Balochistan, one of the province of Pakistan, is situated in the South West of Pakistan. Balochistan is the largest province of Pakistan covering an area of about 34.7 million hectare with sparse population of about, 17914000.

About 80% of the area can be described as inter-mountainous. The remaining 20% consists of flood plains and coastal plains. The unfavorable topographic, edaphic and climatic conditions of Balochistan have restricted cultivation, leaving most of the land for rough grazing. About 93% of the area of Balochistan can be classified as Rangelands.

The nature has blessed this province with the wealth of Livestock and moderate Rangelands. Balochistan’s Ranges
can be utilized for diverse purposes, including forage for livestock and wildlife. These Rangelands are the major source of nutrition for approximately 90-95% of sheep and goats. Livestock plays an important role in the economy of Balochistan. Major part of Balochistan consists of minerals and agriculture, in which livestock is the wealth of Balochistan. 80% of the population lives in the rural area and they depend on livestock for their livelihood. Livestock contribution to the growth of the economy of the province is estimated to be about 40% towards the agriculture and 56.7% towards the GDP of Balochistan, and it gives employment opportunities to approximately 65% of the labor force.

The small ruminant population Sheep & Goats, is about 53% of the total population of the country and this offers lucrative edge to be explored for development of industry.

The province is famous for manufacturing and processing of few carpets and mutton quality sheep namely, Balochi, bivrigh, Harnai and Rukshani and other undocumented breeds of sheep, namely kakri and mengali. Four goat breeds are kept for hair and meat production namely, Pahari, Kajli, Khurasani, Lehri, and two for milk production namey Babri and Kamori crosses. It is also indisputable reality that out of the national population, 48% of sheep, 22 % of goats and 41% of camels are being raised in this province.

It has been proved through a number of fattening trials that fattening of sheep and goats is economical in Balochistan if fattened animals are either sold on special occasions or exported to Gulf States alive. Private sector can also step into this business.

Cattle breeds in Balochistan are Bhagnari, lohani, Red Sindhi and first breed “Balochistan Nari Master”. The Balochistan is very proud to develop a beef breed, “BALOCHISTAN NARI MASTER” a crossbreed of Australian drought Master and indigenous “BAGHNARI”. The live weight of Narimaster bull is about 800 Kg.

After successful evolution of Balochistan Nari Master, there is now great potential for the establishment of meat packing industry in the province. The Government in its trade policy for 1998-99 has allowed the export of fifteen food items including live animals, beef and mutton, blood meals, hides and skins, wet blue leather etc, and there is sufficient potential for private sector to step into this business.

The People of Balochistan live in a traditional way, close to nature. The Livestock is not only the source of livelihood for them but also their hobby.

This province has international borders with two Islamic countries namely Iran and Afghanistan and gateway to Central Asian and Gulf States.

The rangelands of Balochistan are not less than a paradise for the nomads (Khana badosh). These nomads travel from one place to another depending on the climate change.

In winter, they migrate to hot places and return to cold places in summer . They travel on selective migratory routes where they can find valuable grazing fields for their animals. Accordingly, if Sheep, Goat and beef industry is established in the province, this would be great opportunity to establish processing industry and it would flourish economic activities as well. The by-product of livestock animals includes wool, skin and hides. This will further pave the way to establish the feeding industry.

Completion of Gwadar deep sea port especially the agriculture development which includes livestock and dairy development will serve as a hub for the export of Balochistan products in international market.

With the completion of agriculture mega projects there are good chances of employment of modern husbandry practices in this sector. The Merani dam 36000 acre, Subkzai dam 14000 acre and Kachhi canal 700,000 acre and extension of 200000 acre of pat feeder canal under plough would be a blessing for the areas of the province. Farmers will be able to cultivate more crops and fodder, thus enabling them to maintain beef breed and efficient dairy animals like Friesian and its crosses.

Export of animals reared on natural grazing as organic farm animals. The mutton of the indigenous breeds is preferred to the other breeds of country because of its taste and tended fiber. Almost all the animals rely on the rangelands for acquiring their nutritional needs, which gives a unique taste to their meat. If, modern husbandry interventions are introduced, this sector has a lot of potential to serve as a protein source and food security not only for the people of region but also as a foreign exchange.

The People of Balochistan live in a traditional way, close to nature. The Livestock is not only the source of livelihood for them but also their hobby.

There is no tannery in Balochistan and the hides and skins produced here and coming from Afghanistan and Iran are taken to Sindh and Punjab provinces for processing . Mostly these large tanneries require efficient modern process, techniques and quality raw material.

