کی کہ وہ بھی ہمارے بھائی ہیں اور میں ان سے صرف درخواست ہی کرسکتی ہوں کہ وہ خواتین کے ساتھ اس ظالمانہ انداز سے برتاؤ نہ کریں۔ 

بلوچستان میں خواتین کو داعش جیسے ہم خیال انتہا پسندوں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے جو اپنے مذموم اہداف کے لئے کسی بھی حد تک جاسکتے ہیں۔ تعلیم یافتہ نوجوان درحقیقت امید کی ایک کرن ہیں کہ وہ ایسے رجحانات سے نبرد آزما ہوں جن کا مقصد بلوچ معاشرے کو پتھر کے دور میں پہنچانا ہے۔ 

عورت فاؤنڈیشن کی کارکن صائمہ جاوید نے بتایا کہ عورت فاؤنڈیشن معاشرے کے تمام حصوں سے اپیل کرتی ہے کہ وہ ایسے رجحانات کو جانچنے کے لئے اپنا کردار لازمی ادا کریں وگرنہ اس کی شرح قابو سے باہر ہوگئی تو پھر مردوں کے غالب معاشرے میں عورتوں کی کوئی جگہ نہیں بچے گی جبکہ وہ پہلے ہی دباؤ کا شکار ہیں۔ 

ان تمام علاقوں میں موجود خواتین اس وحشیانہ طرز عمل کے بعد شاپنگ کا ارادہ کرتے ہوئے بھی بدستور گھبراتی ہیں۔ اگر وہ کہیں جاتی بھی ہیں تو اپنے خاندان کے کسی مرد کے ساتھ جاتی ہیں یا پھر خواتین کی ایک بڑی تعداد جمع ہوکر شاپنگ کرتی ہیں۔ مزید یہ کہ مقامی افراد مجرموں کے بارے میں معلومات رکھنے یا ان سے آگاہ ہوتے ہیں تاہم اس کے باوجود وہ ان سے متعلق گفتگو کرتے ہوئے کتراتے ہیں۔ ان علاقوں میں مذہبی گروپوں بالخصوص فرقہ وارانہ تنظیموں اور انکے گروہوں کے جھنڈے نمایاں طور پر کثرت سے نظر آتے ہیں اور ان کے مسلح کارکن موٹرسائیکلوں اور کالے شیشے والی بڑی پرتعیش گاڑیوں میں عام گھومتے نظر آتے ہیں۔ 

ان حملوں میں ملوث یہ نفسیاتی مریض چاہتے ہیں کہ خوف کا ایسا معاشرہ تشکیل دیا جائے جہاں بلوچ خواتین اپنے گھروں تک محدود ہوجائیں اور تعلیم کے حصول کے لئے باہر نہ نکلیں، نہ سیاسی سرگرمیوں اور مظاہروں میں حصہ لیں اور ایسی کوئی بھی چیز نہ کریں جس سے ان کا غلبہ خطرے میں پڑ جائے ۔ بدقسمتی سے 1979 سے شروع ہونے

والے نام نہاد افغان جہاد میں مذہب کو ایسے آلہ کے طور پر استعمال کیا گیا تاکہ بلوچ نوجوانوں کو مذہبی انتہاپسندی اور تشدد کے راستے پر ڈالا جائے اور لڑکیوں کو تعلیمی سرگرمیوں سے روکنا یا ان پر تیزاب سے حملے دراصل اسی پالیسی کا تسلسل ہے۔ 

بلوچستان نیشنل پارٹی کے قائم مقام صدر سینیٹر ڈاکٹر جہانزیب جمال دین کہتے ہیں کہ ایسی غیرانسانی حرکت کا مقصد یہ ہے کہ خوف و دہشت کا ماحول پیدا کرکے خواتین کو عام زندگی میں سماجی، تعلیمی، معاشی اور سیاسی طور پر الگ تھلگ رکھا جائے جہاں کوئی خاتون اپنے والدین یا شریک حیات کی اجازت کے باوجود گھر سے باہر نکلنے کا سوچ بھی نہ سکے۔ 

سریاب کے علاقے میں رہنے والے ایک تعلیم یافتہ نوجوان، جہاں چھ خواتین جھلس کر زخمی ہوگئی تھیں، نے دعویٰ کیا کہ وہ 15 سال سے کم عمر ایسی پانچ لڑکیاں کو جانتا ہے جو تیزاب سے حملوں میں جھلس کر زخمی ہوئیں لیکن ان کے اہل خانہ کے مرد حضرات نے اسپتال میں ان کے علاج کی بھی اجازت نہیں دی۔ انہوں نے یہ سوچا کیا کہ اس علاقے میں یہ ان کے خاندانوں کی بدنامی کا باعث بن جائیں گی جبکہ میڈیا یہاں بڑی تعداد میں موجود تھا۔ 

علاقے کے دیگر لوگوں کی طرح میں بھی یہ سوچتا ہوں کہ ریاستی سرپرستی میں چلنے والے فرقہ ورانہ گروپوں نے پورا سریاب یرغمال بنایا ہوا ہے جو ایسے واقعات میں ملوث ہیں اور انہیں نظرانداز نہیں کیا جاسکتا۔ کسی گروپ کا نام لکھے بغیر دھمکی آمیز خطوط پھینکنا ایک عام معمول بن گیا ہے۔ ان خطوط میں یہ گروپ ان کے علاقے کی خواتین کے خلاف روایتی طرز کے الزامات عائد کرتے ہیں اور مقامی آبادی کو دھمکی دیتے کہ کہ وہ اپنی خواتین کو انکے شریک حیات یا گھر کے کسی مرد کے بغیر نہ بھیجیں ورنہ تیزاب سے جھلس جائیں گی۔

قوم پرست جماعت کے ایک کارکن نے کہا کہ یہ ایک بڑا سوال ہے کہ ایسے واقعات ان علاقوں میں کیوں پیش آرہے ہیں جہاں بلوچ عسکریت پسند موجود ہیں اور خواتین اگرچہ تعداد میں کم ہیں لیکن ریاست کے خلاف جاری سیاسی سرگرمیوں میں حصہ لے رہی ہیں۔ درحقیقت، ریاستی ایجنسیاں بلوچ عسکریت پسندوں سے نمٹنے کے لئے مذہبی جنونیوں کی مدد کررہی ہیں۔