The Quality of local animals’ intestine is very high. At the same time, the intestine required for sausage, is exported to Europe and other Countries.

All the wool produced in Balochistan is almost of carpet quality, therefore expansion and strengthening of cottage industry like carpet making would be beneficial. The export market of carpets from Pakistan is already established. This would help converting the raw wool into value added item.

The major milk product market in the province is Nasirabad and Jaffarabad belt of irrigated areas, where cattle and
buffaloes are kept for milk purpose.

The milk so produced, finds ready market in nearby cities like Dera Allahyar, Dera Murad Jamali and Jacobabad and is even transported to Quetta, while surplus is converted into “KHOYA|” Butter and other dairy products.

According to the locals “There is no Fur processing industry in Balochistan,all the skin/fur is sent to Karachi,Sialkot,Kasoor and the local people are not getting profit.

Balochistan Government may also consider providing some incentives to private sector desirous of setting up breeder, farms, hatcheries, and inform of rebate. It is a tax free zone for this sector.

The importance of livestock cannot be ignored. It is an important pillar of economy and particularly plays central role in the economy of Balochistan. Live stock is not only the asset of Balochistan but also guarantees its bright future.

بلوچستان میں مال مویشیوں کے شعبے میں سرمایہ کاری کے مواقع

پاکستان کا صوبہ بلوچستان ملک کے جنوب مغرب میں واقع ہے۔ بلوچستان پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ ہے جو 3 کروڑ 47 لاکھ ہیکٹر رقبے پر محیط ہے۔ اس کی آبادی ایک کروڑ 79 لاکھ 14 ہزار ہے۔ 

بلوچستان کا تقریبا 80 فیصد رقبہ پہاڑی کہلاتا ہے۔ باقی ماندہ 20 فیصد رقبہ سیلاب زدہ اور ساحلی علاقوں پر مشتمل ہے۔ بلوچستان میں جغرافیائی، زمینی اور ماحولیاتی طور پر ناساگار حالات کے باعث وہاں کاشتکاری محدود ہے جس کے باعث بیشتر زمین پر جھاڑ جھنکار ہے۔ بلوچستان کا تقریبا 93 فیصد حصہ ہریالی کے لئے سازگار ہوسکتا ہے۔ 
قدرت نے اس صوبے کو مویشیوں اور معتدل ہریالی کے لئے سازگار خطے سے نوازا ہے۔ بلوچستان میں ہریالی کے لئے سازگار خطے کو مختلف مقاصد کے لئے استعمال کیا جاسکتا ہے جس میں مال مویشی اور جنگلی حیات کے لئے چارہ بھی شامل ہے۔ ہریالی کے لئے سازگار یہ خطہ بھیڑوں اور بکریوں کی غذائیت کا تقریبا 90 سے 95 فیصد ذریعہ ہے۔ 

مویشی بلوچستان کی معیشت میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ بلوچستان کا بڑا حصہ معدنیات اور زراعت پر مشتمل ہے جس میں مویشی بلوچستان کی سرمایہ ہے۔ صوبے کی 80 فیصد آبادی دیہی علاقوں میں رہتی ہے اور وہ اپنے گزر بسر کے لئے مویشیوں پر انحصار کرتی ہیں۔ صوبے میں معاشی ترقی کے لئے مویشیوں کے شعبہ کا حصہ تقریبا 40 فیصد ہے اور بلوچستان کے جی ڈی پی میں زراعت کا حصہ 56.7 فیصد ہے جس سے مزدوری کے 65 فیصد مواقع ملتے ہیں۔ 
چھوٹی سطح پر جگالی کرنے والوں میں بھیڑیں اور بکریاں ملک کی آبادی کا 53 فیصد ہیں جس کے باعث اس صنعت میں مواقع تلاش کرنے سے یہ بہترین برتری کی پیشکش کرتا ہے۔ 

یہ صوبہ کچھ قالین اور مٹن کے معیار جیسے بھیڑ کے گوشت کی تیاری کے لئے مشہور ہے جن میں بلوچی، بیورغ، ہرنائی اور رخسشانی اور دیگر اقسام کی بھیڑیں ہیں اور جن کا ریکارڈ نہیں ہے ان میں ککری اور مینگالی شامل ہیں۔ بکریوں کی چار اقسام کی نسلوں پہاڑی، کجلی، خراسانی، لہری کو انکے بالوں اور گوشت کی پیداوار کے لئے رکھا جاتا ہے جبکہ بابری اور کموری سے دودھ کی پیداوار ہوتی ہے۔ یہ ایک غیرمتنازع حقیقت ہے کہ قومی آبادی کی 48 فیصد بھیڑیں، 22 فیصد بکریاں اور 41 فیصد اونٹوں کی اس صوبے میں پرورش کی جارہی ہے۔ 

یہ بات مختلف ٹھوس انداز سے ثابت ہوچکی ہے کہ اگر موٹے تازے جانور خصوصی مواقع پر فروخت کئے جائیں یا خلیجی ممالک میں زندہ درآمد کئے جائیں تو یہ جانور بلوچستان کیلئے معاشی طور پر مفید ہیں جبکہ نجی شعبہ بھی اس کاروبار میں شریک ہوسکتا ہے۔ 
بلوچستان میں مویشیوں کی مختلف نسلیں بھاگناری، لوہانی، ریڈ سندھی ہیں اور انکی پہلی نسل بلوچستان ناری ماسٹر ہے۔ بلوچستان کو اپنی بیف کی نسل بلوچستان ناری ماسٹر کی تیاری پر انتہائی فخر ہے، یہ آسٹریلیا کے ماسٹر اور بھاگناری کی مخلوط نسل ہے اور زندہ ناری ماسٹر بیل کا وزن تقریبا 800 کلوگرام ہے۔ 

بلوچستان ناری ماسٹر کے کامیاب تجربے کے بعد صوبے میں گوشت پیکیجنگ کی صنعت کے قیام کیلئے بھرپور مواقع ہیں۔ حکومت نے اپنی 1998۔99 کی تجارتی پالیسی میں کھانے کی 15 اشیاء برآمد کرنے کی اجازت دی جن میں زندہ جانور، بیف، مٹن، اعلیٰ معیار کی کھاد اور مویشیوں کی خوراک میں پروٹین کے اضافے کے لئے جانوروں کے خون کی اشیاء ، کھالیں، چمڑے سے بنی مختلف اشیاء سمیت دیگر شامل ہیں۔ نجی شعبے کے لئے اس شعبے میں سرمایہ کاری کے لئے بھرپور مواقع ہیں۔ 

بلوچستان کے لوگ فطرت سے قریب رہتے ہوئے روایتی طریقے سے زندگی بسر کرتے ہیں۔ مویشی پالنا نہ صرف ان کا ذریعہ آمدن ہے بلکہ ان کا مشغلہ بھی ہے۔ 
اس صوبے کی دو بین الاقوامی اسلامی ممالک ایران اور افغانستان کے ساتھ سرحدیں ملتی ہیں اور یہ وسطیٰ ایشیاء4 اور خلیجی ریاستوں کے لئے راہداری کی حیثیت رکھتا ہے۔ 
بلوچستان میں ہریالی کے لئے سازگار علاقے خانہ بدوشوں کے لئے کسی جنت سے کم نہیں۔ یہ خانہ بدوش ماحولیاتی تبدیلی کے مطابق ایک مقام سے دوسرے مقام کی جانب سفر کرتے ہیں۔ 
موسم سرما میں وہ گرم مقامات کی طرف نقل مکانی کرجاتے ہیں اور موسم گرما میں ٹھنڈے مقامات کی طرف لوٹ آتے ہیں۔ وہ منتخب راستوں پر سفر کرتے ہیں جہاں سے وہ اپنے مویشیوں کی خوراک کے لئے سبزہ تلاش کرسکیں۔ 

اس طرح اگر بھیڑ، بکری اور بیف کی صنعت صوبے میں قائم ہوتی ہے تو پروسیسنگ کی صنعت کے قیام سے بھرپور مواقع ملیں گے جبکہ اس سے معاشی سرگرمیاں الگ پھلیں پھولیں گی۔ مویشیوں سے حاصل ضمنی پیداوار میں اون اور کھالیں شامل ہیں۔ اس سے فیڈنگ کی صنعت کے قیام کی راہ بھی ہموار ہوجاتی ہے۔ گوادر ڈیپ سی پورٹ کی تکمیل بالخصوص بلوچستان میں زرعی ترقی بشمول مال مویشیوں اور ڈیری کے شعبے میں پیش رفت سے بین الاقوامی مارکیٹ میں یہ صوبہ منصوعات کی برآمد کا مرکز بن جائے گا۔ 

زراعت کے بڑے منصوبوں کی تکمیل کے ساتھ جدید کھیتی باڑی کے عمل سے اس شعبے میں ملازمت کے اچھے امکانات موجود ہیں۔ اس ضمن میں میرانی ڈیم 36 ہزار ایکڑ، سبکزئی ڈیم 14 ہزار ایکڑ اور کچھی کینال 7 لاکھ ایکڑ اور پٹ فیڈر کینال سے 2 لاکھ ایکڑ اضافی اراضی کو سیراب کرنے کی سہولت صوبے کے لئے باعث رحمت ہوگی۔ کسان مزید فصلیں اور چارہ کاشت کرنے کے قابل ہوجائیں گے جس سے انہیں بیف کی نسل، دودھ دینے والے موثر جانور جیسے فرائزین گائے اور انکی مخلوط نسل برقرار رکھنے میں مدد ملے گی۔ 

فارم کے جانوروں کے مقابلے میں قدرتی چارہ کھانے والے جانوروں کی برآمد میں کمی آگئی ہے۔ اپنے ذائقے اور زیادہ موزوں ریشے کی وجہ سے مقامی نسل کے مٹن کو ملک میں موجود دیگر نسلوں کے مٹن کے مقابلے میں ترجیح دی جاتی ہے۔ تقریبا تمام جانور اپنی غذائی ضروریات کے حصول کی غرض سے ہریالی کے لئے سازگار خطے پر انحصار کرتے ہیں جس سے ان کے گوشت میں ایک منفرد ذائقہ آجاتا ہے۔ اگر جدید کھیتی باڑی کے طریقے متعارف ہوتے ہیں تو اس شعبے میں بے انتہا مواقع ہیں کہ یہ نہ صرف خطے کے لوگوں کے لئے بلکہ بیرون زرمبادلہ کے ساتھ بھی پروٹین کے مرکز اور غذائی تحفظ کے طور پر کام کرے۔ 

بلوچستان میں چمڑے کے رنگنے کا کام نہیں ہوتا۔ اس لئے مقامی جانوروں کی کھالوں کے علاوہ افغانستان اور ایران سے آنے والی کھالیں بھی رنگنے کے عمل کے لئے سندھ اور پنجاب جاتی ہیں۔ اس حوالے سے بیشتر بڑے کارخانوں میں جدید ماہرانہ عمل، طریقوں اور معیاری خام مال کی ضرورت ہوتی ہے۔ 

مقامی جانوروں کی آنتوں کا معیار بہت اچھا ہوتا ہے۔ یہ کپورے ایک مخصوص قیمے (Sausage)کے لئے درکار ہوتی ہیں جو یورپ اور دیگر ممالک کو برآمد کیا جاتا ہے۔ 

بلوچستان میں تیار ہونے والا تمام اون تقریبا قالین کی سطح کا ہوتا ہے، اس لئے کاٹیج کی صنعت میں توسیع اور استحکام سے قالین کے حوالے سے بالخصوص فائدہ ہوگا۔ پاکستان میں قالین کی برآمدی مارکیٹ پہلے سے قائم ہے جس کے باعث ملک کو خام اون سے تیار مصنوعات بنانے میں مدد ملے گی۔ 

صوبے میں دودھ کی پیداوار کی بڑی مارکیٹ نصیر آباد اور جعفرآباد کا آبپاشی والا حصہ ہے جہاں مویشی اور بھینسوں کو دودھ کی پیداوار کے لئے رکھا جاتا ہے۔ یہ دودھ قریبی شہروں کی مارکیٹ جیسے ڈیرہ اللہ یار، ڈیرہ مراد جمالی اور جیکب آباد کے علاوہ کوئٹہ کی مارکیٹ میں بھی فراہم کیا جاتا ہے جبکہ اضافی دودھ کی صورت میں اس سے کھویا، مکھن اور دیگر ڈیری مصنوعات تیار کی جاتی ہیں۔ 

مقامی لوگوں کے مطابق بلوچستان میں پوستین (فر) کی پروسسینگ کی کوئی صنعت نہیں ہے۔ تمام کھالیں/فر کراچی، سیالکوٹ اور قصور بھیجی جاتی ہیں جس سے مقامی لوگوں کو کوئی منافع نہیں ہوتا۔ 
بلوچستان کی حکومت نجی شعبے کو بعض ترغیبات دینے پر بھی غور کرے جس میں پالنے، فارم، انڈے سینے اور ٹیکس کٹوتی سے آگہی شامل ہے۔ یہ ایک ٹیکس فری شعبہ ہے۔ 

مال مویشی کی اہمیت کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا۔ یہ معیشت کا ایک اہم ستون ہے اور بلوچستان کی معیشت میں بالخصوص یہ شعبہ اہم کردار ادا کرتا ہے۔ مال مویشی کا شعبہ نہ صرف بلوچستان کا اثاثہ ہے بلکہ صوبے کے روشن مستقبل کا ضامن بھی ہے۔

SHARE
Previous articleAcid Victims
Next articleMah Ganj